آج کا کالم

سرکاری نوکریاں آخر ہیں کہاں؟ (پارٹ 8)

رويش کمار

جب ہندوستان جیسے عظیم ملک میں ایک فلم پر تین ماہ تک صبح شام ٹی وی پر بحث ہو سکتی ہے اور شہریوں سے لے کر ماہرین تک نے اس بحث میں حصہ لیا ہے تو امید ہے کہ ان میں ملازمتوں پر ہماری سیریز کا 8 واں ایپی سوڈ دیکھنے کی دلچسپی بچی ہوگی. مختلف ریاستوں میں امتحانات سے جڑے طالب علم اداسی کے شکار ہو رہے ہیں. انہیں ملازمتوں کا انتظار ہے مگر کام کہیں ہے نہیں. ایک خاتون نے لکھا ہے کہ کیا حکومت ہی ساری ملازمتیں دے گی، تو پھر حکومت کو صاف صاف کہہ دینا چاہئے کہ ہم سرکاری سیکٹر میں کام نہیں دیں گے. جب تک حکومت بھرتی نکالتی ہے، فارم کے پیسے لیتی ہے، امتحان منسوخ کرتی ہے اور کئی سال اور کئی ماہ تک امتحان نہیں لیتی ہے، تب تک یہ پوچھنا بالکل جائز ہے کہ ریاستی حکومتوں کے انتخاب کمیشن نوجوانوں کے ساتھ ایسا کیوں کر رہے ہیں. حالت یہ ہے کہ جگہ جگہ امتحانات کی سنگھرش کمیٹیاں بن گئیں ہے.

بی ٹی سی ٹریننگ یونین

بی ٹی سی سنگھرش سمیتی

راجستھان لپک سنگھرش سمیتی

جسٹس فار ایس ایس سی سي جي ایل 2016

ادھیان بے روزگار سنگھ مورچہ اتراکھنڈ

بے روزگار یونائٹیڈ فیڈریشن، راجستھان

ان نوجوانوں کو اس لیے کمتر نگاہ سے نہیں دیکھا جانا چاہئے، کہ کوئی سرکاری نوکری مانگ رہا ہے. اگر سرکاری نوکری کی چاہ اتنی ہی بری ہے تو پھر حکومت چلانے کے لئے رہنماؤں کو ووٹ بھی نہیں مانگنا چاہئے. مختلف ریاستوں کے طالب علم واقعی بہت پریشان ہیں. اب دیکھئے کھادی دیہی صنعت کمیشن نے 22 اکتوبر 2017 کو بھرتی نکالی. 14 نومبر کو اطلاع آتی ہے کہ امتحان عارضی طور پر منسوخ کر دیا جاتا ہے. اس کی وجہ 24 دسمبر 2017 کو امتحان نہیں ہوتا ہے، یہ کون سی عارضی وجہ ہے جو ڈھائی ماہ کے بعد بھی دور نہیں ہو سکی ہے، 341 عہدوں کے لئے قریب000 40، طلبا نے فارم بھرے تھے. 1200 روپے لگے تھے فارم بھرنے میں. فارم بھرنے کے بعد بھی کیا ان نوجوانوں کو جاننے کا حق نہیں ہے کہ امتحان کب ہوں گے. آپ ریکارڈ دیکھئے. کوئی بھی امتحان صحیح طریقے سے نہیں ہوتا ہے. سال بھر طالب علم اسی بات سے ڈرے رہتے ہیں کہ کب امتحان منسوخ ہو جائے گا اور ان کی ساری محنت ضائع ہو جائے گی.

