آج کا کالم

سرکاری نوکریاں کہاں گئیں؟

رويش کمار

ریاستوں کے سلیکشن کمیشنوں پر بات کرنا ارجنٹ ہو گیا ہے. نوجوان فارم بھر کر امتحان کا انتظار کر رہے ہیں اور جو امتحان دے چکے ہیں وہ رذلٹ کا انتظار کر رہے ہیں اور جن کا رذلٹ آ چکا ہے وہ جواننگ لیٹر کا انتظار کر رہے ہیں. بھارت کے نوجوانوں کی جوانی کے پانچ سے سات سال اسی میں کٹ جا رہے ہیں. نوکریوں پر پرائم ٹائم کے دوسرے ایپیسوڈ میں جب ہم نے اسٹاف سلیکشن کمیشن 2015 کے امتحان کا حال بتایا تو رذلٹ آنے کے بعد بھی پانچ ماہ سے انتظار کر رہے دس ہزار سے زیادہ طالب علموں کو امید جاگی ہے کہ حکومت جواننگ لیٹر بھیج دے گی. ان میں سے بہت سے طالب علموں نے مجھے فون پر بتایا کہ وہ بینک یا کسی اور جگہ کی نوکری چھوڑ کر آئے کہ انکم ٹیکس میں لگیں گے، سی اے جی میں لگیں گے. مگر کہیں سے جواننگ لیٹر نہیں آ رہا ہے جبکہ وہ رذلٹ میں پاس ہو گئے ہیں. گزشتہ چند گھنٹوں میں میں نے خود سینکڑوں میسج پڑھے اور بہت سے طالب علموں سے بات کی. میں حیران ہوں کہ ان امن پسند اور اچھے نوجوانوں کی تکلیف سمجھنے والا کوئی نہیں ہے. ان کا ایک ایک دن پریشانی میں گزر رہا ہے، وہ فیصلہ نہیں کر پا رہے ہیں کہ دوسرے امتحان کے لئے تیاری میں لگ جائیں یا پھر جس میں پاس ہو چکے ہیں اس کا جواننگ  لیٹر آئے گا. آپ سمجھ ہی گئے ہوں گے. ایک تو 2015 سے اگست 2017 آ گیا۔ امتحان کے عمل کو مکمل ہونے میں اور اس کے بعد بھی پانچ ماہ سے انہیں جواننگ لیٹر نہیں ملا ہے جبکہ یہ امتحان میں پاس ہو چکے ہیں. کیا آپ چاہیں گے کہ ان امیدواروں اور طالب علموں کے ساتھ اس طرح کا سلوک ہو. کیا ان کی داستان فوری طور پر نہیں سنی جانی چاہئے. آخر ان بچوں نے کیا گناہ کیا ہے. ایک لڑکی نے فون کیا کہ اس کا انتخاب، انفارمیشن ٹرانسمیشن وزارت میں پریس انفورمیشن بیورو میں ہوا ہے، لیکن ابھی تک جواننگ نہیں آئی ہے. فون کرنے پر جواب ملتا ہے کہ چھ ماہ اور لگیں گے، کئی بار تو جواب کی جگہ کسی اور انداز میں ان نوجوانوں سے بات کی جا رہی ہے.

