آج کا کالم

سرکاری محکموں کی پول کھولتی سی اے جی رپورٹ!

رويش کمار

بھارت کے کنٹرولر مهالیكھا پريكشك، سی اے جی کی رپورٹ کی عجیب صورت حال ہے. سرکاری فریق نہیں چاہتا کہ اس رپورٹ کو کوئی اور دیکھ لے، اپوزیشن نہیں دیکھ پاتا کیونکہ اس رپورٹ میں ان کی حکومتوں کے بارے میں بھی تبصرے ہوتے ہیں . سی اے جی کی رپورٹ سے گزرتے ہوئے آپ تمام محکموں کی حالت تمام ریاستوں میں سمجھ سکتے ہیں . کہیں ریکارڈ ہی نہیں رکھا جاتا، کہیں زیادہ ادائیگی ہو گیی تو کہیں کسانوں کو واجب حق نہ ملے اس کے لیے بینکوں نے ہی جان بوجھ کر تاخیر کر دی. سی اے جی کی رپورٹ کو اپنے فارغ وقت میں پڑھنا چاہیے. اس سے پتہ چلے گا کہ مہنگے اشتہارات میں جو دعوے کیے جاتے ہیں ان کے پیچھے کھیل کیا ہے؟ فصل انشورنس کے منصوبوں پر سی اے جی کی رپورٹ دیکھنی چاہئے. اس رپورٹ سے پتہ چلتا ہے کہ کسانوں کے لیے منصوبہ بندی کے اعلان اور ان کے زمین پر اترنے میں کتنے آسمانوں کا فرق ہے.

1985 سے بھارت میں فصلوں کے لئے انشورنس کی منصوبہ بندی کو لے کر پریوگ ہو رہے ہیں . 2016 میں جب وزیر اعظم فصل انشورنس اسکیم نافذ ہوئی تو اس کا خوب پرچار ہوا. کچھ شرائط تو پہلے سے کافی اچھی ہیں بھی. مگر اس کے بعد بھی سی اے جی کی رپورٹ پڑھنے سے یہی لگتا ہے کہ اس کی منصوبہ بندی کا کوئی مائی باپ نہیں ہے. وزیر اعظم فصل انشورنس کی منصوبہ بندی کے تحت کسان پریمیم کا ایک حصہ کرتے ہیں باقی حصہ مرکز اور ریاستی حکومت مل کر کرتے ہیں . اس کے لئے پرائیویٹ انشورنس کمپنیاں بھی ہیں اور ایک سرکاری زراعت انشورنس کمپنی اے آي سي بھی ہے. حکومت تو اےآي سي کو پیسہ دے دیتی ہے، اب اےآي سي کا کام ہے کہ وہ پرائیویٹ انشورنس کمپنیوں کو پیسہ پكڑایے تاکہ وہ آگے کسانوں کو انشورنس دے سکیں . ان کمپنیوں کو بغیر کسی گایڈلاین کی شرائط کو پورا کئے ہوئے کس طرح ہزاروں کروڑ روپے دے دیے گئے. کیا کوئی عام کسان ان پرائیویٹ انشورنس کمپنیوں سے پوچھ سکتا ہے کہ اس کے حصے کا یا اس علاقے کا انشورنس کس کس کو ملا.

سی اے جی نے 2011-12 سے لے کر 2015-16 کے درمیان فصل انشورنس کی منصوبہ بندی کا جائزہ لیا ہے. جو نتائج سامنے آئے ہیں اس سے یہی لگتا ہے کہ یہ منصوبہ کسانوں کے لیے ہوتے ہوئے بھی ان کے لئے نہیں ہے. اگر ہوتا تو پھر سی اے جی کو کیوں کہنا پڑا کہ تین دہائی سے انشورنس اسکیمیں ہیں پھر بھی بہت کم کسان ان دائرے میں آئے ہیں . بہت ہی کم چھوٹے اور معمولی کسان فصل انشورنس کی کوریج میں آ سکے ہیں . ایس سی / ایس ٹی کسانوں کے انشورنس کے لیے بھی انتظام ہے مگر ان کا کوئی ڈیٹا نہیں ہے. اسکیم انہی کسانوں کے لیے ہے، جو زراعت کے لیے قرض لیتے ہیں . کئی بار کسان کھیتی کے قرض کا بیمہ کراتے ہیں ، فصل کا نہیں . بینک کسانوں کو انشورنس دفعات کے بارے میں نہیں بتاتے ہیں . کس کسان کا بیمہ ہوا ہے، اس کا ڈیٹا نہ مرکزی حکومت کے پاس ہے نہ ریاستی حکومت کے پاس. یہاں تک کہ انشورنس کمپنی اےآي سي بھی نہیں رکھتی ہے. گایڈلاین میں ڈیٹا رکھنے کی ذمہ داری کو کیوں نہیں جوڑا گیا ہے. آج کل ڈیجیٹل انڈیا اور ڈیٹا انڈیا کی ہی بات ہوتی ہے لیکن ہزاروں کروڑوں کی فصل انشورنس کی منصوبہ بندی کے تحت کس کسان کا بیمہ ہوا ہے اس کا کوئی ڈیٹا ہی نہیں ہے. یہ رعایت کسانوں کے لیے ہے یا کسی اور کے لیے.

