آج کا کالم

کسانوں کی زندگی کتنی سستی؟

رویش کمار

بھارت کی بے روزگاروں کے لئے ایک بہت ہی سادہ بات کہنا چاہتا ہوں. پہلے نوجوانوں کو اچھے اور مستقل اسکولوں سے محروم کرنا ان کو بے روزگار بننے کے قابل بنایا گیا ہے، پھر جب وہ کالج سے نکل کر کسی طرح کی لائق بن بھی جاتے ہیں تو پھراس بات کوشش کی جاتی ہے کہ وہ زندہ بےروزگار رہ رہیں. نوجوانوں کے ساتھ ساتھ ملک کے کسانوں کا بھی برا حال ہے. راجستھان، مڈل ریاست اور مہاراشٹر کی یوت مال میں کسانوں کے ساتھ جو ہوا ہے، اس پر بات کرنا چاہتا ہوں. دو ماہ سے وہاں کٹشنا شک سپرے کرنے کی وجہ 19 کاشت کار مر چکی ہیں. 25 کسانوں کی آنکھوں پر بہت خراب اثر پڑا ہے. تقریبا 700 کسانان یوت مال کے ہسپتالوں میں بھرتی ہیں اور زندگی اور موت کے درمیان جدوجہد کر رہے ہیں.

یوت مال میں اس سال کا کپاس کی بہت بوائی ہویی ہے، لیکن کپاس کو کاٹنیشکوں سے بچانے گیے بہت سے کسان اپنے گاؤں واپس لوٹ کر نہیں آیے. ستمبر کے پہلے ہفتے سے ہی کسانوں کی موت کی خبر آنے لگی تھی. بی ٹی کوٹن پر جب کیٹوں کا حملہ ہوا تو بچانے کے لئے کیٹناشک کی ضرورت پٹی. ماسک اور دستانے نہ پہننے کی وجہ سے سپرے کے دوران زہر ان کے جسم میں داخل ہوگیا. 20 کسان وسوتراو نیک سرکاری ہسپتال کے آئی سییو میں بھرتی ہیں. صرف ستمبر کے مہینے میں 160 کسان اور مزدوروں کا علاج جسم میں زہر جانے کے سبب ہوا ہے. گزشتہ تین ماہ میں 300 کسانوں کا علاج ہوا ہے. اب یہ تعداد 700 بتائی جا رہی ہے. اپنے فصل کو بچانے کے لیے میں کسان جان سے ہاتھ دھو رہے ہیں.

اب مہاراشٹر حکومت نے اعلی سطحی کمیشن کا قیام شروع کیا ہے. فیصلہ کیا گیا ہے کہ دوا چھڑکاو کے دوران استعمال کے لئے مفت میں دستانے اور ماسک دیئے جائیں گے اور مردہ خاندانوں کو دو لاکھ دیئے جائیں گے.

2010 میں بھوانی میں ایک آدھہ گھنٹے کی رپورٹ تیار کی تھی کہ کس طرح کسانوں کو معلومات نہیں ہوتی ہے اور وہ نہ صرف مکمل حفاظت کے بغیر سپرے کرنے لگتے ہیں اور ان کے جسم میں زہر داخل ہوتے ہیں. چوں کہ یہ مزدور ہوتے ہیں اور دوسرے ریاست سے آیے ہوتے ہیں، ان کی موت کی رپورٹنگ بھی صحیح نہیں ہے اور نہ ہی اعدادو شمار رکھے جاتے ہیں. اورنا پتہ چلتا ہے کہ کیٹناشک کی چھڑکاو کی وجہ سے کتنے کسانوں کی موت ہوتی ہے. بیوانی کے ہسپتالوں کے باہر لکھا تھا کہ ہمارے یہاں سپرے کی بیماریوں کا علاج ہوتا ہے. کاش کہ کچھ بدلتا ہے، کتنے کسانوں کا جان بچ جاتی.

بدھ کو جب ریاست کی زرعی وزیر یتومال گئے تو کسانوں نے اس سپرے مشین سے ان پر چھڑکاو کیا اور اپنے ناراضگی ظاہر کی. مختلف میڈیا رپورٹ کے مطابق، ہسپتال میں داخل ہونے والے کسانوں کی تعداد مختلف ہے. کوئی 300 لکھ رہا ہے، کوئی 400 اور 700 لکھا ہے.

