آج کا کالم

سی بی آئی جج کی موت کو لے کر اٹھے سوال

رويش کمار

پہاڑوں میں جتنی برف نہیں گری ہے اس سے کہیں زیادہ دہلی میں اقتدار کے گلیاروں میں برفباری ہو رہی ہے. دو دنوں سے دہلی میں برف کے سلی گر رہی ہے مگر کوئی اس کے بارے میں بات نہیں کرنا چاہتا. ایک ایسی رپورٹ آئی ہے جسے لے کر پڑھنے والوں کی سانسیں منجمد ہو جاتی ہیں، جو بھی پڑھتا ہے اپنا فون بند کر دیتا ہے کہ کہیں کوئی اس پر رائے نہ مانگ لے.

صحافی اس رپورٹ کو چھوڑ کر باقی ساری رپورٹ دھنواں دھار طریقے سے ٹویٹ کر رہے ہیں تاکہ برف کی اس سلی پر جتنی جلدی ممکن ہو، دھول جم جائے. بہت مشکل سے نرنجن ٹاكلے نامی ایک رپورٹر نے ایک جج کی لاش پر جمی دھول کی پرت ہٹا کر یہ رپورٹ شائع کی ہے، بہت آسانی سے اس رپورٹ کو یہ دہلی برف کی سلی کے نیچے دبا دینا چاہتی ہے. مگر یہ رپورٹ آہستہ آہستہ وهاٹس اپ کے تہہ خانوں میں بغیر بتائے ایک جگہ سے دوسری جگہ پہنچ رہی ہے. انگریزی میں شائع ہویی اس طویل رپورٹ کو پڑھتے ہی قاری خوف کے ایسے اندھیرے کنویں میں خود کو گرتا ہوا محسوس کرنے لگتا ہے، جہاں اس کی چیخ بھی اس کے پاس نہیں پہنچ پاتی ہے. ہم نے بہت سے لوگوں سے جواب کے لئے پوچھا، دوبارہ جب فون کیا تو فون بند ہو گیا. اقتدار کا ڈر سب کو غیر مسلح کر دیتا ہے. کیا واقعی ایک سی بی آئی کے جج کی موت سے جڑے سوالوں سے کہانی میں اتنے سوراخ ہو جاتے ہیں کہ آپ کو اس کے سوراخ کے اس پار کوئی قاتل قہقہے لگا رہا ہوتا ہے، اس کی ہنسی پہچانی لگتی ہے مگر نام زبان پر نہیں آتا ہے.

اس رپورٹ کا اثر کسی پراسرار رومانچک سا ہے جسے صحافت کے کورس میں پڑھایا جانا چاہئے. جو بھی پانچ لاکھ فیس دے کر صحافت پڑھ رہے ہیں انہیں اس پر پروجیکٹ کرنا چاہئے. کئی بار واجب وجوہات بھی ہوتی ہیں کہ دوسرے ادارے کی کہانی کو ہاتھ لگانے سے پہلے انتظار کرتے ہیں۔ یہ  ٹھیک بھی ہے مگر حیرت کی بات یہ ہے کہ دو دنوں تک شائع ہونے کے بعد بھی عدالتوں کے گلیاروں سے کوئی آواز سنائی نہیں دی. ممکن ہے کسی نے پڑھی نہ ہو.

ججوں کے پاس وقت کہاں ہوتا ہے، اگر پڑھی ہوتی تو انہیں کیا کرنا چاہیے تھا، کیا ایک جج کی موت سے جڑے سوالوں کی فائل دوبارہ نہیں کھل سکتی ہے. عدالت کو، وزیر قانون کو، ملک کے ایگزیکٹو سرپرست وزیر اعظم کو کیا یہ یقین دہانی اپنی طرف سے نہیں دینا چاہئے تھی. کیا اپوزیشن کو سوال نہیں کرنا چاہئے تھا. کیا سب کو یہ یقین نہیں دینا چاہئے کہ ہم اس کی تحقیقات کریں گے ورنہ عدلیہ کے اندر اندر کے لوگوں کا اپنے کام سے بھروسہ اٹھ جائے گا، ورنہ عدلیہ کے باہر کے لوگوں کا اندر اندر بیٹھے لوگوں پر بھروسہ نہیں رہے گا.

