سرکاری نوکریاں آخر ہیں کہاں؟ (پارٹ: 7)

0

رويش کمار

بھارت میں بے روزگاری کا دھماکہ ہو گیا ہے. جہاں کہیں بھرتی نکلتی ہے، بے روزگاروں کی بھیڑ ٹوٹ پڑتی ہے. یہ بھیڑ بتا رہی ہے کہ بے روزگاری کے سوال کو اب اور نہیں ٹالا نہیں جا سکتا ہے. یہ تمام حکومتوں کے لئے انتباہ ہے چاہے کسی بھی پارٹی کی حکومت ہو، نوجوانوں کے درمیان نوکری کا سوال آگ کی طرح پھیل رہا ہے. مدھیہ پردیش کے مرینا ضلع عدالت میں چوتھی قسم کی نوکری کے لئے بھرتی نکلی ہے. مرینا سے ہمارے ساتھی اوپیندر گوتم نے بتایا ہے کہ صرف 22 عہدوں کے لئے 5300 بے روزگاروں نے درخواست دی تھی. 28 جنوری کو انٹرویو ہونا تھا، باہر اتنی بھیڑ آ گئی کہ پولیس کو مورچہ سنبھالنا پڑا. پولیس کو اس بھیڑ کو ہینڈل کرنے کے لیے ڈنڈے نکالنے پڑے. 200 سے زیادہ پولیس اہلکار لگانے پڑے. دینک بھاسکر نے لکھا ہے کہ سرکاری نوکری کی چاہ میں انجینئر تک چپراسی کے عہدے کے لئے انٹرویو دینے آئے. مرینا، امباه، سبھل گڑھ جورا کی عدالت میں پانی پلانے والی بھرتي، چوکیدار اور ڈرائیور کے 22 عہدوں کے لئے 5500 بے روزگاروں کی اسکریننگ کی گئی. اس عہدے کے لئے تنخواہ صرف 12000 ہے.

اجین سے اجے پٹوا نے بتایا کہ یہاں تو پولیس کو لاٹھی تک چلانی پڑی ہے. بھاسکر رپورٹر نے لکھا ہے. اجین میں چپراسی، چوکیدار اور ڈرائیور کے 16 عہدوں کے لئے سات ہزار آن لائن درخواست آگئیں. اتنی بھیڑ آ گئی کہ پولیس کو بہت محنت کرنی پڑی. 21 ججوں کو تین تین پینل میں رکھا گیا تھا. ان کے پینل کے لئے 66 نوجوانوں کی فہرست تیار کی گئی ہے. مدھیہ پردیش کے اخبار اس خبر سے بھرے ہیں کہ مدھیہ پردیش ہائی کورٹ نے ضلع کورٹ میں ڈرائیور، چپراسی، مالی، سویپر کی بھرتی کے لئے اشتہار جاری کیا تھا. 31 دسمبر تک فارم جمع کرانے کی آخری تاریخ تھی. 738 عہدوں کے لئے 2 لاکھ 81 ہزار نوجوانوں نے اپلائي کر دیا. سب سے زیادہ فارم گوالیر کے نوجوانوں نے بھرے ہیں. گوالیر میں 16 عہدوں کے لئے 70 ہزار فارم بھرے گئے ہیں. ان میں 80 فیصد امیدوار 12 ویں پاس ہیں، گریجویٹ ہیں اور ایم اے پاس ہیں. یہاں پر انٹرویو کے لئے 12 پینل بنے ہیں. دینک بھاسکر نے لکھا ہے کہ ہر دن 2400 امیدواروں کا انٹرویو لینے کا ارادہ ہے. 18 فروری تک انٹرویو چلیں گے. انوراگ دواري ہمارے ساتھی نے لکھا ہے کہ اکیلے گوالییر میں فارم بھرنے سے ہی 1 کروڑ 20 لاکھ روپے سرکاری خزانے میں جمع ہوئے ہیں.