ہسپتالوں کسانوں کی بھیڑ ہے. جن لوگوں کو کھیتوں میں ہونا چاہئے وہ اب زندگی سے لڑے رے ہیں. واقعات ہوتے رہے لیکن کسی نے الارم بٹن نہیں دبایا. یہ کہا جا رہا ہے کہ زرعی محکمہ اور کیٹناششک کمپنیوں نے کسانوں کو ٹھیک سے آگاہ نہیں کیا. انکا ویسے بھی کچھ نہیں ہونا، کبھی بڑی کمپنیوں کو سزا ہوتی ہے کیا. کسانوں کے لئے دس لاکھ کا معاوضہ طلب کیا تھا. مل گیا ہے 2 لاکھ روپے.

راجستھان کے سیکر میں کسانوں نے کئی دن تک مظاہرہ کیا، جس میں قریب کے تاجروں سے لے کر دوسرے لوگوں نے بھی ساتھ دیا. سیکر کا آندولن قرض معافی کے وعدوں کے ساتھ ختم ہو گیا. اب ایک اور کسانوں کا آندولن  کو لوگوں کی توجہ میں ہے. اچھی بات یہ ہے کہ جے پور میں بھی کسان اپنے طریقوں سے احتجاج کر رہے ہیں. کسانوں کی دنیا میں بہت کچھ ہو رہا ہے جسے ہم دہلی میں بیٹھ کر نہیں سمجھ سکتے ہیں. ان کے اندر کا گھٹن مختلف طرح سے باہر آرہا ہے۔ حکومت کو بھی حکومت ککو بھی کسانوں کی بیچینی سمجھنا چاہیے اور انصاف کرنا چاہیے.کسان  اپنی آواز سنانے کے لئے کیا کچھ نہیں کر رہے ہیں. بہتر ہے سننا شروع کردینا چاہئے کہ وہ کیا کہہ رہے ہیں.

جے پور میں کسان زمین میں گڈھا کھود کر کھڑے ہو گیے ہیں. کس نے سوچا تھا کہ گاندھی کی اہنسا ملک کی عوام کو آئی ٹی سیل پر منحصر سیاسی جماعتوں سے بھی زیادہ تخلیقی بنا دے گی. اس تحریک کا نام ہے سمادھی ستیہ گرہ. زمین کی قبر کے بعد پانی کی قبر. دو اکتوبر سے یہ ستیہ گرہ والا چل رہا ہے. خواتین بھی ساتھ آئی ہیں. ان کسانوں کی 1150 بیگا زمین جامعہ ترقیاتی ادارے نے  2010 میں لے لی تھی. اسی سال سے یہ کسان زمین کی قیمت لینے کے لیے مظاہرے کر رہے ہیں. آج تک قیمت نہیں ملی ہے. 2000 کسانوں کی زمین چلی گئی.

4 اکتوبر کے دن دینک بھاسکر کی یہ پہلی خبر چیخ کر یہ بتا رہی تھی کہ مند سور کی واقعہ کے بعد بھی پولیس نے کچھ نہیں سیکھا. اخبار کہہ رہا ہے کہ ٹیکم گڑھ میں کسانوں کو دوڑ-دوڑرا کر پٹا.تھانے میں  بند کر کے کپڑے اتروایے اور 30 /​​کسان زخمی ہوگئے. کسانوں کی غلطیاں یہ تھی کہ وہ میمورنڈم دینے کے لیے ادھیکاری سے ملاقات کرنا چاہتے تھے.

کہیں کسان زہر سے مر رہا ہے تو کہیں دوڑا دوڑا کر مارا جا رہا ہے. کسانوں کا الزام یہ ہے کہ انہیں لوک اپ میں کپڑے اتار کر کر گھنٹوں بٹھایا گیا. ریاستی وزیر نے جانچ کا حکم دیا ہے. ٹیکم گڑھ کے کلکٹر کا کہنا ہے کہ ایک بھی کسان زخمی نہیں ہوا ہے. اگر ان کے کپڑے اڑواے گئے تو تو اس کی جانچ کریں گے. انتظامیہ کا کہنا ہے کہ کسان اور کانگریس کے کارکنوں کی جانب سے پتھربازی ہویی، جس کی وجہ سے لاٹھی چارج کرنا پڑا. یہ پتھر بازی والی مثال بی اےچ یو  کے وقت وہاں کے وائس چانسلر نے دیا تھا جو چھٹی پر بھیج دیا گیا ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close