آج کا کالم

کیا اس ملک میں کمیونزم میں یقین رکھنا بھی جرم ہے

پروفیسر اپوروانند جھا

گزشتہ دس روز سے ہریانہ مرکزی یونیورسٹی کے شعبئہ انگریزی کےاستاد  ایک اکیلی جنگ لڑ رہے ہیں. وہ تعلیمی دنیا کی سرحد پر ایک ایسی جنگ میں ہیں جس میں حملہ آور قوم پرستی کے پرچم اور نشان کے ساتھ ہیں. ان کا سامنا کر رہے اساتذہ کے پاس عقل، ضمیر اور تنقید کی زبان ہے جس کا کوئی خریدار یا قدردان بیرونی معاشرے میں نہیں ہے.

21  ستمبر کو انگریزی محکمہ نے مهاشویتا دیوی کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لئے ایک پروگرام منعقد کیا. اس موقع پر ان کا ناول’ ہزار چوراسيویں کی ماں ‘پر ایک فلم دکھائی گئی. ساتھ ہی ان کی مشہور کہانی ‘دروپدي’ پر مبنی ایک ڈرامہ پیش کیا گیا. ہال بھرا ہوا تھا. سامعین میں طالب علم اور اساتذہ کے ساتھ افسران بھی تھے. ڈرامہ کو کافی پسند کیا گیا. افسران نے بھی شعبئہ انگریزی کے اساتذہ کی جم کر تعریف کی.

 اگلی صبح لیکن ماجرا بالکل مختلف تھا. حاضرین میں موجود کسی نے ڈرامہ کو ریکارڈ کیا اور یونیورسٹی کے باہر نشر کیا. آر ایس ایس کی طالب علم شاخ ‘اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد’ نے الزام لگایا کہ ڈرامہ بھارتی فوج کے جوانوں کی توہین کرنے کی نیت سے پیش کیا گیا تھا. واضح رہے  کہ تین دن پہلے ہی اڑي میں فوج کے کیمپ پر حملے میں کچھ جوان مارے گئے تھے. ہندی اخبارات نے اپنے مزاج کے مطابق یونیورسٹی کے خلاف تحریک میں ہاتھ بٹانا شروع کر دیا. بغیر جاننے کی زحمت اٹھائے کہ ڈرامہ میں کیا تھا اور وہ کب اور کس طرح تیار ہوا تھا.

 ‘دروپدي’ ایک قبائلی عورت کی کہانی ہے جو سیکورٹی فورس کے حملے کا شکار ہوتی ہے.  ہوش میں آنے پر اس کو یہ احساس ہوتا ہے کہ اس کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے. وہ اپنے برہنہ جسم پر پردہ ڈالنے سے انکار کر دیتی ہے اور اس زخمیبرہنہ جسم کے ساتھ سیکورٹی فورس کے افسران کو چیلنج کرتی ہے. اس کہانی کو ڈرامہ کی شکل دینے کیلئے اساتذہ نے ایک ختم مقال شامل کیا جس میں آج کے ہندوستان میں قبائلیوں اور دیگر طبقات پر حکومتی مظالم میں آرمڈ فورسز اسپیشل پاور ایکٹ (افسپا) جیسے قانون کی آڑ میں ہو رہے ظلم کی بات کی گئی. جسٹس ورما کمیٹی اور سپریم کورٹ کے حوالے سے بتایا گیا کہ کس قسم ہندوستانی سیکورٹی فورس کے رکن جنسی تشدد کے جرم میں ملوث رہے ہیں. ناظرین سے اس حالت میں اپنا کردار طے کرنے کو کہا گیا.

 اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد نے الزام لگایا کہ ایک طرف جہاں ہمارے فوجی جوان سرحد پر مارے جا رہے ہیں، وہیں یونیورسٹی میں آرام سے بیٹھے لوگ ان کی کردار کشی کرنے کے لئے اس قسم کے پروگرام کر رہے ہیں.

 یونیورسٹی ہریانہ کے مهیدرگڑھ نامی علاقے میں بھی شہر سے بارہ کلومیٹر دور ہے. لیکن طالب علم کونسل نے طے کیا کہ وہ اس معاملے پر شہر میں تحریک كریگي اور شہر اور ارد گرد کے دیہات سے لوگوں کو یونیورسٹی کے خلاف متحد کرے گی. وائس چانسلر کا پتلا جلایا گیا، اساتذہ پر ملک سے بغاوت کا مقدمہ کرنے، انہیں برخاست کرنے کی مانگ کی گئی. تقریبا روزانہ یونیورسٹی کے دروازے پر احتجاج اور مظاہرہ کیا جا رہا ہے.

 یونیورسٹی انتظامیہ بھول گئی کہ ڈرامہ کے وقت اس نے اپنے اساتذہ کی کتنی پیٹھ ٹھونکی تھی. اگلے ہی دن اس نے پروگرام کی ایک کنوینر ڈاکٹر سنیه ستا سے ڈرامہ میں بھارتی فوج کی شبیہ خراب کرنے کے الزام کے سلسلے میں صفائی مانگی. اس نے چھ رکنی تفتیشی ٹیم بھی تشکیل کر دی جو پورے سیاق و سباق کی پڑتال کرکے اپنی رپورٹ دے گی. یونیورسٹی پر دباؤ برقرار رکھنے کے لئے یہ کہا جا رہا ہے کہ یہ تفتیشی ٹیم ٹھیک نہیں کیونکہ اس میں وائس چانسلر کے قریبی لوگ ہیں. یہ بھی سنائی دے رہا ہے کہ ضلع انتظامیہ اپنی طرف سے تحقیقات کی تیاری کر رہی ہے اگرچہ پہلے پولیس نے کہا تھا کہ وہ یونیورسٹی کی جانچ رپورٹ کا انتظار کرے گی.

