آج کا کالم

طلبہ کے مستقبل سے کھلواڑ کب تک؟

رويش کمار

جب لاکھوں کروڑوں نوجوان پہلی بار ووٹر بننے کی عمر میں پہنچ رہے ہوتے ہیں تب ان کا سامنا دو تین قسم کے نظام سے ہوتا ہے. ایک لائسنس بناتے وقت، دوسرا دسویں اور بارہویں کے امتحان کے وقت. رشوت دے کر لائسنس بنانے یا امتحان میں پرچہ لیک ہونے، پیسے دے کر پاس ہونے کے تجربات کا ان پر کتنا برا اثر پڑتا ہوگا. جس نظام پر انھیں پہلے دن سے بھروسہ ہونا چاہئے، اس کے ساتھ ان نوجوانوں کے تعلقات کا آغاز ہی رشوت سے ہوتا ہے. یہی تجربہ جب اسے میڈیکل اور انجینئرنگ کے امتحان کے وقت ہوتا ہوگا تو اس کا یقین گہرا ہو جاتا ہو گا کہ اس ملک میں کچھ بننا ہے تو اس کا یہی طریقہ ہے. ہو سکتا ہے یہی مایوسی کی ایک وجہ بھی ہو. اس لئے ہمیں اس کی مانگ کرنی ہی چاہئے کہ ہندوستان میں امتحان کا نظام ایسا ہو جس میں کوئی عیب نہ لگا سکے.

ہر سال بورڈ کے امتحان ہوتے ہیں. میڈیا میں طرح طرح کی خبریں چھپتی ہیں. ایک ریاست کو لے کر زیادہ بحث ہوتی ہے، باقی کی نہیں لہذا اگر آپ کو تمام ریاستوں کی خبروں کو نکال کر دیكھے تو مسلہ بڑا نظر آتا ہے. ان خبروں سے ہندوستانی امتحان کے نظام کی جو تصویر بنتی ہے وہ اچھی نہیں ہے.

مہاراشٹر، کیرالہ، بنگال، مدھیہ پردیش راجستھان، بہار، ہماچل پر دیش، ہریانہ، تمل ناڈو، اڑیسہ اور جموں و کشمیر کی خبریں بتاتی ہیں کہ پیپر لیک ہوتے ہیں، لیک ہونے کی افواہ بھی اڑتی ہے اور امتحان منسوخ بھی ہوتے ہیں.

اسی سال مارچ میں مہاراشٹر میں جب بورڈ امتحان ہو رہے تھے تو اخبار لکھ رہے تھے کہ مسلسل تیسرے سال سوال پیپر لیک ہوا ہے. مراٹهی کا سوال نامہ لیک ہو گیا. 14 مارچ 2017 کے ہی انڈیا ٹوڈے پر خبر ہے کہ موبائل فون پر 12 ویں کا ریاضی کا پرچہ لیک ہو گیا. ہندوستان ٹائمز نے تو هیڈلان بنایی ہے کہ ایچ ایچ سي کے امتحان کے پانچ دنوں میں پانچ پیپر لیک ہو گئے.

16 مارچ 2017 کے انڈین ایکسپریس میں شملہ سے خبر شائع ہویی کہ پیپر لیک کی خبروں کی وجہ سے بورڈ نے 12 ویں کے طبیعیات اور کمپیوٹر سائنس کے پیپر منسوخ کر دیے ہیں. وزیر اعلی ویر بھدر سنگھ کو اسمبلی میں سوال نامہ کی چوری پر بیان دینا پڑا. ایوان کو بتایا ہے کہ ایک اسکول کا ڈبل تالا توڑا گیا اور ہر موضوع کے 60 سوال نامے غائب پائے گئے.

