نسلوں کو وراثت میں کیا ملے گا؟ سیلاب، خشک سالی اور ریلیف کیمپ!

سچن کمار جین

اصل میں یہ سچ ہے کہ انسانی فکر بناؤ بھی کر سکتی ہے اور بگاڑ بھی. بگاڑ تو اتنا کہ وہ خود کے بنائے ہوئے اصولوں اور مذہب کو اپنے لالچ کے لئے ڈبونے سے نہیں ہچکچاتا. اپنے وکاس کی فکر میں بگاڑ کا یہ سچ بار بار ابھر کر سامنے آتا ہے. پتہ چلا ہے کہ 31 اگست 2016، یعنی اب سے چند دنوں بعد یہ فیصلہ کیا جانا ہے کہ ملک کے سب سے بڑے باندھ سردار سروور کے دروازے بند کر دیے جائیں. دروازے بند ہونے سے سردار سروور ذخائر میں لاکھوں کیوب میٹر پانی جمع ہو جائے گا اور ماں نرمدا کا آبشار بہاؤ محدود ہو جائے گا.

وکاس کے نام پر ناانصافی اور تباہی

ہم  ایسے وکاس کے لئے بیتاب ہو گئے جس میں ماں کو بندی بنانے کے کام میں بھی پالیسی سازوں کو کوئی ہچکچاہٹ نہیں ہوتی. اس کے دوسری طرف بہار کی حکومت یہ مطالبہ کر رہی ہے کہ گنگا دریا پر بنے فركا باندھ کو ہٹایا جائے، کیونکہ یہ ان کی تباہی کا سبب ہے. وکاس کے یہ منصوبے خود ہی اپنی کہانی کہتے ہیں. ذرا غور سے سنئے آپ کو پتہ چلے گا کہ ‘وکاس "کے نام پر ہم نے جھوٹ، ناانصافی اور تباہی کا کتنا عظیم الشان سروور تعمیر کیا ہے!

چھوٹی سی مثال دیکھئے. 18-19 اگست 2016 کو نسرپور بلاک کے كرونديا گاؤں کی پلیا ملک کے سب سے بڑے باندھ کے بیک واٹر میں ڈوب گئی. سنگیتا اور رانو سمیت 50 بچے اس پلیا پر سے بہہ رہے پانی کو پار کر کے اسکول جانے کی کوشش کرتے ہیں، لیکن حکومت کے ریکارڈ کے مطابق  اس گاؤں کی نقل مکانی ہو چکی ہے. اس باندھ میں 1600 مذہبی مقامات، سیکڑوں اسکول اور لاکھوں گھر غرقاب ہوئے ہیں.

سب سے زیادہ خرچ ‘ڈیزاسٹر ریلیف’ میں

یہ وکاس کا مزار ہوگا یا تہذیب کا قبرستان! میں سوچ رہا تھا کہ اس مضمون میں کسے خطاب کروں. مجھے کچھ سمجھ میں نہیں آیا تو میں خود کو خطاب کرتا ہوں. ہم لوگ تین ماہ پہلے مدھیہ پردیش- مہاراشٹر میں شدید خشک سالی پر بحث کر رہے تھے. تب اپنی حکومتیں خشک سالی امداد کے لئے بجٹ کی کوشش میں لگی تھیں. تین ماہ بعد سیلاب آ گیا. اب حکومتیں سیلاب امداد کے لئے فنڈز اکٹھا کر رہی ہیں. ڈیزاسٹر ریلیف کے کام میں ہماری حکومت کو بہت مزہ آتا ہے. یہ ان کا سب سے زیادہ دلچسپی کا موضوع ہوتا ہے، کیونکہ اس سے حکومت کے اندر جماعتوں کو اپنے اقتدار کی جڑوں کو اور گہرا کرنے کا موقع ملتا ہے.

