آج کا کالم

مویشیوں کی خرید و فروخت میں کسانوں کے لیے نئے قوانین!

رويش کمار

 جانوروں پر ظلم کو روکنے کے لیے بنایے گیے نیے نوٹیفکیشن کو بہت غور سے پڑھنا چاہیے. ابھی تک اسے لے کر گوشت کی تجارت کے تناظر میں ہی بنیادی طور پر بحث ہو رہی ہے۔ جانوروں کی خرید و فروخت کے لیے منڈیوں کو جن اصولوں کا پابند بنایا گیا ہے  اور ان منڈیوں کے جو میعار متعین کیے گیے ہیں، اس کے مطابق اب بہت سی منڈیوں میں جانوروں کی خرید و فروخت نہیں ہو سکے گی. نئے نوٹیفکیشن کے مطابق منڈیوں کو جانوروں کی خرید و فروخت کے لئے کچھ شرطوں کو پورا کرنا ہوں گا. ہر ضلع میں جانوروں کی مانيٹرنگ کمیٹی بنے گی، جسے منڈیوں کو تین ماہ کے اندر اندر رجسٹریشن کرانا ہوگا.

نئے قوانین کے تحت انہی منڈیوں کو جانور فروخت کرنے کے لئے منظوری ملے گی، جہاں مویشیوں کے لئے مناسب رہائش گاہیں ہوں گے، چارہ ہو گا، بہت سے نل ہوں گے، بالٹيو سمیت پانی کی ٹنكياں ہوں گی، روشنی کا بندوبست ہوگا، شوچ گھر ہوں گے، بیمار مویشیوں کے لئے الگ باڑے ہوں گے، حاملہ مویشیوں کے لئے الگ باڑے ہوں گے، جانوروں کے علاج و معالجے کی سہولت ہوگی، چارہ جمع کرنے کے لیے ایک اسٹور روم ہوگا، بنا پھسلن والا فرش ہوگا، گھوڑوں کو لوٹنے کے لیے ریت کا گڈھا ہوگا اور جانوروں کی مختلف پرجاتیوں کے لئے الگ الگ باڑے  ہوں گے.

جانوروں کی منڈیوں کے لئے نیا ڈھانچہ تیار کرنے کے لئے رقم کون دے گا؟ کئی مقامات پر کھلے کھیت میں ہی جانوروں کا میلہ لگتا ہے، خریداری ہوتی ہے اور کھیل ختم ہوجا ہے. اس حساب سے تو سینکڑوں کی تعداد میں لگنے والے مویشی میلے بند ہو جائیں گے. جب تک ان کی خصوصیات سے میلے کی جگہ لیس نہیں ہوگی، جانوروں کی بازار مانيٹرنگ کمیٹی خرید و  فروخت کی اجازت نہیں دے گی. یہی نہیں ان منڈیوں میں قوانین کی پیروی ہو رہی ہے یا نہیں، اس کی جانچ کے لئے افسر اچانک معائنہ کرنے کے لیے بھی آیے گا. ریکارڈ دیکھ سکتا ہے، کسی مویشی پر  ظلم ہوتے دیکھے گا تو مویشی پر قبضہ کر لے گا. نئے نوٹیفکیشن میں جانوروں کی دیکھ بھال کے لیے افسر کے جو کام طے کئے گئے ہیں اس کی فہرست دیکھ کر کسی افسر سے پوچھنا چاہئے کہ کیا وہ کسی منڈی میں آنے والے تمام جانوروں کو چیک کر سکتے ہیں ، کسی ضلع میں کافی افسروں کی ضرورت ہوگی.

بہرحال اب ہر بازار میں تعینات آفیسر بازار میں آنے والے ہر جانور کی جانچ کرے گا. اتارتے وقت اور لے جاتے وقت نگرانی کرے گا. مویشی اور دستاویزات کی جانچ کرے گا.

نوٹیفکیشن میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ مارکیٹ میں مردہ جانوروں کی لاشوں کو بھسم کر دیا جائے گا. ان کو چمڑے کے لئے فروخت نہیں جائے گا یا ان کا چمڑا نہیں اتارا جائے گا. یہ سمجھ نہیں آیا کہ لاشوں کو کہاں بھسم کریں گے، کیا اس کے لئے بھی کچھ انتظام ہونا ہے اور مردہ جانوروں کی کھالیں ہی تو اتاری جاتی ہے جس سے مقامی سطح پر چمڑا بنتا ہے. کیا اس سے دیہی معیشت پر اثر نہیں پڑے گا.

یہی نہیں جانوروں کی منڈی میں جانے والے کسانوں کو اپنے ساتھ کسان ہونے کا سرٹیفکیٹ لے کر جانا ہوگا. مویشی کا مالک تصویر ID کے ساتھ نام اور پتہ دے گا. وہ لکھ کر دے گا کہ مویشی کو ذبح کے لئے نہیں بیچ رہا ہے. خریدنے والے کو بھی شناختی کارڈ جمع کرانا ہوگا. خریدنے والا کسان ہے، اس کے لئے آمدنی دستاویز دکھانا ہوگا. نیے نوٹیفکیشن کے مطابق بہت ساری ایسی جگہیں جہاں اس طرح کی سہولیات نہیں ہیں وہاں جانوروں کی خرید و فروخت بند ہو جائے گی. اس نوٹیفکیشن میں مویشی کا مطلب گائے، بھینس بچھڑا، گائے، ويانا اور اوٹني ہے. پولٹری بھی ہے جس لنڈ، پيرو، ہنس، بتھ، گن مرگا ہے. اس نوٹیفکیشن میں جس طرح سے ظلم کو بیان کیا گیا ہے، ایسا لگتا ہے کہ  مویشیوں کو لے کر ملک میں موجود مختلف علاقوں کی ثقافتی روایات سے بھی چھیڑ چھاڑ کیا گیا ہے.