29 جنوری کو یوپی پولیس بھرتی اور ترقی بورڈز نے اپنے تین امتحانات منسوخ کر دیے ہیں. ان میں سے دو وكینسي 22 دسمبر 2016 اور تیسری 3 مئی 2017 کو نکلی تھی. لپک، اکاؤنٹنگ، خفیہ اسسٹنٹ، کمپیوٹر آپریٹر کے امتحانات لیے گئے تھے. 13 اور 18 ستمبر کو یوپی کے کئی اضلاع میں آن لائن امتحان لیے گئے تھے. اب ان تینوں امتحانات کو منسوخ کر دیا گیا ہے. اگر امتحان لینے میں چوک ہو رہی ہے تو یہ غلطی تو حکومت ہے. ان غلطیوں کی وجہ سے دو لاکھ سے زیادہ نوجوان پریشان ہیں. دو امتحانات اکھلیش حکومت کے وقت کے ہیں، ایک یوگی حکومت کے وقت کا ہے. اب اگر کوئی امتحان قابل اعتماد طریقے سے نہیں ہو سکے گا تو یہ نوجوان کہاں جائیں گے. اس حکومت سے اس حکومت کے بیچ شٹل كارك کی طرح گھومتے رہیں گے.

اس فیصلے سے دو لاکھ نوجوانوں پر کیا گزر رہی ہوگی. ان طلباء نے میسیج کر کے پریشان کر دیا ہے، مگر میں ان کی پریشانی سمجھتا ہوں. سوال یہ نہیں کہ یہ سرکاری نوکری کے انتظار میں ہیں، سوال یہ ہے کہ جس حکومت کا کام قابل اعتماد طریقے سے امتحان کرانا ہے، وہ ابھی تک ملک کے کسی بھی حصے میں فل پروف کمیشن کیوں نہیں بنا پائی ہے. جھارکھنڈ پبلک سروس کمیشن کی چھٹے بیچ کے امتحان 29 جنوری کو ہونے تھے، جسے کینسل کر دیا گیا. پانچ ہزار سے زیادہ طالب علم میس کے امتحان کے لئے جھارکھنڈ پہنچ گئے تھے. بہتوں نے ہوائی جہاز سے لے کر ریل گاڑی کا ٹکٹ کٹا لیا تھا. بہت سے طالب علم کے کچھ دن پہلے ہی رانچی پہنچ گئے تھے تاکہ دقت نہ ہو. ریاست کے ادارے کی ناکامی کی وجہ ان طلباء کو کتنا نقصان اٹھانا پڑا. جھارکھنڈ سے ایک انجنیئر نے اچھی انگریزی میں ہمیں خط لکھا ہے. ہم اس کا اردو ترجمہ آپ کو پڑھ کر سنا رہے ہیں.

آپ کو لگے گا کہ میں کیا کر رہا ہوں، لیکن آپ جب ان نوجوانوں کے درد سنیں گے تو پتہ چلے گا کہ بھرتي نكال كر امتحان لینے کے نام پر انہیں کس طرح ستایا جاتا ہے. یہ کس حد تک تنہائی کی زندگی جینے لگتے ہیں. اسٹاف سلیکشن کمیشن امتحان پاس کر چکے ایک نوجوان نے لکھا ہے کہ جولائی 2016 میں مینس کا امتحان پاس کر گیا تو گھر والوں نے نومبر 2016 میں شادی کرا دی. فروری 2017 کو ٹائپنگ کا آخرے امتحان پاس کر لیا اور اب صرف جواننگ باقی تھی. تب سے اب تک جواننگ کا ہی انتظار کر رہا ہوں. بیٹی بھی ہو چکی ہے اور گھر میں بے روزگار کی طرح بیٹھنا اچھا نہیں لگتا ہے. خط لکھنے والا واقعی بہت اداس لگا.

آپ ان وزراء کو جانتے ہیں تو کبھی ہاتھ جوڑ کر ہی درخواست کر لیں کہ انہیں جواننگ کرا دیں. ان نوجوانوں کو سزا نہیں ملنی چاہئے. ایس ایس سی کا امتحان پاس کر چکے طالب علم روز سی اے جی، پوسٹل ڈیپارٹمنٹ، انفارمیشن ٹرانسمیشن وزارت کو فون کرتے ہیں، کہ ہماری جواننگ کا لیٹر کب آئے گا. جبکہ ان کی تعداد000 20، سے زائد ہے پھر بھی ان کی کوئی سنوائی نہیں ہے.

