آج کا کالم

مودی جی یہ ‘وکاس پرش’ کی زبان نہیں ہے!

یہ 2017 ہے اور جیسا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے حامی زور دیتے ہیں، کہ ہم ‘لبرلس’ (اعتدال پسند) اب تک 2002 میں ہوئی تقریب میں ان کے مبینہ کردار میں پھنسے ہوئے ہیں اور ان کی ترقی کے معاملے کو نہیں دیکھ رہے ہیں. الزامات میں کچھ تو سچائی ہوتی ہی ہے. لیکن ہم اعتدال پسند جب بھی این ڈی اے حکومت کے کام پر توجہ مرکوز کرنے کی کوشش کرتے ہیں یا پھر وزیر اعظم کو اتر پردیش کی فلاح و بہبود کے بارے میں بات کرتے ہوئے سنتے ہیں، وہ ایسا کچھ کہہ دیتے ہیں کہ ہم واپس تاریخ میں پہنچ جاتے ہیں.

کچھ پس منظر. میں معافی کے ساتھ کہنا چاہوں گی کہ مودی اور امت شاہ پر ایک کتاب کی میں مصنفہ ہوں اور میں مودی کے بطور وزیر اعلی 2002 میں گجرات میں ہوئے انتخابات میں دی تقریر سے کوٹ کرنا چاہتی ہوں، ” میں نے انہیں بتایا کہ شنوائی بڑے پیمانے پر میں نے نرمدا پانی لے کر آیا ہوں. اگر وہ صحیح راستے پر چلتے تو انہیں رمضان میں اسے حاصل، ہمیں کیا کرنا چاہئے. ”ان کے لئے ریلیف کیمپ کرنا چاہئے؟ کیا ہمیں بچے پیدا کرنے کے مرکز کھولنے چاہئے؟ ہم پانچ اور ہم 25 بچے پیدا کریں گے. گجرات کی بڑھتی ہوئی آبادی پر روک نہیں لگا پایا ہے اور غریب آدمی کو پیسہ نہیں مل پا رہا ہے. ”

اب ہم واپس موجودہ میں آتے ہیں. 15 سال بعد مودی جی ملک کے وزیر اعظم ہیں. وہ  ‘وکاس پرش’  ہیں جو تمام برعکس حالات میں ملک کی سلامتی کے لئے 56 انچ سینے کی بات کرتے ہیں. جیسا کہ ہم مانتے ہیں، بطور شہری ہم کسی بھی نسل، مذہب، فرقے سے ہوں، پہلے ہم سب دیشواسی ہیں.

فتح پور کی انتخابات ریلی میں اتوار کو وزیر اعظم مودی نے ایسا کچھ کہا جس سے ان لوگوں کو دکھ ہوا ہوگا جو 2002 کی باتوں کو بھول جانا چاہتے تھے. اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو پر طنز کرتے ہوئے مودی نے کہا، ‘گاؤں میں اگر قبرستان بنتا ہے تو شمشان بھی بننا چاہئے. رمضان میں بجلی ملتی ہے تو دیوالی پر بھی بجلی ملنی چاہئے. ذات مذہب کی بنیاد پر تفریق نہیں ہونا چاہئے. ‘ اس کے جواب میں اکھلیش یادو نے زور دے کر کہا ہے کہ وہ گنگا کی قسم کھا کر کہتے ہیں کہ کوئی بھی امتیازی سلوک نہیں کیا گیا ہے.

یہ کوئی اشارہ نہیں تھا، یہ واضح طور پر مذہبی بنیاد پر پولرائزیشن کی کوشش ہے. اس بات سے ہم واپس 2002 کی بات یاد کرنے پر مجبور ہوئے. یہ سیاسی بیان بازی کا نچلا سطح ہے. جیسا کہ توقع تھی، ان کے سیاسی حریف اکھلیش یادو نے امیتابھ بچن سے کہا کہ گجرات کے گدھے کی تشہیر کرنا بند کر دیں. سیاسی بات چیت ڈوب گیا ہے.