2015 میں بہار کے ویشالی ضلع ودھا نکیتن میں نقل کی اس تصویر سے پورا ملک صدمے میں آ گیا تھا. بہار بورڈ کی ٹاپر نے موضوع کو جھجھکور دیا تھا. بہار کے امتحان میں تنازعہ 2016 میں بھی رہا. اڑیسہ میں نقل نہ کرنے دینے پر طالب علموں نے ٹیچر کو ہی کمرے میں بند کر دیا. جموں و کشمیر میں اس سال فروری میں 10 ویں کی سائنس امتحان میں نقل کی اتنی خبر آئی کہ کچھ مراکز پر منسوخ کرنی پڑ گئی. اس سال جب راجستھان میں بارہویں امتحان کے پہلے دن ہی پرچہ لیک ہونے کی خبروں سے افسر پریشان ہو گئے، بعد میں پتہ چلا کہ افواہ تھی.

2015 میں تمل ناڈو میں ریاضی کا پرچہ لیک ہو گیا، چار استاد بھی گرفتار کیے گئے. بنگال میں اسی سال مارچ کے ثانوی امتحان میں فزیکل سائنس کا پرچہ لیک ہونے کی بات حکام نے مان لی. ٹیلیگراف نے لکھا ہے کہ افسر کہتے ہیں کہ پرچہ لیک نہیں ہوا ہے مگر وهاٹس پر جو سوال نامہ گھوم رہا ہے وہ فزیکل سائنس کا ہی سوال نامہ ہے. اپریل 2017 میں دسویں کلاس کا ریاضی کا پیپر آؤٹ ہو گیا. امتحان منسوخ ہوگیا اور انکوائری کا حکم دیا گیا. مدھیہ پردیش میں کیمسٹری اور فزکس کا پرچہ بھی وهاٹس اپ پر آنے کی افواہ اڑی تھی.

بتائیے گیارہ ریاستوں کی بورڈ امتحانات کا یہ حال ہے. اگر پیپر لیک ہونا آل انڈیا مسئلہ ہے تو اسے دور کرنے کی ضمانت ہر ریاست کو دینی چاہئے. ایماندار امتحان کے نظام کے بغیر ایماندار ثقافت بن ہی نہیں سکتی ہے. میں نہیں کہہ رہا کہ اخبار میں لیک ہونے کی خبر شائع ہوییں وہ تمام صحیح ہیں، ہو سکتا ہے نہ ہو لیکن ہر سال ان خبروں کو لوٹ آنا بتاتا ہے کہ چوری کرنے والے گروہ امتحان مراکز کے ارد گرد ہی رہتے ہیں. ہر امتحان کے بعد طالب علموں کے گروپ دو حصوں میں تقسیم ہو جاتا ہے. ایک جس نے نقل نہیں کی، دوسرا جس نے نقل. نقل کرنے والوں کو ہوشیار سمجھنے کی روایت پر روک لگنی چاہئے. دسویں اور بارہویں کے امتحان کے بعد میڈیل کے امتحان کی خبروں کو کھنگالنے بیٹھا تو صورت حال اتنی ہی خوفناک نظر آئی.

طب کی تیاری کرنے والے طالب علم اپنی ہڈی گلا دیتے ہیں، ماں باپ کا کتنا پیسہ خرچ ہوتا ہے اور جب انہیں پتہ چلتا ہوگا کہ نيٹ کے امتحان میں دھاندلی ہوئی ہے تو وہ خود کو کتنا بے بس پاتے ہوں گے. اگر ایک طالب علم بھی وياپم کے طریقے سے ایڈمشن پا جائے تو یہ سینکڑوں ایماندار طالب علموں کے ساتھ ناانصافی ہے. ہم کس طرح ان خبروں کو لے کر عام ہو سکتے ہیں. ہر سال جب 19-20 سال کے لڑکے چوری اور دھاندلی کی شکایت لے کر دہلی کے میڈیا ہاؤس کے باہر بھٹکتے ملتے ہیں تو انہیں دیکھ کر دکھ ہوتا ہے. ہم کیوں نہیں حکومت سے ایک پورے ثبوت ٹیسٹ کے نظام کا مطالبہ کر سکتے ہیں.

