آج کا کالم

نوکریوں کے گھٹتے اور بدلتے مواقعوں پر بحث کیجیے

رویش کمار

FICCI اور NASSCOM نے 2022 میں ملازمتوں کے مستقبل اور امکانات  پر ایک رپورٹ تیار کی ہے، جو کہ بزنس سٹینڈرڈ میں چھپی ہے.اس میں  لکھا ہے کہ اس سال آئی ٹی اور کمپیوٹر انجینئرنگ کی تعلیم حاصل کرنے جا رہے طالب علم جب چار سال بعد نکلیں تو دنیا بدل چکی ہوگی. ان کے سامنے 20 فیصد ایسے روزگار ہوں گی جو آج موجود ہی نہیں ہیں اور جو آج موجود ہیں ان میں سے 65 فیصد کی شکل پوری طرح بدل چکی ہوگی. ضروری ہے کہ آپ اپنی روزانہ سمجھ کے مواد میں BIG DATA، ARTIFICIAL INTELLEGENCE، ROBOTIC کو شامل کریں. ان کی وجہ سے پرانی نوکریاں جائیں گی اور نئی نوکریاں آئیں گی. کیا ہوں گی اور کس سطح کی ہوں گی، اس کی سمجھ بنانی بہت ضروری ہے.

تحقیق کرنے والی ایک کمپنی Gartner کا کہنا ہے کہ artificial intelligence (AI) کی وجہ سے درمیانے درجے کی ڈھیر ساری نوکریاں ختم ہو جائیں گی. اس کی جگہ پر زیادہ مہارت والی اور زیادہ  منظم نوکریاں آئیں گی. ملازمتیں تیزی سے چلن سے باہر ہو رہی ہیں. اشتراک معیشت کا چلن بڑھ رہا ہے. اسے GIGS ECONOMY کہتے ہیں. میں نے پہلی بار سنا ہے. اس کے بارے میں ٹھیک سے نہیں معلوم. جیسے کورئیر بوائے ہوگا وہ کئی کمپنیوں کا سامان ڈھوے گا.

آپ دہلی میں ہی سڑکوں پر دو پہیہ کی بھیڑ غور سے دیکھ سکتے ہیں. پیٹھ پر بوجھا لادے یہ نوجوان روزگار کی آخری جنگ لڑتے نظر آئیں گے. COWORKING HUB ایک نیی چیز گردش میں آیی ہے. اس کے بارے میں جاننے کی کوشش کیجیے. شاید ہم اور آپ کو کسی چوراہے پر کھڑے ہوں گے، کسی بھی کام کے لئے، دو یا دو سے زیادہ اسکل کے ساتھ، کوئی آئے گا کام کرے گا، اور گھر بھیج دے گا. گھر جا کر ہم نیوز چینلز پر عالمی رہنما (وشو گرو) بننے کا خواب دیکھتے ہوئے سو جائیں گے.

اكونومك ٹائمز کی مالنی نے بھی روزگار میں آرہی تبدیلیوں پر ایک مضمون لکھا ہے. میں نے اس کے کچھ حصہ بھی بزنس سٹینڈرڈ میں چھپے فكسي اور نیسكام کی رپورٹ کے ساتھ ملا دیا ہے.

مالنی نے لکھا ہے کہ کمپنیوں کو دارالحکومت کی تعمیر کے لئے اب ورکر کی ضرورت نہیں ہے. فیس بک میں صرف 20000،لوگ ہی کام کرتے ہیں جبکہ کمپنی کے ویلیو 500 ارب ڈالر ہے. اسے بھارتی روپے میں بدلیں گے تو جھٹکا لگ جائے گا. ڈیجیٹل دور میں کام دو سطح پر ہوگا. سب سے زیادہ مہارت والے اور سب سے کم مزودري والی. بہت سے دفتروں میں سر چھپا کر کام کرنے والے درمیان کے قابل لوگ غائب. بلکہ غائب ہو بھی رہے ہیں.

