آج کا کالم

سرکاری بینکوں میں پیسہ نہیں، حکومت کا جھوٹ جمع ہے!

رويش کمار

"کرنسی لون کے بارے میں حقیقت بتاؤں گا تو آپ بھی چونک جائیں گے. بہت سارے بینکوں میں 3 ماہ کے کلوزنگ پر ان اکاؤنٹ پر زیادہ توجہ ہوتی ہے جو PNPA ہوتے ہیں۔ مطلب جو NPA ہونے کی کگار پر ہوتے ہیں. ابھی مینیجر ایک 40 ہزار یا 50 ہزار کا کرنسی لون گمنام نام پر کرتا ہے، اس روپے سے وہ 5-6 لون صحیح کر لیتا ہے جو NPA ہونے والے ہوتے ہیں. کیونکہ اس سے اوپر سے وہ گالی کھانے سے بچ جاتا ہے. اب اس کرنسی لون کے سود دینے کے لئے اب اگلے كواٹر میں جو گمنام کرنسی لون کرے گا، اس سے چکا دے گا. دیکھئے صرف اوپر سے دیا گیا ٹارگیٹ پورا ہو جائے، کوئی گالی سننا نہ پڑے اس کے لئے ہمیں کتنی دھاندلی کرنی پڑتی ہے. کس طرح ہمیں رات کو نیند آتی ہے ہم ہی جانتے ہیں. میں شراب پینے لگا ہوں. ”

یہ کہانی ایک بینکر کی آپ بیتی ہے. بے شمار بینکروں نے اپنے اخلاقی بحران کے بارے میں لکھا ہے. وہ اپنے ضمیر پر جھوٹ کا یہ بوجھ برداشت نہیں کر پا رہے ہیں. کرنسی لون لینے والا کوئی نہیں ہے مگر بینکر پر دباؤ ڈالا جا رہا ہے کہ بغیر پوچھ گچھ کے ہی کسی کو بھی لون دے دو. میں دعوی نہیں کر رہا مگر بینکروں کے ضمیر کی آواز کے ذریعہ جو بات باہر آرہی ہے، اسے بھی سننا جانا چاہئے.

میں نے بینکروں کے ہزاروں میسج پڑھے ہیں اور ڈلیٹ کئے ہیں. اب لگ رہا ہے کہ ان کی باتوں کو کسی نہ کسی طور پر پیش کرتے رہنا چاہئے. آپ کو لگ سکتا ہے کہ ایک ہی بات ہے سب میں مگر جھوٹ کا بوجھ اتنا بھاری ہو چکا ہے کہ ہر روز ایک نیا قصہ ہمیں چونکا دیتا ہے. آپ  یقین نہیں کریں گے کہ ایک بینکر نے ہمیں کیا لکھا ہے.

"رویش جی، میں آپ کو پہلے بھی ایک بار میسج کر چکا ہوں. میری چند ماہ کی نوکری باقی ہے. ریٹائر ہونے جا رہا ہوں. گزشتہ چند برسوں میں میری اپنی دل سے اپنے انسٹی ٹیوٹ کی ساکھ  لگاؤ کم ہو گیا ہے اور کوئی وجہ نہیں بچی ہے کہ میں اس پر فخر کر سکوں. ہماری شاخوں میں روزانہ کئی گاہک آتے ہیں جو کہتے ہیں کہ انہیں لین دین کے میسج نہیں مل رہے ہیں (تقریباً تین سال سے یہ کمی ہے). ہم لوگ اس پر طرح طرح کے بہانے بناتے ہیں. بینک اپنے گاہکوں کو sms سروس کے لئے فی سہ ماہی 15 روپے + gst لیتی ہے (یعنی حکومت تک بھی حصہ جاتا ہے) اس کی خدمت کے لئے جو پروپر طریقے سے دی ہی نہیں جاتی ہے. مشکل سے 20-30 فیصد لین دین کی معلومات جاتی ہوگی پر charges بے شرمی سے پورے لئے جاتے ہیں. آپ الگ الگ شاخوں میں جاکر گاہکوں سے خود پوچھیں تو آپ کو حقیقت معلوم چلے گی. میں چاہتا ہوں کہ ہر کلائنٹ کو بینک گزشتہ 2 سال میں بل کے پیسے واپس کرے اور اس طرح سے اپنی کنڈلی میں کچھ بہتری کرے. کیا اس کے لئے کچھ کلائنٹ عدالت کی معرفت تمام گاہکوں کو ان کا پیسہ لوٹوا سکیں گے؟ اس ناانصافی کے خلاف میں آپ کو ساتھ دیکھنا چاہتا ہوں.”