بیوی اپنے شوہر اور بیٹا اپنے باپ کی موت پر خاموش ہو گئے. ان کا خوف واجب ہی رہا ہو گا، مگر جسٹس لويا کی ڈاکٹر بہن نے تین سال بعد کہنے کی ہمت جٹا لی. لیکن جب ایک بہن نے بات کہہ دی، ایک رپورٹر نے رپورٹ چھاپ دی، ایک میگزین نے اسے لوگوں تک پہنچا دیا تو پھر دہلی میں صحافیوں اور انصاف کی دنیا کے لوگوں کی زبان پر برف کی سلی کیوں جم گئی ہے. کہانی ڈراونی تو ہے. میں نے اس کہانی کو پڑھنے والے صحافیوں کو ڈرتے دیکھا ہے. میں خود سہم گیا کہ کیا ایک جج کی موت واقعی موت تھی یا کسی نے قتل کر دیا.

ناگپور میں 1 دسمبر 2014 کی صبح جج برجگوپال لويا کی موت دل کا دورہ پڑنے سے بتائی جاتی ہے. تین سال بعد ان کی بہن کے سوال ہڈیوں میں سوراخ کر دیتے ہیں، لگتا ہے کہ ان کو کسی نے قتل کر دیا اور قاتل آرام سے ٹی وی دیکھ رہا ہے. اس نے كیرواں کی کہانی چھپ کر پڑھی تو ہوگی. ممکن ہے اس اسٹوری پر پردہ ڈالنے کے لئے دہلی میں ہندو مسلم مسائل کی آندھی چل جائے، ایسے مسئلے آجائیں جہاں ٹی وی پر مولانا اور اینکكرو کے درمیان جنگ چھڑ جائے لیکن جب بھی طوفان رکتا ہے وہ کہانی جھلکنے لگتی ہے. صحافت کی ایک ذمہ داری یہ بھی ہے جب سارے لوگ کسی اسٹوری کو مردہ چھوڑ کر چلے جائیں تو بہت دنوں بعد وہاں لوٹا جائے اور دیکھا جائے کہ وہاں کچھ اور سراگ تو نہیں تھا.

آپ نرنجن ٹاكلے کی اس اسٹوری کو caravanmagazine.com پر پڑھ سکتے ہیں. انگریزی میں ہے اور طویل بھی ہے. كیرواں کے بعد اسے scroll.in اور the wire.in نے بھی چھاپا ہے. ہندی میں آپ the wirehindi.com، mediavigil.com پر اس اسٹوری کو پڑھ سکتے ہیں. indiasamvad.co.in نے بھی اس کہانی میں ایک نیا زاویہ شامل کیا ہے. كنڈ اخبار وارتابھارتي اور ملیالم میں شائع ہونے والا اخبار مادھيمم نے اس رپورٹ کو کور کیا ہے. دہلی کے اخباروں کے دفتر میں اوس پڑ گئ ہے.

كیرواں کی اس کہانی کی تحقیقات  ہم نے اپنے سطح پر نہیں کی مگر جب سی بی آئی کے جج برجگوپال لويا کی بہن کا ویڈیو بیان دیکھا تو لگا کہ کم از کم جیسی کہانی ہے اسے اس طور پر بتایا جا سکتا ہے. سی بی آئی کے اسپیشل کورٹ کے جج برجگوپال لويا سہراب الدین انکاؤنٹر معاملے کی سماعت کر رہے تھے، جس صورت میں بی جے پی کے قومی صدر امت شاہ اہم ملزم تھے. 30 دسمبر 2014 کو سی بی آئی کے اسپیشل سی بی آئی جج ایم بي گوساوي امت شاہ کو اس الزام سے بری کر دیتے ہیں. سی بی آئی نے اس فیصلے کے خلاف اوپری عدالت میں اپیل نہیں کی. اپیل کرنے کا ارادہ ہے بھی یا نہیں، کون پوچھے گا. جب لوگ ایک شائع ہوئی کہانی سے ڈر جاتے ہے وہاں کون پوچھے گا کہ اپیل کیوں نہیں کی جا رہی ہے.

