آج کا کالم

صدارتی انتخابات اور ذات پات کی سیاست

ڈاکٹر وجے اگروال

 1992 ء  میں جب صدارتی  انتخابات ہونے میں ابھی تقریبا دو سال باقی تھے کہ ملک کے  شیڈیول کاسٹ اور ممبران پارلیمنٹ کا ایک وفد صدر جمہوریہ سے ملنے گیا. اس وقت صدر وےكٹرمن تھے.انھوں  نے اس وفد کو پیغام بھجوایا کہ وہ پورے وفد سے نہیں ملیں گے. ان کے کچھ نمائندے آکر ان سے ملاقات کر سکتے  ہیں.وفد  ان کے اس پیغام سے بھڑک اٹھا. اسے انہوں نے اپنے طبقہ  کی توہین سمجھتے ہوئے اس بڑی عمارت کے سامنے ایک بڑے میدان میں طےکیا کہ ” تو ٹھیک ہے. اب اگلا صدر ہمارے ہی طبقے سے ہوگا. ”

اور ان کے اس حساس اور انتہائی  قرارداد نے شنکر دیال شرما جی کے سامنے ایک بہت بڑا دھرم سنكٹ پیدا کر دیا تھا، جو اس وقت ملک کے نائب صدر تھے، اور ظاہر ہے کہ صدر بننے کی خواہش رکھتے تھے. کہا گیا تھا کہ یہ خواہش وےكٹرمن جی کی بھی تھی. لیکن ممبران پارلیمنٹ کے اس اعلان نے ان کے پنرنرواچن کے امکان کو ختم کرکے انہیں اس دوڑ سے بالکل باہر کر دیا. ساتھ ہی ملک کو ایک ایسے دلت شخص کی تلاش میں لگا دیا، جسے اس عہدے پر بٹھایا جا سکے.

صدر بننے کے لئے تعلیمی لیاقت سے زیادہ وقت کے سیاسی مساوات کام کرتے ہیں. خوش قسمتی سے یہ مساوات ڈاکٹر شنکر دیال شرما کے کافی حق میں تھے. لیکن ممبران پارلیمنٹ کے اس قرارداد نے اس راستے کے بننے کی شروعات کر دی تھی، جس پر ان کے طبقے کا ایک شخص صدارتی محل کے ڈرائنگ روم کا سربراہ بن سکے. اس کی شروعات کے طور پر كےآر نارائنن سن 1992 میں نائب صدر منتخب ہوئے اور بغیر کسی  تنازعہ کے پانچ سال بعد ملک کے صدر. دلت طبقے سے آئے ہوئے پہلے صدر، نہ کہ دلت طبقے کے صدر. صدر پوری قوم کے لئے ہوتا ہے، کسی خاص طبقے کے لئے نہیں.اور اب بیس سال کی مدت کے درمیان یہ دوسرا موقع ہے جب دوبارہ ملک کا صدر اسی طبقے سے ہوگا.

یہ خوش آئند بات ہے. یہی جمہوریت ہے، اور جمہوری نظام میں ‘دباؤ گروپوں’ ‘کی طاقت بھی. لیکن یہاں ایک حقیقت ضرور قابل غور ہے کہ آزادی کے ستر سال کے بعد کی ہماری آج کی سیاست بھی نسل کی بنیاد پر کھڑی رہنے کے لئے کیوں مجبور  ہے؟ بی جے پی کے صدر امت شاہ نے كووند کو این ڈی اے کی جانب سے صدر کے عہدے کا امیدوار اعلان کرتے ہوئے شروع میں ہی اس بات کا بہت صاف طور پر ذکر کیا کہ ‘وہ دلت طبقے سے آتے ہیں.’ ‘جبکہ یہ اس عہدے کے لئے کوئی مقرر یا ضروری قابلیت نہیں ہے.ضروری اہلیتیں ان میں ہیں. ساتھ ہی انھوں نے اپنی ذمہ داریوں کو بہترین طریقے سے انجام دی ہیں- آئین کے محافظ کے طور پر آئین کا علم (وہ سپریم کورٹ میں وکیل رہے)، ایم پی اور گورنر کے طور پر ہندوستانی سیاست کی سمجھ اور آل انڈیا کولی سماج کے صدر کے طور پر سماجی- حالات کی عملی سمجھ. لیکن فی الحال یہ ثانوی ہو گئے ہیں. ان کی ذات پات  اورشناخت کو پہلا  درجہ دے دیا گیا ہے.

اپوزیشن کے سامنے یہ ایک ایسا تاریخی موقع تھا، جب وہ دو میں سے کوئی ایک قدم اٹھا کر ہندوستانی سیاست کو ایک مثبت موڑ دے سکتا تھا. پہلی تھی رضامندی کی سیاست. دوسرا یہ کہ وہ کسی دلت کے بجائے کسی دوسرے طبقے سے اپنا امیدوار لاتے. لیکن اس وقت ان کے سامنے ”دلت مخالف” کہلانے کا خوفناک خطرہ اٹھ کھڑا ہوتا. لیکن خطرے اٹھائے بغیر تبدیلی کی امید بھی نہیں کی جا سکتی ہے.

یہاں اصل فکر یہ ہے کہ وہ دن کب آئے گا، جب اس ملک کے محروم طبقے کا شخص اپنی ذات سے نہیں بلکہ اپنی قابلیت سے جائے گا، کیونکہ ذات کا لیبل اس قابلیت کو منسوخ کر کے اسے غیر ضروری طور پر  مایوس کر دیتا ہے. 2015  کی آئی اے ایس کے امتحان میں اسی طبقے کی لڑکی نے ٹوپ کرکے قوم کو کچھ الگ ہی قسم کا اشارہ دیا تھا. وقت وقت پر اس طرح کے انتہائی اہم اشارے ہمیں ملتے رہتے ہیں، جن کا تجزیہ کرتے ہوئے روایتی پالیسیوں میں تبدیلی کی جانی چاہئے. شبیہ کی سیاست سے اس طبقے کا مفاد سدھنے والا نہیں ہے. یہ ایک قسم کے ‘لاحاصل کوشش’ سے زیادہ کچھ نہیں ہے. ٹھوس مسائل پر کام کرنے کی ضرورت ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close