ان سب تبدیلیوں کے سماجی نتائج کیا ہوں گے. دنیا بھر میں حکومتیں تیزی سے ایسے ایجنڈے پر کام کر رہی ہیں جو بھٹکانے کے کام آ سکے. ایسے مسئلے لائے جا رہے ہیں جنہیں سنتے ہی خواب آنے لگتا ہے اور عوام سو جاتی ہے. حکومتوں پر دباؤ بڑھ رہا ہے کہ کم از کم مزدوری بڑھائیں. مگر آپ جانتے ہی ہیں، حکومتیں کس کی جیب میں ہوتی ہیں.

مالنی گوئل نے سرسری طور پر بتایا ہے کہ جرمنی، سنگاپور اور سویڈن میں کیا ہو رہا ہے اور بھارت ان سے کیا سیکھ سکتا ہے. بلکہ دنیا کو ہندوستان سے سیکھنا چاہئے. یہیں کا نوجوان ایسا ہے جسے نوکری نہیں چاہئے، روز رات کو ٹی وی میں ہندو مسلم ٹاپك چاہئے. اب اس کو الو بنانے کے لئے اس بحث میں الجھايا جائے گا کہ ریزرویشن ختم ہونا چاہئے. نوکری کا دشمن ریزرویشن ہے. پوری دنیا میں کام نہ ہونے کے مختلف وجوہات پر بحث ہو رہی ہے، بھارت نے اسی میں اٹکا ہے کہ ریزرویشن کی وجہ کام نہیں ہے.

حکومت کوئی پیشکش نہیں لائے گی، تین طلاق کی طرح بحث میں الجھا کر نوجوانوں کا تماشا دیکھے گی. ریزرویشن پر بحث کے مسئلے کا استعمال فرنٹ کے طور پر ہو گا، جسے لے کر بحث کرتے ہوئے نوجوان خوابوں میں کھو جائیں گے کہ اسی کی وجہ سے کام نہیں ہے. لیڈر ووٹ لے کر اپنے خواب کو پورا کر لے گا. حقائق کے لحاظ سے یہ ہمارے وقت کی سب سے بڑی بکواس ہے. کام نہ تو مخصوص طبقے کی وجہ سے پیدا ہو رہا ہے اور نہ کسی مخصوص طبقے کے لئے. یہی حقیقت ہے. کام کے پیدا کرنے پر تو بات ہی نہیں ہوگی کبھی.

جاپان کے وزیر اعظم نے كارپوریٹ سے کہا ہے کہ تین فیصد سے زیادہ مزدوری بڑھائیں. جاپان میں ایک دہائی بعد معیشت میں تیزی آئی ہے. کمپنیوں کا منافع بڑھا ہے مگر یہاں لیبر کی ضرورت نہیں بڑھی ہے. ان کا مارکیٹ بہت ٹائیٹ ہوتا ہے. اخبار لکھتا ہے کہ یہ اور ٹائیٹ ہو گا. ٹائیٹ لفظ ہی استعمال کیا گیا ہے. جس کا مطلب میں یہ سمجھ رہا ہوں کہ تكنيكی تبدیلی یا پیداوار کی شکل تبدیل کرنے سے اب انسانی وسائل کی اتنی ضرورت نہیں رہی. جاپان میں کئی سال تک کئی کمپنیوں نے مزدوری میں کوئی اضافہ نہیں کیا تھا.

كل ملا كر بات یہ ہے کہ روزگار سے متعلق موضوعات پر حقائق پر مبنی بحث ہونی چاہئیے تاکہ لوگوں کو پتہ چلے گا کہ دنیا کیسے بدل رہی ہے اور کس طرح ان کو تبدیل کرنا ہے. آپ اپنی معلومات کا مآخذ بدلیں، خبروں کو تلاش کر کے پڑھیں. یاد رہے، اخبار خرید لینے سے اخبار پڑھنا نہیں آ جاتا ہے. ہمیشہ کسی ایک ٹاپك پر دو سے تین اخبارات دیسی اور ودیسی ملا کر پڑھیں.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close