آج کا کالم

نہرو سے لڑتے لڑتے اپنی تقریروں میں ہارنے لگے ہیں مودی

نہرو کی اپنی تاریخ ہے اور وہ تاریخ، کتابوں کو جلا دینے اور تین مورتی بھون کو منہدم کر دینے سے نہیں مٹے ‌گی۔

رویش کمار

وزیر اعظم مودی کے لیے الیکشن جیتنا بڑی بات نہیں ہے۔ وہ جتنے  الیکشن جیت چکے ہیں یا جتا چکے ہیں یہ ریکارڈ بھی لمبے وقت تک رہے‌ گا۔ کرناٹک کی جیت کوئی بڑی بات نہیں ہے لیکن آج وزیر اعظم مودی کو اپنی ہار دیکھنی چاہیے۔ وہ کس طرح اپنی تقریروں میں ہارتے جا رہے ہیں۔ آپ کو یہ ہار انتخابی نتیجوں میں نہیں دکھے ‌گی، وہاں دکھے ‌گی جہاں ان کی تقریروں کا جھوٹ پکڑا جا رہا ہوتا ہے۔ ان کے بولے گئے حقائق کی جانچ  ہو رہی ہوتی ہے۔ تاریخ کی دہلیز پر کھڑے ہوکر جھوٹ کے سہارے وزیر اعظم تاریخ کا مذاق اڑا رہے ہیں۔ تاریخ ان کی اس حرکت کو نوٹ کر رہی ہے۔

وزیر اعظم مودی نے اپنا عروج  چن لیا ہے۔ ان کا عروج آسمان میں بھی ہے اور  اس گڈھے میں بھی  ہے جہاں نہ تو کوئی شرافت ہے نہ سطح ہے۔ ان کو ہر قیمت پر اقتدار چاہیے تاکہ وہ سب کو دکھائی دیں عروج  پر مگر خود رہیں گڈھے میں۔ یہ گڈھا ہی ہے کہ ہیرو ہوکر بھی ان کی باتوں کی دھلائی ہو جاتی ہے۔ اس گڈھے کا انتخاب وہ خود کرتے ہیں۔ جب وہ غلط باتیں  کہتے ہیں، جھوٹی  تاریخ بتاتے ہیں، مخالف نیتاؤں کو ان کی ماں کی زبان میں بحث کے لیے چیلنج کرتے ہیں۔ یہ گلی کی زبان ہے، وزیر اعظم کی نہیں۔

دراصل وزیر اعظم مودی کے لیے نہرو چیلنج بن گئے ہیں۔ انہوں نے خود نہرو کو چیلنج مان لیا ہے۔ وہ لگاتار نہرو پر تنقید کرتے رہتے ہیں۔ ان کے حامیوں کی فوج وہاٹس اپ نام کی جھوٹی یونی ورسٹی میں نہرو کو لے کر لگاتار جھوٹ پھیلا رہی ہے۔ نہرو کے سامنے جھوٹ سے گڑھا  گیا ایک نہرو کھڑا کیا جا رہا ہے۔ اب لڑائی مودی اور نہرو کی نہیں رہ گئی ہے۔ اب لڑائی ہو گئی ہے اصلی نہرو اور جھوٹ سے گڑھے  گئے نہرو کی۔ آپ جانتے ہیں اس لڑائی میں جیت اصلی نہرو کی ہوگی۔

نہرو سے لڑتے لڑتے وزیر اعظم مودی کے چاروں طرف نہرو کا بھوت کھڑا ہو گیا۔ نہرو کی اپنی تاریخ ہے اوروہ تاریخ  کی کتابوں کو جلا دینے اور تین مورتی بھون کو منہدم کر دینے سے نہیں مٹے ‌گی۔ یہ غلطی خود مودی کر رہے ہیں۔ نہرو نہرو کرتے کرتے وہ چاروں طرف نہرو کو کھڑا کر رہے ہیں۔ مودی کے آس پاس اب نہرو دکھائی دینے لگے ہیں۔ ان کے حمایتی  بھی کچھ دنوں میں نہرو کے ماہر ہو جائیں‌گے، مودی کے نہیں۔ بھلےہی ان کے پاس جھوٹ سے گڑھا گیا نہرو ہوگا مگر ہوگا تو نہرو ہی۔

وزیر اعظم کی  انتخابی تقریروں کو سن ‌کر لگتا ہے کہ نہرو کی یہی شراکت ہے کہ انہوں نے کبھی بوس کی، کبھی پٹیل کی تو کبھی بھگت سنگھ کی بے عزتی کی۔ وہ آزادی کی لڑائی میں نہیں تھے، وہ کچھ نیتاؤں کو ذلیل کرنے کے لئے لڑ رہے تھے۔ کیا نہرو ان لوگوں کی بے عزتی کرتے ہوئے برٹش حکومت کی جیلوں میں 9 سال رہے تھے؟ ان رہنماؤں کے درمیان نظریاتی دوری، داخلی انتشار اور الگ الگ راستے پر چلنے کی دھن کو ہم کب تک بےعزتی کے فریم میں دیکھیں ‌گے۔ اس حساب سے تو اس دور میں ہرکوئی ایک دوسرے کی بے عزتی ہی کر رہا تھا۔

