آج کا کالمخصوصی

صفایٔی كرميوں کے حالات خراب ہیں!

رويش کمار

ہمارا شہر کون صاف کرتا ہے، ہم اس کے بارے میں بہت کم جانتے ہیں. حفظان صحت کی اتنی بڑی مہم کے بعد بھی ہم صفایی كرميوں کی حیثیت پر بات نہیں کر پاتے ہیں. وہاں تک بات پہنچ ہی نہیں پاتی ہے. دہلی میں دو ماہ کے اندر اندر گٹر صاف کرتے وقت سات افراد کی موت ہو گئی ہے. اسی 6 اگست کو جنوبی دہلی کے لاجپت نگر میں تین لوگوں کی موت ہو گئی. اس کام میں مشینیں کو استعمال تو ہوتا ہے مگر جب راجدھانی دہلی میں ہی اگر ہاتھ سے گٹر کی گندگی کو اٹھایا جا رہا ہے تو باقی ملک کا حال آپ سمجھ سکتے ہیں.

پریکسس سنستھا نے 2014 میں گٹر میں کام کرنے والے مزدوروں کی صحت پر پڑنے والے اثرات کا مطالعہ کیا ہے. آپ جانتے ہیں کہ پورے ملک میں بھارت ماتا کے ان سچے سپوتو کے بارے میں کوئی سرکاری اعداد و شمار نہیں رکھا جاتا ہے. گٹر بھی ملک کے اندر اندر کی وہ حد ہے جہاں ہماری صفائی کے لئے لڑتا ہوا بھارت کی ماں کا سپوت مارا جاتا ہے. اسے نہ تو شہید کا درجہ ملتا ہے نہ ہی معاوضہ. بھارت ماتا کا سپوت کہہ دینے سے سارا مسئلہ حل نہیں ہو جاتا. گٹر میں اترنے والے نسل پرستی کا جو خمیازہ بھگتتے ہیں اس پر بات پھر کبھی ہوگی. کوئی 20 فٹ گہری گٹر میں اترا ہو، سانس لینے کی صاف ہوا تک نہ ہو، پتہ بھی نہ ہو کہ اندر صاف ہوا ہے یا زہریلی گیس. ان کے پاس کوئی سامان نہیں ہوتا جس سے معلوم کر سکے کہ نالے میں زہریلی گیس ہے. کئی بار ماچس کی تیلی جلا کر تحقیقات کر لیتے ہیں. بدن پر کوئی کپڑا نہیں ہوتا ہے. کمر میں رسی بندھی ہوتی ہے تاکہ کیچڑ میں پھنس جائے تو کوئی کھینچ کر باہر نکال لے. پریكسس کی رپورٹ ڈاؤن دی ڈرین پڑھيے گا، انٹرنیٹ پر موجود ہے.

ہمارے ساتھی سشیل مهاپاترا شمالی دہلی کے ماڈل ٹاؤن کے سنگم پارک گئے، جہاں صفایی کرمی رہتے ہیں. 2015 میں جب ہم نے وہاں سے پرائم ٹائم کیا تھا اس کے بعد سے صورت حال میں کچھ تو بہتری آئی ہے. لوگوں نے سشیل کو بتایا کہ اب گٹر اور پینے کا پانی مکس نہیں ہوتا ہے. اس کے بعد بھی مسائل ختم نہیں ہوئے ہیں. بھیانک سطح سے کم ہوکر خوفناک سطح پر آ گئیں ہیں. اگر آپ بھیانک اور خوفناک کے درمیان فرق سمجھتے ہیں تو سمجھ جائیں گے.

سنگم پارک کے نریش اور ہریش ہمارے سٹڈيو میں مہمان ہیں. ان کے گھروں تک پہنچنے سے پہلے کچرے کے ڈھیر کو سلام کرنا ہی پڑتا ہے. گندگی کم ہوئی ہے مگر اب بھی ہے. نریش، اس کی بیوی اور دو بچوں کا خاندان ایک کمرے کے گھر میں رہتا ہے. گھر کے اندر ٹوائلٹ نہیں ہے. ایک ٹوائلٹ باہر ہے جسے تین خاندان استعمال کرتے ہیں. بیت الخلا میں بجلی نہیں ہے. 28 سال کے نریش گزشتہ 9 سال سے گٹر صاف کر رہے ہیں. نریش بھی منڈی گھنٹا گھر میں گٹر صاف کرتے وقت گیس لگنے سے بیہوش ہو گئے تھے. چار دن بعد جب ہسپتال سے واپس آئے تو پھر سے وہی کام کرنے لگے. ایک دن کی کمائی 250 روپے ہے. دہلی میں اسکلڈ لیبر کی کم از کم مزدوری 622 روپے ہے جبکہ انہیں 250 روپے ملتے ہیں. ٹھیکیدار حکومت سے ان مزدوروں کے لئے ماہ کے حساب سے تنخواہ لیتا ہے مگر انہیں دن کے حساب سے دیتا ہے یعنی جس دن سرکاری چھٹی ہوتی ہے اس دن پیسہ نہیں ملتا ہے.

