مودی حکومت کے دو سال کے اشتہارات

بدھ کے روز اخبارات میں کیرالہ کے وزیر اعلی پنارايی وجين چھائے ہوئے تھے. جمعرات کے دن وزیر اعظم مودی چھائے ہوئے ہیں. ملک کے مختلف ریاستوں سے نکلنے والے تمام زبانوں کے اخبارات میں یہ اشتہارات شائع ہوئے ہیں. میڈیا کے کئی ذرائع میں کئی دنوں سے اشتہارات شائع ہوتے آ رہے ہیں. اخبارات کی تعداد اور اخراجات کا پتہ لگانا ممکن نہیں ہو سکا، لیکن 26 مئی کے دن مودی حکومت کے دو سال پورے کرنے پر یہ اشتہار شائع ہوئے ہیں. آپ سے امید کی جاتی ہے کہ آپ ہی کے دیے گئے پیسے سے آپ کی ہی منتخب حکومت کے کام کاج کا حساب آپ ہی تک پہنچانے کی اس کوشش کو خالی نہ جانے دیں. صبح اگر نہیں پڑھ سکے تو گھر لوٹ کر پلٹ کر ضرور پڑھیں کہ حکومت نے کیا کیا کام کرنے کا وعدہ کیا ہے. اگر آپ ان اشتہارات کو مناسب طریقے سے نہیں پڑھیں گے تو اپنے ہی ہاتھوں اپنا ہی پیسہ ضائع کریں گے.

مجھے یقین ہے کہ ایک دن ایسا آئے گا جب حکومت اشتہارات دیتے وقت انھیں صفحات یا ہورڈنگ  پر اس کا خرچ بتائے گی جیسے جب کیرالہ کے وزیر اعلی پنارايي وجين کا اشتہار انگریزی کے اخبارات میں چھپا تھا تب بی جے پی کے لیڈر آر بالاشنكر نے ٹویٹ کیا کہ سی پی ایم کتنی بازاروادی بن گئی جس نے پنارايی کے حلف برداری کے موقع پر قومی اخبارات میں دو صفحات کا اشتہار دیا ہے. ڈی این اے اخبار نے بھارتی جنتا پارٹی کے جنرل سکریٹری کیلاش وجے ورگی کا بیان شائع کیا ہے کہ ایسا لگتا ہے سی پی ایم اپنے نظریات سے دور جا رہی ہے. پارٹی ان کے قدموں کی پیروی کر رہی ہے جن کی تنقید کرتی تھی.

ویسے موقع تھا کہ آج سی پی ایم کے رہنما جم کر مودی حکومت کے اس اشتہار کو لے کر ہنگامہ کرتے، پر لگتا ہے کہ اخبار وہ بھی ٹھیک سے نہیں پڑھتے ہیں. مجموعی طور پر معاملہ "از اكیول ٹو” کا ہے. اشتہار صرف مخالف کی حکومت کا غلط ہے. اپنی حکومت کا نہیں. اگر مخالف کی حکومت ہماری پارٹی کے اخبار میں اشتہارات دے تو غلط نہیں ہے. بنگال سے سی پی ایم کا ایک ترجمان اخبار ہے ‘گنشكتی’. پارٹی کا ہی اخبار ہے. اس اخبار کے پہلے صفحے پر مودی حکومت کا اشتہار چھپا ہوا ہے. کیلاش وجے ورگی جی نے ‘گنشكتی’ کا صحفہ اول دیکھا ہوتا تو ڈر ہی جاتے اور کہتے کہ کہیں سی پی ایم اپنے نظریات سے دور جاتے جاتے ان کے نظریات کے قریب تو نہیں آ رہی ہے. کیا ایسا دن آ سکتا ہے کہ بی جے پی کے ‘کمل سندیش’ پر سونیا گاندھی کی تصویر شائع ہو جائے اور کانگریس کے ترجمان اخبار ‘کانگریس سندیش’ پر وزیر اعظم مودی کی. ‘کمل سندیش’ اور ‘کانگریس سندیش ‘، نام بھی ایک جیسا ہے دونوں کا.

