آج کا کالم

چائے: سستہ قومی مشروب

رويش کمار

چائے کی دکان میں آکسیجن سلنڈر جیسی چیز کو دیکھ کر میری نظر ٹھہر گئی. دکاندار راجیش شکلا نے بتایا کہ یہ انگریزوں کا نظام ہے. وہ چلے گئے لیکن چائے پینے کا یہ اسٹائل بھارت میں رہ گیا. انگریز دودھ والی چائے نہیں پیتے تھے. ليكر (صرف پتی والی چائے) ہی پیتے تھے. سلنڈر میں کھولتا پانی ہے. "نیچے لگے نلكے سے جب پانی نکلتا ہے تو ہم پتی والی گلاس نیچے رکھ دیتے ہیں . گلاس کے اندر اندر چھنني لگی ہوئی جس پر پتی رکھی ہوتی ہے. گرم پانی کا رنگ بدل جاتا ہے. "

"لیکن انڈین لوگوں کو یہ اتنا پسند نہیں ہے. "تین- تین نسلوں سے چائے فروخت کرنے کی ٹھسك نے راجیش شکلا کو چائے کا سماجی علوم کے ماہر بنا دیا ہے. سو سال سے زیادہ وقت ہو گیا ہے. شکلا کہتے ہیں کہ مجھے  چائے بنانے کی ہی عادت ہے. اب کے ٹیسٹ کے مطابق میں پہلے ليكر ہی بناتا ہوں بعد میں اس میں دودھ اور چینی ملا دیا جاتا ہے اور پھر تھوڑی دیر کے لیے لئے ابال دیتے ہیں . شکلا کی دکان پر بہت بھیڑ ہوتی ہے. اچھی بات یہ ہے کہ وہ مٹی کے کپ (چككڑ) میں چایے پلاتے ہیں۔

بنگال میں چائے کی سطح ملک کے کسی بھی حصے سے بہتر ہے. یہاں دہلی یا باقی حصے کی طرح چولہے پر پانی، دودھ اور پتی کو ساتھ ساتھ گھنٹوں نہیں كھولايا جاتا ہے. دہلی کے لوگوں نے گولہ باری اور کڑک چائے کے نام پر چائے پینے کی عادت بگاڑ لی ہے. ویسے كھولا-كھولا کر پیدا ہوتی چائے کے معاملے میں بھی بنگال دہلی کو ٹکر دے سکتا ہے.

شاید کولکتہ میں نوآبادیاتی پرنٹ گہری رہی ہوگی تبھی یہاں ركشاوالا سے لے کر مچھلی بیچنے والا بھی چائے پیتا ہوا نظر آتا ہے. نیبو چائے بھی خوب پیتے ہیں. جبکہ شمالی ہند کے لوگ چائے کو  افسر یا کلکٹر چائے سمجھتے ہیں . دہلی کے مقابلے میں کولکتہ میں کھلی چائے کی دکانیں بھی بہت ہیں. بنگال کی چائے دکانوں میں چائے بنانے کا طریقہ کار میں خوب تنوع نظر آئے گی. کاریگری اور کلاکاری دونوں صورتوں میں. دہلی کی سڑکوں پر کہیں چلے جائیں ایک ہی طریقے سے چائے بنتی نظر آئے گی.

وجيگڑھ علاقے کی چائے کی یہ دکان مجھے کافی پسند ہے. پیالا کے نیچے چھنني لگی ہے. اس کے اوپر ليف رکھی ہوتی ہے. دکاندار کھولتے پانی کو اس پیالا سے پاس کرتا ہے. گرم پانی کے ساتھ رابطے میں آکر پتی اپنا رنگ اور ذائقہ چھوڑتی ہے. اسے دوسری کیتلی میں جمع کر لیا جاتا ہے. پہلے سے گلاس میں گرم دودھ رکھا ہوتا ہے جسے پتی والے پانی کو ڈال دیا جاتا ہے. چائے تیار. دودھ کی چائے کا ذائقہ بھی اچھا لگتا ہے.

بغیر دودھ والی چائے کی طریقہ بھی آسان ہے. پہلے دکاندار نے پیالا والی چھنني پر رکھی پتیوں کے اوپر سے کھولتے پانی کو پاس کرایا. پیالا کے نیچے ایک بڑا پیالا رکھا ہوتا ہے جس میں اس پانی کو روک لیا جاتا ہے. اب یہ ایک طریقے سے سولیوشن بن جاتا ہے جسے تین تین چمچ کے حساب سے گلاس میں ڈال دیا جاتا ہے. اس میں علیحدہ سے کھولتے پانی کو ڈالا جاتا ہے. چینی مختلف حساب سے ملا دیا جاتا ہے.

بڑا بازار میں چائے بنانے کی اس ٹیكنالجي کو دیکھئے. اس نے تو كھولانے کے معاملے میں دہلی کو بھی پیچھے چھوڑ دیا ہے. باقاعدہ چولہے کے نیچے ایک بندہ بٹھایا گیا ہے جو مسلسل اس دیسی مشین سے ہوا پیدا کر رہا ہے. مشین کی ٹوٹي سے نکلنے والی ہوا چولہے کی آنچ کو تیز رکھتی ہے اور اس سے اوپر چائے اس قدر كھدكتي رہتی ہے کہ بیچاری پتیاں جل کر خاک ہو جاتی ہوں گی. ذائقہ تو پتہ ہی نہیں چلتا. لیکن اس کے ذائقہ کے رسیا بھی کافی ہیں. چائے برتن کافی بڑا ہے. یہاں سے چھوٹی چھوٹی كیتليو میں بھر کر دکاندار کا آدمی بڑا بازار کی تنگ گلیوں میں لے جاتا ہے. ایک طرح سے یہ چائے بنانے کا صنعتی طریقہ ہے. بنانے اور تقسیم کے کام میں بہت سے لوگ لگے ہیں .

چائے بھارت کا ‘قومی سستہ مشروب’ (نیشنل اسٹریٹ ڈرنک) ہے. کسی نکڑ پر چائے کی دکان نہ ملے تو لگتا ہے کہ یہاں آبادی ہی نہیں ہے. اور ہاں دام کے معاملے میں کولکتہ بہت سستا ہے. چار سے پانچ روپے میں دودھ کی چائے مل جاتی ہے. تین روپے میں ليكر چائے. دہلی میں آپ کو دودھ کی چائے کے آٹھ سے دس روپے دینے پڑتے ہیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close