آج کا کالم

عدالتی نظام پر اٹھتے سوالات

ہری موہن مشرا

آزاد ہندوستان کی تاریخ میں سب سے دہشتناك فسادات میں ایک 2002 میں گجرات کے احمد آباد میں گلبرگ سوسائٹی قتل عام پر خصوصی عدالت کا فیصلہ اگر ذکیہ جعفری جیسے متاثرین اور دوسرے لوگوں کو حیران کر گیا تو یہ سمجھا جا سکتا ہے. 14 سال بعد آئے اس انصاف سے بہت سنگین اور تشویشناک سوالات اٹھ سکتے ہیں. اس فیصلے سے تو یہی لگتا ہے کہ 28 فروری 2002 کو مارے گئے 69 لوگوں نے خود ہی اپنی موت کو دعوت دی.

خصوصی جج پی بی دیسائی اس نتیجے پر پہنچے کہ ‘ متوفی جناب احسان جعفری (سابق کانگریس رکن پارلیمنٹ اور ذکیہ جعفری کے شوہر) کی جانب سے گولی چلانے سے کچھ ہلاکتوں کی وجہ سے بھیڑ مشتعل ہو اٹھی جو اکثریت کمیونٹی کے تھے’ ….. ورنا بھیڑ موٹے طور پر پتھر بازی اور گلبرگ سوسائٹی کے باہر کھڑی اقلیتی کمیونٹی کی گاڑیوں اور املاک کو ہی جلانے میں مشغول تھی.’ اب سوال ہے کہ جس سانحے میں صبح کے آٹھ بجے سے شام کے چار ساڑھے چار بجے تک قتل اور آتش زنی کا ننگا ناچ ہوا ہو، جس میں سابق کانگریس رکن پارلیمنٹ احسان جعفری سمیت 34 افراد زندہ جلا دیے گئے ہوں اور 35 لوگوں کو مردہ مان لیا گیا ہو اور شام ساڑھے چار بجے جب پولیس پہنچی تو سب کچھ ختم ہو گیا ہو، اس میں انتظامیہ کی ذمہ داری طے کیوں نہیں کی جا سکی؟

یہ سانحہ گجرات کے دارالحکومت میں ہو رہا تھا جہاں پولیس اور انتظامیہ کے لئے پہنچنا مشکل نہیں ہونا چاہئے. پھر بھی اس کی منصوبہ بندی یا سازش کی بات تو پہلے ہی عدالت مسترد کر چکی تھی کیونکہ جانچ اس سمت میں بڑھ ہی نہیں پائی. تاہم اس کی جانچ کرنے والے، سپریم کورٹ کے فرمان سے تشکیل کردہ خصوصی تفتیشی ٹیم (ایس آئی ٹي) کے نمائندہ رہے راگھون نے عدالت کے سازش والے پہلو کو مسترد کرنے پر ناخوشی ظاہر کی تھی. ویسے، یہ ایس آئی ٹی پہلے ہی ریاست کے اس وقت کے وزیر اعلی نریندر مودی کو فسادات کی ذمہ داری سے بری کر چکی ہے.

بنیادی طور پر اس سے سب سے بڑا سوال ہماری عدالتی نظام اور جرم کی تحقیقاتی کاروائی پر اٹھتا ہے. حال میں مرکزی وزارت داخلہ سے عشرت جہاں مڈبھیر کانڈ سے متعلق گمشدہ فائلوں کی جانچ کو لے کر ایک اخبار کی رپورٹ سے بھی یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ کس طرح ہماری تحقیقاتی کاروائی اوپری سطح پر بھی سیاسی شیشے سے دیکھی جاتی ہے اور کیسے نتائج طے کرکے تحقیقات کو اسی طرح موڑ دیا جاتا ہے؟ گجرات فسادات کی تحقیقاتی کاروائی کیسے چلی، اس کا انکشاف تو 2014 میں آئی منوج مٹا کی کتاب ‘دی فکشن آف فیکٹ فائنڈنگ: مودی اینڈ گودھرا’ بڑی تفصیل سے کرتی ہے.

حال میں آئی رانا ایوب کی کتاب ‘گجرات فائلز: اناٹومی آف اے کوراپ’ تو اور بھی سنگین انکشافات کرتی ہے، جس سے دل دہل اٹھتا ہے. رانا ایوب کی یہ کتاب تہلکہ میگزین کے لئے کئے گئے ان کے اسٹنگ آپریشن اور انٹرویوز پر مبنی ہے جسے میگزین نے شائع کرنے سے انکار کر دیا تھا. اس میں گجرات کے اس وقت کے سینئر پولیس افسران اور بر سر اقتدار جماعت کے رہنماؤں سے بات چیت کی گئی ہے. بلا شبہ، یہ بات چیت خفیہ طریقے سے ریکارڈ کی گئی. ایوب کا الزام ہے کہ میگزین نے اسے سیاسی دباؤ میں نہیں شائع کیا لیکن میگزین کے سابق ایڈیٹر نے اس کی وجہ ادارتی خدشات کو بتایا ہے.