‘سامنا’ شیوسینا کا اخبار ہے. اس کے اداریہ کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ پارٹی اور پارٹی سربراہ کی رائے ہے. ‘سامنا’ میں مودی حکومت کے دو سال پورے ہونے پر اداریہ شائع ہوا ہے. اس میں کہا گیا ہے کہ مودی جادو نہیں چلا. علاقائی جماعتوں کو نہیں شکست دے سکے. ‘سامنا’ نے لکھا ہے کہ مودی حکومت نے ایک کے بعد ایک منصوبے شروع کئے، لیکن لوگوں کو چند ہی منصوبوں کے بارے میں معلوم ہے. پرانی حکومت بھی یہی سب منصوبے مختلف نام سے چلا رہی تھی جو بدعنوانی میں پھنس کر رہ گئی.

شاید کہنے کا یہ مطلب ہے کہ ان اشتھارات کا خاص فائدہ نہیں ہو پا رہا ہے. میں نے بھی آپ سے کہا ہے کہ اشتہارات آپ کے پیسے سے ہی چھپتے ہیں اس وجہ سے آپ ضرور دیکھیں. پڑھیں کہ حکومت نے کیا کیا کام کیا ہے. ویسے مودی حکومت نے ‘سامنا’ اخبار میں پہلے صفحہ کے لئے اپنی حکومت کا اشتہار دیا ہے. پہلے صفحہ پر مودی جی نظر آ رہے ہیں. ادارتی صفحہ پر مودی جی کی تنقید ہے.

کانگریس نے کہا ہے کہ یہ اشتہارات کی حکومت ہے. اشتہارات کو لے کر کانگریس اور بی جے پی اکثر دہلی کے عام آدمی پارٹی کی حکومت کی سخت تنقید کرتے ہیں. یہ بھی صحیح ہے کہ کسی نے 500 کروڑ سے زیادہ کا بجٹ نہیں سنا تھا، اس وجہ سے بھی لوگوں میں ناراضگی بڑھی لیکن کیا کسی کو پتہ ہے کہ مرکز کے ان اشتہارات پر کتنے خرچ ہوئے. پتہ چلے تب تو ہنگامہ ہو کہ کتنا پیسہ خرچ ہوا. عام آدمی پارٹی کے رہنما اور وزیر اعلی کیجریوال نے جب اپنے گھر آئے اخباروں کے پہلے صفحے پر مودی ہی مودی دیکھا تو انہیں لگا کہ از اكیول ٹو کرنے کا موقع ہے. انہوں نے جھٹ سے ٹویٹ کیا اور پٹ سے چینلوں پر چل بھی گیا. ٹویٹ پر وزیر اعلی کا کہنا ہے کہ مودی سرکار دو سال کی سالگرہ کے پروگرام پر 1000 کروڑ روپے سے زیادہ خرچ کر رہی ہے. جبکہ دہلی حکومت کے تمام محکموں کے سالانہ اشتہاراتی اخراجات 150 کروڑ سے بھی کم ہیں.

دقت ہماری سیاست ہے. مقابلہ کے چکر میں یہ پارٹیاں دلیل کم اپنا فائدہ زیادہ دیکھتی ہیں، اس لیے ایسے مسائل میں پھنس جاتی ہیں. یہ بھی تو سوچنا ہو گا کہ ہم  ہی پوچھتے ہیں کہ حکومت نے کیا کیا. تو حکومت کس طرح بتائے گی. ایک طریقہ اشتہارات تو ہے ہی. اب آپ کو ایک کسان کی کہانی بتاتا ہوں. ناسك سے کشور بیلسرے نے ایک کسان کی کہانی بھیجی ہے.

ایک روپے کا سکہ لیے یہ کسان آپ سے کچھ کہنا چاہتا ہے. دیوی داس پربھنے کی زندگی کا حساب اگر آپ سلجھا سکتے ہیں تو پلیز ڈو سمتھنگ. دیوی داس کے پاس پونے کے بازار کی رسید ہے. دیوی داس جی 952 کلو پیاز فروخت کر آئے تھے. فروخت کر کے جب حساب کیا تو بچا ایک روپیہ. ایسا نہیں ہے کہ انہیں دام نہیں ملے. 952 کلو پیاز بیچ کر انہیں 1523 روپے 20 پیسے ملے.

