آج کا کالم

کامیڈی چھوڑ صرف وزارت سنبھالیں سدھو!

وراگ گپتا

کانگریس لیڈر نوجوت سنگھ سدھو وزیر بن جانے کے بعد کامیڈی شو میں کام کر سکتے ہیں یا نہیں، اس بارے میں پنجاب کے وزیر اعلی امرندر سنگھ نے ریاست کے ایڈوکیٹ جنرل سے قانونی رائے مانگی ہے. عہدے پر تنازعہ ہونے کی وجہ سے دہلی میں عام آدمی پارٹی کے کئی اراکین اسمبلی کی رکنیت خطرے میں ہے. رہنما اور ممبران اسمبلی کے لئے ‘کام نہیں تو تنخواہ نہیں’ کا اصول لاگو ہونے کی بات بھی ہو رہی ہے، تو پھر سدھو کے کامیڈی شو کے بہانے ملک بھر کے رہنماؤں کو جوابدہ بنانے کا قانون کیوں نہ بنے؟

اگر وزیر کی تنخواہ سے سدھو کا کچن نہیں چلتا تو لیڈر عوام کی لاچاری سمجھیں۔ پنجاب میں عوام کی اوسط آمدنی تقریبا00 8 روپے مہینہ ہے. سدھو کو وزیر ہونے کے ناطے مفت مکان، گاڑی، فون، عملے، مراعات کے ساتھ بھاری تنخواہ بھی ملتی ہے، تو پھر کچن اخراجات کے لئے انہیں کامیڈی شو کی آمدنی درکار کیوں ہے؟

کامیڈی شو کی طرز پر ممبران پارلیمنٹ کے اشتہارات اور فلمی کاروبار پر روک لگے: وزیر بننے کے بعد سدھو کا کامیڈی شو میں حصہ لینا اگر غیر قانونی ہے، تو پھر پارلیمنٹ ہیما مالنی کی طرف سے مصنوعات کی تشہیر اور پریش راول کی طرف سے فلموں میں کام کرنے کو کس طرح جائز ٹھہرایا جا سکتا ہے؟ اس بات کو لے کر قانون اب بننا ہی چاہئے کہ رکن اسمبلی پارلیمنٹ حکومت سے تنخواہ لیتے وقت دیگر کاروبار سے آمدنی نہ ہونے کا حلف نامہ دیں.

تمام پارٹیوں کے ممبر اسمبلی، رہنما اور وزیر دوسرے پیشوں میں ملوث ہیں: اکالی- بی جے پی حکومت کے سابق وزیر اعلی پرکاش سنگھ بادل آپ رسوخ سے ٹرانسپورٹ اور معدنی کا کاروبار چلاتے تھے، جس کی مخالفت کرکے کانگریس نے پنجاب میں بھاری اکثریت سے حکومت بنائی. منشور میں بڑے وعدوں کی بجائے تمام پارٹیاں اپنے ممبران اسمبلی، ارکان پارلیمنٹ اور وزراء کو دوسرے کاروبار اور کاروبار بند کرنے کا قانون کیوں لاگو نہیں کرتیں؟

آفس آف پرپھٹ قانون کی ملک گیر غلط استعمال: کامیڈی شو سرکاری پروگرام یا منافع کا عہدہ نہیں ہے، تو سدھو اس قانون کے دائرے میں نہیں آتے. ڈبل فائدہ کے الزامات کی وجہ سے دہلی میں ‘آپ’ کے ممبران اسمبلی کی رکنیت اور دوسرے لوگوں کو چھوٹ پر تنازعہ ہے. اس بارے میں واضح قانون اگر بن جائے تو ممبران اسمبلی-ممبران پارلیمنٹ کے اوپر ملک گیر احتساب قابل اطلاق ہو سکتا ہے.