بنگلور میں این ایس یو آئی کے ممبرس پکوڑے تلنے لگے. وزیر اعظم نے زی نیوز کو انٹرویو میں کہا تھا کہ دفتر کے باہر پکوڑے تلنے والا بھی 200 کما لیتا ہے، وہ بھی تو روزگار ہے. پورا سوشل میڈیا اس وقت روزگار پر ہونے والی بحث کا پكوڑاكرن کر چکا ہے. کوئی ٹھوس طریقے سے اس سوال پر بحث نہیں کر رہا ہے. این ایس یو آئی کے طالب علم یہاں تو کافی تخلیقی ذہن کے لگ رہے ہیں اگر یہی طالب علم کرناٹک ریاست کے انتخاب کمیشن کا ریکارڈ معلوم کر لیں تو پکوڑے تلنے سے پہلے ٹھنڈے ہو جائیں گے. یوپی سے لے کر بہار، راجستھان سے لے کر پنجاب تک کے انتخاب کمیشن طالب علموں کے ساتھ دھوکہ دہی کر رہے ہیں. بہت ضروری ہے کہ اس وقت اپوزیشن روزگار کے سوال کو سختی سے اٹھائے مگر اس سے بھی ضروری ہے کہ اپوزیشن ٹھوس شکل میں اٹھائے، اپنا پلان بتائے کہ وہ کس طرح روزگار دے گی، وہ کس طرح ان انتخاب کمیشن کو بہتر کرے گی. سوال کا جواب دیجئے، پکوڑے تل کر بچ نکلنے سے کچھ نہیں ہوگا جیسے روزگار کے سوال کو پکوڑے سے جوڑ کر وزیر اعظم نے کنارا کر لیا. کم از کم ان کے اس بیان سے روزگار کے سوال کو تفریح میں نہیں تبدیل کیا جانا چاہئے. خوب تنقید ہونی چاہیے مگر روزگار پر سنجیدہ سیاست ہونی چاہئے.

اوپیندر کشواہا انسانی وسائل کے ریاستی وزیر ہیں. انہوں نے تعلیم کو لے کر بہار میں انسانی شرنكھلا بنائی ہے. آج کل انسانی شرنكھلا کا فیشن چل نکلا ہے. مگر اوپیندر کشواہا جی یہی بتا دیں کہ انسانی وسائل کے وزیر رہتے ہوئے کیا انہوں نے دیکھا کہ ملک کے تمام کالجوں میں پڑھانے کے لئے استاد نہیں ہیں. ان اساتذہ کی بحالی کے لئے کچھ ہوتا نہیں ہے، ہوتا بھی ہے تو سیاسی سفارشات سے لیکچرر پروفیسروں کی تقرری ہو رہی ہے.

پٹنہ اور دہلی میں اوپیندر کشواہا کی قومی لوك سمتا پارٹی نے انسانی شرنكھلا بنائی. اس شرنكھلا کا نام ہے شکشا سدھارر مانو کتار. نریندر مودی کابینہ میں وزیر کے طور پر کام کرتے ہوئے اوپیندر کشواہا آر جے ڈی رہنماؤں کے ساتھ انسانی كتار بنا رہے ہیں تو اس کا تعلق تعلیم سے ہے یا سیاست سے ہے. آپ سمجھ سکتے ہیں. اتنی ایمانداری دکھانی چاہئے کہ کم از کم تعلیم پر حکومت کے اندر اندر کی معلومات وہ باہر لا دیں تاکہ نوجوان دیکھیں کہ کس طرح کالج کے کالج کو اساتذہ سے خالی رکھا گیا ہے. انہیں ایڈمشن کرا کر برباد کیا گیا ہے. اچھی بات ہے کہ آپ کی سیاست کرنے کے لئے ہی سہی اوپیندر کشواہا نے تعلیم کو مسئلہ تو بنایا. بہتر ہے لیڈر تعلیم صحت اور روزگار کے سوال پر جلدی جلدی لوٹنے لگیں.