قومی تحریک کی یہی خوبی تھی کہ الگ الگ خیالات والے ایک سے ایک قد آور رہنما تھے۔ یہ خوبی گاندھی کی تھی۔ ان کے بنائے دور کی تھی جس کی وجہ سے کانگریس اور کانگریس سے باہر رہنماؤں سے بھرا آسمان دکھائی دیتا تھا۔ گاندھی کو بھی یہ موقع ان سے پہلے کے رہنماؤں اور سماجی مصلحین نے دستیاب کرایا تھا۔ مودی کے ہی الفاظ میں یہ بھگت سنگھ کی بھی بے عزتی ہے کہ ان کی ساری قربانی کو نہرو کے لئے رچے گئے ایک جھوٹ سے جوڑا جا رہا ہے۔

بھگت سنگھ اور نہرو کو لےکر وزیر اعظم نے جو غلط بولا ہے، وہ غلط نہیں بلکہ جھوٹ ہے۔ نہرو اور فیلڈ مارشل کریپا، جنرل تھیمیا کو لےکر جو غلط بولا ہے وہ بھی جھوٹ تھا۔ کئی لوگ اس غلط فہمی میں رہتے ہیں کہ وزیر اعظم کی ریسرچ ٹیم کی غلطی ہے۔ آپ غور سے ان کے بیانات کو دیکھئے۔ جب آپ ایک الفاظ کے ساتھ پورے بیان کو دیکھیں‌گے تو اس میں ایک ڈیزائن دکھے‌گا۔ بھگت سنگھ والے بیان میں ہی سب سے پہلے وہ خود کو الگ کرتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ ان کو تاریخ کی جانکاری نہیں ہے اور پھر اگلے جملوں میں اعتماد کے ساتھ یہ کہتے ہوئے سوالوں کے انداز میں بات رکھتے ہیں کہ اس وقت جب بھگت سنگھ جیل میں تھے تب کوئی کانگریسی رہنما نہیں ملنے گیا۔ اگر آپ گجرات انتخابات میں منی شنکر ایر کے گھر  ہوئی میٹنگ پر ان کے بیان کو اسی طرح دیکھیں‌گے تو ایک ڈیزائن نظر آئے‌گا۔

بیانات  کے ڈیزائنر کو یہ پتا ہوگا کہ عوام تاریخ کو کتابوں سے نہیں کچھ افواہوں سے جانتی ہے۔ بھگت سنگھ کے بارے میں یہ افواہ حقیقی ہے کہ اس وقت کے رہنماؤں نے ان کو پھانسی سے بچانے کی کوشش نہیں کی۔ اسی افواہ سے تار ملاکر اور اس کی بنیاد پر نہرو کو مشتبہ بنایا گیا۔ نام لئے بغیر کہا گیا کہ نہرو بھگت سنگھ سے نہیں ملنے گئے۔ یہ اتنا عام فیکٹ  ہے کہ اس میں کسی بھی رسرچ ٹیم سے غلطی ہو ہی نہیں سکتی۔ تاریخ یا سال میں چوک ہو سکتی تھی مگر پورا سیاق و سباق ہی غلط ہو یہ ایک پیٹرن بتاتا ہے۔ یہ اور بات ہے کہ بھگت سنگھ فرقہ پرستی کے سنگین مخالف تھے اور ایشور کو ہی نہیں مانتے تھے۔ فرقہ پرستی کے سوال پر ناستک ہوکر جتنے بھگت سنگھ واضح ہیں، اتنے ہی مادیت پرست ہوکر نہرو بھی ہیں۔ بلکہ دونوں قریب دکھتے ہیں۔ نہرو اور بھگت سنگھ ایک دوسرے کی عزت کرتے تھے۔ مخالفت بھی ہوگی تو کیا اس کا حساب انتخابی ریلیوں میں ہوگا۔

نہرو کی ساری تاریخ  ان کی تنقید کے ساتھ  کئی کتابوں میں درج ہے۔ وزیر اعظم مودی ابھی اپنی تاریخ تیار  کر رہے ہیں۔ ان کو اس بات کا خیال رکھنا چاہئے کہ کم سے کم وہ جھوٹ پر مبنی نہ ہو۔ ان کو یہ چھوٹ نہ تو بی جے پی کے کیمپینر  کے طور پر ہے اور نہ ہی وزیر اعظم کے طور پر۔ قاعدے سے ان کو اس بات کے لئے معافی مانگنی چاہیے تاکہ وہاٹس اپ یونی ورسٹی کے ذریعے نہرو کو لےکے پھیلائے جا رہے زہر پر قدغن لگے۔ اب مودی ہی نہرو کو آرام دے سکتے ہیں۔ نہرو کو آرام ملے ‌گا تو مودی کو بھی آرام ملے ‌گا۔

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

ایک تبصرہ

متعلقہ

Close