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ فصل کی بوائی کتنے ایریا میں ہوئی اور انشورنس کتنے ایریا کا ہوا، دونوں میں فرق دیکھا گیا ہے۔ مہاراشٹر کے ایک تالکہ میں 2015 کے خریف سیزن میں 51،397 ہیکٹر زمین میں دھان کی بوائی ہوئی جبکہ انشورنس ایریا دکھایا گیا 1،11،615 ہیکٹر، بوائی سے بھی دگنا. سی اے جی کا خیال ہے کہ ڈبل انشورنس لیے جانے کے امکان کے اشارے ملتے ہیں . اس کے لئے بیڑ ضلع کی تین تالكاؤں کے بینک ریکارڈ کو دیکھا گیا. پتہ چلا کہ کسانوں کو ایک ہی فصل کی انشورنس دو تین بار ملی ہے.

سی اے جی کا کہنا ہے کہ ریاستی حکومتوں کے دیے گئے اعداد و شمار پر بھروسہ نہیں کیا جا سکتا ہے. منصوبہ بندی کی نگرانی کے لئے کوئی متاثر کن میكنذم نہیں ہے. جب نگرانی نہیں ہے، اعداد و شمار ہی نہیں اور جو ہے اس میں فرق ہے تو پھر بچا کیا. کیا یہی کہنا رہ گیا کہ ہو سکتا ہے کہ بڑے سطح پر دھاندلی ہو رہی ہے.

اگر انشورنس کی رقم سے کم دعوی لیا گیا تو بچی ہوئی رقم کا کیا ہوگا اس کی کوئی گایڈلاین نہیں ہے. 2011-16 کے دوران اےآي سي نے 10 انشورنس کمپنیوں کو622 3، کروڑ روپے جاری کر دیے. اس کے لئے گایڈلاین کی شرائط کی پرواہ بھی نہیں کی گئی اور وجہ بتانے میں ناکام رہی. اےآي سي نے یقین نہیں کیا کہ بینکوں کو يوٹلایزیشن سرٹیفکیٹ دینا ہی ہوگا.

یہ اس اسکیم کی حالت ہے جس کے نام کے آگے وزیر اعظم منسلک ہے اور ملک کی سیاست جس سے دن رات متاثر ہوتی رہتی ہے. فصل انشورنس کی منصوبہ بندی کے تحت حکومت کئی ہزار کروڑ پرائیویٹ انشورنس کمپنیوں کو پریمیم کی سبسڈی دیتی ہے. پرائیویٹ کمپنیاں کسانوں کو دے رہی ہیں یا نہیں اس کی جانچ کے لئے آڈٹ کا کوئی منصوبہ ہی نہیں بنایا گیا ہے. کئی بار بینک بھی کسانوں کا ڈیٹا دینے میں تاخیر کرتی ہیں . کبھی اکاؤنٹ نمبر غلط نکل جاتا ہے تو کبھی اکاؤنٹ نمبر غلط دے دیا جاتا ہے. بینک کام کا دباؤ بتاتے ہیں . یہ سب سی اے جی نے تحقیقات کے بعد اپنی رپورٹ میں کہا ہے.

مہاراشٹر کے چار اضلاع میں 9 بینکوں نے کسانوں کے دعووں کو 72 کروڑ روپیہ روک لیا. ایک کوآپریٹو بینک نے 101 کروڑ کے انشورنس بانٹ دینے کا سرٹیفکیٹ بھی دے دیا جبکہ 98 کروڑ برانچ کے اکاؤنٹ میں ہی پڑے رہے.