 آپ ان تصاویر کو دیکھ کر نظر انداز بھی کر سکتے ہیں. نوکری کا سوال ٹی وی پر آسکے اس کے لئے روز ان مسائل سے جدوجہد کرنا پڑتا ہے جنہیں لے کر سیاسی پارٹیاں فعال رہتی ہیں اور آئی ٹی سیل سرعام للکارتا رہتا ہے کہ آپ كاس گنج پر کب بولیں گے، بالکل دکھائیں گے ہمارے چینل پر كاس گنج کی بھی خبر چل رہی ہے، باقی چینلز پر بھی چل رہی ہے. آج ایک نوجوان نے میسج کیا کہ کیا كاس گنج کے دباؤ میں ملازمتوں کی سیریز بند ہو جائے گی. ہر طرف سے کچھ نہ کچھ شکایتیں ہیں، سوالات ہیں۔ بہتر ہے ملازمتوں پر ایک اور قسط کر ہی لیتے ہیں. تعداد کے حساب سے یہ ساتواں ایپی سوڈ ہوگا. آپ نے مدھیہ پردیش کا حال دیکھا. چپراسی اور ڈرائیور کے عہدے کے لئے لاکھوں درخواست آئی ہیں. ان میں سے کوئی بھی کام پرمنینٹ (مستقل) نہیں ہے. تمام  کانٹریکٹ (معاہدوں) پر ہیں. کانٹریکٹ کی نوکری کے لئے اتنی مارا ماری ہے. ظاہر ہے بے روزگاری کی آگ نوجوانوں کو جلا رہی ہے. لہذا مختلف علاقوں میں آگ لگانے والے مسئلے سلگائے جا رہے ہیں تاکہ بے روزگاری کی چنگاری نظر نہ آئے. انوراگ نے لکھا ہے کہ اپلائي تو گریجویٹ، انجینئر، ایم بی اے تک کے طالب علموں نے ہی کیا لیکن اسکریننگ صرف آٹھویں پاس کے نوجوانوں کی ہی ہوئی ہے کیونکہ قابلیت آٹھویں پاس ہی مانگی گئی تھی. نوجوانوں نے لاکھوں روپے دے کر، بینک سے قرض لے کر جو ڈگری لی ہے، وہ ردی ہو چکی ہے.

ہمارے ساتھی انوراگ دواري نے مدھیہ پردیش کے معدنی وزیر سے سوال کئے ہیں. ہم انوراگ کا انٹرویو کا وہ حصہ دکھا رہے ہیں جس کا تعلق آج کی سیریز سے ہے. آپ وزیر جی کے جواب سنئیے، احتیاط سے سنئے، اگر آپ بے روزگار ہیں تو ان کے جواب سے بہت فائدہ ہو گا.

وزیر جی کہتے ہیں، ‘معدنی شعبہ میں میں نے آملہ بڑھایا تھا. کیپٹل سرمایہ کاری اتنا نہ ہو جائے کہ ترقی کے کام رکنے لگیں. ترقی کے جو اثر ہوتے ہیں وہ بے روزگاری کو دور کرنے والے ہوتے ہیں. سرکاری حکومت کے خزانے پر بوجھ بڑھے گا. بجلی کی دستیابی بڑھائی اور آب پاشی کا رقبہ بڑھایا. ان علاقوں میں جا کر دیکھئے لوگوں کی پے انگ كپیسٹي بڑھ گئی ہے، اس سے مارکیٹ بڑھا ہے. مارکیٹ بڑھا تو تجارت بڑھی. کاشتکاری بڑھنے سے کسان کی جیب میں جو پیسہ بڑھا۔ جو کاروبار بڑھا، اس کو روزگار کے مواقع پیدا ہوئے ان اعداد و شمار پر آپ محسوس کریں گے تو پتہ چلے گا کہ اوور آل جو گروتھ ہوتی ہے، اور خاص طور پر زراعت میں اس بے روزگاری کے مسئلے کے حل میں مدد ملتی ہے. اس سے فائدہ ہم نے لیا ہے لیکن یہ بات صحیح ہے کہ ایفرٹ کرتے رہنے کی ضرورت ہے. ‘

