آج کا کالم

کسانوں کے مسئلہ کا حل کس کے پاس ہے؟

رويش کمار

 جب بھی کسان مظاہرے کرتے ہین ،زیادہ  توجہ ان کی پیداوار کی قیمت نہ ملنے پر کم ہوتا ہے، شہروں میں پھل سبزی اور دودھ کے دام بڑھنے پر زیادہ ہوتا ہے. آپ ٹی وی دیکھیں گے تو ہم رپورٹر-اینکر لوگ کسانوں کے درمیان کم نظر آئیں گے، منڈیوں میں ہی دام پوچھتے رہ جاتے ہیں. اس کی کئی وجوہات ہیں … اس پر بحث کا وقت نہیں ہے. نومبر 2009 کے ایک واقعہ بتانا چاہتا ہوں. مغربی اتر پردیش سے بھاری تعداد میں کسان دہلی آئے. اگلے دن دہلی کے اخبارات میں جو هےڈلان شائع وہ کمال کی تھی.

ہندی کے ایک اخبار کی هیڈلان تھی ‘کسانوں نے جھکا دی حکومت۔انگریزی کے ایک اخبار کی هیڈلان تھی ‘BITTER HARVEST، THEY PROTESTED، DRANK، VANDALISED AND PEED. مطلب، خراب فصل، انہوں نے مخالفت کی، شراب پی، توڑ پھوڑ کی اور پیشاب کر دیا.

تب سے لے کر اب تک میڈیا کے بڑے حصے میں کسانوں کو لے کر نظریہ  نہیں بدلہ  ہے. مدھیہ پردیش میں مظاہرہ کر رہے چھ کسانوں کا قتل ہو گیا ہے. یہ اسی ملک میں ہو سکتا ہے کہ ریاست کا وزیر داخلہ کہہ دے کہ وہاں موجود پولیس اور سی آر پی ایف میں سے کسی کی طرف سے گولی نہیں چلائی، مگر کسان مرے گولی سے ہی. 24 گھنٹے کے بعد آئی جی پولیس بیان دیتے ہیں کہ گولی پولیس نےچلایی ، مگر یہ نہیں کہتے ہیں کہ جو 6 کسان مرے ہیں وہ پولیس کی گولی سے مرے ہیں .

منگل تک وزیر داخلہ کہتے رہے کہ مدھیہ پردیش میں دو اضلاع کو چھوڑ کر کہیں پر کسانوں کی طرف سے کوئی پروٹیسٹ نہیں ہو رہے ہیں. بدھ کو آئی جی کہہ رہے ہیں کہ دہلی سے سی آر پی ایف کے دس کمپنیاں مانگی گئی ہیں. وزیر داخلہ کی بات پر یقین کر لیتے تو وزیر اعظم کسانوں کی حالت پر دہلی میں بحث نہیں کرتے اور نہ ہی وزیر زراعت رادھا موہن سنگھ طے شدہ پریس کانفرنس منسوخ کرتے. ویسے، وزیر زراعت سوچھتا  پكھواڑا پر پریس کانفرنس کرنے والے تھے، کسانوں پر نہیں.

بدھ کو اندور، اجین، دیواس میں کئی مقامات پر تشدد کے واقعہ ہوئے ہیں . کئی مقامات پر کرفیو لگا ہے اور موبائل انٹرنیٹ سروس بند کر دی گئی ہے. اس لیے کئی مقامات سے تصاویر یا ویڈیو نہیں آ پا رہے ہیں . کہیں بس جلا دی گئی ہے تو کہیں دکانوں کو توڑا گیا ہے. مندسور میں 6 کسانوں کی موت کے بعد کسانوں نے ضلع مجسٹریٹ کے ساتھ دھکا مکی کی. ان پر حملہ کیا. رتلام-نیمچ لائن پر ٹرین کی پٹریوں کو نقصان پہنچایا، اس  روٹ پر جو ٹرین جہاں ہے وہیں روک دی گئی. دیواس میں مشتعل لوگوں نے ہاٹ پيپليا تھانے کے سامنے مظاہرہ کیا اور تھانہ احاطے میں رکھی گاڑیوں میں آگ لگا دی. سون كچ میں مظاہرین نے ایک چارٹرڈ بس پر اپنا غصہ اتارا، اس پر سنگ باری کی … اس دوران کئی مسافر اپنی جان بچانے کے لئے بھاگے اور کچھ بس میں ہی پھنسے رہے … بعد میں بس کو خالی کراکر مظاہرین نے اس میں بھی آگ لگا دی … مظاہرے چل رہے ہیں مگر انٹرنیٹ بند ہے.

