آج کا کالم

ندی نہیں، ماں ہے نرمدا!

ڈاکٹر وجے اگروال

ریاست اگرچہ لوگوں کی فلاح و بہبود کے لئے وجود میں آیا ہے، لیکن اس بدلتے ہویے سماج میں ریاست اور لوگوں درمیان تصادم کی حیثیت مسلسل برقرار ہے. وجہ یہ ہے کہ لوگ جہاں عقائد اور روایات سے منسلک رہنا چاہتے ہے، وہیں ریاست سماج کو جدید بنانے کے لیے اس کے خلاف قانون منظور کرتا رہتا ہے. حال ہی میں تمل ناڈو کے روایتی کھیل جلي كٹو میں سماج اور کورٹ کی کھینچ تان اور کورٹ میں فی الحال تین طلاق پر چل رہی سماعت کے معاملے میں اس دونوں اور تصادم کو بہت اچھی طرح دیکھا اور سمجھا جا سکتا ہے.

لیکن ہر معاملے میں ایسا نہیں ہوتا. وہ صورت حال تو کمال کی ہوتی ہے، جہاں ریاست کے قوانین کو لوک کی حیثیت مل جائے. اس تبدیلی کے عمل نہ صرف تیزی آ جاتی ہے، بلکہ یقینی بھی ہو جاتی ہے. لیکن کیا ہدوستانی قانون اور سماجی نظام کے تناظر میں اس کے بہتر نتائج ہمیں اسی طور پر دیکھنے کو مل رہے ہیں؟

اس تناظر میں میں نے مدھیہ پردیش کے وزیر اعلی شیوراج سنگھ چوہان کے اس بیان کا ذکر کرنا چاہوں گا، جس میں انہوں نے ریاستی اسمبلی کی طرف سے نرمدا دریا کو ‘قانونی شخص’ سے متعلق قانون منظور کرائے جانے کی بات کہی ہے. بیشک ان ​​کے دماغ میں یہ بات چند روز قبل اتراکھنڈ ہائی کورٹ کے ایک فیصلے کی طرف گنگا جمنا ندیوں کو ‘متحرک یونٹ’ اعلان کئے جانے سے آئی ہوگی. اس سے چار دن پہلے ہی نیوزی لینڈ نے اپنی واگني دریا کے لئے ‘لونگ اینٹٹي’ سے متعلق قانون بنایا تھا.

ٹھیک ہے، یہاں اہم سوال یہ اٹھتا ہے کہ نرمدا ہماری دنیا میں ایک بے جان عنصر کے طور پر موجود ہے یا ذی شخصیت کے طور پر …؟ اگر اس ہمارے لوک روایت پہلے ‘نرمدا میا’ مان کر چل رہی ہے تو پھر اس کے لئے الگ سے قانون بنائے جانے کا جواز کیا ہے ؟ اس سے تو یہی لگتا ہے کہ یا تو ہماری ریاست کو اس پر یقین نہیں، یا نرمدا کا یہ انسانی سوروپ جھوٹا ہے …؟

ان تمام سوالات سے پیچھے ایک اور بات بھی ہے. اگرچہ ‘نرمدا سیوا یاترا’ ہر سال منعقد ہوتی ہے، لیکن اس بار مدھیہ پردیش حکومت نے اسے اپنی کوششوں سے اسے ایک قومی شکل دینے کی کوشش کی ہے. وزیر اعظم نریندر مودی اور بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے قومی صدر امت شاہ جیسے لیڈر اور جیکی شراف اور گووندا کی طرح مقبول فلمی ناموں کا اس سے شامل کیا جانا، اسی حقیقت کی طرف اشارہ کرتا ہے. اس سے صاف لگتا ہے کہ ریاست کے لوگوں کے دل اور دماغ میں نرمدا ندی کے لئے ہزاروں سال سے محبت اور احترام کا جو احساس موجود ہے، اس زیادہ سے زیادہ طور پر بیدار کر اس جذباتی توانائی کے استعمال کر کے نرمدا کا تحفظ کیا جائے اور یقینی طور پر اس کوشش کو جتنا کامیاب ہونے کا امکان ہے، اتنی کامیابی کے امکانات قانونی کوششوں سے نہیں، کیونکہ قانون تو ایک نہیں، کئی کئی پہلے سے موجود ہیں. انہیں اسی اسمبلی نے منظور کیا ہے، لیکن نرمدا ہے کہ روز مرہ آلودہ ہوتی جا رہی ہے.

جہاں تک نرمدا کے ذی روح ہونے کا سوال ہے، اس بارے میں ‘سكد پران اور وایو پران’ میں تفصیل کے ساتھ بیان ملتا ہے. ان پرانوں میں نرمدا کی پیدائش اور اہمیت پر بحث کی گئی ہے. نرمدا کا ایک نام ریوا بھی ہے. قدیم صحیفوں میں اس دریا کا ایک اور نام ‘شنكري’ بھی ملتا ہے. اس کا مطلب ہے – شنکر کی بیٹی. ظاہر ہے، نرمدا کو ایک مقدس عورت کے طور پر ذکر کیا گیا ہے.

اسی طرح کی کچھ دیگر ایسی کہانیاں بھی ہیں، جو نصوص سے نکل کر لوگوں کی زبان پر آ چکی ہیں اور لوگوں سے بات چیت کے انداز میں سن کر اس کا لطف اٹھایا جا سکتا ہے. ایک وضاحت یہ بھی ہے کہ نرمدا اور سون ندی برہما کی آنکھوں سے گری ہوئی آنسو کے قطرے ہیں. اس وضاحت میں نرمدا ندی کی پاکیزگی کے تاثرات موجود ہے، لہذا لوک زندگی اس میں مقدس ڈبكياں لگا کر اس پر بھرپور طرز عمل بھی کرتے ہیں کہ نرمدا میں غسل کرنے سے گناہوں کا خاتمہ ہو جائے گا. اب یہ بات الگ ہے کہ ہم اس کی پاکیزگی کے ساتھ کیا سلوک کر رہے ہیں.

ایک دلچسپ کہانی اور بھی ہے جو لوک ایمان کی بنیاد ہے. نرمدا علاقے کے لوگوں کا یہ خیال ہے کہ نرمدا سون بھدر ندی کی محبت میں پڑ گئی تھی.لیکن یہ محبت نرمدا ندی کو حاصل نہیں ہو سکا، جس کی وجہ سے نرمدا ناراض ہو کر الٹی سمت میں بہنے لگی.ظاہر ہے، جہاں ریاست کے پاس اتنی مضبوط، بڑی اور گہری طاقت ہو، اسے کیوں اپنے آپ کو کسی قانون کا محتاج بننا چاہئے. پھر بھی اگر ایسا کیا جاتا ہے، تو وہ کہیں نہ کہیں سیاست کی کمزوری کا اظہار کرتا ہے، چاہے اس کمزوری کی وجہ کچھ بھی ہو۔

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Back to top button
Close