ہم سب جانتے ہیں کہ ڈیزاسٹر ریلیف کی بدعنوانی کس حد تک جڑیں پھیلائے ہوئے ہے. ایک سال میں مدھیہ پردیش حکومت 9000 کروڑ روپئے کے ریلیف کے کام پر خرچ کر رہی ہے. یہ کسی ایک مد میں اس کا سب سے بڑا خرچ ہوتا ہے. یہ کیسا وکاس، جس میں سب سے زیادہ خرچ "ڈیزاسٹر ریلیف” کے لئے ہوتا ہے؟

بازآبادکاری دیتا ہے لوٹ کھسوٹ کا موقع

پھر بھی وکاس کے لئے بے تاب حکومت اس طرح کے منصوبے بناتی ہے، جس میں لاکھوں لوگوں کی نقل مکانی ہوتی ہے. ان کی بازآبادکاری کے لئے بھی کچھ ارب روپے کی رقم مختص کی جاتی ہے. بعد میں پتہ چلتا ہے کہ حکومت کے نمائندوں-دلالوں- بعض سیاستدانوں اور پیشہ وروں کے گٹھ جوڑ نے، بے گھروں کے لئے بنے منصوبہ کا پکوان بنا کر وسائل کو ڈکار لیا ہے. ہم سب جانتے ہیں کہ سردار سروور باندھ کے تحت بازآبادکاری کے نام پر فرضی رجسٹری کی بھیانک بدعنوانی ہوئی ہے. اس کی جانچ کے لئے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس کی بینچ  کے ذریعہ جسٹس جھا کمیشن کی تشکیل ہوئی تھی. پتہ چلا کہ زمین خریداری کے نام پر 1500 فرضی رجسٹری کروائی گئی ہیں، جن میں بدعنوان لوگوں کے گٹھ جوڑ نے جم کر لوٹ مچائی.

اندازہ ہے کہ بازآبادکاری کے لئے مختص 2300 کروڑ روپے میں سے 1000 سے 1500 کروڑ روپے کرپشن کی نذر ہو گئے. جسٹس جھا کمیشن اپنی رپورٹ پیش کر چکا ہے. آخر میں کیا ہوا؟ آخر میں حکومت ان ہی لوگوں کے خلاف کارروائی کرنے کا من بنا رہی ہے، جو نقل مکانی کے صدمے سے دوچار ہیں. غالباً یہ کارروائی سرکاری مشینری کے وہی لوگ کریں گے جو واقعی گھوٹالے میں شامل تھے. یہ نظام اتنا غیر انسانی کیسے ہو سکتا ہے کہ سامنے دکھائی دے رہے ایمرجنسی کو رد کر دینے کا قدم اٹھا سکے. ہو سکتا ہے، کیونکہ وکاس کے جو معیار ہم نے طے کئے ہیں، انہیں حاصل کرنے میں خدمت خلق کو جڑ سے اکھاڑ پھینکنا بنیادی شرط ہے.

اب بھی نہیں ہو پائی مکمل طور پر نقل مکانی

سردار سروورباندھ کے تناظر میں سپریم کورٹ کے فرمان رہے ہیں کہ جب تک تمام باندھ متاثرین کی باز آبادکاری نہ ہو جائے، تب تک باندھ کو پورا نہیں بھرا جائے گا؛ لیکن مدھیہ پردیش حکومت عدالت کی توہین کر رہی ہے. دوسری طرف مہاراشٹر میں 1000 خاندان آب پاشی کا مطالبہ کرتے رہے اور 1335 خاندان بے گھر زمرہ کی پہچان کے لئے ‘درخواست دے رہے ہیں اور اپیل’ کر رہے ہیں.

حال ہی میں بھارت کے چیف جسٹس نے بالکل ٹھیک بات کہی کہ کیا عدالت کے حکم سے ملک میں رام راج آ سکتا ہے؟ بدعنوانی ختم ہونے کا حکم دیں، تو کیا ایسا ہوگا؟ چیف جسٹس کی بات بہت جائز اس لئے ہے، کیونکہ حکومت خود استحصال کی منتظم بن گئی ہے.

سردار سروورباندھ کے گیٹ بند کئے جانے کی تیاری

سردار سروور باندھ کی اونچائی 139 میٹر پوری ہو چکی ہے. اس کے بعد باندھ پر گیٹ لگانے کا کام بھی مکمل ہو چکا ہے. اب ان دروازوں کو بند کیا جانا ہی باقی ہے؛ بس! اس پر حکومت جھوٹ بولتی ہے کہ سب کی بازآبادکاری ہو چکی ہے. ممکن ہے کہ اب بچوں کو یہ متن پڑھانا بند کر دیا جائے کہ ‘جھوٹ بولنا گناہ ہے’؛ کیونکہ ہماری حکومت ہی سب سے زیادہ سے زیادہ یہ گناہ کرتی ہے. مدھیہ پردیش حکومت کا کہنا ہے کہ باندھ کی ڈوب میں آنے والے تمام دیہات اور خاندانوں کی بازآبادکاری ہو چکی ہے.