ابھی پرائم ٹائم کی نوکری سیریز کا اثر دیکھتے ہیں. اثر کہنا ٹھیک نہیں ہو گا، کیونکہ جس امتحان کا اشتہار 2014 میں نکلا ہو وہ اگر چار سال بعد 2018 میں مکمل ہونے لگے تو اسے اثر نہیں کہتے ہیں. 1 ستمبر 2014 کو سیکرٹریٹ اسسٹنٹ اور دیگر عہدوں کے لئے295 3، عہدوں کا اشتہار نکلا تھا. 2014 سے اپریل 2016 آ گیا تب جاکر مینس کے امتحان کا رزلٹ نکلا. اس کے بعد جسمانی جانچ کا امتحان مکمل ہونے میں 2016 گزر گیا. اس کے بعد کچھ پتہ ہی نہیں چلا کہ امتحان کہاں گئے، نتائج کہاں گئے؟ طالب علم ریاستی ملازم کمیشن کے دفتر کے سامنے دھرنا دیتے رہے مگر کسی نے توجہ نہیں دی. اسی 10 جنوری کو کئی گھنٹوں تک دھرنے پر بیٹھے مگر کوئی نتیجہ نہیں نکلا. اب یہ طے ہوا ہے کہ جنگل کے علاقے عہدیدار کا انٹرویو جلدی ہو جائے گا، کیونکہ 15 عہدوں کی وجہ سے 3000 سے زائد عہدوں کے لئے رذلٹ نہیں آ رہا تھا. 18 جنوری کے پرائم ٹائم میں ہم نے یہ مسئلہ دکھایا تھا. 27 جنوری کو بہار ملازم انتخاب کمیشن نے نوٹس نکالا کہ جنگل کے علاقے کے عہدیدار کے لئے مینس امتحان پاس کر چکے طالب علم 6 فروری کو انٹرویو دیں. طالب علموں کو امید ہے کہ باقی کام بھی فوری ہونے لگیں گی. میں بہت پرجوش نہیں ہوں جب تک کہ فوری رذلٹ نہیں آ جاتا ہے. پھر بھی لگتا ہے کہ حکومت میں کوئی ہے جو پرائم ٹائم دیکھ رہا ہے اور ایکشن لے رہا ہے. جو بھی ہے اس کا شکریہ. ہمارا مقصد یہی ہے کہ امتحان ٹائم سے ہو اور رذلٹ بھی ٹائم سے نکلے.

راجستھان میں 26 جولائی 2013 کو لوئر ڈویذنل کلرک گریڈ پہ ٹو کا اشتہار جاری ہوا تھا.538 7، عہدوں کے لئے اشتہار جاری ہوا تھا، کب جاری ہوا تھا، 2013 میں. اب کیا ہو رہا ہے جنوری 2018 گزر گیا ہے. پانچ سال ہو گئے ہیں. جولائی 2013 میں اشتہار نکلا اور 11 جنوری 2014 کو تحریری امتحان ہوتے ہیں. کاغذ جاری ہو جاتا ہے اور امتحان منسوخ ہو جاتے ہیں. اس امتحان کا آرگنائزر ہے راجستھان پبلک سروس کمیشن. 23 اکتوبر 2016 کو دوبارہ امتحان ہوتا ہے اور نتیجہ آتا ہے 16 جنوری 2017 کو. ٹائپنگ ٹیسٹ کا فائنل رذلٹ نکلتا ہے 7 اور 8 مارچ 2017 کو. 6200 طالب علم لكھت سے لے کر ٹائپنگ کے امتحان کے بعد پاس ہو جاتے ہیں پھر ہو جاتا ہے کیس. کچھ طالب علم راجستھان ہائی کورٹ چلے جاتے ہیں.