6 جون 2014 کو اسپیشل جج اتپٹ ناراضگی ظاہر کرتے ہیں کہ امت شاہ کیوں نہیں آئے. جج اتپٹ حکم دیتے ہیں کہ امت شاہ 20 جون کو عدالت میں حاضر ہوں، نہیں آتے ہیں. جج اتپٹ اگلی سماعت کی تاریخیں 26 جون طے کرتے ہیں مگر 25 جون کو ان کا تبادلہ ہو جاتا ہے. سپریم کورٹ کا حکم ہے کہ سہراب الدین معاملے میں ایک ہی افسر شروع سے آخر تک تحقیقات اور سماعت میں رہے گا. جج اتپٹ کا تبادلہ پونے ہو جاتا ہے. ان کی جگہ آتے ہیں 48 سال جج برجگوپال هركشن لويا. جج لويا امت شاہ کو ذاتی طور پر حاضر ہونے کی شرط سے چھوٹ دے دیتے ہیں. کہتے ہیں کہ وہ دس ہزار صفحات کی چارج شیٹ کو دوبارہ دیکھنا چاہتے تھے، نئے جج تھے اور کیس حساس تھا اس لئے بھی. ان کے ساتھ رہنے والی بھانجی نپور نے بتایا ہے کہ اس کیس کو لے کر بہت کشیدگی ہے. اسے کس طرح سمجھا جائے، اس میں بہت لوگ شامل ہیں. اس سے کس طرح نمٹا جائے.

بھانجی نے یہ بات كیرواں کے رپورٹر نرنجن ٹاكلے کو بتائی. اسی کے بعد سے نرنجن نے اس کہانی کی پڑتال شروع کر دی. 31 اکتوبر کو جج لويا نے پوچھا کہ امت شاہ حاضر کیوں نہیں ہیں. شاہ کے وکیل کہتے ہیں کہ انہوں نے خود حاضر نہ ہونے کی چھوٹ دی ہے. لويا یاد دلاتے ہیں کہ چھوٹ تب تھی جب شاہ ریاست کے باہر ہوں، اس دن شاہ ممبئی میں تھے. 1 دسمبر 2014 کی صبح ناگپور میں جسٹس لويا کی موت ہوتی ہے. 15 دسمبر 2014 کو جج لويا کے سامنے امت شاہ کی پیشی ہونی تھی. 30 دسمبر کو نئے جج ایم جی گوساوي امت شاہ کو تمام الزامات سے بری کر دیتے ہیں.

فیصلے میں کہا جاتا ہے کہ سیاسی وجوہات سے امت شاہ کو پھنسایا گیا تھا. جج کی موت والی کہانی میں امت شاہ کا ذکر صرف ریفرنس کی بات ہے، بتانے کے لئے وہ کتنے ہائی پروفائل کیس کی سماعت کر رہے تھے، اس کا مطلب یہ نہیں کہ کسی پر اشارہ کیا جا رہا ہے، وہ ہم بالکل نہیں کر رہے مگر اسی ایک وجہ سے یہ بھی لگتا ہے کہ جج لويا کی موت سے جڑے سوالوں کو سنجیدگی سے لینا چاہئے تاکہ کسی کو شک نہ ہو. آخر ان کی بہن کو بتانا تو پڑے گا کہ ان کے سوالات کا کیا ہوا. جج لويا ناگپور نہیں جانا چاہتے تھے. وہاں ایک جج کی بیٹی کی شادی میں جانا تھا مگر دو جج کہتے ہیں کہ چلنا چاہئے. ان کے کہنے پر وہ ناگپور جاتے ہیں. شادی سے لوٹ کر ممبئی میں اپنی بیوی سے بات کرتے ہیں اور اس کے بعد ان کے خاندان کو کچھ پتا نہیں چلتا. صبح ایک فون آتا ہے کہ جج لويا مر گئے ہیں. نرنجن ٹاكلے نے جج لويا کی ڈاکٹر بہن کے حوالے سے جو سوال اور واقعہ لکھا ہے اب آپ اس کو پڑھ کر اور سن کر سہر جائیں گے. کسی کی موت دل کا دورہ پڑنے سے ہو سکتی ہے مگر ایک جج کی موت ہوگی اس پوسٹ مارٹم سے لے کر لاش کو بیوی اور بیٹے کے گھر بھیجنے کی جگہ باپ کے پاس گاؤں بھیجنے کا فیصلہ کوئی اور کر لے گا، یہ سب سوال اتنی آسانی سے ہضم نہیں ہوتے ہیں. ایک جج کا معمولی چیزوں کے لئے پروٹوکول ہوتا ہے.