ہریش 18 سال سے گٹر کی صفائی کر رہے ہیں. 100 روپے سے کام شروع کیا تھا، 2000 میں 125 روپے ہوئے، اس کے پانچ سال بعد یعنی 2005 میں پچیس روپیہ بڑھ کر 150 روپے اور پھر سات سال بعد پچاس روپیہ بڑھ کر 200 روپے ہوا. اس دوران دہلی کی کتنی آبادی بڑھی، دہلی کے گٹر میں ردی کی ٹوکری کتنی بڑھی اس کا حساب لگائیں گے تو پتہ چلے گا کہ آزاد ہندوستان میں آج بھی غلامی کا رواج چل رہا ہے. 12 سال میں مزدوری 100 سے بڑھ کر 200 روپے ہوتی ہے جبکہ اس کام میں کتنا خطرہ ہے، آپ کو بتانے کی ضرورت نہیں ہے. ہریش کے پاس دو کمرے کا گھر ہے. اس گھر میں اس کے والدین، کم عمر کے چار بھائی اور ہریش کے تین بچے یعنی دو کمروں کے گھر میں 10 لوگ رہتے ہیں. ہریش کی بھی جان جاتے جاتے بچی ہے. آپ بھارت ماتا کے ان سپوتو کی اقتصادی اور رہائش حیثیت دیکھ سکتے ہیں.

عدالتوں نے بہت سے احکامات دیئے ہیں جو صفای کرمیوں کے حق میں ہیں. 2008 میں ماس ہائی کورٹ کا فیصلہ بھی ہے کہ سیور کی ہاتھ سے صفائی نہیں ہو گی. اس کے اگلے سال بھی چنئی میں گٹر صاف کرتے ہویے ایک شخص کی موت ہو گئی. انگریزوں نے ہر شہر کو گٹر لائن کے مطابق اپنے لئے بانٹ دیا. مدراس میں تو وهايٹ ٹاؤن اور بلیک ٹاؤن بن گیا. بلیک ٹاؤن میں شہر کو صاف کرنے والے رہنے لگے. زیادہ تر دلت تھے. دنیا کے کسی بھی شہر میں جہاں گٹر لائن بچھی ہے وہاں صاف کرنے والوں کو اسی نگاہ سے دیکھا گیا ہے. ان کے ساتھ امتیازی سلوک اور چھوت چھات کا سا برتاؤ کیا گیا. یہ فرق آج بھی موجود ہے اگر ہم چاہیں تو نظر آسکتا ہے. مدراس کی طرح دہلی میں بھی گٹر لائن امیروں کے علاقے میں بچھی ہیں. آج بھی یہی حالت ہے. تب بھی گٹر لائن مہنگی تھی، آج بھی اسے بچھانا کافی مہنگا ہے. دہلی میں ڈیڑھ لاکھ مین ہول اور پانچ ہزار کلومیٹر سے زیادہ لمبی گٹر لائن ہے.

صفائی پر ہندی میں لکھی یہ صرف ایک کتاب ہے جسے ہندی کے قاریٔین بہت کچھ جان سکتے ہیں. سوپان جوشی کی کتاب ‘جل تھل مل’ سے ایک بات بتاتا ہوں. ہم لندن کی ٹیمز ندی کی بات بہت کرتے ہیں مگر اسی ندی میں ایک اور ندی ملتی تھی فلیٹ. 17 ویں صدی سے پہلے فلیٹ ندی میں کشتیاں تیرتی تھیں، لیکن اس کے بعد میلا پانی بہنے لگا. آہستہ آہستہ دریا نالے میں بدل گئی اور اس کو پاٹ دیا گیا. ندی مٹ گئی اور اس جگہ کا نام پڑا فلیٹ سٹریٹ. لندن کے اخبارات کا یہ دفتر ہے. اودھیندر شرن نے بھی اس پر اچھا کام کیا ہے ان کی کتاب in the city out of place … oxford university سے آئی ہے جس میں دہلی کے شہری انتظام کے گزشتہ ڈیڑھ سال کی تاریخ باریک معلومات کے ساتھ دی گییٔ ہے. ویسے وجیے پرساد کی کتاب untouchable freedom بھی شاندار ہے. وجۓ پرساد نے بتایا ہے کہ دہلی میونسپل کارپوریشن نے بیسویں صدی کے شروع میں صفائی کے کام کو ٹھیکے پر دینا شروع کر دیا مگر ٹھیکیداروں کی لوٹ کی وجہ سے صفائی میں بہتری نہیں ہو سکی. 1915 میں بہت سارے ٹھیکیدار ہٹا دیے گئے جس کے خلاف ٹھیکیداروں نے ہڑتال کی تھی. اس کام میں جمادارو کی تب بھی چلتی تھی آج بھی چلتی ہے. تب 1933 میں (sweeper) بننے کے لئے دو ماہ کی سیلری جمعدار کو رشوت کے طور پر دینی پڑتی تھی تاکہ کام مل سکے. یہ بھی پتہ چلا کہ انگریزوں کے ٹائم میں دہلی میونسپل کارپوریشن موسم گرما میں کم صفایی کرمی رکھتا تھا، کیونکہ افسر لوگ شملہ چلے جاتے تھے، موسم سرما میں صاحب لوگ لوٹتے تھے تب صفایی کرمیوں کی تعداد بڑھ جاتی تھی.

