آج کا کالم

نتن پٹیل کا میڈیا میں نام – نہیں ملی قیادت

رویش کمار

جس دن آنندی بین پٹیل نے استعفی کا اعلان کیا تھا اس دن پرائم ٹائم پر احمد آباد کے ایک صحافی پرشانت دیال نے کہا کہ وہ جتنا وزیر اعظم نریندر مودی کو سمجھتے ہیں اس کی بنیاد پر کہہ سکتے ہیں کہ انہیں میڈیا کو غلط ثابت کرنے میں لطف ملتا ہے. جس کا بھی نام میڈیا میں نئے وزیر اعلی کے طور پر چلے گا ہو سکتا ہے وہ نہ بنے. لگتا ہے پرشانت دیال کی بات آج بھی درست ہو گئی. کل دن بھر گجرات کے نئے وزیر اعلی کے طور پر نتن پٹیل کا نام چلتا رہا. متوقع امیدوار اور ذرائع کے حوالے سے نتن پٹیل کا نام چلتا رہا. اس بھروسے کے ساتھ کہ شام کو ہونے والی پارٹی اراکین اسمبلی میں صرف اعلان کی خانہ پری کی جائے گی اور نتن پٹیل نئے وزیر اعلی کے طور پر سامنے آئیں گے. مگر ایسا نہیں ہوا. وزیر اعظم نریندر مودی نے ایک بار پھر میڈیا کو غلط ثابت کر دیا. گجرات بی جے پی کے صدر وجے روپانی نئے وزیر اعلی ہوں گے. کل صبح سے چینلوں پر روپانی کا انٹرویو نہیں چلا، نتن پٹیل کا نام آگے تھا اور وہی کیمروں پر تھے. ہمارے ساتھی راجیو پاٹھک نے بھی متوقع امیدوار کے طور پر ان کا انٹرویو کیا.

لیکن جب پارٹی اراکین اسمبلی کی نشست کے بعد نام کا اعلان ہوا تو جس کا نام وزیر اعلی کے لئے چل رہا تھا، وہ ڈپٹی سی ایم بن کر باہر نکلے. فیصلہ کا اعلان کرتے ہوئے مرکزی وزیر نتن گڈکری نے کہا کہ وہ میڈیا کا شکریہ ادا کرنا چاہتے ہیں. پرشانت دیال کی بات یاد آ گئی اور مجھے ہنسی آ گئی، یہ سوچ کر کہ کہیں نتن گڈکری جی میڈیا کا شکریہ اس لیے تو نہیں ادا کر رہے تھے کہ اس نے نتن پٹیل کا نام چلا کر روپانی کا راستہ آسان کر دیا ہے یا اس لئے تو تھینكيو نہیں کیا کہ دن بھر جو خبر چلائی ہے وہ اب غلط ہو چکی ہے. صحیح خبر میں دے رہا ہوں. مرکزی وزیر نتن گڈکری نے بتایا کہ وجے روپانی کا نام آنندی بین پٹیل نے تجویز کیا اور گجرات کے اراکین اسمبلی نے ان کے نام کی حمایت کر دی.

نام کے اعلان کے بعد جو مالا پہنائی گئی اس میں وجے روپانی، نتن پٹیل اور آنندی پٹیل بھی آ گئے. آنندی پٹیل نے بھی دونوں کے ساتھ وكٹری سائن بنا کر اپنی خوشی ظاہر کی. پارٹی صدر امت شاہ نے گلدستہ دے کر وجے روپانی کو مبارکباد دی تو انہوں نے باقاعدہ دونوں ہاتھ جوڑ کر جھک کر امت شاہ کا شکریہ ادا کیا لیکن جب امت شاہ گلدستہ لے کر گئے تو نتن پٹیل نے کھڑے کھڑے قبول کیا. انہوں نے بغیر جھکے ہی گلدستہ لے لیا. ہو سکتا ہے ان تصویروں کا کچھ مطلب نہ ہو مگر یہ تصویریں دلچسپ تو ہیں ہی. میڈیا میں یہ بات چل رہی تھی کہ امت شاہ وجے روپانی کو ہی وزیر اعلی بنانا چاہتے ہیں لیکن آنندی بین پٹیل نہیں چاہتی تھیں کہ وجے روپانی وزیر اعلی بنیں.

یہ خبر اپنے آپ میں جھٹکے کی طرح ہے. کیا نتن پٹیل جیسا سینئر وزیر اور مودی کے دور کے گجرات کو رگ رگ سے جاننے والا لیڈر ایسی نادانی کرے گا کہ میڈیا کے کہنے پر انٹرویو دینے لگے. کیا کبھی نتن پٹیل بتا سکیں گے کہ انہیں صبح تو وزیر اعلی کے لئے کہا گیا تھا یا ان سے سی ایم کے طور پر انٹرویو دے کر غلطی ہو گئی. وہ خود تو ایسی غلطی نہیں کریں گے. صحافیوں سے زیادہ بی جے پی کے اراکین اسمبلی اور وزیر جانتے ہیں کہ امت شاہ اور وزیر اعظم مودی کا طریقہ کار کیا ہے. نتن پٹیل 2002 سے 2007 کو چھوڑ 1995 سے وزیر ہیں. آنندی بین پٹیل حکومت میں بھی اہم وزیر رہے.