ایک ایماندار طالب علم کو کس طرح آپ کو سمجھايیں گے کہ پیسہ دے کر کوئی ڈاکٹر بن گیا. پھر کامپٹیشن کا کیا مطلب ہے. کیا ان خبروں کے بعد نيٹ امتحان سے منسلک کسی افسر کے خلاف کارروائی ہوئی. اس کی کوئی خبر ہمارے ہاتھ نہیں لگی. مختلف اخبارات کے یہ هیڈلان ایک جگہ جمع کر دیکھنے پر پتہ چلتا ہے کہ طبی امتحان میں نقل کی گنجایش لگتی ہے. شیطانی لوگوں کے گروہ ہر سال آتے ہیں اور کسی محنتی طالب علم کا حق اڑا لے جاتے ہیں. کیا ہمیں ایک ایماندار اور قابل اعتماد امتحانی نظام نہیں مل سکتا جس میں ایک بھی طالب علم کے ساتھ دھوکہ نہ ہو.

26 جولائی کے اخبارات میں ایک خبر شائع ہویی، National Eligibility Cum Entrance Test (NEET) کی پوسٹ گریجویٹ امتحان منعقد کرنے کے لئے جس امریکی کمپنی کو ٹھیکہ دیا گیا ہے، اس نے تسلیم کیا ہے کہ امتحان کے نظام کو کوئی ہیک کر سکتا. کیا حکومت سے یہ سوال پوچھنا ٹھیک ہوگا کہ جب بھارت ایک ساتھ 108 سیٹلائٹ خلا میں بھیج سکتا ہے تو کیا میڈیکل داخلہ امتحان خود منعقد نہیں کر سکتا ہے. کیا امتحانات بھی پرائیویٹ ایجنسیوں سے ہونے لگے ہیں. پھر لیک ہونے کی جوابدہی کس کی ہوگی، کس طرح اعتماد پیدا ہوگا کہ پرائیویٹ کمپنی نے کسی کے ساتھ سودا نہیں کیا ہوگا. دہلی پولیس کرائم برانچ مرکزی رینج کی چارج شیٹ سے پتہ چلتا ہے کہ دہلی پولیس نے چندی گڑھ اور نوئیڈا سینٹر کی جانچ کی، بہترین جانچ پڑتال کی ہے، مگر اسی طرح کی جانچ اگر ملک بھر میں ہو جاتی تو جانے کتنے بھرم ٹوٹتے اور کتنا بھروسہ. پہلے نيٹ امتحان کے نظام کو سمجھیے.

نیشنل ایگزامنیشن بورڈ نيٹ کا امتحان ايوجيت کرتا ہے. انڈر گریجویٹ اور پوسٹ گریجویٹ کی امتحان نيٹ کے تحت ہوتے ہے. انڈر گریجویٹ نيٹ امتحان میں 10-11 لاکھ طالب علم شامل ہوتے ہیں. پوسٹ گریجویٹ نيٹ امتحان میں تین لاکھ کے قریب طالب علم شامل ہوتے ہیں. یہ تین لاکھ وہ طالب علم ہیں جو پانچ سال کی میڈیکل تعلیم پڑھ چکے ہوتے ہیں. پی جی کے لیے تقریبا 25000 سیٹیں ہوتی ہیں جن میں سے دس گیارہ ہزار ہی سرکاری ہوتے ہیں. پرائیویٹ کالجوں سے پی جی کرنا کروڑوں کا کھیل ہے، اس لیے ہر ڈاکٹر سرکاری سیٹ کے لئے تیاری کرتا ہے. حکومت کی 10-11000 پی جی کی سیٹ میں سے 6-7000 ہی طبی ہوتی ہے یعنی جس میں آپ پریکٹس کر سکتے ہیں.

ایک ایک سیٹ کے لئے مارا ماری ہوتی ہے. ڈاکٹر میڈیکل کالج میں ایڈمشن لیتے ہی یعنی پہلے ہی سال سے پی جی کی تیاری شروع کر دیتا ہے. جب اس کی یہ پتہ چلے کہ اس میں بھی کچھ لوگ ایجنٹ تمام ایجنٹ کے ذریعہ ان کی محنت پر ڈاکہ ڈال رہے ہیں تو وہ کتنے مایوس ہوتے ہوں گے. دسمبر 2016 میں ہوئی پی جی نيٹ کے امتحان میں دھاندلی کی شکایت پر دہلی پولیس نے تحقیقات شروع کی تو کئی ایسی باتیں سامنے آئی ہیں جو حیران کرنے والی ہیں.