یہ قصے اس لیے بتا رہا ہوں تاکہ اپنے شہر کی صفائی کے نظام کو جاننے میں دلچسپی پیدا ہو. جیسے پیرس کی سڑکوں پر اتنا میلا ہوتا تھا مل موتر کی ہائی ہیل کا فیشن چل پڑا. ہائی ہیل کے مقبول ہونے میں ایک وجہ یہ بھی بتایی جاتی ہے تاکہ پتلون کی موہری میں پاخانہ پیشاب نہ لگے. ڈاکٹر اشیش متل نے اتنی دیر تک گٹر میں اتر کر صفائی کرنے والوں پر کام کیا ہے. ان بیماریوں کا حال جانا ہے. ہم کبھی ڈاکٹر اشیش متل سے بھی بات کریں گے. ڈاکٹر اشیش بھی پریکسس کی رپورٹ ڈاؤن دی ڈرین کا حصہ تھے. 200 گٹر صاف کرنے والوں کا مطالعہ کر ڈاکٹر اشیش نے بتایا ہے کہ …

  • – اگر ہائیڈروجن سلفائڈ کی مقدار زیادہ ہے تو ایک بار سانس لینے ہی سے موت ہو جائے گی۔
  • – مرنے والوں کا پیٹرن ایسا ہے کہ ایک ساتھ تین مرتے ہیں۔
  • – جب ایک نہیں آتا ہے تو دوسرا جاتا ہے اسے دیکھنے تیسری جاتا ہے۔
  • – دہلی میں ایک جونیئر انجینئر کی بھی موت ہو چکی ہے۔
  • – 80 فیصد سیور صاف کرنے والے ریٹائرمنٹ ایج تک نہیں پہنچ پاتے ہیں۔
  • – انہیں کئی طرح کی بیماریاں گھیر لیتی ہیں اور وقت سے پہلے مر جاتے ہیں۔

گٹر میں ہائیڈروجن سلفائڈ، امونیا، متھین، کاربن ڈااكساڈ، سلفر ڈائی آکسائید، نائٹروجن آکسائڈ جیسی گیس ہوتی ہیں. پٹرول اور منریل سپيريٹ جیسے پٹرولیم اشیاء کا دخول بھی گٹر گیس کے نقصان میں اضافہ کا سبب بنتا ہے. اگر کم سطح پر ان کیمیکلز کی زد میں آئیں تو آنکھوں کی جلن، کھانسی اور گلے کی خارش، دم گھٹنا اور پھیپھڑوں میں کیمیکل جا سکتے ہیں. زیادہ دیر تک ان کی زد میں رہے تو تھکاوٹ، نمونیا، بھوک نہ لگنا، سر درد، جلن، يادداشت کم ہونا، چکر آنے جیسی بیماریاں ہو سکتی ہیں. طویل عرصے کے بعد سنگین بیماریاں بھی ہو سکتی ہیں. ویکسینیشن بہت ضروری ہے ان سیوریج ملازمین کے لئے کیونکہ وائرس کچرے میں ہوتا ہے. ٹی ٹی نس کا انجیکشن، ہیپاٹائٹس A، ہیپاٹائٹس B اور ٹائیفائیڈ ویکسین. 58 میں سے صرف 5 کا.

حفظان صحت پر ہندی میں لکھی میری ایک پسندیدہ کتاب ہے. جل تھل مل. اس کتاب کے کچھ سیاق و سباق سنانا چاہتا ہوں. بھارت میں برطانوی حکومت نے اپنی بستیوں کو صاف رکھنے کے لئے سیور بنائے. اس کے لئے ضروری جتنا پیسہ بھی لگایا لیکن ہندوستانی لاکھوں بستیوں میں گٹر کی نالی ڈالنے سے وہ کنارہ کشی کرتی رہی. دہلی میں گٹر کی تاریخ جاننے والے بتاتے ہیں کہ انگریز افسر طرح طرح کے بہانے بناتے تھے تاکہ ہندوستانیوں کی بستی پر خرچہ نہ کرنا پڑے. 1912 میں دہلی کے ایک سرکاری دستاویز میں پرانی دہلی کے ایک ڈاکٹر کہتے ہیں کہ كویل کو امیر طبقے کے لوگوں کے گھروں کے گٹر کی نالی سے جوڑنا چاہئے کیونکہ دوسرے لوگ اس کا خرچہ نہیں اٹھا سکتے ہیں. گٹر سے نکلا میلا پانی کسانوں کو آبپاشی اور کھاد کے لئے فروخت کیا جاتا تھا. اس کمائی میں انگریز حکومت کی دلچسپی تھی. میلے پانی کی دنیا کے کئی ممالک میں کسانوں کو آبپاشی کے لئے فروخت کیا جاتا تھا. یہ شاید اس کے بعد سے ہو رہا ہے جب سے میلے پانی کی نالیاں بن رہی ہیں. کئی جگہ آج بھی ایسا ہوتا ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close