آج کا کالم

نیوٹن اور ڈارون کے بعد اب باری ایڈیسن کی

رويش کمار

بھارت جلد ہی بلب اور ریڈیم کے موجد کا اعلان کر سکتا ہے. ریٹرواسپیكٹو افیکٹ سے۔ یعنی بیک ڈیٹ سے. بیک ڈیٹ سے بھلے ہی دہلی کے 20 ممبر اسمبلی فائدہ کے عہدے سے آزاد نہیں ہو سکتے مگر بیک ڈیٹ سے اب ایڈیسن اور میڈم کیوری بھی خارج ہونے والے ہیں. نیوٹن اور ڈارون ہو چکے ہیں. پوری دنیا میں سائنس کی کتابیں پھاڑي جا رہی ہیں. نئی کتابیں شائع ہو رہی ہیں.

بھارت میں ماں باپ کو اپنے بچوں کو اسکول سے واپس بلا لینا چاہئے. بھارت کے وزیر روز نئ نئ ریسرچ کر رہے ہیں. اگر وہ پرانے کورس پر بچوں کی پڑھائی کروائیں گے تو والدین کو بھاری نقصان ہو سکتا ہے. ایک بار سارہ ریسرچ آ جائے۔ ان وزیروں کے وزیر اعظم من کی بات میں کہہ دیں، تب دوبارہ کوچنگ اور اسکول پر پیسہ خرچ كيجے گا۔ ابھي رک جائیے.

آپ پلیز چیک کریں کہ ماسٹر کہیں اب بھی نیوٹن اور ڈارون کو تو نہیں پڑھا رہے ہیں. ان دونوں کی تھیوری بھارت کے دو وزراء نے رجیکٹ کر دی ہے. اپنے بچوں کے لئے ہنومان چاليسا خرید لائیں. وہی پڑھ کر وہ اب بہت خوش ہو جائیں گے. بے وقوفوں کے اس دور میں بے وقوف ہونے میں بھی بھلائی ہے. سب خوش رہیں گے. انسانی وسائل کے وزیر مملکت نے کہا ہے کہ ڈارون کی تھیوری غلط تھی کیونکہ بندروں سے انسان بنتے کسی نے نہیں دیکھا. نہ ہمارے باپ دادا نے دیکھا، نہ اس پر  لکھا۔ اسے بھارت کے اسکول اور کالجوں کی کتابوں میں بدل دینا چاہئے.

یہ نئی تھیوری ہے. ہمارے باپ دادا نے جو چیز نہیں دیکھی ہو گی اور اس کے بارے میں نہیں لکھا ہو گا، ہم اسے نہیں مانیں گے. جیسے موجودہ ہوائی جہاز بنتے ہمارے باپ دادا نے نہیں دیکھا، نہ ہی لکھا۔ جس وقت رائٹ بردرس ایجادات کر رہے تھے، اس وقت چھپرا اور سیوان سے دیکھنے کوئی نہیں گیا تھا. اب کوئی بھی وزیر کہہ سکتا ہے کہ ایڈیسن نے بلب ایجاد نے نہیں کیا. ہمارے باپ دادا نے سورج کی روشنی پہلے ہی دیکھ لی تھی. اسے آدی بلب کہا تھا. گراہم بیل جس نے ٹیلیفون دریافت کیا، اسے بھی رجیکٹ کر دیں گے یہ وزیر. کوئی منتر پڑھ کر بتائیں گے کہ ہم فون سے بات کرتے تھے.

کورس کی کتابیں تو بدلوا دیں گے لیکن کہیں جیو اسمارٹ فون نہ بدلوا دیں. بھارت کے وزیر صرف وزارت کا ہی کام نہیں کرتے، بلکہ ان کی لیبارٹری بھی ہے جہاں وہ ڈارون سے لے کر گراہم بیل کے ریسرچ پر ریسرچ کر رہے ہوتے ہیں اور ان کی کاٹ نکال رہے ہوتے ہیں. بھارت میں کچھ غضب ہی ہو رہا ہے. پوزیٹو بنے رہیے. ہم پھر سے کھوجی گئیں ساری چیزوں کو کھوجنے جا رہے ہیں.

ڈارون کو چیلنج کرنے والے وزیر کا نام ہے ستیہ پال سنگھ. نیوٹن کو چیلنج کرنے والے وزیر تعلیم کا نام ہے واسودیو دیوناني. دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ سارے چیلنجز وزراء  تعلیم کی جانب سے مل رہے ہیں تاکہ اقوام متحدہ میں کوئی سوال بھی نہ اٹھا سکے.

راجستھان کے وزیر تعلیم واسودیو دیوناني نے کہا ہے کہ کشش ثقل کے اصول تو نیوٹن سے ہزاروں سال پہلے برهمہ گپت ثانی نے دے دیے تھے. انہی وزیر نے کسی ریسرچ کو اٹھا کر کہہ دیا کہ گائے ہی وہ واحد جانور ہے جو سانس چھوڑتی ہے تو آکسیجن چھوڑتی ہے. باقی سارے لوگ کاربن ڈائی آكسائڈ چھوڑتے ہیں. وزیر جی اگر تین چار لاکھ گائیں لے کر دہلی آجائیں، ان سے آکسیجن چھڑوا دیں تو یہاں کی آلودگی دور ہو جائے گی.

امید ہے کہ اسرو کے سائنٹسٹ، نیوٹن کی دی ہوئی تھیوری، کشش ثقل کو چھوڑ کر برهمہ گپت کے فارمولے کے مطابق بھی کبھی راکٹ لانچ کریں گے. اسرو کو بھی کچھ کہنا چاہیے تھا. برهمہ گپت ثانی کے بارے میں میں بھی پڑھنا چاہوں گا. کیا کوئی فارمولا دیا تھا، 9.8 بتایا تھا، یا صرف کہا تھا کہ کشش ہے. جاننے میں کوئی حرج نہیں ہے لیکن اتنی بڑی کھوج ہمارے وزیر نے کر دی ہے اور انہیں بال بہادروں کے ساتھ بہادری کا ایوارڈ نہیں دیا جا رہا ہے، میں اس کی مخالفت کرتا ہوں.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close