بینک سیریز سے فرق یہی آیا ہے کہ بینکروں کی روح مخر ہو رہی ہے. وہ بھی انسان ہیں. وہ اپنے ضمیر پر بوجھ برداشت نہیں کر سکتے ہیں. انہیں پتہ ہے ایک دن چیئرمین اور اوپر کے لوگ ہوا میں اڑ جائیں گے اور یہ لوگ جیل جائیں گے. اب یہ جھوٹ اتنا پھیل چکا ہے کہ ریزرو بینک بھی بے اثر ہو چکا ہے. اس کی صلاحیت نہیں ہے کہ وہ اس پیمانے پر پھیلے جھوٹ کو پکڑ سکے. اگر آج بینکروں کو یقین ہو جائے کہ ہر حال میں عوام ان کا ساتھ دے گی تو وہ ایسے ایسے جھوٹ سامنے رکھنے لگیں گے جس سے آپ کے ہوش اڑ جائیں گے. آپ کے پیسے تو اڑ ہی چکے ہیں.

”Want to share worst working conditions in the bank and showing concerns over Managed balance sheets of the bank which do not show true pictures to its stake holders whether they r employees. Share holders GOVT Or market etc. Officers Unions gave their helping hands in the times of crises and management cut their petrol reimbursement to 25 percent In the name of continued losses with a promise to restore the same when profits will emerge. But Inspite Of profits continued for the last 5~6 years petrol cut is not restored. Now in the name of PNB on going fraud cases Bank management is about to implement transfer policy as a result of which each and every officer who is in the state not in zone will be transferred to other state as a result of which mass transfers are going to take place in coming month as confirmed by Top management in IR meeting in 16.03.18.”

انگریزی میسج آیا ہے، ہوبہو پیش کر دیا ہے. جناب یہی کہہ رہے ہیں کہ سب کو اوپر سے ٹھیک لگے لہذا بینکوں کے بہی کھاتے میں فرضی جوڑ گھٹاؤ کیا جا رہا ہے. نیرَو مودی جی تو خود فرار ہو گئے، وزیر خزانہ ابھی تک نہیں بول پائے مگر اس کی سزا بینکروں کو مل رہی ہے. اس ریاست سے اس ریاست میں تبادلہ کرکے. تبادلے کا جو خرچ آتا ہے وہ بھی اب بینک پورا نہیں دیتا ہے. آپ اگر دو ہزار بینکروں سے بات کر لیں گے تو یہی لگے گا کہ بینکر بھی اپنی جیب سے بینک چلا رہے ہیں. جس کا ذکر میں غلام بینکروں کی داستان میں کر چکا ہوں. وہ اپنی غلامی کو سمجھنے لگے ہیں. اپنی نوکری  داؤ پر رکھ کر براہ راست بینک کے خلاف تو نہیں کھڑے ہو سکتے مگر اب ان کا ضمیر بولنے کے لئے مجبور کرنے لگا ہے. ملک بھر کے ان جگہوں سے بینکر مجھے اپنا درد بتا رہے ہیں جہاں میرا چینل کئی ماہ سے آتا بھی نہیں ہے. حکومت کے دعووں کو بڑا اور سچا بنانے کے لئے بینکوں کے اندر اندر جو فرضی واڑا ہو رہا ہے، اس پر آپ آج بھلے دھیان نہ دیں مگر جس دن یہ بینک بھربھرائیں گے، سڑک پر آکر آپ روتے رہ جائیں گے.