یہ منظر 18 جنوری کی صبح کا ہے. اس جلوس میں شامل 250 لڑکے اسٹاف سلیکشن کمیشن کا كمبائنڈ گریجویٹ لیول امتحان 2016 پاس کر چکے ہیں. 5 اگست 2017 کو ہی رذلٹ آ گیا تھا. آج تک ان کامیاب طالب علموں کو جواننگ لیٹر نہیں ملا ہے. پورے ہندوستان میں ایس ایس سی، سي جي ایل 2016 میں661 10، امیدوار کامیاب ہوئے تھے. 18 جنوری کو یہ امیدوار پٹنہ کے بھكھناپہاڑي سے جلوس لے کر نکلے، اشوک راج پتھ ہوتے ہوئے، گاندھی میدان واقع کارگل چوک پر پہنچے. ان کے بینر کے نعرے بتا رہے ہیں کہ بھارت کے نوجوانوں کے ساتھ کیا ہو رہا ہے. ان کی حالت بتا رہی ہے کہ جیسے یہ بھارت کے ومرش سے ہی باہر کر دیے گئے ہیں. یہ نوجوان ہندوستان کے مختلف شہروں میں بیٹھ کر جواننگ لیٹر کے انتظار میں سسک رہے ہیں. ان طلباء ہی سے ہم نے کہا کہ آپ خود ہی ویڈیو شوٹ کرکے بھیج دیں. یہ بات میں آپ ناظرین کو بتا رہا ہوں تاکہ آپ سمجھ سکیں کہ صحافت کو بچانے میں صحافی سے زیادہ آپ کے کردار کی ضرورت ہے. نیوز اینکر ابھی گودی میڈیا کا حصہ بن کر ڈھول بجا رہے ہیں. روتے ہوئے کو اور رلا رہے ہیں. یونیورسٹی سیریز بھی آپ لوگوں کی مدد سے چلی اور اب ملازمتوں کی یہ سیریز اس بات پر منحصر ہو گی کہ آپ کس حد تک مخلص اور صحیح معلومات ہمیں دیتے ہیں. اس کے لئے ایس ایس سی، سي جي ایل 2016 کے کامیاب امیدواروں کا شکریہ.

سی اے جی، انفارمیشن ٹرانسمیشن وزارت، شماریات ڈویژن، انکم ٹیکس میں ان کے ڈوذیر بھیجے جا چکے ہیں مگر تمام محکموں سے ان نوجوانوں کو جواننگ لیٹر نہیں ملا ہے. یہی مسئلہ ہے اسٹاف سلیکشن کمیشن کی 2015 اور 2016 کے امتحان کی. ہم نے کمیشن کے چیئرمین سے جواب مانگا تھا. جواب کا کچھ حصہ ہم نے پرائم ٹائم کی دوسری قسط میں دکھایا تھا. آج پھر کچھ دکھا رہے ہیں. ویسے سارے محکموں کو جواب دینا چاہیے کہ رذلٹ آنے کے بعد بھی وہ اپنے یہاں سے نوجوانوں کو جواننگ لیٹر کیوں نہیں بھیج رہے ہیں.

سوال: DOP & T کی ہدایات کے مطابق تحریری امتحان سے لے کر انٹرویو اور تقرری کا عمل  6 ماہ میں مکمل کرنا ہوتا ہے، تاخیر کے وجہ کیا ہے؟

ایس ایسس سي: امیدواروں کی تعداد لاکھوں میں ہوتی ہے، اس لئے ان امتحانات کے نتائج کا اعلان کرنے میں وقت لگ جاتا ہے. آبجیكٹو ٹائپ، ملٹی پل چوائس کے امتحانات کمپیوٹر کے ذریعے ہی ہوتے ہیں اور مناسب کمپیوٹر لیب محدود تعداد میں دستیاب ہیں. چنانچہ یہ امتحانات طویل (بعض اوقات ایک سے ڈیڑھ ماہ) چلتے ہیں. اسکل ٹیسٹ اور ڈوکیومنٹس ویری فکیشن میں امیدواروں کی تعداد کے مطابق تقریبا 15 دن سے 1 ماہ کا وقت لگ جاتا ہے. اس طرح ایک بھرتی امتحان کے مختلف مراحل کے ختم ہونے اور آخری رذلٹ نکلنے میں تقریبا ایک سال کا وقت لگ جاتا ہے. یہ نوٹ کیا جانا چاہئے کہ امیدواروں کی تعداد لاکھوں میں ہونے کا باوجود کمیشن ہر مرحلے کا رذلٹ دو ماہ کے اندر اندر دے دیتا ہے.

