آج کا کالم

کالا دھن- ناکافی ہے من کی بات، کریں پالیسیوں میں تبدیلی

وراگ گپتا

سنگھ پریوار سے جڑے  سودیسی جاگرن منچ کے کنوینر کشمیری لال نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی اچھے ڈاکٹر ہو سکتے ہیں، لیکن پرانی دواؤں کے استعمال سے معیشت کی حالت کیسے بہتر ہوگی …؟ اس بار ‘من کی بات’ پروگرام میں سماجی مسائل کے بجائے کالے دھن اور ٹیکس چوری کی بحث کرکے وزیر اعظم نے اچھی نیت کو دکھایا ہے، لیکن حکومت کی پالیسیوں سے تو کالے دھن کا مسئلہ اور زیادہ بڑھ رہا ہے …

کالے دھن کی واپسی اور سخت سزا پر حکومت کی ناکامی –

حکومت بنانے پر ہر شہری کے اکاؤنٹ میں 15 لاکھ روپے جمع کرانے میں ناکام ہونے پر بی جے پی صدر امت شاہ نے اسے جملہ ہی قرار دے دیا. کالے دھن پر حکومت کی نئی منصوبہ بندی سے تقریبا 3,770 کروڑ کا ہی انکشاف ہو سکا، جس کے علاوہ 13,000 کروڑ کے کالے دھن کی اطلاع ملنے کی بات کہی جا رہی ہے. سال 2012-13 میں 2.87 کروڑ لوگوں نے انکم ٹیکس ریٹرن فائل کیا، جس میں صرف 1.25 کروڑ لوگوں نے ٹیکس دیا. ملک میں صرف5,430  لوگوں نے ایک کروڑ روپے سے زیادہ اور ان میں سے صرف تین لوگوں نے 100 کروڑ سے اوپر انکم ٹیکس دیا. وزیر اعظم نے اس گڑبڑی پر اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ 125 کروڑ لوگوں میں صرف ڈیڑھ لاکھ لوگوں کی قابل ٹیکس آمدنی 50 لاکھ روپے سے زیادہ ہے، جبکہ لاکھوں لوگ کروڑوں کے بنگلے میں رہ رہے ہیں. سوال یہ ہے کہ کالے دھن والوں کو سزا دینے کے بجائے، نو لاکھ کروڑ خرچ کر کے حکومت ان کے لئے اسمارٹ سٹی کیوں بنا رہی ہے …؟

سیاستدان، صنعت کار اور افسروں کے گٹھ جوڑ سے پیدا شدہ بگڑا ہوا سرمایہ دارانہ نظام اور کالا دھن –

 مرکز اور ریاست کے انتخابات میں تمام جماعتوں کی طرف سے 10 لاکھ کروڑ سے زیادہ کالا دھن  خرچ ہوتا ہے، جس کی جھلک بی ایس پی کے باغی رہنما سوامی پرساد موریہ کے ذریعہ ٹکٹ دینے میں بدعنوانی کے بیانات سے ملتی ہے. سیاسی جماعتوں کی طرف سے     20,000 روپے سے زیادہ کی آمدنی یا خرچ کو چیک سے ہی کرنے کی پابندی کے قانون کو مودی حکومت لاگو کرکے کالے دھن کے نظام کی اصلاح سکتی ہے، جس کو کرنے کے بجائے بڑے صنعت کاروں کو 5.32 لاکھ کروڑ سے زیادہ کی ٹیکس چھوٹ دے دی جاتی ہے.

سرکاری بینکوں کے پیسے کی لوٹ پر حکومت کی خاموشی –

 گزشتہ سال انکم ٹیکس کی کل وصولی تقریبا تین لاکھ کروڑ کی تھی، جب کہ صرف 44 صنعت کاروں نے پانچ سرکاری بینکوں سے 4.87 لاکھ کروڑ روپے کا قرض لیا ہے. ریزرو بینک کے اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ سال 31 مارچ تک سرکاری بینکوں کے کل پھنسے ہوئے قرض کا 1/3حصہ صرف 30 قرض داروں نے ہضم کر لیا. ڈی او پی ٹی کی طرف سے جاری نئے قوانین کے مطابق سرکاری گرانٹ کے طور پر دو کروڑ روپے سے زیادہ کی رقم لینے والے این جی او کے ذمہ داران کو پبلک سروینٹ مانتے ہوئے ان کے خلاف بدعنوانی مخالف قانون کے تحت کارروائی ہو گی، جب کہ سرکاری بینکوں کے لاکھوں – کروڑوں روپے ہضم کرنے والے بڑے صنعت کار، جو کالے دھن کی بڑی وجہ ہیں، کے خلاف قانون بے بس ہی رہتا ہے.

‘اسمارٹ سٹی’ کے دور میں ہندوستان بھی ‘بریگزٹ سینڈروم’ کی گرفت میں –

 وزیر اعظم نریندر مودی نے پونے میں ‘اسمارٹ سٹی’ کی منصوبہ بندی کا آغاز کرتے ہوئے اسے ہر مرض کی دوا بتایا. ان میں رہنے والے ایک فیصد بڑے لوگوں نے ملک کے 53 فیصد سے زیادہ وسائل پر قبضہ کیا ہے. کالے دھن کا نظام ان لنبرداروں کو سزا دینے کے بجائے انہیں بینکوں کی قرض معافی، ایف ڈی آئی سے سستا مال و دولت اور لیبر- قوانین میں سرکاری رعایت دی جا رہی ہے. ای کامرس کی نئی اکنامی سے جاب لیس گروتھ  ہو رہی ہے، جس سے کروڑوں نوجوان بے روزگاری کی مایوسی اور نشے کا شکار ہیں. جی ڈی پی کے اعداد و شمار میں بھلے ہی شک ہو، لیکن زراعت کے علاقے منفی بڑھوتری کی شرح پر تمام متفق ہیں. گاؤں میں اور عام آدمی کے پاس کالا دھن تو نہیں، لیکن بے مائیگی کا سوکھا ہے، جو اسمارٹ سٹی کے کچڑے سے دور نہیں ہو گا. سرکاری پالیسیوں کی وجہ سے ملک میں امیروں اور غریبوں کے درمیان بہت بڑی کھائی ہے، جسے اسمارٹ سٹی کے ذریعہ پختہ کیا جا رہا ہے، جس سے ہندوستان بھی بریگزٹ سینڈروم کی گرفت میں آ سکتا ہے. عوام کو راحت دینے کے لئے پی ایم کو ‘من کی بات’ کے علاوہ پالیسیوں میں تبدیلی بھی کرنی پڑے گی، ورنہ بے روزگاری اور بے مائیگی سے لاچار ہندوستان، کالے دھن سے لبالب اسمارٹ سٹی کے دروازے پر پناہ گزین کے طور پر دستک تو دے گا ہی …!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

وراگ گپتا

وراگ گپتا سپریم کورٹ ایڈووکیٹ اور آئینی امور کے ماہر ہیں۔

متعلقہ

Close