مظاہرے کرتے وقت کسانوں کو اس بات کا خیال رکھنا چاہیے کہ تشدد کے واقعات نہ ہوں. اس سے اصل مسائل سے توجہ ہٹ جاتی ہے. سارا زور اس پر ہوتا ہے کہ امن بحال کی جائے، اور اس کا فائدہ اٹھا کر ان کے رہنما وزیر اعلی، وزیر کے ساتھ تصویر كھيچاكر تحریک ختم کا اعلان کر دیتے ہیں. ریاست میں کئی مقامات پر انٹرنیٹ بند ہے پھر بھی وزیر اعلی ٹویٹ کر رہے ہیں. انہوں نے کہا ہے کہ وہ خود ایک کسان ہیں اور ان کی پریشانی سمجھتے ہیں. آپ ساری باتوں پر حکومت عمل کرے گی. ویسے مدھیہ پردیش کابینہ نے کچھ فیصلے تو کئے ہیں …

-فصلو کی فروخت اور شرح طے کرنے کے لئے کمیشن۔

-5020، روپے کوئنٹل تر دال خرید کی قیمت۔

-5025، روپے کوئنٹل مونگ دال خرید کی قیمت۔

-20 جون سے ارد کی خرید، کسانوں کو فورا ادائیگی۔

-نقدي کے لئے بینک وزارت خزانہ سے بات۔

-بینک جتنا ممکن ہو، نقد اور باقی رقم آرٹي جي ایس۔

-نقدي رہی تو نقد ادائیگی بھی۔

آپ نے دیکھا ہوگا کہ اس فیصلے میں نقدی پر زور ہے. کیا نوٹ بندي کی وجہ کسانوں کے پاس نقدی کم ہونے کی وجہ سے بھی یہ صورت حال پیدا ہوئی ہے. کیا یہ محض اتفاق رہا ہو گا کہ بدھ کی صبح دہلی کے اخبارات کے پہلے صفحے پر چھ کسانوں کی موت کی خبر تھی. انہی اخبارات کے اندر اندر زراعت اور کسان بہبود کی وزارت کے دو دو صفحات کے اشتہارات چھپے ملے. جسٹ آسکنگ.

اس اشتھاراتی کو پڑھ کر لگا کہ زراعت کے میدان میں حکومت کی اتنی کامیابیاں ہیں کہ دو صفحات سے کم میں ان کی گنتی نہیں ہو سکتی. کاش اس اشتھار کو ملک کے سارے کسان پڑھ لیتے تو وہ کارکردگی چھوڑ آج جشن منا رہے ہوتے. میں نے دونوں صفحات کو انڈر لاین کرکے پڑھا ہے. 2022 تک کسانوں کی آمدنی دگنی کرنے کا وعدہ کیا گیا ہے. زراعت تعلیم کا بجٹ 47 فیصد سے زیادہ کیا گیا ہے. ویسے مدھیہ پردیش کابینہ کے فیصلے کے تناظر میں اس اشتھار کو  دیکھنا دلچسپ ہے. پتہ چلتا ہے کہ کسان کچھ اور مانگ رہے ہیں اور حکومت کچھ اور دے رہی ہے. اس اشتہار میں وزیر اعظم فصل انشورنس کی منصوبہ بندی پر مکمل ایک رائٹ اپ ہے کہ کس طرح بڑی تعداد میں کسانوں نے انشورنس لینا شروع کر دیا ہے. انشورنس لینے سے کیا انشورنس مل جاتا ہے.

