آج کا کالم

پتھروں کی رستي مٹی سے سانسوں میں جمتی موت!

راجستھان کے واڑہ ضلع کے كلےكٹریٹ احاطے میں عوامی سماعت میں آسيند تحصیل کے رگھناتھپرا گاؤں کے گوپی (64 سال)، جو کہ بول اور سن نہیں سکتے اور ان کا ایک ہاتھ بھی نہیں ہے، اپنا درد بتانے آئے ہیں . انہیں معذور پنشن ملتی ہیں ، لیکن گزشتہ پانچ ماہ سے وہ بھی نہیں ملی ہے. ان کی بیوی ٹی بی کی بیماری سے چل بسی. گھر میں ایک لڑکا اور ایک لڑکی ہے. لڑکی، ماں کی موت کے بعد سے حیران، لہذا بہت ہی گمسم رہتی ہے. وہ صرف سب کی خوراک پوری کر دیتی ہے. سوال یہ ہے کہ گھر خرچ کس طرح چلے؟ تو کیا گوپی اجرت بھی نہیں کر سکتے ہیں ؟ اس کا جواب بھی ہے – نہیں .

بھری جوانی میں گوپی نے ارد گرد کی ارولي پتھر کی کانوں میں کام کرنا شروع کیا تھا. پتھروں کو توڑنا ان کا مشغلہ تھا، پر اب انہیں سلیكوسس بیماری ہو گئی ہے. تین بیگھا کھیتی ہے، لیکن بیوی کی بیماری میں قرض کے چلتے گروی رکھا گیا. حالانکہ گوپی بول نہیں سکتے لیکن ہر آتی جاتی سانس کے ساتھ ان کے پھولتے نتھونے اور ان کی کراہ ان کے حال بيا كر دیتی ہے.

رگھناتھپرا میں صرف گوپی نہیں ، بلکہ 56 اور لوگ ہیں جو اب سلیكوسس کی زد میں ہیں . ایسا نہیں کہ یہ کہانی صرف رگھناتھپرا ہے، بلکہ واڑہ کی بنیڑا تحصیل کے سالريا پنچایت کے مسٹر جی کے کھیڑا گاؤں کے عذاب تو اور بھی خوفناک ہے. اس گاؤں میں 60 گھروں میں 70 سے زائد بیوہ خواتین رہتی ہے، لیکن ان بیواؤں کو ضلع انتظامیہ سے آج تک راحت نہیں ملی ہے، جبکہ انہیں خود بھی سلكوسس ہے. اسی گاؤں کے شنکر (42 سال) کی موت گزشتہ ماہ ہی ہوئی ہے. وہ سلیكوسس کا بوجھ زیادہ دن اپنے کندھے پر ڈھو نہ سکا.

سوال یہ ہے کہ جب لوگوں کو پتہ چل گیا کہ یہ بیماری جان لیوا اور لاعلاج ہے تو پھر ان کانوں میں کام ہی کیوں کرنا! کیونکہ یہاں پر منریگا کا کام کھلتا نہیں ہے. کام مانگنے اور نہ دینے پر قانونی اجرت الاؤنس حاصل نہیں ہے. ایسے میں لے دے کر یہی اختیار بچتا ہے اور اس میں بھی اجرت باہر کی توقع سے زیادہ ملتی ہے. یہ سال بھر ملنے والا کام ہے. بس یہی مجبوری ان مزدوروں کو زندگی سے موہ کرتے ہوئے بھی موہ تحلیل کرا دیتی ہے. سوال یہ بھی ہے کہ جب صورت حال اتنی خوفناک ہے تو پھر حکومت کیا کر رہی ہے؟

اول تو حکومت نے پہلے یہ مانا ہی نہیں کہ سلیكوسس  نامی کوئی بیماری بھی ہے. سرکاری نمائندے مزدوروں کو ٹی بی جان کر ان کا علاج کرتے رہے، جب صورت حال قابو سے باہر ہونے لگی، تو سپریم کورٹ کو نوٹس لینا پڑا. اس کے بعد بھی انتظامیہ نے نہ تو سلیكوسس کی تحقیقات میں تیاری دکھائی اور نہ ہی سرٹیفکیٹ کے بعد ملنے والے معاوضے کو دینے میں . پورے ضلع میں ابھی صرف 1050 لوگوں کو ہی ٹیگ کردہ کر سرٹیفکیٹ تقسیم کئے گئے ہیں ، جبکہ ان کانوں میں کام کرنے والے مزدوروں کی تعداد 000 20 کے قریب ہے. معلوم ہو کہ سلیكوسس  میں مبتلا شخص کو امداد کے طور پر ایک ملین اور موت پر تین لاکھ کا معاوضہ دیا جاتا ہے.