کھیلوں کی ایسوسی ایشنز سے ممبر پارلیمنٹ اور وزراء کو فائدہ اور کمائی پر لگام کیوں نہیں: کرکٹ اور دیگر کھیلوں کی ایسوسی ایشنز کے ذریعے سے کانگریس کے راجیو شکلا، این سی پی کے شرد پوار، بی جے پی کے انوراگ ٹھاکر سمیت کئی رکن اسمبلی، رہنما اور وزیر بہت فائدہ لیتے رہے ہیں. سپریم کورٹ کی طرف سے بی سی سی آئی معاملے میں حکم کے بعد زیادہ تر سیاستدان کھیلوں کی ایسوسی ایشنز کے انتظام سے باہر ہو گئے ہیں، لیکن اس کے باوجود پارلیمنٹ کو اس بارے میں جلد ہی قانون بنانا چاہئے.

افسر اور جج دوسرا کاروبار نہیں کر سکتے تو پھر وزیر کیوں: سابق وزیر ماحولیات اور کانگریسی لیڈر کمل ناتھ پر اپنے ہوٹل کی ماحولیاتی منظوری، وزیر ٹرانسپورٹ نتن گڈکری پر ای رکشہ کی پالیسیوں اور کاروبار متاثر کرنے کے سنگین الزامات لگتے رہے ہیں. قانون کے مطابق سرکاری افسر اور جج دوسرے کاروبار نہیں کر سکتے. وکالت جیسے ذاتی پروفیشن والے لوگ بھی دوسرا کاروبار نہیں کر سکتے، پھر پارلیمنٹ اور وزراء کو دیگر کاروبار کرنے کی اجازت کیوں ملنی چاہئے؟

اسمبلی اور پارلیمنٹ میں مفادات کا تضاد: رکن اسمبلی پارلیمنٹ اگر دیگر کاروبار سے براہ راست یا بالواسطہ طور پر منسلک ہیں، تو وہ لوگ پارلیمانی کمیٹی اور قانون کی تعمیر کا حصہ نہیں بن سکتے. اس کے باوجود تمباکو، سگریٹ، ادویات، دفاع سمیت بہت سے شعبوں کی پالیسیوں اور ٹیکس کے نظام کو زیادہ تر رہنما غیر قانونی طور پر متاثر کرتے ہیں. ایسے لوگوں کو انتخاب لڑنے سے منع کرنے کا قانون کیوں نہیں بننا چاہئے؟

کام نہیں، تو تنخواہ نہیں کی حکمرانی کب لاگو ہو گی: وزیر اعظم نریندر مودی نے پارلیمنٹ میں بی جے پی ممبران پارلیمنٹ کی غیر موجودگی کے بارے میں سنجیدہ روش کا اظہار کیا، جبکہ گزشتہ پارلیمانی سیشن کا قیمتی وقت ممبران پارلیمنٹ کے بائیکاٹ کی وجہ سے برباد ہو گیا. ممبران پارلیمنٹ کو حاضری اور کام کے مطابق ہی تنخواہ ملے، اس کے لئے پارلیمنٹ کب قوانین بنائے گی؟

ممبر اسمبلی-ممبران پارلیمنٹ کو آر ٹی آئی کے دائرے میں لایا جائے: رکن اسمبلی اور ایم پی تنخواہ، الاؤنس، خصوصیات کے ساتھ ساتھ دیگر مراعات بھی لیتے ہیں تو پھر انہیں آر ٹی آئی قانون کے تحت جوابدہ کیوں نہیں بنانا چاہئے ؟

بیرون ملک کی طرز پر ‘مفادات کے تضاد’ کے لئے بھارت میں بنے قانون: حال ہی میں برطانیہ کے سابق وزیر خزانہ اور موجودہ ممبر پارلیمنٹ جارج اوسبورن کے مدیر بننے پر تنازعہ ہوا تھا. بھارت میں رکن اسمبلی-ممبران پارلیمنٹ کی طرف سے جائیداد-کاروبار کا اعلان، گفٹ پابندی اور تجارتی مفادات کا انکشاف کرنے کے قوانین ہیں، جنہیں سنجیدگی سے شاید ہی لاگو کیا جاتا ہو. سدھو کے بہانے وزیر اعظم نریندر مودی سیاستدانوں کے قوانین کیلئے سخت قانون بنانے کی پہل اگر کریں تو جمہوریت کو ‘کامیڈی سرکس’ بننے سے روکا جا سکتا ہے!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close