آج کا کالم

وزیر اعظم کا امریکی دورہ- اس بار کچھ الگ سا

سدھیر جین

وزیر اعظم کے تازہ غیر ملکی دوروں کا جائزہ لینے میں میڈیا بڑی الجھن میں دکھا. ویسے تو دوسرے ممالک سے تعلقات کے معاملے میں تمام ممالک کے عام لوگ متفقہ طور سے خودغرض ہو جاتے ہیں. وہ یہی دیکھتے  ہیں کہ دوسرے ملک سے ہمیں کیا فائدہ ملنے والا ہے. معلوم نہیں کس دور میں ایسا ہوتا ہو گا کہ دوسرے ممالک سے تعلقات بنانے یا بڑھانے کے معاملے میں دو ملک ایک دوسرے کے فائدے کی بات سوچتے ہوں گے. تاریخ تو یہی بتاتی ہے کہ ہمیشہ سے ہی اچھی سفارتکاری یہی مانی جاتی رہی ہے کہ کوئی کتنی چالاکی سے کسی ملک سے زیادہ سے زیادہ لے کر آئے اور کم از کم دے کر آئے. آئیے اسی نقطہء نظر سے دیکھیں کہ وزیر اعظم امریکہ سے کیا لے کر آئے اور کیا دے کر آئے.

وہ جو ہندوستانی  میڈیا کے ذریعے ہمارے سامنے آیا

ہمارے اپنے میڈیا نے یہی بتایا ہے کہ نیوکلیئر سپلائر گروپ کی رکنیت کو اور پکی کر کے آئے ہیں. دوسرا فائدہ یہ کہ میزائل ٹیکنالوجی کو ترقی یافتہ ممالک سے حاصل کرنے میں جو اڑچنین تھیں وہ امریکی دورے میں کم کر کے آئے ہیں. تیسرا یہ کہ امریکی عوامی نمائندوں کے سامنے اپنی شان بڑھا آئے ہیں. ہندوستانی  میڈیا نے وزیر اعظم کے دورے سے پیشتر جو ایجنڈا مشہور کیا تھا وہ بھی یہی تھا سو دورے کے بعد یہ تاثر بننا فطری تھا کہ اپنے ملک نے کمال کر دیا. وزیر اعظم کے واپس لوٹ آنے کے کم از کم دو دن بعد تک تو یہی صورت حال بنی ہوئی ہے.

اور وہ جو امركي میڈیا میں مشہور ہوا

سب کی طرح امریکی میڈیا بھی اپنے ملک کے تئیں حب الوطنی کیوں نہیں دکھائے گا. خاص طور پر اس وقت جب دنیا کے تمام بڑے ممالک کی طرح امریکہ بھی مندی کی مار سے دن بدن دبلا ہوا جا رہا ہو اور ان کے سامنے دوسرے ممالک کو اپنا سامان فروخت کرنے کا سب سے بڑا مقصد ہو. امریکی میڈیا نے اپنے ذی ہوش قارئین کے لئے، اپنے ملک کے مفادات کو سب سے اوپر رکھتے ہوئے اور تین کروڑ ہندوستانی نژاد امریکیوں کی فطری خوشی کے لئے ہندوستانی  وزیر اعظم کے دورے کو کمتر کرکے نہیں دکھایا. دورے سے ایک ہفتہ قبل یعنی 27 مئی کو اور دورے سے عین پہلے 5 جون کے نیویارک ٹائمز کی رپورٹوں کو غور سے دیکھیں گے تو ایک بات یہ بھی پائیں گے کہ وزیر اعظم کے گزشتہ 15 سال کی تاریخ اور اقتدار میں آنے کے دو سال کے کام کاج کا ذکر بھی اس اخبار نے کیا تھا. اوباما اور مودی کی خاندانی پس منظر اور اقلیتی معاملے میں سیاسی سوچ کی تبدیلی تک کا ذکر امریکی میڈیا میں کس مقصد سے آیا ہوگا یہ بات اونچے قسم کے سفارتکار ہی بتا پائیں گے.

