آج کا کالم

سلمان خان کے کلین چٹ پر سوال

رویش کمار

25 جولائی کے دن سلمان خان چنكارا معاملے میں عدالت سے بری ہو گئے. عدالت نے کہا کہ اس معاملے میں گواہ ہریش دلانی کبھی کورٹ آیا نہیں. اس لئے عدالت کے پاس حالات سے متعلق ثبوت ہی رہ گئے ہیں اور وہ ناکافی ہیں۔ اس لئے سلمان خان بری کئے جاتے ہیں. دو دن تک لوگ جس گواہ کی بات کر رہے تھے وہ آ گیا ہے. فیصلہ بھی آ گیا ہے، جس گواہ کی وجہ سلمان خان بری ہوئے وہ گواہ بھی آ گیا ہے. ہریش دلانی ان کا نام ہے. ان کا کہنا ہے کہ ان کی گواہی ہی نہیں ہوئی. عدالت کا کہنا ہے کہ سمن جاری کئے گئے مگر یہ آئے ہی نہیں. بدھ کی شام جب ہماری ساتھی ہرشا کماری سنگھ اور جودھپور کے ساتھی ارون ہرش کے ساتھ ہریش دلانی این ڈی ٹی وی پر آئے تو ایک مثال بن کر آئے. وہ مثال یہ کہ ہماری تحقیقاتی ایجنسیاں اپنے ثبوتوں کو جمع کرنے میں عدالتوں کو بھی چکما دے سکتی ہیں. جس گواہ کو غائب بتایا گیا وہ اب آپ کے سامنے حاضر ہے.

ہریش دلانی نے این ڈی ٹی وی انڈیا کے ذریعہ اپنے لئے سکیورٹی کا مطالبہ کیا ہے. ان کا کہنا ہے کہ ہائی پروفائل کیس کی وجہ سے ان کی جان کو خطرہ ہے. ہریش دلانی سلمان خان کیس کے اکیلے گواہ ہیں. وہ اس گاڑی کے ڈرائیور تھے، جس سے سلمان خان شکار کرنے گئے. اس واقعہ کے بعد ہریش دلانی کی زندگی بدل گئی اور سلمان خان کی منزل بھی. وہ بے گناہی کے فیصلے تک پہنچ گئے اور ہریش دلانی اپنی گواہی کے لئے ترستے رہے. اب ان سے بھی سوال تو بنتا ہے کہ جب کورٹ نے سمن جاری کئے تو یہ کورٹ میں کیوں نہیں آئے. کیوں انہوں نے سلمان خان کے وکیلوں کے سوالوں کا سامنا کیا. مجسٹریٹ کے سامنے ان کا 164 کا بیان ایک مضبوط ثبوت تھا، مگر اسے مشتبہ اور بڑھا چڑھا کر دیا گیا بیان بتایا گیا ہے.

سلمان خان پر الزام تھا کہ ایک فلم کی شوٹنگ کے دوران وہ جودھپور کے پاس بھواڑ میں تھے اور 26 ستمبر، 1998 کو ایک چنكارا کا شکار کیا. اس کے دو دن بعد، 28 ستمبر 1998 کو جودھپور کے  اصطبل میں ایک دوسرے چنكارا کو مار گرایا. 1 اکتوبر، 1998 کو سلمان خان پر کالے ہرن کے شکار کا بھی الزام لگا. سلمان خان کو کالے ہرن کے شکار کے الزام میں گرفتار بھی کیا گیا اور 5 دن بعد ضمانت پر رہا کر دیا گیا. نچلی عدالت میں ان دونوں صورتوں میں 1 سال اور 5 سال کی سزا سلمان کو سنائی گئی، لیکن 18 سال بعد سلمان خان چنكارا شکار کے تمام معاملات سے بری ہو گئے. راجستھان حکومت نے کہا ہے کہ پہلے وہ کورٹ کے فیصلے کو پڑھے گی پھر سپریم کورٹ میں اپیل پر غور کرے گی.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close