بھارتی ریل کو مودی حکومت کے قابل وزراء میں سے ایک سریش پربھو چلاتے ہیں لیکن سی اے جی نے بھارتی ریلوے کے لئے ٹکٹ کی بکنگ، سیاحت سے لے کر کھانے پینے تک کا ذمہ سنبھالنے والی IRCTC کے کام اور کوالٹی کی جو آڈٹ رپورٹ دی ہے وہ کافی سنگین ہے. سوچنا پڑ رہا ہے کہ سریش پربھو کے ریلوے کے وزیر رہتے یہ سب ہو رہا ہے جنہیں اچھا سمجھا جاتا ہے تو پھر یہ کس طرح ممکن ہے کہ ذونل ریلوے کو ہر اسٹیشن اور ٹرینوں میں کیٹرنگ کی خدمات کا ماسٹر پلان بنا کر دینا تھا لیکن سات ذونل ریلویز نے یہ بلیو پرنٹ بنا کر نہیں دیا. پالیسی بنی کہ ٹرین کی پینٹری کار میں گیس کے برنر نہیں ہوں گے، سب کو الیکٹرک کیا جائے گا، اس کے باوجود انٹی گریٹیڈ کوچ فیکٹری نے اپریل 2011 سے مارچ 2016 کے درمیان ایل پی جی سلنڈر والی 103 پینٹری کار بنا کر ذونل ریلوے کو دیں . 115 بیس کچن ریلوے احاطے کے باہر تھے جہاں معیار چیک کی کوئی سہولت نہیں تھی. 74 اسٹیشنوں میں سے 46 میں عوامی غذایی مرکز ہی نہیں تھے جبکہ ریلوے بورڈ نے ذونل ریلویز کو سستی قیمتوں میں کھانا فراہم کرنے کے لئے غذایی مرکز بنانے کا حکم دیا تھا. 74 اسٹیشنوں اور 80 ٹرینوں کی مشترکہ تحقیقات سے پتہ چلا کہ کیٹرنگ يونٹس میں صاف صفائی نہیں رکھی گئی تھی. نل کے پانی کا ہی استعمال کھانے پینے کی اشیاء میں ہوا. ڈسٹبن کھلے ہوئے تھے اور ان میں کافی گندگی بھری تھی. کھانے پینے کے سامان کو مکھی، کیڑوں ، دھول، چوہوں اور ككروچ وغیرہ سے بچانے کے لئے ڈھک کر نہیں رکھا گیا تھا.

ٹرینوں اور اسٹیشنوں میں کھانے پینے کی اشیاء کی فروخت میں کافی دھاندلی ہو رہی ہے، ٹرین کی موبائل يونٹس میں خریدے گئے کھانے پینے کی اشیاء کے بل نہیں دیے جا رہے تھے. خوراک مواد طے شدہ مقدار سے کم دی جا رہی تھیں . بغیر منظوری کے ناقص کوالٹی کا پینے کا پیک پانی فروخت کیا جا رہا تھا. یہ بھی کہا گیا ہے کہ کئی بار کھانے کی کوالٹی ایسی نہیں تھی کہ وہ کسی انسان کو دی جائے، کھانے پینے کا آلودہ یا ایكسپايري ڈیٹ والا سامان مسافروں کو دیا جا رہا تھا. سی اے جی کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مسافروں سے سپرفاسٹ ریلوے کے لئے 11 کروڑ سپرچارج تو وصول لیا گیا مگر کچھ سپر فاسٹ ٹرینیں 95 فیصد لیٹ چلتی رہیں .

ابھی آتے ہیں صحت پر. گاؤں کے لوگوں کی صحت کے لئے 2005 میں قومی دیہی صحت مشن (این آر ایچ ایم) کی شروعات ہوئی تھی تاکہ پیدا ہونے کے وقت بچے اور ماں کی ہونے والی موت کو روکا جا سکے. سی اے جی نے 2011 سے مارچ 2016 تک کا حساب کتاب کیا ہے. اس منصوبہ کی بھی پول کھلتی نظر آ رہی ہے. 27 ریاستوں نے اس منصوبے کے پیسہ خرچ ہی نہیں کیے. 2011-12 میں یہ رقم375 7، کروڑ تھی جو 2015-16 میں بڑھ کر 9509 کروڑ ہو گئی. 6 ریاستیں ایسی ہیں ، جہاں 36.31 کروڑ کی رقم کسی اور منصوبہ بندی میں لگا دی گئی. جن منصوبوں کا تعلق غریب عورتوں اور نوزائیدہ بچوں سے ہے ان منصوبوں کا پیسہ بھی سات ہزار کروڑ اور نو ہزار کروڑ خرچ نہیں کریں گے تو کیا مانا جائے. کیا یہ منصوبے کاغذ پر ہی گھوم پھر کر واپس دہلی یا ریاستوں کے دارالحکومت میں واپس لوٹ آتے ہیں .