دیکھئے، ہر مرحلے کا رذلٹ دو ماہ میں دیتا ہے. جواب میں کس طرح کھیل ہوتا ہے. امتحان کے عمل کہاں تو 6 ماہ میں مکمل ہونا چاہئے لیکن آپ بتا رہے ہیں کہ رذلٹ دو ماہ میں دیتا ہے جبکہ 2015 کا رذلٹ بھی 2017 میں آیا. چیئرمین صاحب کے تحریری بیان کے جواب سے امیدوارخوش نہیں ہیں. ایسے ہی ایک امیدوار نے جو جواب بھیجا ہے، اسے ہم اپنے اتحادی کی آواز میں پڑھ کر سنانا چاہتے ہیں. اس امیدوار کی شناخت خفیہ رکھنا بھی ضروری ہے. طالب علم کہتا ہے، ‘سر، سب سے پہلے تو بے روزگاری کا مدعا اٹھانے کے لئے میں  دل و جان سے آپ کا شکریہ کرنا چاہتا ہوں. ایک پیغام میں نے آپ کو آپ کے فیس بک پیج پر بھی بھیجا تھا، شاید وقت کی کمی کی وجہ سے آپ پڑھ نہیں پائے. آپ کا نمبر مجھے اپنے ایک ٹیچر سے ملا. آپ نے آج ملازمت انتخاب کمیشن کی کوتاہیوں کو اجاگر کرنے کی کوشش کی اس کے لئے ایک بار پھر شکریہ. جس انٹرویو کے لئے آپ نے CGL16 کے امیدواران کو آفس بلایا تھا، وہاں میں بھی پہنچا تھا. آپ نے اپنا پروگرام یہ بول کر ختم کیا کہ کل پھر اس پر بات کریں گے. سر اس پر بات کرنا اور بھی ضروری ہے کیونکہ آپ نے جو رپورٹ دکھائی اس کے حساب سے آپ کو ایس ایس سی چیئرمین نے بتایا کہ 95 فیصد ڈوذير SSC نے الگ الگ ڈپارٹمنٹ میں بھیج دیئے ہیں لیکن انہوں نے یہ نہیں بتایا کہ اسی کے ساتھ ہر ڈپارٹمنٹ کو ایک اور آرڈر بھیج دیا گیا ہے جس میں لکھا گیا ہے کہ کسی بھی منتخب امیدوار کو کمیشن کے اگلے حکم تک جواننگ لیٹر نہیں دیا جائے. جس کی وجہ سے محکمہ چاہ کر بھی ہمیں جواننگ لیٹر نہیں دے سکتا. ہر ڈپارٹمنٹ میں ملازمین کی کمی ہے، وہ جلد سے جلد ہماری جواننگ کروانا چاہتے ہیں پر اس آرڈر کی وجہ سے وہ بھی مجبور ہیں.’