شراون اماوسيا کے دن پورے مہاراشٹر میں بیل پولا منایا جاتا ہے. اس دن کے لئے بیلوں کو سجایا جاتا ہے. ان سینگوں کو سجایا جاتا ہے. کیا اب یہ بند ہو جائے گا. نئے نوٹیفکیشن میں لکھا ہے کہ بیلوں کو زیورات یا آرائشی مواد لگانا ممنوع ہے. متھرا میں گوپ اشٹمي کے دن گایوں کو پھول مالا سے سجایا جاتا ہے. پھول مالا سے سجانے پر روک کی بات تو نوٹیفکیشن میں نہیں ہے، مگر ظلم والے کہہ سکتے ہیں کہ اتنے لوگ گھیر کر گائے کی پوجا کریں گے جو گائے گھبرا سکتی ہے. کیا گائےبیلوں کو گھنگھرو سے سجانا بیدردی ہوگی. نیے نوٹیفکیشن کے مطابق ناک یا نکیل یا لگام کو اپنی طرف کھیچنا، جھٹکنا اور جھكجھورنا منع ہے. کیا بغیر نکیل کھینچے بھینس اور بیل کو کنٹرول کیا جا سکے گا. کیا بھینس یا بیل نام سے بلانے پر مان جائیں گے. ویسے کسانوں کو بتا دیا جائے کہ ڈنڈے سے مارنا بھی ظلم میں شمار کیا جائے گا.

کرنال کے پشپالك کسان رام سنگھ نے اپنے بیل کے گلے میں گھنگھرو باندھا ہے. ناتھ بھی بدلتے رہتے ہیں . ملک بھر میں جانوروں میلوں میں آرائشی اشیاء ملتے ہیں . ان دکانوں میں رنگ برنگی رسیاں ، گھنٹیاں ہوتی ہیں . لہذا اس بحث میں پشوپالكوں اور مویشیوں کے سامان فروخت کرنے والے دکانداروں کی بھی انٹری ہونا چاہئے. ابھی تک گوشت تاجر ہی اپنی بات رکھ رہے ہیں .

نوٹیفکیشن میں کئی ایسی باتیں ایسی ہیں جو مویشی اور پشوپالك کی فطری رشتے کو متاثر کرنے والی ہیں . نوٹیفکیشن میں لکھا ہے کہ جانوروں کو دودھ پینے سے روکنے کے لئے چھيكا استعمال کرنا ظلم مانا جایے گا. بچھڑے کے منہ پر جو لگایا جاتا ہے اس چھيكا یا حجاب کہتے ہیں . کسانوں یا پشوپالكوں کے پاس چھيكا لگانے کے اپنے دلائل ہیں . اب تو بغیر ڈاکٹر کے آپ اپنی گائے بھینس کو نال سے دوا تک نہیں پلا سکتے ہیں . زیادہ وقت تک کے لئے چھوٹی رسی پر باندھ بھی نہیں سکتے۔ جانوروں کو کنٹرول کرنے کے لئے دم، توتن اور کان مروڑنا ممنوع ہو گیا ہے. اس طرح کے قوانین بنائے گئے ہیں . ہو سکتا ہے کہ یہ اصول حکومت سختی سے لاگو نہ کرے مگر کتاب میں ہونے سے بہت سے این جی او پشوپالكوں پر غیر ضروری دباؤ ڈال سکتے ہیں . چیکنگ میں مویشی پکڑے جائیں گے تو یہ سب جرائم کے طور پر گنے جائیں گے کہ ناتھ لگایا تھا، زیورات پہنایا تھا وغیرہ.

ہندی کے لوگ جانوروں کے میلوں اور مویشیوں کے زیادہ قریب ہیں مگر اس طرح کا مضمون دیکھنے کو نہیں ملا. لیکن اس پر ٹھوس مضمون لکھا ہے ڈائون ٹو ارتھ میگزین کے رچرڈ مهاپاترا نے. ان کا کہنا ہے کہ اس فیصلے سے کسان بری طرح متاثر ہونے والا ہے. گوشت کی برآمد سے زیادہ غریب کسان متاثر ہونے جا رہے ہیں . … رچرڈ نے لکھا ہے کہ ہم زراعت کی معیشت کو ٹھیک سے نہیں جانتے ہیں لہذا میڈیا میں غلط مسائل پر بحث ہو رہی ہے. 2010-11 میں سے ساڑھے تین لاکھ کروڑ کا آؤٹ پٹ جنریٹ ہوا تھا جو کاشت جی ڈی پی کا 28 فیصد تھا. ملک کی جی ڈی پی کا 5 فیصد. اس کاروبار میں کسی بھی طرح کی چھیڑ چھاڑ سے دیہی معیشت متاثر ہونے جا رہی ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close