اپنے پرانے کالم میں میں نے تفصیل سے بحث کی تھی کہ کس قسم اکھلیش یادو نے مظفرنگر فسادات کے متاثرین کے مسائل کو حل کرنے میں غیر ذمہ دارانہ رویہ اپنایا تھا. لیکن مودی کا سیاسی بیان کافی نقصان دہ ہے. مودی اب صرف اسٹار کمپینر نہیں ہیں. وہ بھارت کے، دنیا کے سب سے بڑے جمہوری ملک کے وزیر اعظم ہیں.

وزیر اعظم نے وہ بات بولی جس سے لوگ ناراض ہوئے، ریاست نے 2014 میں مظفرنگر فسادات کے بعد پولرائزیشن دیکھا ہے. پی ایم مودی کی پارٹی کے صدر امت شاہ نے ایک دوسری انتخابی ریلی میں اپنے سربراہ کو مایوس نہیں کیا. انہوں نے متھرا میں بھیڑ سے پوچھا کہ کیا انہیں اکھلیش حکومت نے لیپ ٹاپ دیئے. بھیڑ کا جواب نہ میں تھا. پھر اپنی تقریر کی شدت بڑھاتے ہوئے انہوں نے مسلمانوں کا بالواسطہ ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ان لوگوں کو اکھلیش حکومت سے لیپ ٹاپ مل گئے ہیں. بی جے پی نے ابھی تک اس بات کا کوئی ثبوت نہیں دیا ہے کہ لیپ ٹاپ کی تقسیم میں کسی قسم کا امتیازی سلوک ہندوؤں کے ساتھ ہوا ہے. کیا یہ پیش گوئی کی ہے؟

ایسا نہیں ہے کہ مودی اور ان کے وزراء پر پہلی بار انتخابات کو فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوشش کا الزام لگا ہے، خاص طور پر ایسے ریاستوں میں جہاں پر انہیں سخت تصادم کا سامنا کرنا پڑ رہا ہو. بہار میں انتخابات کے دوران امت شاہ نے کہا تھا کہ اگر وہ اقتدار میں نہیں آئے تو پاکستان میں آتش بازی پھوٹےگے.

وزیر اعظم نریندر مودی کے اعلان کردہ بدعنوانی پر جراحی ہڑتال یعنی نوٹبدي کے بعد یہ پہلا الیکشن ہے. اگر پی ایم مودی کو واقعی میں اتر پردیش میں اکھلیش یادو حکومت کی طرف سے طاقت کے غلط استعمال کی فکر ہے یا پھر وہ اپنی حکومت کی ترقی کے ایجنڈے کو دکھانا چاہتے ہیں تو پھر وہ نوٹبدي کی بات کیوں نہیں کرتے ہیں، کیوں نہیں وہ کالے دھن کو واپس لانے وعدے پر بات کرتے ہیں.

اگر بیان بازی کو ایک طرف رکھ دیں تو اترپردیش میں عام آدمی کے لئے بنیادی ضروریات بجلی، لڑکیوں کی حفاظت، تعلیم اور بدعنوانی سے پاک ریاستیں ہیں. اگر کوئی ووٹر کسی بات کو لے کر سروے کرے گا تو شاید شمشان کا میدان سب سے آخر میں آئے گا.

یہ صاف ہے کہ ‘سب کا ساتھ سب کا ترقی’ نعرے کے ساتھ اقتدار میں آئے وزیر اعظم کے لئے اس انتخاب میں کافی کچھ داؤ پر لگا ہے. یہ بھی واضح ہے کہ ان کی پارٹی کو ریاست میں ایک بھی مسلم امیدوار نہیں ملا جو اسمبلی الیکشن لڑ سکے. یہ صاف ہے کہ وزیر اعظم 2002 کے اپنے پانی والے بیان سے ایک انچ بھی آگے نہیں بڑھے ہیں. اس بیان میں انہوں نے کہا تھا کہ وہ شراون میں گجراتیوں کے لئے پانی لانا چاہتے ہیں نہ کہ رمضان المبارک کے وقت …

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close