پی جی نيٹ کے امتحان کا ٹھیکہ امریکہ کی ایک کمپنی پرومیٹرك کو دیا گیا. اس کمپنی نے پولیس کو بتایا ہے کہ اس کے سافٹ ویئر سے چھیڑ چھاڑ ہو سکتی ہے. پولیس اس کی تحقیقات کر رہی تھی کہ امتحان کا سافٹ ویئر ہیک ہو سکتا ہے یا نہیں. 20 صفحات کی چارج شیٹ میں هیكنگ سے لے کر فکسنگ کی خطرناک کہانیاں ہیں. چارج شیٹ ہے، دوش ثابت نہیں ہوا ہے. ہم اس چارج شیٹ کے بہانے امتحان کے نظام کو سمجھنے کی کوشش کر رہے ہیں. دہلی پولیس پر ذمہ داری ہو گی کہ وہ اس چارج شیٹ کو ثابت بھی کرے. پولیس کو پتہ چلا کہ ملزمان نے ہیکنگ کی منصوبہ بندی امتحان شروع ہونے سے بہت پہلے بنا لی تھی. طالب علموں سے پیسے لے کر انہیں یہ بھی کہا گیا کہ کس سینٹر کا انتخاب کریں، اس کے آگے کا وہ لوگ دیکھ لیں گے. اس سلسلے میں دہلی پولیس نے چار افراد کو گرفتار بھی کیا ہے.

چندی گڑھ اور نوئیڈا کے امتحان مراکز کے دو سپروائزر نے کچھ طالب علموں کی مدد کی ہے. جس سرور سے امتحان ہو رہے تھے، اسے ہیک کر ان کی مدد کی گئی. پوچھ گچھ کے دوران پولیس کو پتہ چلا کہ امتحان کے لئے Prometric Testings Pvt Ltd کو ٹھیکہ دیا گیا ہے.

چارج شیٹ کے مطابق اس کمپنی نے CMS IT Services Pvt Ltd کے ساتھ معاہدہ کیا کہ وہ انجینئر اور ویب سائٹ سپروائزر اور دیگر عملے فراہم تاکہ ایگزام لیب تیار ہو سکے. CMS IT Services Pvt Ltd نے M / S Apex Services کے ساتھ معاہدہ کیا کہ امتحان كےدرو میں ٹیکنیکل اسٹاف کی ضرورت پڑے گی اس کو مہیہ کرے. پولیس کا خیال ہے کہ اتنی سخت کے بعد بھی سسٹم میں بہت سے ایجنٹ پیدا ہو گئے جو طالب علموں کو تلاش کرنے لگے کہ پیسے مل جائے تو اس کے اچھے رینک دے دیا جائے. پہلا مرحلہ ہے امیدوار کا ملنا. امیدوار ملتے ہی تمام ایجنٹ اپنے سینئر ایجنٹ کو بتا دیتا تھا. سینئر ایجنٹ والدین یا طالب علم کے رابطے میں آ جاتا ہے. یہ ایجنٹ سائٹ کے سپروائزر، انجینیر کے رابطے میں رہتے ہیں. امیدوار کو بتایا جاتا ہے کہ کون سا امتحان مرکز منتخب کرنا ہے. جہاں افسر اس کی نقل کرنے میں مدد کر سکتے ہیں.

امتحان منعقد کرنے والی کمپنی پولیس کو اس سافٹ ویئر کے بارے میں نہیں بتا سکی جس کے سہارے امتحان کو ہیک کیا گیا ہے. پیسے دینے والے طالب علم کو انٹرنیٹ کے ذریعہ ایگزام کمپیوٹر کا ایکسیس دے دیا گیا اور ایگزام ہال سے باہر کے کمپیوٹر سے جوڑ دیا گیا. یہ تو پوسٹ گریجویٹ امتحان کا ہال ہے۔ قریب تین لاکھ کے قریب طالب علم حصہ لیتے ہیں. انڈین ایکسپریس کی ایک خبر کے مطابق اس راستے سے کوئی 200 طالب علموں کے پاس ہونے کا خدشہ ہے. جس امتحان نظام پر لاکھوں طالب علموں اور ان کے خاندانوں پر اتنا بھروسہ ہے وہ اعتماد ٹوٹا کس طرح. کس کی وجہ سے. اس معاملے کو اٹھانے والے آنند رائے کا دعوی ہے کہ امریکی کمپنی کو بغیر ٹینڈر کے ہی امتحان منعقد کرنے کا ٹھیکہ دے دیا گیا. آنند رائے ہی مسلسل دو تین سال سے یہ معاملہ اٹھا رہے ہیں.