کمائی: 1,523.20 روپے

ٹرانسپورٹ: 1,320.00 روپے

کمیشن: 91.35 روپے

مزدوری: 77.55 روپے

دیگر: 33.30 روپے

کل بچت: 1.00 روپے

دراصل ہوا یہ ہے کہ ناسك میں ایشیا کے پیاز کے سب سے بڑے تھوک بازار میں اپریل سے دام گر کر ایک تہائی رہ گئے ہیں. کسانوں کا کہنا ہے کہ 100 کلو پیاز کے لئے ہمیں 400 سے 450 روپے ملے ہیں. جبکہ انھیں 1100 سے 1200 روپے ملنے چاہئیں. اس سال پیاز کی اچھی فصل ہوئی ہے اس لئے بھی دام گرے ہیں. ہر سال یہ کہیں نہ کہیں ہوتا ہے. کبھی آلو کے کسان بمپر فصل کے پھیر میں پھنستے ہیں تو کبھی پیاز تو کبھی کسی اور چیز کے کسان. اب کسان حکومت سے فی کوئنٹل پر 300 سے 400 روپے کی سبسڈی مانگ رہے ہیں.

اگر مہینوں کی محنت پر کسان کے ہاتھ میں ایک روپیہ بچے گا تو یہ بات سمجھیں کہ حالت کتنی خراب ہے. ہم  وزارت زراعت کی کمیشن برائے زرعی لاگت اور قیمت کی ویب سائٹ پر گئے. اسے دیکھنے کے لئے کہ کس فصل میں کسان کو قیمت کے مقابلے میں کتنا منافع ہوتا ہے. اس ویب سائٹ پر رپورٹ تو 2015-16 کی ہیں لیکن ان کے اندر سرمایہ کاری اور منافع کے جو اعداد و شمار ہیں وہ 2013-14 کے ہیں. اس سے یہ پتہ نہیں چلتا کہ نئی حکومت کے آنے کے بعد کاشت میں منافع کتنا بڑھا ہے. ان اعداد و شمار کے مطابق ایک ہیکٹر کھیت میں کسان نے دھان اگانے کے لئے 22،645 روپے لگا دیے. کسان کو ملا 24،151 روپے یعنی منافع ہوا 1،506 روپے. کیا کسان کا اس سے کام چلے گا. وہ قرض لیتا ہے تو اس کا سود بھی ہوتا ہوگا. اس رپورٹ کے مطابق دھان کی کھیت میں منافع 10 فیصد رہا، مکئی میں 12 فیصد منافع رہا. جوار میں -.2 فیصد منافع رہا. جوار میں -3 فیصد منافع. مونگ کی کاشت 6 کے منافع رہا.

اعداد و شمار کو تلاش کرنے اور پڑھنے میں کافی احتیاط کی ضرورت ہوتی ہے. پھر بھی جب حکومت کا زور اعداد و شمار پر اتنا رہتا ہے تو وزارت زراعت کے اس کمیشن کو ہر سال کی تفصیلات دینی چاہئے. وزارت زراعت کی ویب سائٹ کے مطابق 2014-15 میں دھان کی قیمت خرید 1،360 روپے كوئنٹل تھی، جسے مودی حکومت نے 15-16 میں بڑھا کر 1410 روپے فی کوئنٹل کیا ہے. کیا 50 روپے کے اس اضافہ سے کسانوں کے اخراجات کا 50 فیصد منافع ملا. کیا وہ قیمت بھی وصول پا رہے ہیں. لوک سبھا انتخابات کے دوران بھارتیہ جنتا پارٹی نے وعدہ کیا تھا حکومت بننے پر کسانوں کو لاگت کی قیمت کے علاوہ 50 فیصد منافع ملے گا. ہم نے یہ وعدہ اس لئے یاد دلایا کیونکہ وزیر اعظم نے جمعرات کو سہارنپور میں مجھے ایسا ہی کرنے کے لئے کہا ہے. کیا پتہ اس سے کسانوں کا بھلا ہو جائے اور پھر کسانوں کا بھلا ہوگا تو وزیر اعظم کو بھی واہ واہی ملے گی.



⋆ رویش کمار

رویش کمار
مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

آپ اسے بھی پسند کر سکتے ہیں

نیرَو مودی کے نام رويش کمار کا کھلا خط

نیرَو مودی جی، آپ بھارت آنے سے نہ ڈریں. آپ کی رشتہ داری ہی کمال کی ہے کہ ہاتھ لگانے میں حضور کے ہاتھ کانپ جائیں گے. ہمارے مےهل بھائی تو یہیں ہیں، ان کا بھی کچھ نہیں ہوا ہے. یہ نہ سمجھیں کہ وزیر دفاع، قانون منتري اور انسانی وسائل کے وزیر کے بعد وزیر نہیں بچے ہیں.ابھی بہت وزیر ہیں آپ کے لئے. وزیر زراعت ہیں، کیمیکل اور کھاد وزیر ہیں، وزیر اطلاعات ہیں.