یہ دعوی بالکل جھوٹ ہے کیونکہ اب بھی ڈوب متاثرہ علاقے میں 48 ہزار خاندان رہ رہے ہیں. ان کی کوئی خیر خبر نہیں لی گئی ہے. مدھیہ پردیش اور گجرات حکومت کی حکمت عملی یہ ہے کہ باندھ میں 139 میٹر کی اونچائی تک پانی بھر دیا جائے. جب زمین ڈوب آئے گی، تو قبائلیوں، دلتوں، کسانوں، مزدوروں کو اپنے گھر زمین خود چھوڑنے پڑیں گے اور حکومتوں کو بازآبادکاری کے لئے کوئی انتظام نہیں کرنا پڑے گا. اس طرح کی پالیسی سے 244 گاؤں اور ایک شہر ڈبوئے جانے کی تیاری ہے.

15946 خاندانوں کو رپورٹ میں دکھایا گیا ڈوب سے باہر

نرمدا اوارڈ میں واضح طور پر کہا گیا تھا کہ باندھ کے مکمل آبی ذخائر کی سطح (13868 میٹر) ہوگی اور زیادہ سے زیادہ آبی ذخائر کی سطح 141.21 میٹر ہوگی. سیکشن میں واضح کیا گیا ہے کہ اوارڈ کی اشاعت تاریخ 7 دسمبر 1979 سے 45 سال تک اس کی نظر ثانی / تبدیلی نہیں ہو گی؛ لیکن بیک واٹر لیول کے معاملے میں مشرق میں ڈوب سے متاثر مانے گئے 52 دیہات کا ڈوب لیول 138.68 میٹر کی سطح سے بھی کم کرکے دکھایا گیا ہے اور 15946 خاندانوں کو ڈوب سے باہر بتایا جا رہا ہے جبکہ باندھ کی اونچائی 138.68 میٹر ہی رکھی گئی ہے. یہ ناممکن کام مدھیہ پردیش اور گجرات حکومت دھوكہ دھڑی سے مل کر کر رہے ہیں. سائنسی حقیقت یہ ہے کہ بیک واٹر لیول (یعنی باندھ کے پیچھے کے سیلاب کی سطح) ایک خاص مقام پر ہمیشہ باندھ کی اونچائی کے برابر کی آبی سطح سے کہیں زیادہ ہوتا ہے.

دھرم پوری بازآبادکاری کی کوئی کاروائی نہیں ہوئی

اس حقیقت کو حکومت نے جان بوجھ کر چھپایا ہے. مدھیہ پردیش حکومت کے اس ایکٹ کی وجہ سے دھرم پوری جیسا شہر باندھ کے بیک واٹر میں ڈوب جائے گا. سچ یہ ہے کہ دھرم پوری کی بازآبادکاری کی کوئی کاروائی ہی نہیں شروع کی گئی ہے۔ تعجب خیز ہے کہ مدھیہ پردیش حکومت کو اس سے نہ تو آبپاشی کا فائدہ مل رہا ہے، نہ بجلی کا، اور سب سے زیادہ نقصان مدھیہ پردیش کے لوگوں کو ہو رہا ہے، پر مدھیہ پردیش حکومت خاموشی سے گجرات حکومت کے سامنے پست ہے اور ان کی ریاست کے شہریوں کے ساتھ ہو رہے ناانصافی پر خاموش ہے …. صرف اقتدارکی بہتری کے لئے سماج کی تباہی!

باندھوں کا پانی لا رہا ہے تباہی

اپنی زندگی خشک سالی-سیلاب- کرپشن-غیر جوابدہ نظام اور تاریک حال کے درمیان پھنس گئی ہے. آج پھر نرمدا دریا اپنے بھیانک شکل میں ہے، لیکن یہ نرمدا ندی کا اصل وصف نہیں ہے. اس پر بنے برگی، اندرا ساگر، اونكاریشور جیسے بڑے باندھ بار بار بھر رہے ہیں. جب وہ تقریبا پورے بھر رہے ہوتے ہیں، اس کے بعد ایک ساتھ لاکھوں کیوب میٹر پانی باندھ کے دروازے کھول کر بہا دیا جاتا ہے. باندھ والوں کے لئے یہ ایک سادہ سا کام ہوتا ہے، انہیں یہ احساس ہوتا ہی نہیں ہے کہ جو پانی چھوڑا جا رہا ہے، وہ آگے جا کر کس طرح کی تباہی مچا سکتا ہے!