اسی سال 7 اپریل کو راجیہ سبھا میں زرعی ریاست وزیر نے کپل سبل کے سوال کے جواب میں کہا کہ 2016 کے خریف سیزن میں یعنی دان سیزن میں کسانوں نے 4270،  کروڑ کا انشورنس دعوی کیا تھا، مگر انہیں ملا صرف 714 کروڑ. یہ 7 اپریل 2017 تک کے اعداد و شمار ہیں. آپ سمجھ سکتے ہیں کہ انشورنس خریدنا آسان ہے، انشورنس لینا آسان نہیں ہے. یہی وجہ ہے ایڈورٹائزنگ میں کچھ اور ہے، سڑکوں پر کچھ ہے. آپ یہ جواب راجیہ سبھا کی ویب سائٹ پر جا کر چیک کر سکتے ہیں .

2014 میں بی جے پی نے وعدہ کیا تھا کہ اقتدار میں آنے پر اخراجات میں پچاس فیصد منافع کا اضافہ کر کے قیمت دیں گے. حکومت نے سپريم کورٹ میں کہا کہ نہیں دے سکتے. 28 مئی کو بی جے پی صدر امت شاہ اس تناظر میں دو باتیں کہتے ہیں . پہلی کہ اخراجات میں زمین کی لاگت کا اضافہ کر کے کوئی بھی حکومت سوامناتھن فارمولے کو لاگو نہیں کر سکتی ہے.

پھر وہ اپنا حساب لگاتے ہیں . قیمت قیمت میں زمین کی لاگت کم کر دیتے ہیں اور کہتے ہیں کہ حکومت نے اخراجات سے 43 فیصد زیادہ کم از کم امدادی قیمت دیا ہے.

یہ تمام فصلوں کے بارے میں کہہ رہے ہیں یا کسی ایک فصل کے بارے میں صاف نہیں ہے، مگر 43 فیصد زیادہ دام کی بات کو میڈیا نے هیڈلان کے طور پر شائع کیا تھا.

منگل کو پرائم ٹائم میں ہی دیوندر شرما نے کہا کہ اگر ایسا ہوا ہوتا تو حکومت ہر اشتہارات اور پریس کانفرنس میں دعوی کر رہی ہوتی. ہم نے اس دو صفحات کے اشتہار میں بہت تلاش کیا، جس کا دعوی امت شاہ نے 28 مئی کو کیا تھا. آپ کو یقین نہیں کریں گے کہ دو صفحات کے اشتہار میں کم از کم امدادی قیمت کے بارے میں کوئی ذکر ہی نہیں ہے. تو کیا جو بات امت شاہ کو معلوم ہے، زراعت اور کسان بہبود کی وزارت کو پتہ نہیں ہے.

ویسے 2006 میں ایم. ایس سوامناتھن نے قومی کسان کمیشن کے چیئرمین کے طور پر یہ مشورہ دیا تھا. ایسا نہیں ہے کہ حکومت ایم ایس سوامناتھن کو بھول گئی ہے. اسی 19 مئی کو وزیر اعظم نریندر مودی نے ایم. ایس سوامناتھن کی ایک کتاب کا معنون کیا تھا. اس موقع پر وزیر اعظم نے کہا کہ ڈاکٹر سوامناتھن کی خوبی یہ ہے کہ ان کا کام عملی حقائق کی بنیاد پر ہے.

امت شاہ کہتے ہیں کہ زمین کی قیمت کا اضافہ کر کے کوئی حکومت لاگت کا پچاس فیصد دام دے ہی نہیں سکتی. کم از کم امدادی قیمت دینے سے سارے کسانوں کو کم از کم امدادی قیمت نہیں مل جاتی ہے. اسی مہینے دہلی میں زراعت سائنسدانوں کے درمیان بھارت کے اہم اقتصادی مشیر اروند سبرميم نے کہا کہ حکومت نے کم از کم امدادی قیمت پر دالیں خریدنے کی پوری کوشش کی. اس کے بعد بھی 60 فیصد کسانوں کو کم از کم امدادی قیمت سے کم پر دالیں بیچنی پڑیں . پوری کوشش کرنے کے بعد بھی حکومت 40 فیصد کسانوں کو کم از کم امدادی قیمت دے سکی. یہ کہنا ہے بھارت کے مرکزی اقتصادی مشیر کا 600 1، روپیہ مہینہ کماتا ہے ہندوستان کا کسان. منگل اور بدھ کو مہاراشٹر میں تین کسانوں نے خودکشی کی ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close