بہار، جھارکھنڈ، سکم، اتراکھنڈ، مغربی بنگال میں پرائمری ہیلتھ سینٹر، کمیونٹی ہیلتھ سینٹر اب بھی 50٪ کم ہیں . سینکڑوں ایسے صحت مرکز ہیں جو گندی حالات میں کام کر رہے ہیں . 20 ریاستوں میں 1285 پروجیکٹ کاغذوں میں پورے ہو چکے ہیں مگر اصلیت میں شروع بھی نہیں ہوئے ہیں . 17 ریاستیں ہیں جہاں 30 کروڑ کی الٹراساؤنڈ، ایکس رے، اسيجي جیسی مشینیں پڑی ہوئی ہیں. وہاں طبی عملے نہیں ہیں ، رکھنے کی جگہ تک نہیں ہے.

کیا آپ کو لگتا نہیں کہ عوام کے ساتھ مذاق ہو رہا ہے. 27 ریاستوں کے تقریباً ہر صحت مرکز میں 77 سے 87 فیصد ڈاکٹروں کی کمی ہے. جب ڈاکٹر ہی نہیں ہیں تب حکومتیں ایسا اشتہار کیوں نہیں بناتی ہیں کہ ہم منصوبہ بندی تو بنا رہے ہیں مگر پہنچا نہیں رہے ہیں . بغیر ڈاکٹر کے لئے این آر ایچ ایم کا پیسہ کس طرح خرچ ہو رہا ہوگا. 13 ریاستوں میں تو 67 صحت مرکز سے ملاقات کی جہاں پر کوئی ڈاکٹر ہی نہیں تھا. اینميا جسم میں آئرن کی کمی کی بیماری ہے اور عورتوں اور بچوں میں اینميا کے معاملے میں بھارت دنیا میں ٹاپ پر ہے. ترسیل کے دوران مرنے والی پچاس فیصد مائیں اینميا کی وجہ سے مرتی ہیں . اس کے بعد بھی سی اے جی نے تمام ریاستوں کے بنیادی مراکز میں پایا کہ آئرن گولی دی ہی نہیں جا رہی ہیں . این آر ایچ ایم سینٹر میں حاملہ عورت کو سو فولک  ایسڈ گولی دینی ہوتی ہے. آڈٹ میں پایا گیا کہ تمام 28 ریاستوں میں 3 سے 75 فیصد کی کمی ملی یعنی گولی دی ہی نہیں گئ. اروناچل، جموں کشمیر، منی پور، میگھالیہ میں 50 فیصد حاملہ خواتینکو ٹیٹنس کا ٹیکہ بھی نہیں لگ سکا.

سی اے جی نے گجرات میں 3 جنرل ہسپتالوں کی جانچ کی. نڈياڈ جنرل ہسپتال میں آپریشن تھیٹر تو ہے لیکن آپریشن کے پہلے اور بعد مریض کو رکھنے کے لئے کمرے نہیں ہیں . اگر آپ کو براہ راست مریض کو آپریشن تھیٹر میں لے جائیں ، وہاں سے براہ راست وارڈ میں تو اسے انفیکشن ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے. اسی ہسپتال میں جگہ کی کمی کی وجہ لیب کا کام بھی مریضوں کے ویٹنگ ایریا میں ہی چل رہا تھا. گودھرا کے جنرل ہسپتال میں 440 بستر کی ضرورت ہے، لیکن 210 ہی ہونے کی وجہ سے مریض زمین پر ملے. جھارکھنڈ میں 17 پرائمری ہیلتھ سینٹر کی عمارت ہی نہیں ہے. 5 ضلع اسپتالوں میں 32 خصوصی ٹریٹمنٹ خصوصیات میں سے 6 سے 14 سہولیات دستیاب تھیں . یعنی جتنی بیماری کا علاج ہونا چاہئے، نہیں ہو رہا ہے. کیرالہ کی 1100 سے زیادہ سي ایس چي اور پی ایچ سی میں صرف 23 میں ڈلیوری کی سہولت ہے. بہار میں جنی سکشا یوجنا کے تحت 40 فیصد قابل خواتین کو ان کے حق نہیں دیئے گئے.

آڈٹ میں پتہ چلا کہ 15 ریاستوں کے سالانہ اکاؤنٹ میں بھی کافی گڑبڑیاں ہیں . رسیدوں میں ، اخراجات میں کم زیادہ دکھایا گیا ہے، حساب بھی ٹھیک سے نہیں رکھا گیا ہے. اپنے اختتام میں کیگ نے لکھا ہے کہ مرکز اور ریاستوں دونوں نے پیسے کو خرچ کرنے کے معاملے میں تسلی بخش کام نہیں کیا ہے. سی اے جی کی رپورٹ سے نظریں چرانے سے کوئی فائدہ نہیں . بہتر ہے بات ہو اور نظام کو شفاف بنانے کے ساتھ ساتھ زمین پر اتارنے کی کوشش ہو.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close