دھاراجی میں پیش آئے ایسے ہی واقعہ نے 500 لوگوں کی جان لے لی تھی. وہ پانی کو بھی اعداد و شمار میں تولتے ہیں اور سوچتے ہیں کہ پانی اعداد و شمار کے مطابق ہی برتاؤ کرے گا! وكاس كاروں کو یہ ذرا بھی احساس نہیں ہوتا ہے کہ ایسا کوئی وکاس اخلاقی نہیں ہو سکتا ہے جو خوب سارے درختوں، زمین، پہاڑوں، جانداروں اور لاکھوں لوگوں کی زندگی کے امکانات کو پانی میں ڈبو اور بہا دیتا ہو. کیا قدرت کے مفاد میں ہم تھوڑے نقصانات کو بھی وکاس کا معیار نہیں مان سکتے ہیں، تاکہ آنے والی نسلوں کو کل-کل بہتی نرمدا، درخت، مندر، گاؤں کے ساتھ کے ساتھیوں کا سکھ مل سکے!

نرمدا میا کو قید کرنے پر اولاد خاموش!

جب حکومت یہ طے کر رہی ہوگی کہ سردار سروور باندھ کے دروازے بند کر دیے جائیں تو کیا ان کی آنکھوں کے سامنے وہ درخت ہوں گے، جن پر پنچھيوں کے گھونسلے بنے ہوئے ہیں. شاید نہیں، ان کا یہ ٹھوس تاثر ہے کہ جب درخت ڈوب جائے گا، تب یا تو چڑیا مر جائے گی یا اڑ کر کہیں اور گھوںسلا بنانے کی جدوجہد میں لگ جائے گی. وہ یہی سوچ انسانوں کے بارے میں بھی رکھتے ہیں. ہم شدید تنوع کے درمیان رہنے والے لوگ ہیں. ایک طرف تو مندروں- مسجدوں کے نام پر دنگا فساد کرتے ہیں، پر جب ہزاروں مندر مسجد وکاس کے سیلاب میں ڈبوئے جا رہے ہوں، تب ہم خاموش ہو جاتے ہیں. کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمیں خدا سے کوئی خاص لگاؤ نہیں ہوتا، ہمیں تو اس کاروبار سے لگاؤ ہوتا ہے، جو خدا کے نام پر کیا اور پھیلایا جاتا ہے. نرمدا تو میا ہے، پر جب یہ میا قید کی جا رہی تھی، تب اولاد چپ کیوں رہیں؟

وکاس نے پانی بہنے کے راستے کئے بند

اکثر کہا جاتا ہے کہ جب بارش کم ہوتی ہے، تب قحط پڑتا ہے اور جب بارش زیادہ ہوتی ہے تب سیلاب آتا ہے. ہمیں یہی پڑھایا جاتا ہے. یہ محض جھوٹ ہی تو ہے. ذرا آپ بھارت کے جیسل میر ضلع کے بارے میں جانئے، جہاں 15 سے 40 ملی میٹر بارش میں سماج رہتا ہے، گندم پیدا کرتا ہے اور خشک سالی کی شکایت بھی نہیں کرتا. اس کی دوسری طرف ایسا کیوں ہوتا ہے کہ 1 گھنٹے کی بارش ممبئی، دہلی، بھوپال کو سیلاب میں ڈبو دیتی ہے. اس لیے نہیں کہ بارش زیادہ ہوئی، بلکہ اس لئے کہ وکاس نے پانی کو بہنے کے لئے جو راستہ چاہئے، اسے  پاٹ دیا، اس پر اپنے لالچ کے محل کھڑے کر لئے اور اپنی گندگی سے ان راستوں کو بند کر دیا. تب پانی بہے گا کہاں سے؟