میں روز سوچتا ہوں کہ ان میسج کا استعمال کس طرح کروں. اب لگتا ہے کہ ڈلیٹ کرنے سے پہلے ان کی باتوں کا ایک حصہ اٹھا کر یہاں رکھ دوں. کرنسی لون کو لے کر جو فرضی واڑا چل رہا ہے، جو قصے میں نے پڑھے ہیں، میں اب سمجھنے لگا ہوں کہ امریکہ اور برطانیہ کے بینکوں کے اندر اندر جو ہوا تھا، وہی اب ہندوستان میں ہو رہا ہے. بینکر اب بھی اس بحران کو نہیں سمجھ رہے ہیں. وہ اپنی لڑائی لڑ رہے ہیں سیلری کے لئے مگر درد بتاتے ہیں کراس سیلنگ اور جھوٹ بول کر انشورنس فروخت کے دباؤ کی. کرنسی لون کے اعداد و شمار بڑے لگیں اس کے لئے کئے جا رہے فرضی واڑے کی وجہ سے وہ ٹوٹ رہے ہیں. بینک کے فریم ورک میں کسی ریاست میں چوٹی کے دس پانچ لوگ ہی ہوتے ہیں. ان کے ذریعہ ہزاروں ملازمین اور افسران پر دباؤ ڈالا جا رہا ہے. انشورنس بیچنے کا کمیشن انہی دس پانچ چوٹی کے افسروں کو ملتا ہے. جتنا میں نے سمجھا ہے.

“ Sir, bank has also sold me insurance policy with home loan forcefully without my consent and when I requested them to cancel in freelook period, they have not done the same…”

انگریزی میں لکھے اس میسیج سے آپ اتنا تو سمجھ ہی گئے ہوں گے کہ بغیر ان کی اجازت کے انشورنس پالیسی بیچ دی گئی. جب انگریزی والے بینکوں کے جھوٹ کے شکار ہیں تو ذرا تصور کیجیے غریبوں کے ساتھ کیا ہو رہا ہوگا. مجھے یہ بھی سننے کو ملا ہے کہ غریب كھاتے والوں کے اکاؤنٹ سے پیسے نکال لئے جا رہے ہیں، بغیر ان کی اجازت کے. جب وہ واپس کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں تو بینکر بتاتے ہیں  کہ پیسہ واپس کرنے کا کوئی عمل ہی نہیں. ایک بینک کے منیجر نے بتایا کہ اس طرح ہمارا ہی بینک پانچ چھ ہزار کروڑ کا منافع بنا لیتا ہے.

اٹل پنشن یوجنا. اٹل جی کے نام سے بھی لوگوں کے ساتھ دھوکہ کیا جا سکتا ہے، مجھے یقین نہیں تھا. سینکڑوں کی تعداد میں بینکر بتا رہے ہیں کہ کوئی لے نہیں رہا، ہمیں دینے کے لئے مجبور کیا جا رہا ہے. ایک بینکر نے لکھا کہ آج جب سات بج گیا تو باہر گیا. چائے کی دکان سے تین لوگوں کو پکڑ لایا. دستخط کرایا اور اپنی جیب سے 100-100 روپے ڈال کر اپنا ٹارگٹ پورا کیا اور گھر چلا گیا. ورنہ ساڑھے نو بجے رات تک بیٹھنا پڑتا. اس طرح اٹل پنشن کی یوجنا بیچی جا رہی ہے. بہت بینکروں نے کہا کہ ایسے بھی یہ یوجنا ٹھیک نہیں ہے. اس میں کوئی دم نہیں ہے. ہم نے پوچھا ہمیں تو اتنی باریکی سمجھ نہیں آتی تو ان کا یہ جواب ہے.

"سر، آج کے زمانے میں کسی گاہک کو انوسٹمنٹ کے بارے میں بتاؤ تو اس کا پہلا سوال ہوتا ہے کہ رٹرن کتنا ہے اور کتنے سال میں. سر، اٹل پنشن یوجنا کے کیس میں انٹری ايرس ہے 20 سال. اس کے بعد آتا ہے گاہک کی عمر کا فنڈا جس سے پریمیم طے ہوتا ہے. 20 سال کا سن کر ہی 10 میں سے سات لوگ غائب ہو جاتے ہیں. جو تین بچے وہ تین بھی اچھے تعلقات کی وجہ سے پلان لے لیتے ہیں. ابھی آتی ہے پالیسی چلانے کی بات پر. میں نے ابھی تک کچھ 70 اٹل پنشن یوجنا کی ہے. جن میں سے شاید ہی کسی میں 3-4 پریمیم سے زیادہ جمع ہوا ہوگا. سر، میں نے ایم بی اے کی تعلیم حاصل کی ہے. میں نے اپنا سارا علم اور طریقے لگا دیئے کہ گاہک کو سب کچھ بتا کر اسے بیچ لوں، مگر کوئی فائدہ نہیں ہے. اس کا فائدہ ہوتا تو میں خود نہیں لے لیتا. اچھا نہیں لگتا ہے اپنی نوکری کو بچانے کے لئے، جھوٹی شان سے اپنی روزی روٹی چلانے کے لئے، ایک گاہک جو بھروسے سے اپنی محنت کی کمائی میرے بھروسے مستقبل کے لئے بچانا چاہتا ہے، اسے غلط مشورہ سے ضائع کروں. جتنی محنت ہم بینک والوں سے ان سب APY اور انشورنس بیچنے کرنے کے لئے کروائی جا رہی ہے، اس وقت میں بینکرس بزنس کا فیگر چینج کر سکتے تھے. ”

