آج کا کالم

مظفر نگر فسادات سے کیا سیکھا ہم نے؟

رتن منی لال

سات ستمبر کو مظفرنگر فسادات کی تیسری برسی تھی. اسی دن 2013 کو ایک چھیڑخوانی کے واقعہ کو نظرانداز کرنے کا نتیجہ ایک ایسا خوفناک فرقہ وارانہ فساد تھا جس میں 62 سے زیادہ لوگوں کو جان گنوانی پڑی. ہزاروں لوگ سماجی و فرقہ وارانہ منافرت کا شکار ہونے کی وجہ سے بے گھر ہوئے. اگرچہ کچھ ہی دنوں میں یہ واضح ہو گیا تھا کہ ایک فرقے کے لوگوں کے ذریعہ چھیڑخوانی کی مخالفت کرنے کے خلاف ہوئے تشدد نے ایسی بھیانک شکل اختیار کر لی تھی کہ ارد گرد کے گاؤں اور اضلاع میں بھی دونوں فرقوں کے لوگ ایک دوسرے کے خون کے پیاسے ہو اٹھے تھے.

اس کے کچھ ہی مہینوں میں ہوئے لوک سبھا انتخابات میں کم از کم ایک جماعت کو تو یہاں کے پولرائزیشن کا فائدہ ہوا، یہی نہیں، اتر پردیش کی سماج وادی پارٹی کی حکومت نے جس طرح سے یہاں کے حالات کا سامنا کیا اس سے اس پارٹی کو نہ تو ہندو طبقہ کی حمایت ملی نہ ہی مسلم طبقہ کی. عام تأثر اس وقت بھی یہی تھا اور آج بھی یہی ہے کہ مقامی انتظامیہ اور پولیس نے یک طرفہ کارروائی کی جس سے دوسری فریق میں عدم اطمینان بڑھا اور اس سے متعلق باتیں اور بحثیں بھی خوب ہوئیں. ریاستی حکومت نے ایک جانچ کمیشن بھی تشکیل دی جس نے دیر سویر اپنی رپورٹ بھی داخل کر دی لیکن جو سوالات واقعہ کے پہلے دن اٹھے تھے وہ آج بھی جواب طلب ہیں.

کیا کسی بڑے فرقہ وارانہ فسادات کے بعد صرف متعلقہ علاقے کی انتظامیہ اور پولیس ذمہ دار ہوتی ہے؟ کیا اس ملک کی حکومت اور حکمران پارٹی کی کبھی غلطی نہیں ہوتی؟ کیا ریاست کی دارالحکومت میں بیٹھے اعلی حکام سے صرف یہی جوابدہی ہے کہ وہ اس ملک میں حکومت چلا رہی پارٹی کے مفادات کو ہی دیکھیں؟ کیا قصورواروں کو سزا دینے اور بے گناہوں کو تشدد کا نشانہ نہ بنانے کی ذمہ داری ان کی نہیں ہے؟

اس سے بھی سنگین سوال یہ ہے کہ کیا مظفرنگر سے پہلے ہوئے تمام فسادات کی حقیقت جاننے کے لئے بٹھائے گئے کمیشن کی رپورٹوں کا واقعی میں کوئی مطلب ہے بھی؟ یا ایسے کمیشن صرف فوری طور پر اٹھے طوفان کو پرسکون کرنے کا ایک طریقہ ہیں جن کی افادیت کے بارے میں حکومت، اپوزیشن، انتظامیہ اور عوام سب جانتے ہیں؟

ان فسادات میں مظفرنگر اور اس سے لگے ہوئے شاملی میں 60 سے زیادہ افراد ہلاک ہو گئے تھے اور ہزاروں کی تعداد میں لوگ بے گھر ہوئے تھے. واقعہ کے بعد آئے سرما کے مہینوں میں صورت حال کافی خراب ہو گئی تھی کیونکہ جہاں بے گھر لوگوں کے لئے عارضی کیمپ بنائے گئے تھے وہاں سردی سے بچنے، طبی اور سیکورٹی کی سہولیات کافی نہیں تھیں. یہی نہیں، بحالی کے دوران متأثرہ خاندانوں کی خواتین کے ساتھ زیادتی کے واقعات کی خبریں بھی آئی تھیں.