آپ نے یونیورسٹی سیریز دیکھی ہوگی، یو ٹیوب پر ہے. 27 دنوں تک ہم نے دکھایا کہ ملک کے کئی ریاستوں کے دارالحکومت اور ضلع ہید کواٹر میں موجود کالجوں کی حالت خستہ ہو چکی ہے. وہاں پڑھانے کے لئے پروفیسر نہیں ہیں. کلاس میں لڑکیاں پہنچ رہی ہیں مگر پڑھانے والا کوئی نہیں ہے. 27 اایپی سوڈ کم نہیں ہوتے. اعلی تعلیم پر مسلسل اس رپورٹ کو دیکھ کر آپ بھی تھکے ہوئے تھے لیکن آپ کی اس تھکن نے آپ ہی کے بھائی بندوؤں کا کیا حال کر دیا ہے. ان کے پاس ڈگری ہے مگر وہی ڈگری ابھی ان کے لئے تھرڈ ڈگری کا درد دے رہی ہے.

ہریانہ کے کرنال ضلع میں اسی سال چپراسی کے 70 عہدوں کے لئے ویكینسي آئی تھی جسے بھرنے اتنے لوگ آ گئے. یہ ساری ویكینسي کانٹریکٹ (معاہدوں) کی تھی،پر مننٹ (مستقل) نہیں تھی، اس کے بعد بھی بے روزگاری تمام اعداد و شمار کو تباہ کرتے ہوئے نکل آئی ہے. 70 عہدوں کے لئے تقریبا دس ہزار لوگ آگئے. تعداد کچھ کم بھی ہو سکتی ہے اور زیادہ بھی. انتظامیہ کو بھی اتنی بھیڑ کی توقع نہیں تھی، لہذا بھرتی کینسل کر دی. وہاں آئے نوجوان غصے میں آ گئے اور وہاں تھوڑا بہت شور مچایا. کرنال سے ہی وزیر اعلی منوہر لال کھٹر آتے ہیں. ہریانہ میں کرنال کو سی ایم سٹی بولتے ہیں. 70 عہدوں کے لئے آٹھویں پاس کی قابلیت تھی مگر آگئے بی اے اور ایم اے والے.

نوکری سیریز کے بعد نوجوان چاہتے ہیں کہ صرف روزگار پر بات ہو. ہماری سیریز کا اثر یہ ہوا کہ بہار پبلک سروس کمیشن کے 60 ویں سے 62 ویں بیچ کی مینس امتحان کی  تاریخ آ گئی. ایک سال سے اس امتحان کا کوئی اتہ پتہ نہیں تھا مگر ہماری سیریز کے بعد ایک ممکنہ تاریخ آئی ہے، اس تاریخ پر امتحان ہوگا یا نہیں ہوگا یہ اس پر منحصر ہے کہ ملک میں وہی والا ٹاپک کتنا اثر دار رہتا ہے. وہی والا ٹاپک ہندو مسلم ٹاپک کا اچھا سا نام ہے کیونکہ کچھ لوگوں کو تکلیف ہے کہ میں بار بار ہندو مسلم کیوں بول رہا ہوں.

بي پي ایس سي کی ویب سائٹ پر نوٹس ہے کہ بي پي ایس سي کی 60 سے 62 ویں بیچ کے داخلہ امتحان اس سال اپریل میں ہو سکتے ہیں. یہ بیچ کے لئے اشتہار ستمبر 2016 میں آیا تھا. فروری 2017 میں پی ٹی کے امتحان ہوئے تھے، نومبر 2018 گزرنے لگا مگر مینس کے امتحان کا کوئی اتہ پتہ نہیں تھا. ہماری نوکری سیریز کے بعد تاریخ کا اعلان کرنا پڑا ہے.

