آج کا کالم

کیا ریرا قانون سے خريددارو کو فائدہ ہو گا؟

رويش کمار

آج جب ٹی وی دیکھ رہا تھا تو کچھ اس طرح کی لکیریں دکھایی دے رہی تھیں کہ اب بےایمان بلڈرز کی خیر نہیں. اب نہیں بچیں گے بےایمان بلڈر. الفاظ سے کس طرح ٹی وی ایک جعلی حقیقت تیار کرتا ہے یہ لکیریں اسی کی مثال ہیں. آپ سازوں کے خلاف رات دن مظاہرہ کر رہے عام لوگوں سے پوچھيے کہ کیا واقعی ایک مئی سے ریرا قانون نافذ ہونے کے بعد بلڈروں کی خیر نہیں ہوگی. ان کی بے ایمانی ختم ہو جائے گی. ظاہر ہے ٹی وی کو معلوم ہے کہ آپ کے پاس وقت نہیں ہے اس لئے اس نے کہہ دیا کہ بے ایمان بلڈرز کی خیر نہیں ہے. جبکہ اس نے یہ نہیں بتایا کہ اس قانون کے بعد بھی بلڈرز کا کچھ نہیں بگڑےگا. ایسا اس قانون کا جائزہ لینے والوں نے کہا ہے. ٹی وی نے یہی بات آپ سے چھپا لی کہ اس قانون سے بلڈرز کا کچھ نہیں بگڑےگا. صرف ایک نعرہ دے دیا کہ ریرا قانون سے بلڈرز کی خیر نہیں .

ریرا کا پورے فارم ہے ریئل اسٹیٹ ریگولیشن بل 2013. یہ 14 اگست 2013 کو رہائش اور شہری غربت کے خاتمے کی وزارت نے راجیہ سبھا میں پیش کیا تھا. مارچ 2016 میں یہ قانون پاس ہوا اور اب ایک سال بعد ایک مئی سے لاگو ہو رہا ہے. اس دوران ریاستوں نے مرکزی حکومت کے برقرار ماڈل پر جو قانون بنائے ہیں ان کے بارے میں کوئی اچھی رپورٹ تو نہیں. کئی ریاستوں میں ایسی گذاش چھوڑی گئی ہے کہ بلڈر بچ جائیں. لیکن میڈیا نے بڑی چالاکی سے یہ جملہ آپ کو پکڑا دیا کہ اب بلڈرز کی خیر نہیں.

چند مستثنیات کو چھوڑ کر جو بھی رہائشی منصوبے آئے گے اسے ریرا رجسٹر کرانا ہوگا. چند مستثنیات سے بلڈرز کو کیا کیا فائدہ ہو جائے گا، اسے سمجھنا ہوگا. بغیر رجسٹر کرائے کوئی پروموٹر نہ تو پیشگی رقم لے سکے گا اور نہ ہی بکنگ کر سکے گا. یہاں تک کہ فلیٹ کی خریداری فروخت کرانے والے ایجنٹ کو بھی ریرا میں رجسٹر کرانا ہوگا. کسی بھی پروجیکٹ کی تمام معلومات ریرا کی ویب سائٹ پر ہوگی، اس میں سائٹ، لے آؤٹ اور پراجیکٹ کب پورا ہوگا تمام لکھا ہوگا. خریداروں سے جو بھی پیسہ لیا جائے گا اس کا 70 فیصد حصہ ایک مختلف بینک اکاؤنٹ میں جمع کرے گا. ریاستی حکومتوں کو چھوٹ دی گئی ہے کہ 70 فیصد سے کم بھی مختلف اکاؤنٹ میں رکھ سکتے ہیں . یہ رعایت ریاستی حکومتوں کو کیوں دی گئی ہے، بلڈروں کو فائدہ پہنچانے کے لئے یا خریداروں کو. یہ تبھی پتہ چلے گا جب آپ ٹی وی سازوں کی خیر نہیں جیسے جملوں سے نکل کر دیکھنا سیکھیں گے. ریئل اسٹیٹ ریگولیشن بل میں ایک ٹربیونل بنانے کی بات ہے. اسے ہر ریاست اپنے یہاں قائم کرے گا. اگر ریرا نے خریداروں کے حق میں فیصلہ نہیں دیا یا بلڈر ریرا کا فیصلہ سے مطمئن نہیں ہوا تو اس ٹربیونل میں اپیل کی جا سکے گی. ریرا کا ایک قانون ہے کہ اگر آویدن كرتا کو رجسٹریشن کے لئے درخواست کے 15 دن کے اندر ریرا سے کوئی جواب نہ ملے تو منصوبے کو رجسٹرڈ مان لیا جائے گا.

ہر ریاست میں ایک ریرا ہوگا، جس کا ایک صدر ہوگا اور دو رکن ہوں گے. اتنی چھوٹی ادارے کیا 15 دنوں میں عمارت سازوں کے پیش کئے گئے لے آؤٹ پلان، ان منظوری وغیرہ چیک کر رجسٹر کر سکتی ہے. اس قانون کے تحت ترقی اتھارٹیوں سے ہوئی غفلت کو بھی شفل کیا جا سکتا ہے. ریرا کے تحت جرمانے کا بھی انتظام ہے. اگر پروموٹر نے شپت کی رجسٹریشن نہیں کرایا تو اس پر اس منصوبے کی کل لاگت کا دس فیصد جرمانہ لگے گا. اگر ریرا کے احکامات کے باوجود بھی رجسٹریشن نہیں کرا سکا تو تین سال تک جیل ہو سکتی ہے یا متوقع لاگت کا دس فیصد تک اضافی جرمانہ لیا جا سکتا ہے.

76000 ریئل اسٹیٹ کمپنیوں ریرا کے تحت رجسٹر ہوں گی. ایک اندازے کے مطابق بھارت میں ہر سال 2300 سے 4488 پراجیکٹ لانچ ہوتے ہیں. دس لاکھ خریدار ان پراجیکٹ میں سرمایہ کاری کرتے ہیں . جو پراجیکٹ پہلے چل رہے ہیں انہیں بھی ریرا سے رجسٹریشن لینا ہوگا. اس قانون کو سمجھنا ضروری ہے. لاکھوں لوگ بلڈرز سے پریشان ہیں. کسی کو وقت سے فلیٹ نہیں ملا تو کسی کو خراب فلیٹ ملا. ہمیں جاننا چاہئے کہ ریرا کے وجود میں آنے سے پرانی تکلیف کتنی دور ہوگی اور نیا تجربہ کتنا شاندار ہوگا. کیا کوالٹی اور ڈیزائن کے سوالات کا جواب بھی ریرا سے ملے گا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close