آج کا کالم

ونے کٹیار نے کہا تھا آپ بچ گئی ہو نہ؟

ندھی کلپتی

‘تم بچ گئی ہو نہ؟ ونے کٹیار نے کہا تھا ….. کھلی جیپ کو چلاتے ہوئے 6 دسمبر 1992 کو جب میں نے پریشان ہوکر ان سے کہا تھا کہ میری ٹیم مجھ سے بچھڑ گئی ہے. ایودھیا میں بابری مسجد کے گنبد کی اوپری پرت بھربھراكر گر رہی تھی. مڑ کر دیکھا تو لوگ پتھر پھینک رہے تھے کچھ اوپر بھی چڑھے ہوئے تھے اور ہاتھ میں کچھ لئے توڑنے کی کوشش کر رہے تھے. میں مسجد کے احاطے کے بائیں جانب موجود تھی اور بھیڑ مجھے آہستہ آہستہ مسجد سے دور دھکیل چکی تھی. ارد گرد زمین پکی نہیں تھی لہذا بھیڑ کی بھگدڑ سے دھول اڑ رہی تھی ….. شور بھی بہت تھا ۔زمین پر اترے مٹی کے بادلوں نے سب دھندلا سا کر دیا تھا .

6 دسمبر 1992 کے دن صبح صبح لکھنؤ سے براہ راست ایودھیا پہنچی تھی. قریب دو گھنٹے کا سفر تھا. تب میں انٹرنیشنل پرائم ٹائم نیٹ ورک کے لئے کام کرتی تھی، جو برطانیہ، امریکہ، کینیڈا کے لئے ہفتہ وار بھارتی نیوز بھیجا کرتا تھا. وہ زمانہ VHS ٹیپ کا تھا. ویڈیو کیسٹ کا دور. جب لوگ رینٹل کیسٹ لے کر اپنے ویسیآر کے ذریعے نیوز، فلمیں ، پاکستانی ڈرامہ وغیرہ دیکھا کرتے تھے. نیوز چینل تو بعد میں ، 1995 میں شروع ہوئے تھے.

تو دہلی میں خلیج ٹائمز سے آئے راجو ناگراجن ہمارے واحد ایڈیٹر تھے اور میں پہلی بار رپورٹر بنی تھی. نيوزٹریك سے کچھ مہینوں پہلے ہی یہاں آئی تھی. ڈیڑھ سال پہلے ہی کام شروع ہوا تھا. یہاں تمام علاقوں میں رپورٹنگ کرنے کا موقع ملتا تھا … سیاسی، اقتصادی، سماجی، آرٹ … صحت وغیرہ. صبح آفس میں کہانی پر بات چیت کر دن بھر کے لئے نکل جاتے تھے ….. كیمراپرسن، ساؤنڈ ركرڈسٹ اور ڈرائیور … جو ایک چھوٹا سا خاندان بن گیا تھا … صبح سے شام تک.

جب رام جنم بھومی کی تحریک کا زور چل رہا تھا … یونین کے آچاریہ گری راج کشور سے جھنڈے والان میں کئی بار ملنے کا موقع ملتا تھا. رپورٹ بنانے کے لئے ان کی بائٹ اکثر لیا کرتی تھی. ایک دن جب میں نے ذکر کیا کہ میں ایودھیا جانا چاہتی ہوں تو انہوں نے مجھ سے کہا تھا کیا کرو گی جاکر؟ ہٹ کرتے ہوئے میں نے کہا تھا کہ وہاں کا تجربہ ضروری ہے. تب اس پر انہوں نے زیادہ کچھ کہا نہیں تھا. جانے کی خواہش تو تھی کیونکہ دہلی کے گليارو میں بحث تھی کہ کچھ بڑا ہو جائے گا .