ان کی بہن نے جو بات بتائی ہے ان کے مطابق خاندان کا فیصلہ نہیں تھا کہ ناگپور سے لويا کی لاش ممبئی جائے گی یا ان کے گاؤں. بس خاندان کے ارکان کو فون آتا ہے کہ ان کی لاش لاتور کے گیٹ گاؤں بھیجی جا رہی ہے. گیٹ گاؤ میں لويا کے والد رہتے ہیں، لويا کی تین بہنیں دھلے، جلگاو اور اورنگ آباد میں رہتی ہیں. آخر کس سے پوچھ کر جسٹس لويا کی لاش ممبئی کی جگہ گیٹ گاؤں بھیجی جاتی ہے. یہی نہیں لاش کے ساتھ کوئی سیکورٹی نہیں تھی، کوئی پولیس والا نہیں تھا، کوئی پروٹوکول نہیں تھا. ایمبولینس کا ڈرائیور اکیلے اس لاش کو گیٹ گاؤں لے کر اترتا ہے. جن دو ججوں کے ساتھ جج لويا گئے تھے، وہ ڈیڑھ ماہ تک خاندان سے رابطہ نہیں کرتے. وہ جج بھی اپنے ساتھی کی لاش کے ساتھ گیٹ گاؤں نہیں آتے.

یہ ویڈیو ہمیں كیرواں میگزین نے دی ہے. مراٹهی میں جج لويا کی بہن انورادھا بياني بول رہی ہیں جن سے لويا کافی بات کرتے تھے، معمولی چیزوں کے لئے دوا پوچھتے تھے. لہذا بہن کو پتہ تھا کہ بھائی کو کس قسم کی تکلیف ہے. پوسٹ مارٹم رپورٹ میں دل کا دورہ پڑنے کے جو وجوہ بتائے گئے ہیں، اس سے ڈاکٹر بہن متفق نہیں ہیں. ان وجوہات کا ان کے خاندان میں کوئی ہسٹری نہیں ہے. بہن کی عادت ہے ڈائری لکھنے کی. وہ ہر روز کی بات چیت لکھتی رہتی تھیں. اس بات چیت سے پتہ چلا کہ انہیں موت کی اطلاع مبینہ طور پر آر ایس ایس کے کارکن ایشور بہیتي سے ملتی ہے. كیرواں میگزین کے رپورٹر نے ایشور بہیتي سے سوال کیا ہے مگر جواب نہیں آیا ہے. یہی ایشور بہیتي ہے جو کچھ دنوں بعد انورادھا بیانی کے گھر جسٹس لويا کا فون لے کر آتا ہے. انورادھا کے ذہن میں سوال دوڑنے لگتا ہے کہ جج کا فون ایک ایشور بہیتي  کو کیسے ملا.

جج کی موت ہو گی، تو ان کے سامانوں کی زبتی ہوگی اور قائدے سے پولیس ہی لے کر آئے گی. یہی نہیں انورادھا کی ایک اور بہن سرتا مدھانے کے پاس کسی جج کا فون آتا ہے. سریتا اس دن لاتور میں تھی. بھائی کی موت کی خبر ملتے ہی لاتور کے ایک استپال میں بھرتی اپنے بھتیجے کو لینے جاتی ہیں. لیکن وہاں وہی ایشور بہیتي ملتا ہے جو فون لے کر انورادھا کے گھر گیا تھا. سریتا نے توجہ تو نہیں دی مگر یہ سوال دھنس گیا کہ یہ ایشور بہیتي کون ہے جو بھائی کی موت کی خبر لے کر آتا ہے. ایشور بہیتي انہیں کہتا ہے کہ ناگپور جانے کی ضرورت نہیں ہے. وہاں سے لاش ایمبولینس کے ذریعہ گیٹ گاؤں بھیجی جا چکی ہے. ایشور بہیتي انہیں گھر لے کر جاتا ہے. بہنوں کو بہت بعد میں دیہان آتا ہے ایک جج کی موت ہوئی ہے، نہ پولیس نہ انتظامیہ. آر ایس ایس کے ایک آدمی اتنا سب کچھ کس طرح جانتا ہے.