خواتین بینکروں کی حالت پڑھ کر میری حالت خراب ہونے لگی ہے. ہفتے کی شام جب میری کتاب لانچ ہو رہی تھی تب ایک نمبر  مسلسل فلیش کر رہا تھا. اتنی بار فلیش کیا کہ آخر میں چِڑھ گیا. میں ہی اونچی آواز میں بولنے لگا کہ آپ میسج کر دیتے. ایسا کیا ہے کہ آپ مسلسل آدھے گھنٹے سے فون کر رہے ہیں. ادھر سے آتی آواز نے میرا پورا موڈ بدل دیا. بھول گیا کہ اپنی کتاب کے لانچ میں آیا ہوں.

"سر، میری ساتھی کو انشورنس نہ بیچ پانے کی وجہ سے بینک میں بٹھا لیا ہے. میں تو آٹھ بجے نکل گیا مگر اسے ساڑھے نو بجے رات کے بعد ہی چھوڑیں گے. اس کا بچہ بہت بیمار ہے. بہت تیز بخار ہے. گھر میں کوئی نہیں ہے. یہاں اکیلے اپنے بچے کے ساتھ رہتی ہے. آپ نیوز فلیش کردیں تو اسے چھٹی مل جاتی. ویسے بھی اس بینک سے گھر آنے میں چالیس منٹ لگیں گے. اس ماں کی حالت بہت خراب ہو گئی ہے. روز کی یہی کہانی ہے. ہم انشورنس فروخت نہیں کرتے ہیں تو بینک میں افسروں کو دیر رات تک بٹھا کر رکھا جاتا ہے. ”

“I am also a banker and I had to go too bank today with my kid, as nobody was there for take care of my son at home.”

آپ سمجھ گئے ہوں گے کہ یہ میسج خاتون بینکر کا ہے. اتوار کو بھی بینکروں کو جانا پڑتا ہے. اس کے بدلے انہیں کوئی چھٹی نہیں ملتی ہے. خواتین بینکروں کی حالت پڑھ کر بے بس سا محسوس کرنے لگا ہوں. کئی بار لگتا ہے کہ حکومت، چیئرمین، ای ڈی ٹائپ کے افسروں کا گھمنڈ اتنا بڑھ سکتا ہے یا ہمیں اتنا برداشت کرنا پڑے گا کہ یہ ہماری حالت غلام جیسی کر دیں گے.

حکومت بینکوں کے اندر اندر جو جھوٹ جمع کر رہی ہے، وہاں اب جھوٹ ہی بچا ہے. آپ کو میڈیا انتخابی جیت کے قصے دکھا رہا ہے، مگر آدمی کی حالت غلام سی ہو گئی ہے، وہ نہیں دکھائے گا کیونکہ گودی میڈیا تو خود میں غلام میڈیا ہے. آج نہ کل 13 لاکھ بینکروں کو سوچنا پڑے گا کہ چوٹی کے چند افسروں کو ملنے والے کمیشن کے لالچ میں کیا وہ اپنے لیے غلامی قبول کر سکتے ہیں؟ خواتین بینکروں کو ایک دوسرے کا ہاتھ تھامنا ہی ہوگا، انھیں اب نکلنا ہی ہوگا، آزادی کے لئے قیمت ادا کرنی پڑتی ہے.

نوٹ: اس مضمون کو گاؤں گاؤں پہنچا دیں اور لوگوں کو بتا دیں کہ بینکوں کے اندر اندر خواتین بینکر غلام کی طرح رکھی گئیں ہیں، انہیں بچانا ہے. مرد بینکروں کی بھی حالت بری ہے. انہیں بھی بچانا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Close