‘گجرات فائلز’ 2002 فسادات کے بعد مڈبھیڑ میں ہوئی اموات کا ذکر کرتی ہے اور بتاتی ہے کہ سینئر پولیس افسران نے یہ سب کس طرح انجام دیا. 2003 سے 2006 کے درمیان گجرات میں کئی مشہور تصادم ہوئے. ان میں عشرت جہاں، سہراب الدین شیخ، کوثر بی اور تلسی رام پرجاپتی کے معاملے خاصے مشہور ہوئے. ان تصادم پر سوالات اٹھنے لگے تو کئی سینئر پولیس افسران اور اس وقت کے وزیر داخلہ امت شاہ سے پوچھ گچھ ہوئی، گرفتاری ہوئی اور معاملہ اب بھی زیر التوا ہے.

گجرات فائلز سےابھرنے والی تصویر بتاتی ہے کہ جب ہمارے نظام سے توازن کا عمل غائب ہو جائے تو کیسے بھیانک مناظر وقوع پذیر ہو جاتے ہیں. ایوب نے جن حکام سے بات چیت کی، وہ بے بس سے لگتے ہیں کیونکہ وہ جانتے تھے کہ وہ جو کر رہے ہیں وہ جائز یا قانونی  کبھی نہیں ہو سکتا ہے. یہی نہیں، اس کے لئے ان کے پاس کوئی تحریری فرمان بھی نہیں تھا. وہ حکم اس لیے مان رہے تھے کیونکہ ایسا نہ کرنے پر ان کا کریئر مشکل میں پڑ جاتا. حالاں کہ کچھ کے فرقہ وارانہ تیور بھی اجاگر ہوتے ہیں. کچھ تو یہ بھی بتاتے ہیں کہ کس طرح تقرریوں میں کچھ ذاتوں کو ترجیح مل رہی تھی.

ظاہر ہے، ایوب نے ان افسروں اور رہنماوں سے رابطہ اپنی شناخت چھپا کر کیا تھا. انہوں نے امریکہ میں مقیم فلم ساز میتھلی تیاگی کا نام اپنایا تھا اور خود کو پکا آر ایس ایس حامی بتایا تھا. اس طرح انہیں گجرات فسادات اور اس کے بعد اہم عہدوں پر رہے پولیس حکام جی ایل سنگھل، راجن پیريدرشي، پی سی پانڈے، جی سی ریگر سے بات کرنے کا موقع ملا. انہوں نے سینئر بیوروکریٹ اشوک نارائن کے علاوہ سابق وزیر مایا کوڈنانی اور یہاں تک کہ مودی سے ملنے میں کامیابی حاصل کی.

اس کتاب میں سب سے زیادہ پریشان کن بات یہ لگتی ہے کہ پولیس افسر جان بوجھ کر مشتبہ مڈبھیر کو انجام دے رہے تھے اور اسے اپنی ڈیوٹی کا حصہ سمجھتے ہیں. کچھ ہی میں اس کے تئیں کوئی پچھاوا دکھتا ہے. خیر، اس سے ہماری عدالتی نظام اور تحقیقاتی کاروائی پر جو سنگین سوالات کھڑے ہوتے ہیں، وہ قابل غور ہیں. مثلا، اگر 14 سال بعد فیصلہ آتا ہے اور وہ متاثرین کو نامکمل لگتا ہے تو یقینی طور پر اس عدالتی نظام میں بنیادی اصلاحات کی ضرورت ہے. اصلاحات کا یہ تقاضا ان صورتوں میں تو اور بھی سنگین ہو جاتا ہے، جہاں 14-15 سال بعد لوگ دہشت گردانہ وارداتوں کے جرم سے بری کر دیے جاتے ہیں. جیسا کہ مکہ مسجد، بیسٹ بیکری واقعات سمیت کئی ریاستوں میں دہشت گردانہ وارداتوں کے سلسلے میں گرفتار کئے گئے لوگوں کے ساتھ ہوا. ان زیادہ تر معاملات میں پولیس انہیں گرفتار کرنے کا جواز ثابت نہیں کر پائی. لیکن انہوں نے اپنی زندگی کے جو انمول سال گنوا دیے، انہیں کون لوٹائے گا. فسادات اور دہشت گردانہ وارداتوں کے مقدمات میں پولس تحقیقات پر شکوک و شبہات کے ڈھیروں معاملے عوامی بحث میں طویل عرصے سے  رہے ہیں. حکومت کے پاس عدالتی نظام اور تحقیقاتی عمل میں بنیادی اصلاحات کی کئی کمیٹیوں کی سفارشات دھول پھانک رہی ہیں، کیا یہ موقع نہیں ہے کہ اب ان پر شدت سے غور کیا جائے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close