آج کا کالم

کیا جی ایس ٹی واقعی ہر مرض کی دوا ہے؟

رویش کمار

جب بھی پارلیمنٹ کا اجلاس شروع ہوتا ہے جی ایس ٹی کی بات زور زور سے ہونے لگتی ہے. اب پیش ہوگا تو اب پاس ہو گا. جی ایس ٹی کے بارے میں سنتے پڑھتے یہی لگا کہ یہ ہندوستانی ٹیکس نظام کے تمام مسائل کا یکمشت حل ہے. گڈس اینڈ سروس ٹیکس بولتے ہیں. اسے اب تک  کا سب سے بڑا ٹیکس اصلاح بتا کر پیش کیا جا رہا ہے. اگر ایسا ہے تو جی ایس ٹی کو لے کر باتوں کا دائرہ بھی وسیع ہونا چاہئے. حکومت کے دعووں سے لگتا ہے کہ وہ اسے پاس کرانے کے لئے ضرور اتفاق اور تعداد کے بے حد قریب پہنچ چکی ہے اور اب اسے قانون بننے سے کوئی نہیں روک سکتا. ضرور یہ ایک پیچیدہ موضوع ہے مگر آزما کر دیکھنے میں کیا حرج ہے. ویسے بھی وزیر خزانہ کہتے ہیں کہ جی ایس ٹی سے ملک کی اقتصادی سالمیت ہونے والی ہے، اب اتنی بڑی سرگرمی ہو رہی ہے تو ملک کو بھی بحث کرنی چاہئے.

ابھی ہندوستان میں پیدا ہونے والے کسی بھی سامان پر مرکز اور ریاست مل کر کئی طرح کے ٹیکس لگاتے ہیں. جیسے سیلز ٹیکس، ایكسائز، ڈیوٹی، ویٹ وغیرہ. انہیں آپ بالواسطہ کرکے کہتے ہیں. جہاں مال پیدا ہوا وہاں ٹیکس، جہاں سے فروخت ہونے یا بننے گیا تو راستے بھر میں نانا قسم کی ڈیوٹی اور آپ نے خریدا تو پھر ٹیکس. تاجروں کاروباریوں کو بہت سے محکموں اور کاغذوں کے جھنجھٹ کا سامنا کرنا پڑتا تھا. کئی جگہوں کے بزنس ڈوب جاتے تھے اور کئی جگہوں کے چل پڑتے تھے. جیسے غازی آباد میں مشین اور مشینری پارٹ پر ریاستی حکومت 14.5 فیصد ٹیکس لگاتی ہے. اسی آئیٹم پر آس پاس کی کچھ ریاستیں پانچ سے سات فیصد کا ٹیکس لگاتی ہیں. جس سے غازی آباد میں اس کا دھندا کمزور ہو جاتا ہے کیونکہ لوگ اس کام کے لئے دوسری ریاستوں میں چلے جاتے ہیں. اب ہمیں یہ نہیں معلوم کہ اگر سب جگہ ایک کی شرح سے ٹیکس لگا دیا جائے تو سب جگہ مشینری کا دھندہ چمکے گا یا کسی ایک یا دو جگہ پر ہی چمکے گا؟

جی ایس ٹی لاگو ہوگا تو ایک ہی بار اور ایک ہی جگہ ٹیکس دینا ہوگا. اس سے پہلے ویٹ اور سروس ٹیکس آیا تھا تب بھی انہیں لے کر خوب خواب دکھائے گئے تھے. لیکن اب سب کو ملا کر ایک جی ایس ٹی آ رہا ہے تو خواب بھی ایک ہو گیا ہے. ٹیکس کی وصولی بڑھ جائے گی اور ہندوستان کی جی ڈی پی بھی نو کی اوسط سے ڈیڑھ سے دو فیصد تک بڑھ جائے گی.