کیا واقعی ایسا کوئی حکم ہے کہ جواننگ لیٹر نہیں دیا جائے، وهاٹس اپ میں تو طالب علم باقاعدہ اس حکم کی کاپی بھی بھیج رہے ہیں جس میں جواننگ روکنے کی بات کہی گئی ہے. وجہ کچھ بھی ہو، تین تین سال امتحان کے لگیں اور پانچ پانچ ماہ جواننگ کے، یہ کتنی افسوسناک بات ہے کہ نوجوانوں کی جوانی کو برباد کیا جا رہا ہے. تب کھل کر یہی بولنا چاہئے کہ ہم نے حکم دیا ہے کہ جواننگ نہ ہو، جاؤ جو کرنا ہے کر لو. ہم اس حکم کی کاپی نہیں دکھا رہے ہیں کیونکہ خود سے اس کی تصدیق نہیں کروا سکے ہیں. ہم یہ سیریز کس طرح کر رہے ہیں اس کے بارے میں کچھ بتانا چاہتے ہیں. ہم اتھارٹی کے چکر لگانے میں ٹائم ضائع نہیں کریں گے. ہمارا شو دیکھنے کے بعد کسی چیئرمین کو لگتا ہے کہ جواب دینا چاہئے تو ہم ان کی رائے اگلے سیریز میں ضرور دکھائیں گے. اس وقت ہم نوجوانوں کی شکایت یہاں پیش کرنے سے پہلے کئی احتیاطی تدابیر برتتے ہیں. مثلا فارم دیکھتے ہیں، تاریخ دیکھتے ہیں، میڈیا رپورٹ دیکھتے ہیں اور ایڈمٹ کارڈ تک دیکھتے ہیں. اگر کوئی چوک ہو جائے تو معافی مانگ لیں گے لیکن نوجوانوں کے ساتھ جو دھوکہ ہو رہا ہے، ہر پارٹی کی حکومت میں، اسے یہاں ایكسپوز کیا جائے گا. بہار سے ایک طالب علم نے مجھے میسیج کیا. بہار میں بھی اسٹاف سلیکشن کمیشن ہے، جس کا دفتر پٹنہ کے بیلی روڈ پر ہے. اس نے 1 ستمبر 2014 میں اشتہار نکالا کہ سیکرٹریٹ اسسٹنٹ اور دیگر عہدوں کے لئے فارم بھریں. گریجویٹ طالب علم ہی اس کے لئے قابل قبول رکھے گئے اور عہدوں کی تعداد تھی 3295. دو مراحل میں پی ٹی کے امتحان ہوئے جو فروری 2015 میں مکمل ہو گئے. مگر رذلٹ آتا ہے ایک سال بعد، 3 فروری 2016 کو. 27 مارچ 2016 کو مینس کا امتحان ہوتا ہے، رذلٹ آتا ہے 17 اپریل 2016 کو. اسی میں 2014 سے 2016 آچکا ہے. مینس میں جو پاس ہوئے ان کی جسمانی جانچ کا امتحان ہوتا ہے. یہ امتحان کئی مراحل میں اکتوبر سے لے کر 12 دسمبر 2016 تک مکمل ہوتا ہے. تبھی کمیشن کے چیئرمین بدل جاتے ہیں اور فیصلہ کرتے ہیں کہ دوبارہ رذلٹ نکالیں گے. انہیں شک رہا ہو گا کہ دھاندلی ہوئی ہے، تو اب دوبارہ سے رذلٹ نکالا گیا.

کورٹ کیس اور دھاندلی ان سب کے نام پر یہ امتحانات ٹالے جاتے ہیں. کسی بھی ریاست میں کوئی بھی امتحان بغیر چوری یا گھپلے کے الزامات کے مکمل نہیں ہوتے ہیں. اس کا حل نکالا جا سکتا تھا فاسٹ ٹریک کورٹ بنا کر اور بغیر نقل اور دھاندلی کا امتحان منعقد کرکے.  نوجوان پہلے امتحان کی تیاری کرتے ہیں اور پھر اس کے لئے آندولن. ان سب آندولنوں کو کوئی خاص کوریج نہیں ملتا ہے. لہذا حکومتیں بھی مست رہتی ہیں کہ کسی کو پتہ ہی نہیں چلے گا، بیورو کے بڑے رپورٹر ایسے آندولنوں کو کور کرنا ٹھیک نہیں سمجھتے کیونکہ ان کے نیشنل اینکر اسے بڑی کہانی نہیں مانتے ہیں۔ اس کے بعد بھی نوجوان ڈیٹا پیک، کیبل نیوز اور اخبار پر مہینے کے ایک ہزار خرچ کرتے ہیں.  بہرحال 10 جنوری کو بہار اسٹاف سلیکشن کمیشن کے امتحان میں کامیاب ہوئے طلبا نے 96 گھنٹے کا دھرنا دیا. 96 گھنٹے تک ان نوجوانوں سے بات کرنے کوئی نہیں آیا. وہ بیلی روڈ پر واقع بہار اسٹاف سلیکشن کمیشن کے باہر کھلے آسمان میں رات رات بھر سردی میں ٹھٹھرتے رہے. 22 ماہ ہو چکے ہیں ان امتحان کے لیے اور ابھی تک فائنل رذلٹ نہیں آیا ہے. اگر چار چار سال لگیں گے ایک امتحان کے پورے ہونے میں تو بہار کا نوجوان کرے گا کیا. کورٹ کیس بہانہ بن گیا ہے. اسے حکومت عدالت سے فوری طور پر سننے کی درخواست تو کر ہی سکتی تھی. میڈیا کی خبروں کے مطابق فروری 2018 میں اس امتحان کی کاؤنسلنگ ہوگی.