جب لويا کا جنازہ ہوتا ہے تب بہت جج شامل ہوتے ہیں. وہاں کچھ جج بیوی اور بیٹے کو کسی سے بات کرنے سے منع کرتے ہیں. دونوں آج تک بولنے کی ہمت نہیں جٹا پائے، میں سمجھ سکتا ہوں، آپ کو بھی سمجھنا چاہئے. بس اتنا ہی کہنا ہے کہ ایسا بھی کیا جینا کہ اتنا ڈرنا چاہئے. دہلی میں هرتوش بل، اپورواند، شبنم ہاشمی، منیشا سیٹھی اور سعیدہ حمید نے پریس کانفرنس کی اور پوری بات بتائی. یہاں میڈیا کے کیمرے اور رپورٹر تو موجود نظر آ رہے ہیں، امید ہے آپ کو 23 نومبر کے اخباروں میں اس خبر کے بارے میں پڑھنے کو ملے گا. ممکن ہے کہ میڈیا ہندو مسلم کا کوئی قومی نصاب لے کر اتنا ہنگامہ کرے گا کہ یہ خبر دب جائے گی جیسے کسی جج کی موت کی خبر تین سال تک دبی رہتی ہے. یہی خوبی بھی ہے کہ جب سب لوگ اس اسٹوری پر بولنے سے کترا رہے ہیں تین چار لوگ پریس کانفرنس کر رہے ہیں اور ایک رپورٹر نرنجن ٹاكلے بھی آتا ہے تو یہ کہانی کر دیتا ہے. ہمارے ساتھی اوما شنکر سنگھ اس پریس کانفرنس کا احاطہ کرنے گئے تھے.

موت کو لے کر سوال ہی تو ہے، ظاہر ہے انکوائری ہونے میں کسی کو کیا دقت ہے، بولنے میں اتنا ڈر کیوں ہیں، کیا ہم خوف کو گلے لگانے لگے ہیں، یہ کسی کے لئے اچھا نہیں ہے. ڈر بانٹنا بند کیجیے، کسی پر شک بھی کرنا بند کیجیے لیکن جب کوئی سوال کر دے تو حکومت اور عدالت کا کام ہے کہ جواب کا یقین دلانا اور جواب بھی دینا. بہن انورادھا بياني کی باتوں اور آپ کی انکوائری کے بنیاد پر نرنجن ٹاكلے نے موت کی رات سے منسلک جو ڈیٹیل جمع کی ہیں، وہ ڈرانے والے ہیں. جج لويا ناگپور کے وی آئی پی گیسٹ ہاؤس روی بھون میں ٹھہرے تھے. جہاں اس وقت بہت سے جج، کئی بڑے افسران بھی ٹھہرے تھے. جب سینے میں درد کی شکایت ہوتی ہے تو انہیں آٹو سے لے جایا جاتا ہے. کیا اس گیسٹ ہاؤس میں ایک بھی گاڑی نہیں تھی، آٹو رکشہ سے کس طرح منتقل کر دیا گیا. روی بھون سے دو کلومیٹر کے فاصلے پر آٹو رکشہ اسٹینڈ ہیں. لويا کو ایک ایسے ہسپتال میں منتقل کر دیا جاتا ہے جہاں ایسیجی مشین کام نہیں کر رہی تھی. وہاں سے انہیں دوسرے ہسپتال میں لے جایا جاتا ہے. جہاں انہیں مردہ قرار دے دیا جاتا ہے. یہ بھی پتہ نہیں چل پایا ہے کہ جسٹس لويا کو اسپتال لے کر کون گیا. وی آئی پی گیسٹ ہاؤس سے ایک جج کو آٹو میں بٹھاکر کون لے گیا تھا.

جب موت ہوئی تھی تب میڈیا میں خبر چھپی تھی، دل کا دورہ پڑنے سے موت کی خبر کو سب نے عمومی طور پر لیا. کسی نے کبھی شک نہیں کیا. مگر انورادھا بياني اور نرنجن ٹاكلے اپنی پڑتال سے کچھ ایسے سوال نکالتے ہیں جو پہلی نظر میں دیکھنے پر واقعی پتھر سے بھی زیادہ ٹھوس لگتے ہیں. پوسٹ مارٹم کے ہر صفحے پر ایک شخص کے دستخط ہے. دستخط کے نیچے لکھا ہے کہ یہ لويا کا کزن ہے. انورادھا بياني کہتی ہیں کہ ان کا کوئی کزن نہیں ہے. ریکارڈ کے مطابق لويا کی لاش اسے سونپا جاتا ہے. مگر ایمبولینسوں میں لاش لے کر تو صرف ڈرائیور گیا تھا. وہ آدمی کون تھا اور کہاں ہے اس وقت جس کا دستخط ہے.