ان کے پاس آنندی بین حکومت میں صحت، تعلیم، شاہراہ، تعمیرات  جیسی وزارتیں تھیں. مہسانا سے رکن اسمبلی ہیں. گجرات کے صحافی پرشانت دیال نے پرانی بات یاد دلا دی. کہا کہ 90 کی دہائی میں پٹیل ریزرویشن کا بھوت نتن پٹیل نے ہی کھڑا کیا تھا. وہی یہ کہہ کر پٹیلوں کو متحد کرتے تھے کہ کانگریس نے چودھری کو ریزرویشن دے دیا اور پٹیل پیچھے رہ گئے. مگر ہاردک پٹیل کی قیادت میں جو پٹیل ریزرویشن کا مسئلہ ابھر کر سامنے آیا تو اس میں نتن پٹیل نے کنارہ کشی اختیار کر لی. وہ اقتدار کے ساتھ رہے، سماج کے ساتھ نہیں. جمعہ کو دن بھر انٹرویو دیتے دیتے نتن پٹیل نے میڈیا کو پٹیل ریزرویشن اور دلت تحریک سے نمٹنے کا علاج بھی بتا دیا. اتنا سینئر سیاستدان بغیر اوپر سے ملے حکم کے اپنے گھر مجمع نہیں لگائے گا. حالاں کہ ان کا انٹرویو متوقع امیدوار کے طور پر ہی ہو رہا تھا مگر وہ انٹرویو تو دے ہی رہے تھے مستقبل سی ایم کے طور پر.

گجرات میں بی جے پی کی حکومت میں پہلی بار کسی کو نائب وزیر اعلی بنایا گیا. اس سے پہلے کانگریس کے چمن بھائی پٹیل کی حکومت میں نرہری امین کو نائب وزیر اعلی بنایا گیا تھا. کیا ڈپٹی سی ایم کا عہدہ کسی اقتدار کے توازن کے لئے ہے یا نتن پٹیل کا مان رکھنے کے لئے کہ جھٹکا تو ٹھیک ہے، بہت زیادہ جھٹکا شاید ٹھیک نہ ہو. ایک سینئر رکن اسمبلی اور وزیر کو چھوڑ کر پہلی بار رکن اسمبلی بنے وجے روپانی کو وزیر اعلی بنایا گیا ہے. دلچسپ بات یہ ہے کہ نتن پٹیل اور وجے روپانی دونوں ہی 1956 کے سال میں پیدا ہوئے ہیں. نتن پٹیل ڈیڑھ مہینہ بڑے ہیں وجے روپانی سے. مگر حکومت میں روپانی سے پٹیل ڈیڑھ مہینہ چھوٹے ہو گئے. ان کے ڈپٹی بن گئے. ہوتا ہے.

وجے روپانی کا سیاسی سفر بہت پرانا ہے. حکومت کا تجربہ بھلے ہی کم ہو، مگر تنظیم کا خوب ہے. وہ ایمرجنسی میں جیل گئے ہیں. 2006 سے 2012 تک راجیہ سبھا کے رکن بھی رہے ہیں. راجکوٹ کے میئر اور کونسلر بھی رہے ہیں. اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد سے منسلک رہے ہیں. 2014 میں ضمنی انتخابات جیت کر پہلی بار رکن اسمبلی بنے کیونکہ رکن اسمبلی وجو بھائی والا کو کرناٹک کا گورنر بنا دیا گیا تھا. پہلی بار رکن اسمبلی بنتے ہی کابینہ وزیر بن گئے. آنندی بین کی حکومت میں نقل و حمل اور آب رسانی کے وزیر بنے. دو سال کے اندر اندر وزیر اعلی بننے جا رہے ہیں. قانون کی ڈگری ہے. 24 سال کی عمر سے ہی بی جے پی میں سرگرم رہے ہیں. وجے روپانی کی بیوی انجلی روپانی بھی اکھل ودیارتھی پریشد سے منسلک رہی ہیں.

جب آنندی بین پٹیل نے استعفی دیا تب انڈین ایکسپریس میں شیلا بھٹ نے لکھا تھا کہ گجرات حکومت میں باہر سے امت شاہ کی بڑھتی ہوئی دخل اندازی  اور قومی سطح پر ان کے بڑھتے ہوئے اثرات کی وجہ سے آنندی بین نے یہ راستہ اپنایا تاکہ ایک خاص موقع کا فائدہ اٹھا کر انہیں چیک کیا جا سکے. آنندی بین کو شکایت تھی کہ پٹیل اور دلت تحریکوں کے وقت پارٹی نے بھی ان کا ساتھ نہیں دیا. لیکن آخر میں امت شاہ کی ہی چلی. وجے روپانی امت شاہ کے قریبی مانے جاتے ہیں. کچھ دن پہلے وجے روپانی نے بیان دیا تھا کہ مجھے پارٹی اور تنظیم کا کام دیا گیا ہے، اس سے زیادہ اہم کیا ہو سکتا ہے. یہی میری ترجیح بھی ہے. میڈیا نے سمجھا کہ وجے روپانی نے خود کو وزیر اعلی کی دوڑ سے باہر کر لیا ہے. مگر یہ سب تو کہنے کے لئے ہوتا ہے. میڈیا کو سمجھنا چاہئے تھا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close