ایودھیا شہر میں ہم اپنی ماروتی وین میں سوار آسانی سے گھستے چلے گئے. باسو کی بیريكیڈ گ تھی. اوسط تعداد میں لوگ سڑکوں پر موجود تھے … میلے کا سا ماحول تھا … گاڑی ہم نے لکھنؤ سے لی تھی تو بابری مسجد قریب نظر آنے پر ہم اتر گئے … ہریش پردیسی، روی شرما اور کیمرا مین اسسٹنٹ موریا … ہايبیڈ کیمرے کا زمانہ تھا جس میں بھاری بھاری مشینیں تھیں … صوتی ریکارڈر 8-10 کلو سے کم نہیں ہو گا. قریب پهچتے ہی قطار کے درمیان ہوتے ہوئے ہمیں بائیں جانب بھیج دیا گیا. ہماری شناخت چیک کی گئی تھی. بھیڑ بڑھ رہی تھی. صحافیوں کی تعداد کافی تھی. غیر ملکی صحافی بھی موجود تھے، طرح طرح کے کیمرے … ایک نئے صحافی کے لیے ہر لمحہ سیکھنے کا موقع تھا. وہ بڑا سا کینوس نظر آ رہا تھا جس کے لئے ملکی و غیر ملکی کمپنیاں صحافی اپنا تجربہ درج کرانے موجود تھے.

بھیڑ کے ساتھ نعرے لگاتے لوگوں کی تعداد بھی بڑھ رہی تھی. بائیں جانب مجھے مسجد کا ایک سرا نظر آ رہا تھا. اس طرف کوئی لیڈر نہیں تھے اگرچہ لاؤڈ اسپیکر پر آوازیں خوب آ رہی تھیں . خواتین کافی تعداد میں موجود تھیں . بات کرنے پر انہوں نے مجھے بتایا کہ وہ درگا ڈکٹ سے ہیں … مہاراشٹر سے آئی تھیں . ان تالیاں بجا-بجا کر گانا گانا آج بھی یاد ہے. کچھ نے کہا ہمیں تو ٹریننگ ہے لٹھ چلانے، ٹیلوں پر چڑھنے کی. میرے پیچھے ڈھال کے بعد ایک روڈ سی یاد ہے … مسجد ایک اونچائی پر بنی تھی.

نعرے بازی کی آوازوں کو شور میں تبدیل میں وقت نہیں لگا کیونکہ کچھ لوگ گنبد پر چڑھے نظر آنے لگے. وہ گنبد کو توڑ رہے تھے … کچھ نیچے کھڑے پتھر پھینک رہے تھے … تھامے راجیش اور روی نے کہا تم یہاں ٹھہرو ہم کچھ كلوذپ لے کر آتے ہیں … وہ آگے بڑھے ہی تھے کہ درگا ڈکٹ کی خواتین نے ہاتھوں کو پکڑ ایک لنک سی بنا لی. انہوں نے کہا کہ اس سے ہم بچھڑےگے نہیں . دھکا تیز ہونا شروع ہو گیا تھا. میں نے کچھ کو کہتے ہوئے سنا لڑکوں کو ہی موقع کیوں مل رہا ہے، ہمیں ملتا تو ہم بھی چڑھ کر سکتے تھے.

میں ، راجیش اور روی کے پاس جانے کی کوشش میں تھی کہ چلانے کی آوازیں آنے لگیں … بھگدڑ سی مچ گئی. کچھ مسجد کی طرف بھاگ رہے تھے تو کچھ اس سے دور. دھول کی آندھی سی چلنے لگی تھی … آنکھ پوپ ناک میں گھسنے لگی تھی … راجیش روی کو نظریں تلاش نہیں پا رہی تھیں … میرے سامنے سامنے بائیں جانب کا گنبد گر رہا تھا … آگے پیچھے بھیڑ اور دھول ہی نظر آ رہی تھی. صبح کے دس بجے ہوں گے لیکن شام کا وقت سا لگ رہا تھا … ڈھال سے نیچے سڑک پر اتر ہی رہی تھی تو ونے کٹیار اکیلے کھلی جیپ چلاتے سامنے سے گزر رہے تھے. میں نے ان کو روک کر کہا کہ میرے ساتھی بچھڑ گئے ہیں ، ان کے لئے تلاش کریں … کچھ تصور کریں … انہوں نے بس اتنا کہا – تم بچ گئی ہو نہ؟