مدعا یہ تھا کہ فارم بھرتے وقت کئی لوگوں نے کمپیوٹر میں ڈپلومہ نہیں کیا تھا مگر رذلٹ آتے آتے ڈپلوما کر چکے تھے. ہائی کورٹ نے کہا فارم بھرنے کی آخری تاریخ تک جن کے پاس ڈپلومہ ہے وہی قابل قبول مانے جائیں گے. پھر طالب علم ڈویژن بنچ چلے جاتے ہیں. ڈویژن بنچ کا فیصلہ آتا ہے کہ جن طالب علموں کے پاس 31 مارچ 2017 تک ڈپلوما آ گئے ہیں وہ بھی قابل مانے جائیں گے. اب اس کے بعد 7 جولائی 2017 کو حتمی نتیجہ نکالا جاتا ہے. حکم کے بعد بھی بحالی کا اتہ پتہ نہیں. چار چار سال امتحان میں گنوا کر طالب علموں کا قوت برداشت جواب دے چکا تھا. انہوں نے 45 دنوں تک یعنی جولائی سے اگست کے درمیان دھرنا دیا. 26 دسمبر 2017 کو امتحان میں پاس ہوئے طالب علموں کو محکمہ الاٹ کر دیا جاتا ہے. اب ان کی شکایت تھی کہ داخلہ ضلع میں بحالی کر دی گئی. اس کے خلاف محکموں میں شکایت ہوئی تو خامی دور کرنے کے نام پر ابھی تک ان کی جواننگ نہیں ہوئی ہے. 2013 سے 2018 آ گیا ہے. ایک امتحان کے پیچھے پانچ سال لگ گئے. ہمارے پاس حکومت کا حق نہیں ہے. مگر پانچ سال ایک امتحان میں لگے اس کے لئے کس کا پکش لیا جائے، اوپر والے کے علاوہ.

حکومت ہمیں موت دے دو، یہ سرخی ہے راجستھان میگزین کی، جو اسی سے متعلق ہے. میگزین نے لکھا ہے کہ جب ان اضلاع میں تقرری ہو رہی تھی تو اس میں کافی خرابی ہوئی. جب امیدواروں نے انتظامی بہتری کے سیکشن میں شکایت کر دی. ابھی شکایت کے بعد دوبارہ یہ عمل اٹک گیا ہے. ایک کلرک کے امتحان کے لئے دس دس سال لگا دیتے ہیں لوگ. 20 جنوری کو دینک بھاسکر نے جو لکھا ہے اسے جان کر آپ حیران رہ جائیں گے. اس لئے ضروری ہے کہ اب حکومتوں کے ساتھ ساتھ عدالتوں کا بھی دروازہ کھٹکھٹایا جائے کہ ملازمتوں کے معاملے کی سماعت فاسٹ ٹریک کورٹ میں ہو. دینک بھاسکر کے سیکر ورژن میں خبر شائع ہوئی ہے کہ راجستھان میں413 77،  عہدوں کی بھرتیاں کورٹ میں اٹکی ہوئی ہیں. ان میں سے800 61، عہدوں پر تقرریاں کانگریس کے وقت کی ہیں اور613 15، بھرتیاں بی جے پی حکومت کی وقت کی ہیں. 2013 میں اسکول اسسٹنٹ کے لئے000 33، بھرتیاں نکالی گئیں تھیں. مگر 2018 تک ان کا کچھ عاتہ پتہ نہیں ہے.