اس بار جب ایم بی بی ایس کے لئے نيٹ کے امتحان کے لئے طالب علم اور طالبات امتحان مرکز پہنچے تو ان سختی سے جانچ کی گئی. کپڑے اتار کر جانچ ہویی. کپڑے کتر دیے گئے. کیرل کا واقعہ ہے مگر چوری نہ ہو، کوئی نقل نہ کر سکے اس کے لئے ایسی چیکنگ ہوئی کہ واقعی سب کو لگا ہوگا کہ ان کے ساتھ کویی دھوکہ نہیں کرے گا. ابھی نقل ختم. باقاعدہ ڈریس کوڈ جاری ہوا کہ امتحان کیندر پر کس طرح پہنچنا ہے. کیرالہ کے کانپور میں تھوڑا زیادہ ہو گیا مگر طالب علموں کو ایک ایسی امتحان نظام کا انتظار تو ہے ہی جس پر آنکھ بند کر اعتماد کیا جا سکے. نيٹ پی جی کا حال تو دیکھ لیا آپ نے، اب اخبارات کی خبروں میں نيٹ انڈر گریجویٹ امتحان کا حال دیکھئے.

پٹنہ پولیس سی بی اییس سئ کی اجازت کا انتظار کر رہی ہے تاکہ جس ٹرک میں سوال نامے لائے گئے ان کی فورینزک تحقیقات ہو سکے. 7 مئی کو پٹنہ کے 32 اور گیا کے 20 مراکز پر نيٹ کا امتحان منعقد ہوا. پولیس کا دعوی ہے کہ اس نے سوال نامہ لیک کرنے کی کوشش کو ناکام بنا دیا. اس سلسلے میں بہت سے لوگوں کو گرفتار کیا گیا تھا. آپ 14 مئی 2017 کو ٹائمز آف انڈیا دیکھ سکتے ہیں. پٹنہ کے دینک جاگرن میں ایک دن پہلے صفحے پر خبر چھپتی ہے کہ سرغنہ سے تین کروڑ کی ڈیل ہوئی تھی امتحان پاس کرنے کے لئے.

ایک خبر کے هیڈلان میں کہا گیا ہے کہ پانچ گروہ ہیں جو 20 ملین میں پاس کرانے کی ضمانت لیتے ہیں. کئی جگہ سے ایسی بھی خبریں شائع ہویی  ہیں کہ پیسہ لے کر سینٹروں نے ٹھگا بہت امیدواروں کو، 145 کی جگہ 120 سوالات کے ہی جواب فراہم کیے. اس سال مئی میں منعقد نيٹ يوجي سی امتحان کی جانچ گوا پولیس کر رہی ہے، راجستھان کی اے ٹی ایس کر رہی ہے اور پٹنہ پولیس کر رہی ہے. آنند رائے نے جب دہلی پولیس کو شکایت کی تو زبانی جواب ملا کہ ابھی نيٹ پی جی کی تحقیقات میں ہی اتنا مصروف ہیں کہ نيٹ يوجي کی جانچ میں اتنا توجہ دینا ممکن نہیں ہے.

نيٹ ایم بی بی ایس اور نيٹ پی جی کا امتحان کا بندوبست مکمل طور چوری مکت نہیں ہے. نظام ایسا ہونا چاہئے کہ افواہ کی بھی گنجایش نہ رہے اور کوئی کسی کو ٹھگ نہیں پائے. اخبارات کی تراشہ دیکھتے ہوئے لگ رہا تھا کہ ہر ریاست میں اس امتحان کو لے کر گروہوں کا اپنا نظام ہے. یہ تب ہے جب اسی طرح سے وياپم گھوٹالہ ہوا تھا. یہاں تک کہ ایمس کا داخلۂ امتحان بھی مشکوک ہو جاتا ہے.