جی ڈی پی بڑھنے کے پیچھے دلیل یہ دی جاتی ہے کہ اس وقت ہزارہا کاروبار کا کوئی ریکارڈ نہیں ہے، لہذا جی ڈی پی کا صحیح اندازہ نہیں ہو پاتا ہے. جی ایس ٹی سےجڑے ماہرین کہتے ہیں کہ جو بھی خدمات دیتے ہیں چاہے وہ تاجر ہیں یا صنعت کار اگر ان کا سالانہ ٹرن اوور دس لاکھ سے زیادہ ہے تو انھیں ریٹرن فائل کرنا پڑے گا. اس سے حکومت کے پاس زیادہ سے زیادہ حقیقی اعداد و شمار آئیں گے اور ٹیکس کی وصولی بھی بڑھ جائے گی.

لیکن جو جی ایس ٹی آرہا ہے کیا وہ واقعی ایک شرح اور ایک قسم کا ٹیکس نظام ہے؟ کیا واقعی جی ایس ٹی کے نفاذ کے بعد سب جگہ ایک جیسا ہی ٹیکس لاگو ہو گا؟ اگر ایسا ہے تو اس کی فہرست میں یہ تین مختلف نام کیا کہتے ہیں؛ سینٹر جی ایس ٹی، اسٹیٹ جی ایس ٹی، انٹر اسٹیٹ جی ایس ٹی.

وزیر خزانہ نے اسے اقتصادی سالمیت کہا ہے تو پھر تین اقسام کی جی ایس ٹی کیوں ہیں. ایک قسم کی کیوں نہیں ہے. ناقدین کا کہنا ہے کہ تین اقسام کی جی ایس ٹی کی وجہ سے اب تاجر کا اسیسمینٹ بھی تین جگہوں پر دیکھا جائے گا. جیسے پہلے چل رہا تھا ویسے ہی اب بھی چلے گا. ناقدین کا کہنا ہے کہ ایک ہی ریٹرن فائل کرنی ہوگی لیکن اس کی جانچ کم از کم دو یا تین اہلکار مرکز یا ریاست کی سطح پر کریں گے. کہیں نظام وہی تو نہیں رہے گا؟ کیا واقعی محکموں کے چکر لگانے سے نجات مل جائے گی؟ سونے، چاندی اور آسائش پر جی ایس ٹی الگ ہوگی. عام عوام سے جڑی چیزوں پر جی ایس ٹی الگ ہوگی. اگر ریٹ کا جھنجھٹ جی ایس ٹی میں رہے گا تو پھر جی ایس ٹی کا کیا فائدہ!

اخبارات میں زیادہ تر مضامین اور بیانات کو پڑھتے ہوئے جی ایس ٹی کی تعریف ہی ملتی ہے. ان کا کہنا ہے کہ جی ایس ٹی حتمی شکل سے تو بہتر ہے. ایک پختہ نظام معیشت میں ہر طرح کے کاروبار کا ریکارڈ تو ہونا ہی چاہئے. کیا ہندوستان کے زیادہ تر لوگ اس کے لئے تیار ہیں. اول تو سیاسی جماعتوں کو ہی منانے میں اتنے سال لگ گئے تو لوگوں کو بھی وقت دینا ہی ہوگا. ریکارڈ سے باہر ٹریڈ کر پانا مشکل ہوگا. دنیا کے 160 سے زائد ممالک میں جی ایس ٹی نافذ ہے. امریکہ میں نہیں لاگو ہے. ارون کمار نے اكنامك اینڈ پولٹیكل ویکلی میں کچھ سوالات اٹھائے ہیں.