باندھوں سے آئے سیلاب نے چھینا ذریعہء معاش، فصل

بالکل تازہ مثال دیکھئے. ساؤتھ ایشیا نیٹ ورک آن ڈیمس، ریورس اینڈ پیپل نے حال ہی میں بتایا کہ اصل میں باندھ بھی سیلاب کا بڑا سبب ہیں. بہار میں کیا ہوا؟ وہاں تو ابھی تک معمول سے 14 فیصد بارش کم ہوئی ہے، پھر بھی گنگا دریا میں سیلاب آیا اور پٹنہ ڈوبنے لگا. اب اس سے 10 لاکھ لوگ متاؑثر ہیں. باندھ تو وکاس کے لئے بنتا ہے نا؛ پھر اس نے 10 لاکھ لوگوں کا گھر، سکون، سامان، مندر، درخت، پہاڑ، ذریعہ معاش، فصل کیوں چھین لیا؟ یہ کیسا وکاس ہے، جو ہر سال 200 ملین لوگوں کو راحت کی صف میں لا کھڑا کرتا ہے، ریلیف کیمپوں میں لے آتا ہے، کھانے کے پیکٹ لینے کے لئے قطار میں لگا دیتا ہے! کبھی سوچا ہے؟

فركا اور بان ساگر باندھ کا پانی لا رہا ہے بہار میں تباہی

بہار میں سیلاب کو مغربی بنگال میں گنگا دریا پر بنے فركا باندھ اور مدھیہ پردیش میں سون دریا پر بنے بان ساگر باندھ نے بھیانک شکل دی ہے کیونکہ کیوب میٹر پانی اکٹھا کرکے چھوڑ دینے کی وجہ سے پانی دریا کے تٹوں- کناروں سے باہر نکل آیا. اب یہ سیلاب اتر پردیش کی طرف بڑھ چکا ہے. باندھ میں پانی اکٹھا کیا جاتا ہے، لیکن وکاس ماہرین کو یہ اندازہ کبھی نہیں ہوتا ہے کہ جب پانی چھوڑا جائے گا، تب وہ کہاں اور کتنی تباہی لا سکتا ہے؛ ان کا مباحثہ تو ناپختہ اعداد و شمار سے ہوتا ہے.

ہڑپا تہذیب سے بھی پرانی ہے نرمدا وادی کی تہذیب

ہم سب تہذیب کے بارے میں پڑھتے ہیں. ہمیں پڑھایا گیا تھا کہ ہڑپا تہذیب 5000 سال پہلے وجود میں آئی. لیکن حالیہ برسوں میں یہ حقیقت بھی سامنے آنے لگی کہ وادئ سندھ کی تہذیب سے پہلے نرمدا وادی کی تہذیب وجود میں تھی. ممکنہ طور پر انسانی ارتقاء کا مرکز نرمدا وادی ہی تھا. حقائق کو پختہ کرنے کے لئے نرمدا وادی میں دبے بکھرے 20 لاکھ سالوں کے باقیات کا مطالعہ کیا جانا طے ہوا، لیکن اب شاید ہم کبھی اپنے ارتقاء کے بارے میں جان نہیں پائیں گے، کیونکہ وکاس کے نام پر ان ذرائع کو ہی ڈبویا جا رہا ہے. ستم ظریفی دیکھئے کہ وکاس کی پالیسی بنانے والوں کی پیشانی پر شکن بھی نہیں ہے!

جب بھی اپنی حکومت سردار سروور باندھ پر دروازے لگانے کا فیصلہ لے گی تو کیا وہ ایک بار آنکھیں بند کر کے ان میں سے کچھ سوال خود سے پوچھے گی کہ یہ وکاس آنے والی نسل کو وراثت میں کیا دے گا؟ کیا ہم نے اس وکاس کے ذریعے، انسانی تہذیب کو کوئی نئی مثبت اور انسانی شناخت دی؟ کیا قدرتی ماحول کو ڈبوكر ہی وکاس کا ہدف حاصل کرنا واحد متبادل تھا؟ کیا یہی ثقافتی راشٹرواد ہے؟



⋆ سچن جین

سچن جین

سچن جین تحقیقی مضمون نگار اور سماجی کارکن ہیں.

آپ اسے بھی پسند کر سکتے ہیں

کیا ہے امیروں کی دنیا کا مطلب؟

سچن کمار جین فوربس میگزین ہمیں ہر سال بتاتا ہے کہ دنیا میں ارب پتی …