سودے کی تفصیل عوامی نہیں کی گئی اس بار

امریکہ جدید دنیا کے کامیاب ترین تاجر کے طور پر تسلیم شدہ ہے. اس وقت بھی اس کا رتبہ دنیا کے سب سے زیادہ مالدار ممالک جیسا ہے. وہ سامان بھی وہی بنا کر فروخت کرتا ہے جو اونچی لاگت اور اونچے منافع والے یعنی  بیش قیمتی ہوتے ہیں. اور زیادہ تر وہی چیزیں بناتا ہے جو ترقی پذیر ممالک کو بیچے جا سکیں. لہذا امریکی میڈیا کی نظروں میں ہندوستانی  وزیر اعظم کا امریکی دورہ ایک ایسے بڑے کلائنٹ کا دورہ سمجھا جا سکتا ہے جس کے بارے میں وہ سمجھتا ہے کہ ہندوستان ایک ابھرتی ہوئی معیشت ہے. امریکی میڈیا کے رخ کو غور سے دیکھیں تو اس نے تین باتوں کو توجہ دی. ایک ہندوستان کو ایٹمی بجلی گھر جلدی بیچے جا سکیں، دوسری یہ کہ میزائل ٹیکنالوجی بیچی جا سکے اور تیسری کہ شمسی توانائی کا جدید سامان فروخت کیا جا سکے. رہی بات اس کی کہ ان سے متعلق سودوں کی تفصیلات کو اس بار عوامی نہیں کیا گیا، کہنے کو یہ باتیں دفاع سے متعلق رازداری والی کہی جاتی ہیں لیکن اس سودے کے بھاری بھرکم حجم کی وجہ سے بھی ہو سکتا ہے کہ اسے عام کرنے سے بچا گیا ہو.

تینوں مقاصد کس شکل میں مشہور ہوئے

میڈیا میں ذکر ایٹمی بجلی گھروں کے سودے کا زیادہ نہیں ہوا. اس کام کو نیوکلیئر سپلائر گروپ کی رکنیت کے لئے ہندوستان  کی حمایت کرنے کے نام پر مشہور کیا گیا. اسی طرح میزائل ٹیکنالوجی کو فروخت کرنے کا ذکر نہیں ہوا بلکہ متعلقہ نظام میں ہندوستان  کو شامل کرنے میں امریکی حمایت کا ہوا. شمسی توانائی کا سامان فروخت کرنے کا ذکر نہیں ہوا بلکہ اس بات کو ماحولیاتی معاہدے پر ہندوستان  کی رضامندی کی سمت میں آگے بڑھنے کا ہوا. زمین کو ٹھنڈا رکھنے کے لئے صاف توانائی یا سبز توانائی یعنی شمسی توانائی کو افزودگی کے لئے ہندوستان  پر اچھا خاصا دباؤ ہے. ہماری دقت یہ ہے کہ ہم اس پر بھاری بھرکم خرچ کی مالی حیثیت میں نہیں ہیں.

امریکی اراکین پارلیمنٹ کا گدگد ہونا

فورا ہی سمجھ میں نہیں آیا تھا کہ امریکی پارلیمنٹ میں ہندوستانی  وزیر اعظم کی تقریر کے دوران آٹھ بار دیر تک تالیاں بجنے کا چکر کیا ہے. غور سے دیکھنے سے پتہ چلا کہ وزیر اعظم کی تقریر میں یہ وہ موقعے تھے جو اشارہ دیتے تھے کہ ہندوستان امریکہ کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر چلنے کو راضی ہے. امریکی عوامی نمائندے دنیا میں اس خوفناک بحران کے دور میں یہ سن کر گد گد کیوں نہیں ہوں گے کہ تیزی سے بڑھتی ہوئی معیشت والا اور 130 کروڑ آبادی والا ہندوستان آج مشکل وقت میں امریکہ کے ساتھ ہے، صرف ساتھ ہی نہیں ہے بلکہ امریکہ کا بیسٹ فرینڈ ہے.

ہم کیا لا سکتے تھے امریکہ سے

یہ تو سب کو بھنک لگنے دینے کی بات نہیں ہے کہ ہم خود کس حالت میں ہیں. تاہم اس مغالطہ میں رہنے سے بھی اب کوئی فائدہ نہیں ہے کہ کسی کو معلوم نہیں ہے. مثلا نیویارک ٹائمز نے ہندوستان  کی موجودہ حکومت کے وعدوں اور اس پر عمل کی بات بھی وزیر اعظم کے اسی امریکی دورے سے پہلے لکھی تھی. خیر کچھ بھی ہو، اس بار ہم برابری کے لین دین کی بات سوچ سکتے تھے. مثلا میک ان انڈیا کے لئے براہ راست اوباما کے ذریعہ ذکر چھڑوا سکتے تھے. معلوم نہیں کیوں اس بار امریکہ میں آباد ہندوستانی  کمیونٹی اور دوسرے امریکی سرمایہ کاروں سے ہندوستان  میں پیسہ لگانے، ہندوستان  میں بے روزگاری مٹانے کی باتیں سنائی نہیں دیں. شاید ہم این ایس جی کے ممکنہ رکنیت سے ہی اپنے کو گدگد حالت میں دکھانا چاہتے تھے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

سدھیر جین

سدھیر جین معروف سینیئر صحافی ہیں اور انڈین ایکسپریس گروپ- جن ستا کے چیف سب ایڈیٹر رہ چکے ہیں۔

متعلقہ

Close