کیا یہ کوئی پیٹرن ہے، ہر ریاست میں ایک ہی پیٹرن کیسے ہو سکتا ہے.000 33، عہدوں پر بھرتی نہ نکلے تو اس کا ریاست کی صلاحیت پر کوئی اثر تو پڑتا ہوگا. نوجوانوں کی عمر اور صلاحیت پر تو اثر پڑتا ہوگا. غنیمت ہے کہ بھارت کی سیاست میں بے روزگاری کا مسئلہ نہیں چلتا ہے. نوجوانوں کے کردار کو لے کر ہم میڈیا والے اور لیڈر کچھ زیادہ ہی بڑھا چڑھا کر کہتے ہیں کہ نوجوان ملک تبدیل کر رہا ہے. وہ اپنے حالات کو تو بدل نہیں سکتا، ملک کیا بدلے گا.

پہلے تین سال میں بی اے ہو جائے، فوری نوکری لے لے یہی بہت ہے. چھ سال میں بی اے کرے گا، دس سال میں کلرک بنے گا تو وہ ملک نہیں، ملک کے لیڈر اسے اپنے حساب سے بدل رہے ہیں. یہ سیریز یہ بھی بتاتی ہے کہ ہمارے نوجوانوں کی پولٹیكل کوالٹی کیسی ہے. ہم نے آپ کو بتایا تھا کہ اتراکھنڈ میں 2016 میں باغ محکمہ بھرتی نکالتا ہے مگر 2018 جنوری گزر جانے کے بعد بھی بھرتی کا بھَرتا بنا ہوا ہے. پتہ نہیں کب ہوگی. نوجوان جب اپنے آپ کو یہ سمجھ کر وزیر سے ملنے گئے کہ وزیر بے روزگاروں سے خوف کھا جائیں گے تو وزیر نے وہی کہا جو حقیقت ہے. ویسے وہ بات تو بری ہے لیکن وہ بری چیز بے روزگاروں کو سوچنا چاہئے کہ آج کی سیاست میں ان کی کیا جگہ ہے. وزیر کا شکریہ ادا کرنا چاہیے کہ انہوں نے نوجوانوں کو ان کی صحیح جگہ بتا دی. اگر نوجوان بے روزگاروں کی اتنی خراب پولٹكل کوالٹی نہ ہوتی تو کوئی وزیر انہیں اس طرح کا لیکچر نہیں سنا سکتا تھا. وزیر جی نے انہیں کہا کہ مجھے تم رکن اسمبلی نہیں بنایا ہے. آپ اتراکھنڈ کے باغ وزیر کا یہ ویڈیو سنیے. لطف آ جائے گا، 29 جنوری کا یہ ویڈیو ہے.

بے روزگار – سر، ہم اپنی بات رکھنا چاہتے ہیں

وزیر – کیا بات رکھنی ہے، سکریٹری کو کرنے دو ایگزامن. تم آندولن کروگے تو میں بات نہیں مانوں گا. جاکے وزیر اعلی کو بول دو اس کو ہٹا دیں

بے روزگار – سر بات تو سنیں. ہم اپنی بات رکھنا چاہتے ہیں

وزیر – بات کیا رکھنی ہے. آج میں اخبار میں پڑھ رہا ہوں، تصویر دیکھ رہا ہوں، چھپ رہی ہے. کرتے رہو مخالفت، کرتے رہو. مجھے تم نے نہیں بنایا ممبر اسمبلی.

بے روزگار – سر ہم بارہ ہزار بے روزگاروں کا معاملہ ہے.

وزیر – بارہ چھوڑو، بیس ہزار ہو جاؤ. تم آندولن کرکے کروا لو. میں نہیں سنوںگا. تم آندولن کر لو.

وزیر ایسا ہونا چاہئے جو وزیر اعلی سے بھی نہ ڈرے اور بے روزگار نوجوانوں سے بھی. امید ہے ان وزیر جی کی اپنی کارکردگی شاندار ہوگی اور لوگ کافی خوش ہوں گے ان کے کام سے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close