کن مزدوروں کو سلیكوسس ہوا ہے، اس کی شناخت بھی بڑی ٹیڑھی کھیر ہے. مہینے میں ایک بار نيوموكونوسس بورڈ ضلع ہیڈکوارٹر پر بیٹھتا ہے اور جا نچ پڑتال کرتا ہے. یہ تحقیقات بھی ایکسرے کے ذریعے ہی کی جاتی ہے، جس سے کئی مریض تو پکڑ میں ہی نہیں آ پاتے ہیں . راجستھان میں کہیں پر بھی ILO Plate نہیں ہے، جس پر آسانی سے سلیكوسس کی علامات پڑھے جا سکتے ہیں . اس کے علاوہ UNGSYSP بھی راجستھان میں ابھی نہیں ہے. یہ خطرے والا کام بھی ہے، کیونکہ اس میں انجکشن پھیپھڑوں میں داخل کر وہاں سے نمونہ لیا جاتا ہے. تاہم واڑہ میں بنے دباؤ سے اب یہ بورڈ ماہ میں 2-3 بار بیٹھنے لگا ہے. شناخت ہو جائے تو بھی معاوضہ کی رقم مزدوروں کے اکاؤنٹس تک پہنچنے میں بڑی دقت ہے. کچھ مزدوروں کا اکاؤنٹ تو جن دھن منصوبہ بندی کے تحت کھلا تھا جس میں 50000 روپے سے زیادہ کی رقم جا نہیں سکتی تھی، اس لئے ان کا چیک واپس آ گیا.

مزدور کسان طاقت تنظیم (ایم كے ایس ایس) کے نکھل ڈے اس عمل پر سوال کھڑے کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ یہ متضاد عمل ہے. وہ کہتے ہیں کہ سلیكوسس  کی شناخت ہونے پر مزدور کو راحت رقم دی جائے گی، لیکن یہ رقم ملنے کے لئے مزدور کو نيوموكونوسس بورڈ کو یہ بتانا پڑے گا کہ اس نے کس کان میں کام کیا ہے. وہ کہتے ہیں کہ عام مزدور بہت کانوں میں کام کرتے رہتے ہیں اور خان مالک بھی مزدوروں کا چست درست ریکارڈ نہیں رکھتے ہیں . اس کے علاوہ ایک حقیقت یہ بھی ہے کہ کچھ لوگوں کو سلیكوسس  صرف اس لئے بھی ہوئی کیونکہ وہ بالواسطہ طور پر اس کے اثرات میں ہیں . انہیں بھی ثابت کرنا ہے کہ انہیں سلیكوسس  کیسے ہوئی؟ جبکہ سپریم کورٹ کا کہنا ہے کہ راحت تو سب کو ملنا چاہئے.

اگر مزدور کی موت ہو جائے تو اس کے وارثین کو 3 لاکھ روپے کی رقم ملتی ہے، لیکن اس کے پیچھے بھی ایک عمل ہے. متاثر ہلاک ہونے کے بعد نيوموكونوسس بورڈ کے سامنے ہی اس کا پوسٹپارٹم ضروری ہے. اس کے بعد ہی اسے مستحق مانا جائے گا. نکھل کہتے ہیں کہ سلیكوسس ایک لايلاج بیماری ہے اور جب ایک بار شخص کا تصدیق ہو گیا ہے کہ وہ سلیكوسس  کا ہی مریض ہے تو پھر اس کے کیا معنی ہیں ؟ اگر کوئی میڈیکو- لیگل معاملہ ہو تو بات مختلف ہے.

مزدوروں کا سانحہ یہیں نہیں کم ہوتا ہے. جهاجپر تحصیل کے گڈبديا گاؤں کے مدن داس کا درد مختلف ہے. ان کے گاؤں میں 150 مزدوروں میں سے صرف ان کا ہی سلیكوسس  کے سرٹیفکیٹ بنا، لیکن اس کے ٹھیک دوسرے دن ہی ان سمیت 40 لوگوں کو ایک ساتھ کام کرنے سے بٹھا دیا گیا ہے. ایک طرف لیبر قوانین ہیں ، دوسری طرف مدن داس جیسے لوگ زمینی چیلنجوں سے دو چار ہیں .

ان پتھر کانوں کا ریاضی بھی بڑا ہی غضب کا ہے. پتھر کان کی لیز حاصل کرنے کے لئے درخواست گزار کو کلکٹر آفس میں درخواست دینا ہوتا ہیں . اس درخواست کو کوئی بھی شخص کر سکتا ہے، پر یہ بھی اتنا ہی سچ ہے کہ کانیں رسوخ رکھنے والوں کو ہی ملتی ہے؟ کہنے کو یہ سب کے لئے کھلا عمل ہے، لیکن یہی عمل مقامی جنوں اور پنچایتی راج کے لحاظ سے بھی ایک چیلنج ہی ہے، جبکہ ہم سب جانتے ہیں کہ مقامی وسائل پر مقامی کمیونٹی کا ہی پہلا حق ہے، لیکن ایسا ہوتا نہیں ہے.

اب حکومت کہہ رہی ہے کہ کان مزدوروں کے لئے کھلی سانس لینے پراجیکٹ شروع ہو جائے گا، جس میں کہ واڑہ سمیت دیگر 19 ضلع شامل ہیں . معلوم ہو کہ ریاست کے 20 اضلاع کے 34 بلاکوں میں وسیع سطح پر کان کنی کا کام ہوتا ہے. بہر حال اس پورے قواعد میں یہ تو طے ہے کہ ابھی ہو رہے سارے جتن صرف زدہ آسماں میں تھیگڑے لگانے جیسے ہیں ۔ کیونکہ روک تھام کو لے کر تو کوئی بھی کوشش نہیں ہے. تاہم اس مسئلے کا ایک سرا سماج کی طرف بھی آتا ہے، کیا ہم اپنے گھروں میں ٹمٹمانے پتھروں سے گریز کرنے کی تیاری کر سکتے ہیں .

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close