 سوال یہ ہے کہ یونیورسٹی انتظامیہ نے کیوں اپنے اساتذہ کو ‘غیر محفوظ’ چھوڑ دیا ہے اور کیوں وہ ان کی طرف سے کھل کر نہیں بول رہا. آخر ان کے لوگ ڈرامہ کی کارکردگی میں موجود تھے اور اس کی تعریف بھی کی تھی. کیا ان کی یہ رائے اب بدل گئی ہے یا اس کی کوئی اہمیت نہیں ہے؟ سوال یہ بھی ہے کہ کیا یونیورسٹی کیمپس میں ہونے والی سرگرمیوں پر ہر کسی کو رائے دینے کا حق ہونا چاہئے؟ کیا انہیں جو نہیں جانتے، یا جنہیں اس کی کوئی سمجھ نہیں کہ تعلیمی سرگرمیاں کس طرح کی ہوتی ہیں، یونیورسٹی کی کلاس میں یا اور کہیں چلنے والی سرگرمیوں کو ٹھیک ٹھیک سمجھ بھی سکتے ہیں؟

 دوسرے الفاظ میں یونیورسٹی میں کیا باہری سماج کو مداخلت کا حق ہونا چاہئے؟ تاہم ٹیگور چاہتے تھے کہ یونیورسٹی اور معاشرے کے درمیان کوئی دیوار نہ ہو، لیکن کیا یونیورسٹی کی کوئی سرحد بھی نہیں ہو گی؟

 کوئی دس سال پہلے بڑودہ کے سياجي راؤ یونیورسٹی کے آرٹس کی فیکلٹی میں امتحان کے حصے کے طور پر لگی نمائش پر وشو ہندو پریشد کے ارکان کی طرف سے حملہ کیا گیا. طلباء اور اساتذہ پر مقدمہ درج ہوا اور انہیں معطل کیا گیا. کسی وقت جو دنیا کا ایک مانا ہوا فن محکمہ تھا، اس واقعہ کے بعد مکمل طور برباد ہو گیا. پانچ سال پہلے دہلی یونیورسٹی نے بیرونی عناصر کے اعتراض ظاہر کرنے پر اے رامانجن کے مضامین کو اپنے نصاب کی فہرست سے باہر کر دیا. دس سال پہلے راجیہ سبھا کے ہنگامے کی وجہ سے اسکول کتابوں میں شامل اوتار سنگھ پاش، پریم چند، حسین، پانڈے بیچن شرما ‘اگر’، دھومل جیسے مصنفین کے متن بدل دیے گئے.

 کیا یونیورسٹی کے معاملات کا نمٹارا فوج کے لوگ اور معاشرے کے طاقتور سربراہ کریں گے؟ اس سال کے شروع میں ہم نے جواہر لال نہرو یونیورسٹی میں وائس چانسلر کو سابق فوجی ہیرو کی رائے لیتے دیکھا کہ کیمپس کس طرح چلے. کیا یہ پورے ملک میں ہو گا؟ ہمارے لئے فخر کی بات ہے کہ ہریانہ مرکزی یونیورسٹی کے انگریزی کے استاد اپنے فیصلے کو لے کر پریشان نہیں هےانهپں پست نہیں کیا جا سکا ہے. ڈاکٹر سنیه ستا نے اپنے جواب میں یہ بھی پوچھا ہے کہ کیا ریاست سے سوال کرنا دانشورں کا فرض نہیں؟ لیکن ان پر خطرہ ہے. ایک ٹیچر کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ وہ نکسلی ہیں کیونکہ چند سال انہوں نے چھتیس گڑھ میں پڑھایاہے. طالب علم کونسل کا کہنا ہے کہ اس بھولے بھالے ریاست میں کمیونزم کی تبلیغ کی سازش ہو رہی ہے جسے وہ ناکام کرے گی. پوچھا جا سکتا ہے کہ کیا اس ملک میں کمیونزم میں یقین رکھنا جرم ہے.

 سب سے بڑا سوال ہے کہ دہلی سے کوئی سوا سو کلومیٹر کے فاصلے پر واقع اس یونیورسٹی کے اساتذہ پر جب حملہ ہو رہا ہے تو ملک کی اساتذہ برادری چپ کیوں ہے؟ انگریزی دانشوران سیمینار اور منتخب کمیٹیوں کے ارکان کے طور پر ضرور ہریانہ مرکزی یونیورسٹی گئے ہوں گے، کیوں وائس چانسلر کو نہیں لکھ رہے کہ ان کے ساتھیوں پر یہ حملہ ناقابل قبول ہے. ہریانہ مرکزی یونیورسٹی کے دیگر اساتذہ بھی کیوں خاموش ہیں؟ کیا یہ حملہ آخری ہے؟ ہریانہ اور پنجاب میں بھگت سنگھ اور اوتار سنگھ پاش کے نام لیوا بھی کیوں حملے کے شکار اپنے بہادر اساتذہ کے ساتھ یکجہتی کا مظاہرہ نہیں کر رہے ہیں؟ کیا برائی کے حق میں منظم ہونا  آسان ہے اور ضمیر کو اکیلے اپنی جدوجہد جاری رکھنی ہوگی؟ پھر بھی یہ ملک عظمت کا خواب دیکھ سکتا ہے؟

( مضمون نگار دہلی یونیورسٹی کے پروفیسر اور معروف سیاسی و سماجی تجزیہ نگار ہیں )

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close