یہ کہا جا رہا ہے کہ جی ایس ٹی کی وجہ سے ہماری جی ڈی پی میں بالواسطہ ٹیکس کا حصہ بڑھ جائے گا. بالواسطہ ٹیکس بڑھنے سے افراط زر بڑھتا ہے تو چیزوں کی قیمتیں کس طرح کم ہو جائیں گی. ارون کمار کا کہنا ہے کہ زیادہ تر چیزوں کے دام بڑھیں گے. جی ایس ٹی کا غیر منظم علاقے کے كاروبار پر کیا اثر پڑنے والا ہے. کیا واقعی اس سے ہماری معیشت میں چھپے کالے دھن کو کم یا ختم کیا جا سکے گا.

کیا جی ایس ٹی واقعی ہر مرض کی دوا ہے؟ پروفیسر پربھات پٹنائک نے جی ایس ٹی کو لے کر وفاقی ڈھانچے کے کمزور پڑنے کا خدشہ ظاہر کیا ہے. وفاقی ڈھانچے کا مطلب آپ یوں سمجھئے کہ مرکز اور ریاست اپنے اقتصادی فیصلے اپنی اپنی ضرورتوں کے حساب سے کریں گے. جی ایس ٹی کے بعد ریاستوں کے لئے ٹیکس کو لے کر کچھ کرنے کے لئے نہیں بچے گا. ہر چیز کے لئے ریاستیں مرکز پر منحصر ہو جائیں گی. لیکن وزیر خزانہ کا دعوی ہے کہ زیادہ تر ریاستیں جی ایس ٹی پر رضامند ہو گئی ہیں. صرف تمل ناڈو کو کچھ اعتراضات ہیں.

پارلیمنٹ کا مانسون سیشن ہو سکتا ہے جی ایس ٹی کی وجہ سے تاریخی ہو جائے. آئین ترمیم بل ہے. راجیہ سبھا میں پاس ہونے کے بعد آدھی ریاستوں کی اسمبلی سے بھی پاس ہونا ہو گا. وزیر خزانہ دعوی کرتے ہیں کہ اس سے ہندوستان کی جی ڈی پی دو فیصد بڑھ جائے گی. کیا واقعی جی ایس ٹی نہیں ہونے کی وجہ سے ہماری جی ڈی پی 2 فیصد کم ہے. جی ایس ٹی کی وجہ سے ہم کس بنیاد پر امید کر رہے ہیں کہ بالواسطہ ٹیکس کی بنیاد بڑھ جائے گی. کیا ہندوستان کی جی ڈی پی اس وجہ سے کم ہے کہ بہت سارے کاروباروں کی گنتی نہیں ہے. اگر جی ایس ٹی کا مطلب ایک ٹیکس ہونا تھا تو ریاستوں کو پٹرولیم پر ویٹ اور سیلز ٹیکس لگانے کی چھوٹ کیوں دی گئی. مرکزی حکومت، ریاستوں کو تین سال تک جو بھی ریاستی آمدنی کا نقصان ہوگا، اس کی تلافی کرے گی. اس کے بعد ریاستی آمدنی کا نقصان ہوگا تو ریاستیں کیا کریں گی، اس کی کوئی بحث یا ہم عام لوگوں کے درمیان سمجھ نہیں ہے. جی ایس ٹی کونسل میں تین چوتھائی سے فیصلہ ہوگا. ملک میں سیاست مستقل نہیں ہے. موجودہ دور میں بی جے پی کو برتری ہو سکتی ہے لیکن جی ایس ٹی کونسل میں بی جے پی مخالف ریاست کے لئے کیا صورت حال اتنی آسان ہو جائے گی. موجودہ نظام میں ہی فنڈ کو لے کر مرکز اور ریاست کے درمیان جھگڑے ہوتے رہتے ہیں. کہیں ایسا تو نہیں کہ ریاست کا وزیر خزانہ جی ایس ٹی کونسل کے دفتر میں ہی بیٹھا رہے گا. ایک اور سوال اٹھتا ہے کہ جب سارے ٹیکس جی ایس ٹی کونسل سے طے ہوں گے تو ریاستوں میں وزیر خزانہ کیا کرے گا؟

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close