مقابلہ جاتی امتحان دینے والے طالب علموں کے درمیان ہاسٹل اور چائے کی دکانوں میں اس سیریز کی بحث ہو رہی ہے. ایک اور اثر ہوا ہے. 63 ویں بیچ کی بي پي ایس سي کے امتحان کے بارے میں معلومات شائع ہوئی ہے کہ اس سال جون کے آخری ہفتے میں امتحان ہو گا. یہی نہیں ہماری سیریز کے اثر میں بہار ریاست ملازم انتخاب کمیشن نے بھی اپنا امتحانات کا کیلنڈر تیار کرنے کی بات کہی ہے. مقامی اخبارات میں چھپا ہے ورنہ ابھی تک یہ عالم تھا کہ فارم بھر گئے، امتحان کا پتہ نہیں، امتحان ہو گیا مگر رذلٹ کا پتہ نہیں. یہی نہیں ہم نے کام سیریز کے چھٹے قسط میں دکھایا تھا کہ بہار کے چھپرا ضلع کے جے پرکاش نارائن یونیورسٹی کے چالیس ہزار سے زیادہ طالب علم بی اے اور ایم اے میں داخلہ لے کر پھنس گئے ہیں. 2014-17 کے بیچ میں جن طلبا نے بی اے کا داخلہ لیا تھا، تین سال میں بی اے ہو جانا چاہئے تھا مگر صرف پہلے سال کی ہی امتحان ہوا. بھارت کی یونیورسٹیاں طالب علموں سے فیس لے کر ان کو برباد کرنے کی لیبارٹری بن گئ ہیں. چھ سال میں طالب علموں کو بی اے کرنے کے لئے مجبور کیا جائے اور کسی کے خلاف کارروائی نہ ہو یہ صرف اور صرف وہی والے ٹاپک کی وجہ سے ہو سکتا ہے. یہاں تک کہ اس یونیورسٹی میں 2013-16 کے طالب علموں کا بھی بی اے مکمل نہیں ہے. ہم نے یونیورسٹی سیریز میں بھی اس یونیورسٹی کا حال دکھایا تھا، کوئی اثر نہیں ہوا. مگر نوکری سیریز سے جوڑنے کے بعد یہی اثر ہوا ہے کہ کم از کم کاغذ پر تاریخ کا اعلان ہوا ہے.

بی ٹیک تیسرے اور چوتھے سمسٹر کے امتحان فروری میں شروع ہوں گے. ٹي ڈي سي تیسرے حصہ (2013-16) کے امتحان مارچ 2018 میں شروع ہوں گے اور ایم اے، ایم ایس سی اور ایم کام (2014-16) کے پہلے اور تیسرے سمسٹر کے امتحان مارچ 2018 کے آخری ہفتے میں شروع کیے جائیں گے. ایسی اطلاع جے پرکاش نارائن یونیورسٹی سے جاری ہوئی ہے.

بی ٹیک کا اجلاس بھی تین چار سال لیٹ تھا. جس یونیورسٹی میں000 40، سے زیادہ طالب علم پھنسے ہوں، اور ان کے مستقبل کے بارے میں کچھ فیصلہ ایک پروگرام کے بعد ہو جائے تو ظاہر ہے مجھے بھی یہی کرنا چاہئے. پتہ چلا کہ اس سے پہلے امتحان منڈل کی میٹنگ ہوتی تھی مگر تاریخ کا اعلان نہیں ہوتا تھا. ہماری سیریز کے بعد تاریخ کا اعلان ہوا ہے. پتہ چل رہا ہے کہ بی اے کے امتحان کی تاریخ کا بھی اعلان ہو جائے گا. ابھی ابھی آپ کو بتایا بھی کہ جے پی یونیورسٹی میں تین سال کا بی اے چھ سال میں ہوتا ہے. اسٹاف سلیکشن کمیشن کے امتحان میں پاس ہوئے نوجوانوں کو اب بھی ٹھوس جواب نہیں مل رہا ہے کہ انہیں جواننگ کے لیٹر کب آئیں گے. وہ مختلف محکموں کو فون کر رہے ہیں، کوئی جواب نہیں مل رہا ہے.000 20، سے زیادہ ان نوجوانوں کا مسئلہ واقعی انتہائی سنگین ہے.