پریشانی میں سوجھ نہیں رہا تھا کیا کیا جائے … واپس اوپر چڑھی تو پتہ چلا صحافیوں کی پٹایی ہو رہی ہے … کیمرے توڑے جا رہے ہیں … میں نے گاڑھا سنتری کلر کا پہرہن پہنا تھا، تو شاید مجھ پر صحافی ہونے کا شک نہیں ہوا … کچھ لمحات میں ہانپتے راجیش مل گئے. انہوں نے بتایا کہ کس طرح مشکل سے بچے … راجیش نے کہا گاڑی ڈھونڈتے ہیں پھر اس میں بیٹھ کر روی کو ڈھونڈینگے. کچھ دور  ہی ایودھیا کا تھانہ تھا. وہاں کافی غیر ملکی صحافی موجود تھے. وہ مدد مانگنے لگے ایف آئی آر پوسٹ کرنے کے لیے کیونکہ وہاں ہندی میں ہی لکھی جانی تھی. ان کیمروں کے مہنگے لینس توڑ دیے گئے تھے … بہت بے خراب حالات تھے .

کچھ دیر روی کا انتظار کرتے ہم مرکزی سڑک پر پہنچے تو ڈرائیور مل گیا. ٹوکری میں بیٹھتے ہی اس نے پوچھا آپ لوگ کس طرح بچ گئے ..؟ کہا اب فوری طور پر یہاں سے نکلنا ہو گا … پریس سٹکر اس نے ہٹا دیا تھا … ہریش کیمرے کو رکھ ہی رہے تھے کہ اسسٹنٹ موریا بھی مل گیا سڑک پر … راجیش ہم سب سے زیادہ تجربہ کار تھے. انہوں نے کہا روی بھی آگے مل ہی جائے گا … آگے بڑھتے چلو … تاہم وہ ہمیں نہیں ملا …

لکھنؤ کے راستے پر گاڑیاں زیادہ نہیں تھیں . ہماری ماروتی وین کا زبردست ایکسیڈنٹ بھی ہونا تھا … سائیکل والے کو بچانے کے چکر میں گاڑی پلٹ گئی لیکن کسی کو چوٹ نہیں آئی. خراب گاڑی کے بعد وہاں کے مقامی اخبار ‘آج’ کی جیپ سے ہم لکھنؤ پہنچے. لیکن بڑا دھچکا تب لگا جب رات میں نازل کی روی کی بہت پٹائی ہوئی تھی … پاؤں ٹوٹ گیا تھا اور سر پر بھی مارا گیا تھا … وہ ہسپتال میں موجود تھا. صوتی ریکارڈر ٹوٹ گیا تھا اور ٹیپ ڈیمیج ہو گیا تھا. بہت صحافیوں کی پٹائی ہوئی تھی. بعض خواتین صحافیوں سے بدسلوکی بھی .

دہلی واپسی پر سی بی آئی کے لوگ پوچھ گچھ کے لئے اکثر آفس آتے تھے … کچھ بچے ہوئے ٹیپ لے لئے تھے … روی کو تو بار بار سی بی آئی کے دفتر بھی جانا پڑتا تھا. دہلی میں صدر شنکر دیال شرما نے تمام صحافیوں کو ملنے کے لئے بلایا تھا. اپنا احتجاج درج کرانے کے لئے ایک میمو بھی سونپا تھا. لیکن اس وقت بھی یہ بحث تھی اور اب بھی رہتی ہے کہ بہت سے کیمروں کے باوجود وہ تصويریں کہاں گئی؟ ایک دو اب بھی تصاویر کے علاوہ ویڈیو کہاں گئے ؟

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close