آج کا کالمنقطہ نظر

کیا بوچڑ خانوں سے پہلے بدعنوانی دور کرنا ضروری نہیں؟

ندھی کلپتی

‘نوراتری شروع ہو گئے ہیں، دیکھنا گوشت کی دکانوں میں بھیڑ کم ہو جائے گی’۔ سماج وادی پارٹی کے لیڈر کا ارادا یہ تھا کہ ہندو گوشت زیادہ کھاتے ہیں اور اگر یوگی آدتیہ ناتھ حکومت کے نشانے پر صرف مسلم سماج ہے تو بوچڑكھانے بند کرنے کا داؤ صحیح نہیں ہے. ایک بڑے لیڈر نے کہا یوپی کے ‘تمام مذبح کو بند کرنا چاہئے، کسی جانور کو مارا نہیں جانا چاہئے، اسلام میں گوشت کھانا لازمی نہیں ہے.’ یہ طنز تھا یوگی حکومت پر لیکن شاید جب یہ پچھلی حکومت میں وزیر تھے، انہی کے پاس وہ محکمہ تھا جو مذبح کے لائسنس رنيو کرتے تھے. کتنوں کے لائسنس برسوں سے رنيو نہیں ہوئے تھے. ابھی بتایا جا رہا ہے کہ اوپری کمائی کا یہ بڑا ذریعہ تھا. بہرحال کل ہی الہ آباد ہائی کورٹ نے ریاستی حکومت سے جواب مانگا ہے کہ جو لائسنس پینڈ گ ہیں ، ان کو رنيو کرنے کے لئے اقدامات اٹھائے گئے ہیں یا نہیں؟

حالات یہ ہیں کہ مذبح پر کارروائی سے گوشت فروشوں کی ہڑتال جاری ہے. گوشت، مرغ، مچھلی والے تمام چھوٹے بڑے کاروباری ریاستی حکومت کی اچانک کارروائی کی مخالفت کر رہے ہیں. آج حکومت سے گزارش کی کہ جب تک نئے سرکاری بوچڑكھانے نہیں کھل جاتے تب تک پرانوں کو کام کرنے دیا جائے. اب بی جے پی کا انتخابی وعدہ تھا کہ غیر قانونی بوچڑكھانے بند کرنا، تو حکومت آ گئی ہے اور جوش و خروش ہر جانب سے دکھائی دے رہا ہے. کیا حکم دینے والے، کیا عمل کرنے والے … زیادتی یہ ہو گئی کہ لائسنس والوں پر بھی کارروائی ہو گئی. گھبراہٹ میں کچھ نے خود دکانیں بند کر لیں . کئی کے لائسنس تھے لیکن رنيو نہیں ہوئے تھے، کئی نسلوں سے اسی کام میں لگے رہے ہیں. وہ آمدنی کا دوسرا ذریعہ کیا تلاش کریں. کچھ دنوں کا نوٹس مل جاتا تو کمائی کا انتظام کر لیتے. تمام سیاسی پارٹیاں حمایتی بن کر کھڑے ہو جاتے ہیں لیکن اس کام میں لگے لوگوں کو نکالنے کی کوشش نہیں کی گئی. اور تو اور لائسنس رنيو نہیں کئے تو حالات سامنے ہیں.

ریاست میں 25 لاکھ لوگ اس کاروبار سے منسلک ہیں. پورے ملک میں یوپی میں سب سے زیادہ گوشت برآمد ہوتا ہے اور ہمارا ملک اس معاملے میں دنیا میں تیسرے نمبر پر ہے. ریاست میں مذبح خانوں کے اعداد و شمار صاف نہیں ہیں. ایک رپورٹ کے مطابق یوپی میں 41 لائسنسی بوچڑكھانے ہیں. لیکن نیشنل گرین ٹریبیونل میں مرکزی پليوشن کنٹرول بورڈ نے کہا کہ 126 ہیں، جن میں سے 27 کے قریب افليوینٹ ٹريٹمینٹ پلانٹ ہیں . یوپی پليوشن کنٹرول بورڈ کا کہنا ہے کہ 58 ہیں. پورے ملک میں سرکاری تسلیم شدہ 72 ہیں جن میں سے 32 یوپی میں ہیں  اور جو نظر میں آتے ہیں وہ ان کی تعداد بہت زیادہ بنا دیتے ہیں.

ان سب کے درمیان لائسنس حاصل کرنے کا عمل اور بھی دلچسپ ہے. ہری جھنڈی کے لئے 19 سے زیادہ مجوريا لینی پڑتی ہیں . ڈیوڈ ملی بینڈ آفس، پولیس، پليوشن کنٹرول بورڈ، آگ سیفٹی، لیبر ڈپارٹمنٹ، وی اے ٹی، ایکسائز، میونسپل، لوکل پنچایت … فہرست کافی لمبی ہے …

اب حکومت کی کارروائی ایسوں پر بھی ہو رہی ہے، جن سے کوئی ایک چوک ہو گئی. کسی کا سی سی ٹی وی خراب ملا تو کسی کی نالی بند. اب اتنی مختلف مجوريا لینا سب بس کی بات نہیں ہے. صرف پیسے والے یا بڑے کاروباری ہی یہ کر پاتے ہوں گے. یہ درست ہے کہ گندگی پر بھی قابو پانا ہے، لیکن کیا حکومت کو پہلے لائسنس کے عمل کو آسان نہیں بنانا چاہیے تھا. کیا کچھ دن کا نوٹس دیا جا سکتا تھا. رقم کے بدلے لائسنس ریاست میں بدعنوانی کا بڑا ذریعہ تھا. اس بدعنوانی کے خاتمے پر عمل ہونا چاہیے تھا. بہرحال اب کورٹ میں ریاستی حکومت کو تین اپریل تک جواب دینا ہے. دیکھنا ہوگا کہ یوگی حکومت کیا راستہ اپناتی ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close