ابھی اتراکھنڈ سے ہمارے ساتھی دنیش مانسیرا کی رپورٹ دیکھئے. آپ ہنستے ہنستے رونے لگیں گے اور روتے روتے کب ہنسنا بھول جائیں گے پتہ بھی نہیں چلے گا. ‘صحیفوں میں حکومت کی حکمت کی شدھی کا کوئی وظیفہ  ہے یا نہیں میں سرکاری طور پر نہیں بتا سکتا مگر یہ بے روزگار دہرادون میں حکومت کی حکمت کی شدھی کے لئے یگیہ کر رہے ہیں. یگہ کی تصویر دیکھتے ہوئے آپ بھی دیوی دیوتاؤں کا سمان کیجیے مگر میری بات غور سے سنئے. اتراکھنڈ کے باغ محکمہ نے اگست 2016 میں 95 عہدوں کے لئے بھرتی نکالی. اس کے لئے گیارہ ہزار طالب علموں نے 300-300 روپے دے کر فارم بھرے. طے ہوا کہ امتحان ہو گا 14 مئی 2017 کو لیکن نہیں ہوا. پھر طے ہوا کہ امتحان ہو گا 15 اکتوبر 2017 کو لیکن نہیں ہوا. یہ پیسے حکومت کے پاس ضبط ہو گئے. آج تک حکومت نے نہیں لوٹائے. ابھی کمیشن نے ایک اور کھیل کیا. عہدوں کی تعداد 95 سے بڑھا کر 198 کر دی گئی اور 17 نومبر 2017 کو بھرتی کا اشتہار نکلا. اس بار پھر 12 ہزار طلباء نے 300-300 روپے دے کر فارم بھرے. یعنی انہوں نے 600 روپے دیے فارم بھرنے کے. یہ امتحان 10 جنوری 2018 کو ہونا تھا، مگر منسوخ ہو گیا. اب ایک بار پھر کہا گیا گیا ہے کہ 308 عہدوں کی بھرتی نکلے گی.

یہ کھیل ہر ریاست میں دیکھنے کو ملا ہے. پہلی بار جب امتحان منسوخ ہوتا ہے تو اگلی بار کے لئے عہدوں کی تعداد بڑھا دی جاتی ہے. فارم کے پیسے لے لئے جاتے ہیں مگر امتحان نہیں ہوتے ہیں اور ہوتے بھی ہیں تو رذلٹ نہیں آتا بس عہدوں کی تعداد بڑھا بڑھا کر نوجوانوں کو امید بیچی جا رہی ہے. وہ بھی فارم بھر کر ٹی وی پر وہی والا ٹاپک دیکھنے میں مست ہو جاتے ہیں. 2016 سے 2018 آ گیا اور 600 روپے بھی لے لیے اور امتحان بھی نہیں ہوا، آپ کو اس سوال کو تكنيكک اور قانونی خامیوں کا حوالہ دے کر نہیں ٹال سکتے ہیں. دنیش مانسیرا نے ایک حساب جوڑا ہے.

– اس طرح کے امتحان کے لئے ایک طالب علم کوچنگ پر000 30، روپے خرچ کرتا ہے

– دہرادون میں رہ کر تیاری کرنے کے لئے مہینے کے000 10،خرچ کرتا ہے

– اس طرح وہ ایک امتحان پر ایک سال میں ڈیڑھ لاکھ خرچ کر دیتا ہے

– اس کے بعد بھی نوکری نہیں ملتی ہے، امتحانات وقت پر پورے نہیں ہوتے ہیں

دنیش مانسیرا نے بتایا کہ ان بے روزگار نوجوانوں کی کوئی نہیں سن رہا ہے جبکہ ان کی تعداد 12000 ہے. یہ روز پریڈ گراؤنڈ میں جمع ہوتے ہیں، نعرے بازی کرتے ہیں اور شام کو جب ٹی وی دیکھتے ہیں تو ان کی خبر ہی نظر نہیں آتی. 12000 لوگوں کی زندگی سے جڑی خبر کو میڈیا میں جگہ نہیں ہے، اس کا مطلب ہے کہ میڈیا ضرور کچھ بڑا کام کر رہا ہے. دنیش مانسیرا سے آپ سے رابطہ کیجیے اور ملازمتوں میں ہو رہی دیريوں اور دھاندلیوں کا کھیل ان کو بتائیے. ان کی رپورٹ کا اگلا حصہ ہم آگے بھی دکھائیں گے.