اسی 15 جون کو سی بی آئی نے ایمس ایم بی بی ایس کا سوال نامہ لیک ہونے کے الزام میں مقدمہ درج کیا ہے. 28 مئی کو امتحان ہوا تھا. دہلی ہائی کورٹ نے مرکزی حکومت، ایمز اور سی بی آئی کو ایمس کاغذ لیک کی صورت میں اسٹیٹس رپورٹ مانگی تھی. آنند رائے اس معاملے میں عرضی داخل کرنے والے ہیں اور پرشانت بھوشن وکیل ہیں. 16 اگست کو اگلی سماعت ہے. سی بی آئی نے کئی مقامات پر چھاپے ماری بھی کی ہے. 2003 میں ایمس کے امتحان کو لے کر بڑا گھوٹالہ سامنے آیا تھا. اہم ملزم رنجیت ڈان کا نام یاد رکھیں گے جو بینک، انجینئرنگ، میڈیکل کے سوال نامے لیک کرتا تھا. کئی بڑے لوگ اس کے کلائنٹ ہوتے تھے جو اپنے بچوں کو پیسے کے دم پر ڈاکٹر انجینئر بنا دینا چاہتے تھے. سی بی آئی کی جانچ ہوئی تھی. 100 کروڑ کا دھندہ تھا یہ. 2003 کے بعد 2017 میں سی بی آئی پھر ایمس امتحان کی تحقیقات کر رہی ہے.

مجھے پتہ ہے کہ یہ سوال رہنماؤں کے بیکار کے الزام تراشی جتنے اہم نہیں ہیں لیکن سوچیں کہ پیسہ دے کر بغیر تعلیم کے کوئی ڈاکٹر بن جائے اور خوش علاج کرنے لگے. بات صرف ڈاکٹر بننے کی نہیں ہے، حکومت نے عوام کا پیسہ ایک ایسے طالب علم پر خرچ کیا جو پیسے دے کر چوری کے راستے سے ڈاکٹر بنا ہے. ایک بار وہ چوری کے راستے سے ڈاکٹر بنے گا تو ڈاکٹری کی اخلاقیات پر عمل کس طرح کرے گا. اس ملک میں سیاسی وجوہات وياپم گھوٹالے پر مناسب طریقے سے بحث نہیں ہوئی لیکن ہونی چاہئے تھی. سپریم کورٹ نے سی بی آئی سے کہا ہے کہ فوری طور پر تمام معاملات میں چارج شیٹ فائل کیجیے اور ہارڈ ڈسک کی اطلاع بھوپال کے سی بی آئی ٹرائل کورٹ میں جمع کیجیے. 31 اکتوبر تک سی بی آئی سے کہا گیا ہے کہ تمام کیس میں چارج شیٹ فائل کرنی ہے. وياپم صورت میں 200 سے زیادہ ایف آئی آر درج ہیں.آنند رائے کا کہنا ہے کہ 2500 ملزم بنائے گئے تھے. 2000 گرفتار بھی ہوئے تھے.

وياپم کا بھانڈا تو پھوٹ گیا مگر کہیں ایسا نہ ہو کہ نيٹ کو لے کر بھی اس طرح کا گھوٹالہ ہو رہا ہو. ہندو اخبار کی رپورٹ ہے 4 اپریل 2017 کی. مدھیہ پردیش اسمبلی میں سی اے جی کی ایک رپورٹ رکھی گئی. اس میں کہا گیا کہ ریاستی حکومت نے امتحانات کے لئے مناسب ریگولیٹری فریم ورک رکھا ہی نہیں جس کی وجہ سے امیدواروں کا مستقبل خراب ہوا. وياپم ایک محکمہ ہے، ریگولیٹر ادارہ نہیں ہے. قوانین کو طاق پر رکھ کر افسروں کی تقرریاں کی گئیں. حکومت نے یہ بھی ڈیٹا نہیں رکھا کتنے امتحانات ہوئے ہیں. پتہ چلتا ہے کہ شفافیت کی زبردست کمی ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close