کئی بار لگتا ہے کہ انتخاب کمیشن کی کوئی خفیہ حکمت عملی ہے. نوجوانوں کا غصہ ٹھنڈا کرنے کے لئے بھرتی نکال دو، انہیں خواب دکھاتے رہنے کے لئے دو چار سال تک پروگریس ہی پوری ہوتی رہے اور جب رذلٹ کا ٹائم آئے تو کینسل یا پھر کورٹ کے ذریعہ امتحان دوبارہ لٹکا دو. ان کی زندگی سانپ سیڑھی کے کھیل کی طرح ہو گئی ہے. جیسے ہی 100 پر پہنچنے والے ہوتے ہیں 99 پر سانپ کاٹ لیتا ہے اور واپس  دو پر پہنچ جاتے ہیں. اس امتحان میں حصہ لینے والی کچھ لڑکیوں سے ہم نے آڈیو ریکارڈنگ منگا لی.

ابھی چلتے ہیں ہریانہ. یہاں 28 جون، 2015 پر پوسٹ گریجویٹ ٹیچر کے لئے اشتہار نکلا. جون 2015 کو 19 موضوعات کے لئے786 6، عہدوں کے لیے اشتہار نکلتا ہے. تحریری امتحان پورا ہوتا ہے 2016 میں کیونکہ موضوعات کی تعداد 19 تھی.

6 فروری 2017 کو تحریری امتحان کے نتائج آ جاتے ہیں. 11 سے 26 اپریل تک دستاویزات کی جانچ کی تاریخ نکلتی ہے. بتائیے 2015 سے 2018 آ گیا مگر بحالی کا عمل مکمل نہیں ہوا تو ان میں سے کچھ نے مظاہرہ کرنے کی ہمت کی. کرنال جسے سی ایم سٹی کہا جاتا ہے وہاں یہ چھوٹا پردرشن ہوا. ایسے دھرنے میڈیا کے کسی کونے میں چھپ جاتے ہیں، وہاں سے تھک ہار کر وہ لوگ اسے یو ٹیوب پر ڈال دیتے ہیں. پھر وهاٹس اپ پر فارورڈ کرتے رہتے ہیں. اسی سال 5 جنوری کو اس کا یہ پردرشن کا ویڈیو ہے. یہی نہیں جس امتحان کے لئے یہ تحریک چلا رہے ہیں اس کا اشتہار پہلی بار 2014 میں نکلا تھا، حکومت بدلی تو نئی حکومت نے 2015 میں پھر سے اشتہار نکالا، یعنی کہ 2014 کی طرف سے 2018 آ گیا مگر بحالی کا عمل مکمل نہیں ہوا. اس کے بارے میں تازہ اپ ڈیٹ 2 جنوری 2018 کے دینک جاگرن میں چھپا ہے. خبر میں لکھا گیا ہے کہ تمام عہدوں کے تحریری امتحان ہو چکے ہیں. نتائج آ چکے ہیں. دستاویزات کی جانچ ایک سال پہلے مکمل ہو چکی ہے. کچھ عہدوں کے لئے انٹرویو ہو چکے ہیں. اس کے بعد بھی بحالی کا عمل مکمل نہیں ہو رہا ہے. گزشتہ تین سال سے نوجوان اس بھرتی کے انتظار میں گھوم رہے ہیں. اگر آپ ان انتخاب کمیشن کی رفتار سے بھارت کو دیکھیں تو کیسا بھارت لگتا ہے. کیا آپ کو رفتار کا کوئی احساس ہوتا ہے. نوجوانوں کے خواب بھی حکومتوں کے یہاں ادھار پڑے ہیں.