فسادات کے دوران اور اس کے بعد کی انتظامی کارروائی میں سب سے زیادہ سوال حکمران پارٹی کے ایک رخے رویہ پر اٹھے ہیں. فسادات جس واقعہ پر بھڑکے اس پر فوری طور پر کارروائی نہ کرنے سے لے کر فسادیوں اور متاثرین کے تئیں کئے گئے سلوک پر وہاں کے لوگ آج بھی ناراض ہیں. ریاستی حکومت نے معاملے کی تحقیقات کے لئے جو ایک رکنی انکوائری کمیشن تشکیل دی اس کی رپورٹ میں بجائے اس طرح کے سوالوں کو اٹھا کر ان کے جواب تلاش کرنے کے، سیدھے سیدھے دو اہم جماعتوں کے رہنماؤں کوجذبات بھڑکانے کا مجرم مانا ہے اور میڈیا کو بھی واقعات کو بڑھا چڑھا کر بتانے کا مجرم قرار دیا ہے. پولیس کے کچھ افسران کو ایک حد تک واقعہ پر کنٹرول کرنے میں ناکام رہنے کا مجرم قرار دیتے ہوئے کمیشن نے اپنی رپورٹ میں ریاستی حکومت پر کوئی بھی تبصرہ نہیں کیا ہے.

یہ عجیب بات ہے کہ ان فسادات میں خصوصی طور پر رساکشی دلتوں اور مسلم طبقے کے درمیان دیکھی گئی تھی، خاص طور پر دیہی علاقوں میں. ان اضلاع اور آس پاس کے رہنے والے پرانے لوگوں میں بھی اس بات پر حیرت اور تشویش تھی اور اب بھی ہے کہ یہ دونوں طبقے کئی نسلوں سے ساتھ ساتھ رہ رہے ہیں اور ان کے درمیان سماجی اور کاروباری تعلقات بھی رہے ہیں، لیکن پھر بھی فسادات کے دوران دلت طبقے کے لوگوں نے فسادات میں فعال کردار ادا کیا تھا. ان دنوں اکثر بلائے جانے والی مہاپنچايتوں میں بھی دلتوں نے کھل کر اور بڑی تعداد میں حصہ لیا تھا. فسادات کے بعد لکھی گئی پولیس رپورٹ میں بھی دلتوں کا قصورواروں کے طور پر نام ہے اور بہت سے جیل میں بھی ہیں. ایک مقامی رپورٹ کے مطابق، مسلم کمیونٹی کے لوگوں کے وہاں سے فرار کے بعد خوش حال جاٹ کسانوں اور جاگیرداروں نے اب دلتوں کو کام پر رکھا ہوا ہے.

اس طرح دلتوں کا مسلم کمیونٹی اور جاٹ طبقے کے ساتھ ایک نئی سماجی برابری ابھری ہے جس کے اصل میں تین سال پہلے کے فسادات کا درد تو ہے ہی، ساتھ ہی یہ شکایت بھی ہے کہ ریاستی حکومت نے معاوضہ دینے اور تادیبی کاروائی کرنے میں یک طرفہ فیصلے لئے ہیں. سیاسی طور پر پوری ریاست میں جس طرح بہوجن سماج پارٹی دلت مسلم اتحاد بنانے کی کوشش کر رہی ہے، اس کی راہ میں یہ سماجی حقیقت آ سکتی ہے. مقامی دلت اور جاٹ لوگ یہ بھی یاد کرتے ہیں کے فسادات کے بعد ہوئے سیاسی واقعات میں بہوجن سماج پارٹی کے مقامی رہنما قادر رانا اور دیگر رہنما اکثر مسلم طبقے کے حق میں ہی کھڑے نظر آتے تھے. یہ بھی قابل غور ہے کہ مظفرنگر کے واقعہ کے بعد اتر پردیش میں ہوئے بہت فرقہ وارانہ واقعات میں مسلم اور دلت طبقے کے لوگ آمنے سامنے تھے.

مظفرنگر کے فسادات کا سیاسی فائدہ ایک پارٹی کو ملا. یوپی میں ضمنی اسمبلی انتخابات سے پہلے بھی ایسے ہی کئی واقعات پیش آئے. ایسے میں یہ اندازہ مشکل نہیں ہے کہ فسادات کے واقعات کو پھر سے اٹھانے کا سیاسی فائدہ کسے ہونے والا ہے. ویسے، سیاسی نفع نقصان کے لحاظ سے دیکھیں تو حکمران پارٹی ہو یا اپوزیشن پارٹیاں، ایسے تمام واقعات / مدعے کا استعمال سب نے اپنی پوزیشن مضبوط کرنے کے لئے ہی کیا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رتن منی لال

مضمون نگار سینئر صحافی ہیں۔

متعلقہ

Close