رپورٹ بہت طویل ہے اور ڈراونی ہے. اگر ایک جج کی موت سے منسلک سوالات ادھورے رہ سکتے ہیں تو ہم کس نظام میں رہ رہے ہیں. كیرواں نے ایک اور رپورٹ شائع کی ہے، اس رپورٹ کے بعد. جس میں بتایا ہے کہ ایک جج کو اس کیس کو آباد کے لئے سو کروڑ کی رشوت کی مبینہ طور پر پیشکش ہوئی تھی. اس کا ذکر یہاں نہیں کیونکہ جج کی موت سے منسلک سوالات ابھی ختم نہیں ہوئے ہیں. آپ سمجھ گئے ہوں گے کہ کیوں دہلی پر برف کے سلی پڑی ہے. کیا ایک جج کی موت کی تحقیقات سے لے کر پوسٹرمارٹم رپورٹ تک میں اتنے فرق ہو سکتے ہیں، سنندا پشکر کی پوسٹ مارٹم رپورٹ تو روز ٹی وی پر کھولتا ہے، کھلنی بھی چاہیے مگر جسٹس لويا کے خاندان والوں کو کیا جواب ملے گا. ناگپور کے سيتاودي پولیس اسٹیشن اور سرکاری میڈیکل کالج کے دو ذرائع نے نرنجن ٹاكلے کو بتایا کہ انہوں نے آدھی رات کو ہی لاش دیکھ لی تھی، اس کا پوسٹ مارٹم بھی اسی وقت کر لیا گیا تھا. مگر پوسٹ مارٹم رپورٹ میں موت کی اطلاع کا وقت سوا چھ بجے ہے. پوسٹ مارٹم شروع ہوتا ہے 10 بجکر 55 منٹ پر اور ختم ہوتا ہے 11 بجکر 55 منٹ پر. موت کا وقت اور پوسٹ مارٹم کے وقت کو لے کر دو طرح کی رائے ہیں.

کیا اس رپورٹ کو یوں ہی نظر انداز کر دیا جانا چاہئے، کس کے مفاد میں ان سوالات کو نظر انداز کرنا، ایک جج کی موت ہوتی ہے، ان کا بیٹا اور بیوی بولنے کی ہمت نہیں جٹا پاتے تو کیا بھارت کے سربراہ جج کو انہیں تحفظ کا بھروسہ نہیں دینا چاہئے، انہیں بولنے کا حوصلہ نہیں دینا چاہئے. آخر جب ایک شہری خوف کے سبب جینے کا، بولنے کا حوصلہ چھوڑ دے گا تو کون حوصلہ دے گا. کیا اقتدار کو ہم نے خوف کا شیٹ بنا لیا ہے کہ وہ خوفزدہ کرتی رہے گی اور ہم اس خوف کی چادر کو تان کر سوتے رہیں گے، اس کے نیچے خوف سے کانپتے رہیں گے، سوال سمپل ہے، جج تمام طرح کے مقدمات کی سماعت کرتے ہیں. بہت مشکل ہے کہنا کہ کسی کے قتل کا تعلق کس معاملے سے تھا، مگر کیا یہ جاننا ضروری نہیں کہ ایک جج کی موت کو لے کر سوال اٹھ رہے ہیں، اس کے جواب کب اور کیسے ملیں گے. اگر اس کہانی کے حوالہ سے کسی کو ڈر ہے تو کیا بغیر ریفرنس کے پرواہ کئے صرف جج کی موت سے منسلک سوالات کا جواب نہیں تلاش کیا سکتا ہے. ایک عام شہری کے لئے بھی جواب ضروری ہے. ورنہ سب کو لگے گا کہ جب ایک جج کے ساتھ ایسا ہو سکتا ہے تو پھر کسی کے ساتھ ہو سکتا ہے. میں بھی آپ سے ایک بات کہنا چاہتا ہوں. مجھے بھی ڈر لگا تھا، لیکن  اس لیے اسے کیا تاکہ انورادھا بياني کو یہ نہ لگے کہ اس کے بھائی کو کسی نے مار دیا اور بولنے والا کوئی نہیں تھا. لويا کے بیٹے کو یہ نہ لگے کہ اس ملک میں کوئی کسی کے لئے بولتا نہیں ہے. ایسا نہیں ہے. مجھے امید ہے کوئی بولے نہ بولے، وزیر اعظم اور بھارت کے چیف جسٹس ضرور بولیں گے کہ ڈرنے کی بات نہیں ہے. جو سوال ہیں ان کی جانچ ہوگی.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close