ٹیچر یونین کے نیتا کے مطابق ہریانہ میں000 50، عہدے خالی ہیں. لاکھوں نوجوان گھر بیٹھے ہیں. کئی بار لگتا ہے کہ نوجوانوں کو بے روزگار اس لیے رکھا جا رہا ہے تاکہ وہ گھر بیٹھ کر ٹی وی پر وہی والا مسئلہ دیکھ سکیں جس کے بارے میں میں نے فیصلہ کیا ہے کہ اب سے ہندو مسلم مسئلہ نہیں کہوں گا، اسے اب وہی والا مسئلہ کہوں گا. اے این آئی کا فوٹیج ہر نیوز چینل کے دفتر میں پہنچ جاتا ہے. اسی اے این آئی کا ایک فوٹیج دفتر میں دکھا. سمجھ نہیں آیا کہ اتنی بڑی تعداد میں وہ بھی لکھنؤ میں یہ نوجوان کیا کر رہے ہیں. آپ نے شاید دوسرے چینلز میں خوب دیکھا بھی ہوگا اگر چلا ہوگا تب. ہمارا میڈیا آپ کو مسلسل حقیقت سے الگ کرکے جعلی حقیقت کی دنیا میں لے جاتا ہے. 17 جنوری کو یہ نوجوان اتر پردیش حکومت کے حال ہی میں 42 ہزار سپاہیوں کی بھرتی کے اشتہار سے خفا ہوکر مظاہرہ کر رہے ہیں. کیونکہ یہ 2015 میں جب وكینسي نکلی تھی تب بھر چکے تھے. اس کا نتیجہ نہیں آیا ہے. ان کا مطالبہ ہے کہ پہلے 2015 کا رزلٹ آئے پھر نئی بھرتی ہوں. 2015 میں اکھلیش حکومت کے وقت716 34، سپاہی کے عہدوں کے لئے درخواست دی تھی. لیکن یہ پوری بھرتی کا عمل الہ آباد ہائیکورٹ پہنچ گیا. ہائی کورٹ نے 27 مئی 2016 کو اس بھرتی امتحان کے نتائج پر روک لگا دی. اسی بدھ کو یوپی حکومت نے 42 ہزار نئے سپاہیوں کی بھرتی کا اشتہار نکالا ہے جس کے فارم بھرنے کا عمل 22 جنوری سے شروع ہوگا. اسی کی مخالفت میں یہ امیدوار لکھنؤ میں اکٹھا ہوئے. ان لوگوں کی شکایت ہے کہ بھرتی کے عمل سے ناراض کچھ لوگوں نے ہائی کورٹ میں عرضی ڈال دی، ریاستی حکومت نے اس معاملے میں مناسب طریقے سے پیروی نہیں کی اور نتیجہ یہ ہوا کہ کورٹ نے مکمل عمل ہی روک دیا اور نتائج کا اعلان نہیں ہو پایا. یوپی حکومت کا کہنا ہے کہ یہ معاملہ عدالت میں چل رہا ہے لہذا اس کے ہاتھ بندھے ہوئے ہیں. ایسے میں حکومت نئی بھرتی کے عمل لائی ہے جو اس سے مختلف ہے اور اس کا پرانا بھرتی والے معاملے سے کوئی لینا دینا نہیں ہے. پرانی بھرتی کے معاملے میں عدالت جو حکم دے گی، حکومت اس پر ہی عمل کرے گی. ایک حکومت کی بحالی دوسری حکومت میں کیوں نہیں جاری رہ سکتی، ہر ریاست میں ایسی شکایات ملی ہیں. پچھلی حکومت کی بحالی نئی حکومت منسوخ کر دیتی ہے. اس کا نقصان نوجوانوں کو اٹھانا پڑتا ہے.

مرکزی حکومت کا ایک آنکڑا بتاتا ہوں. وزارت خزانہ کی ایک رپورٹ بتاتی ہے کہ مارچ 2016 تک 4 لاکھ 12 ہزار عہدے خالی تھے. مرکزی حکومت کے پاس 36 لاکھ 33 ہزار 935 منظور عہدے ہیں. 11.36 فیصد عہدے خالی ہے. اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 2014 میں جتنے عہدے خالی تھے، قریب قریب اتنے ہی عہدہ 1 مارچ 2016 تک خالی رہ گئے. نوکری کا سپنا بکتا ہے، ملتی نہیں ہے. نیتا کو پتہ ہے آپ کی جوانی جوانی نہیں، پانی ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close