ابھی آتے ہیں اتر پردیش کے بی ٹی سی کے امتحان میں. بی ٹی سی کا مطلب ہوا بیسک ٹرینڈ ٹیچر. یہ پہلی سے پانچویں کلاس میں پڑھاتے ہیں. ریاست میں مختلف جگہوں پر بی ٹی سی سینٹر بنے ہیں جہاں میرٹ کی بنیاد پر یہ منتخب کیے جاتے ہیں اور پڑھانے کے لئے ٹریننگ دی جاتی ہے. بی ٹی سی کی ٹریننگ کے لئے پانچ ہزار فیس ہوتی ہے. دو سال کا کورس ہوتا ہے یہ. اس کے بعد طالب علموں کو ٹیٹ کا امتحان پاس کرنا ہوتا ہے، ٹیٹ کا انگریزی میں مطلب ہوا ٹیچر ایلجبلٹي ٹیسٹ. اس کے بعد جب حکومت بھرتی نکالتی ہے تو بی ٹی سی اور ٹیٹ کی بنیاد پر میرٹ لسٹ بنتی ہے. حکومت نے 2012 کے بعد بی ٹی سی اساتذہ کی بھرتی ہی نہیں کی ہے.

یوپی کے بی ٹی سی اہلیت والے نوجوان جگہ جگہ مظاہرہ کر رہے ہیں. ٹوئٹر کے دن رات ٹویٹ کئے رہتے ہیں کہ ہمارا مسئلہ کب دکھائیں گے. وزراء کو بھی ٹویٹ کرتے ہیں. ان کا کہنا ہے کہ 2016 میں460 12، عہدوں کے لئے اشتہارا نکلا تھا. مارچ 2017 تک کاؤنسلنگ کا عمل جاری رہا. 18 مارچ کو سارے ضلع کے کٹ آف آگئے اور میرٹ لسٹ بن گئی تھی. لیکن 23 مارچ کو یوگی حکومت نے ان کی بھرتی پر روک لگا دی. اس کے بعد سے یہ نوجوان ہر موقع پر مظاہرہ کر رہے ہیں. یہاں تک کہ 16 جولائی 2017 سے تین ستمبر 2017 تک ڈھائی ماہ لکھنؤ کے لکشمن میلے میدان میں دھرنا بھی دیا. اب یہ امتحان عدالت میں جا چکے ہیں. ہائی کورٹ سے کیس بھی جیت گئے. 3 نومبر کو عدالت نے حکومت کو حکم دیا کہ دو ماہ میں ان کو بحال کیا جائے. عدالت کے حکم کے بعد بھی دو ماہ گزر گئے ہیں اور ان طالب علموں کو پتہ نہیں کہ کیا ہو گا. حکومت اب سنگل بنچ کے حکم کے خلاف ڈبل بنچ میں جا چکی ہے.

اتر پردیش کے460 12، نوجوانوں کو لگتا ہے کہ پرائم ٹائم میں ذکر کے بعد جواننگ لیٹر مل جائے گا، حکومت کا من بدل جائے گا. کتنا اچھا ہو اگر ایسا ہو جائے. ہم اس سے متعلق محکمہ کے وزیر کا دل سے شکریہ ادا کریں گے.

یوپی میں بی ٹی سی کی دس ہزار سیٹیں ہیں. پرائیویٹ اداروں میں ایک لاکھ سیٹیں ہیں. اتنے طالب علم ہر سال استاد بننے کی قابلیت لے کر باہر نکل رہے ہیں. ملازمتوں کی رفتار اتنی سست ہے. بی جے پی نے یوپی میں وعدہ کیا تھا کہ حکومت بننے کے 90 دن کے اندر اندر ریاست کے تمام خالی سرکاری عہدوں کے لئے شفاف طریقے سے عمل شروع ہو گا. پنجاب کے بے روزگار صبر کریں، ان کا بھی نمبر آئے گا پرائم ٹائم میں.

مترجم : محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


تبصرے