آج کا کالم

کیا صرف یقین دہانیوں سے بھرے گا کسان کا پیٹ؟

رويش کمار

مارچ کے وسط میں جنتر منتر پر تمل ناڈو کے کسانوں نے کئی دنوں تک  مظاہرہ کیا. ہر دن ان کی کارکردگی ایک نئی سطح پر پہنچتا رہا، مگر آخر میں نتیجے پر نہیں پہنچا. وہی یقین دہانی لے کر لوٹنا پڑا. کسانوں کی بیشتر تحریکوں کی سب سے بڑی کامیابی یہی ہوتی ہے، یقین دہانی. ایک یقین دہانی سے دوسرے یقین دہانی کے درمیان کسان لٹکتا رہتا ہے. اس کے مسائل وہیں کی وہیں رہتے ہیں . کاش ہمارے پاس کوئی اعداد و شمار ہوتا، جس سے ہم بتا دیتے کہ اس سال اتنے مظاہرے ہوئے اور ان سب کے الگ الگ نتائج کیا رہے. مدھیہ پردیش میں آج گولی لگنے سے مارے جانے والے کسانوں کی تعداد اب پانچ ہو گئی ہے.

وزیر داخلہ کا بیان ہے کہ کسانوں کی موت پولیس اور وہاں تعینات سی آر پی ایف جوانوں کی گولی سے نہیں ہوئی ہے. دونوں نے کسانوں پر گولی نہیں چلائی ہے. کسان ایک جون سے دس دن کے ہڑتال پر ہیں . ان کا مطالبہ ہے کہ قرض معاف ہو، سبزی کی مناسب قیمت ملے. اجین، شاہجہاں پور، اگر-مالوا، اندور، کنارہ، رتلام، نیمچ، مندسور میں ہڑتال کا اثر دیکھا گیا ہے. کئی مقامات پر کسانوں نے پھل سبزی لے کر منڈی جا رہے ٹرکوں کو روکا ہے. کئی مقامات پر مظاہرے کر رہے کسان اور پولیس کے درمیان تصادم کے واقعات ہوئے ہیں . مندسور میں کسانوں کی موت کے بعد کرفیو لگا دیا گیا ہے. بدھ کو مدھیہ پردیش بند کا اعلان کیا گیا ہے. مغربی مدھیہ پردیش میں انٹرنیٹ سروس بند کر دی گئی ہے. اندور میں کسانوں کو امن مارچ نکالنے کی اجازت نہیں ملی تو کسانوں میں ناراضگی پھیل گیی. مگر وہاں کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا. ضلعی کلکٹر کے آفس کے باہر کسانوں نے ایڈ مرل کو میمورنڈم دیا، لیکن کسانوں کا دعوی ہے کہ وہاں سے لوٹتے وقت پولیس نے ان پر لاٹھی چارج کی.

ہمارے ساتھی انوراگ دواري نے ریاست کے وزیر داخلہ بھوپندر سنگھ سے بات کی. ان کا کہنا تھا کہ مندسور اور نیمچ میں 5-6 دنوں سے کسانوں کی آڑ میں سماج دشمن عناصر لوٹ مار کر رہے تھے. گاڑیوں میں آگ لگائی جا رہی تھی. اس کے بعد بھی حکومت کی ہدایت ہے کہ کسانوں پر کوئی کارروائی نہ کی جائے. مسلسل اینٹی سوشل ایلیمینٹ پولیس پر حملہ کر رہے ہیں اور اب ہم نے حکم جاری کیا ہے کہ اگر کہیں پر کسانوں کے نام پر اینٹی سوشل ایلیمنٹ پولیس پر حملہ کر رہے ہیں تو ان کے خلاف سخت کارروائی ہو. یہ ان ہی بیان کا حصہ ہے جسے میں نے پڑھا ہے.

وزیر داخلہ کے مطابق، صرف دو اضلاع میں تحریک ہے. صوبہ میں کہیں پر کسانوں کی طرف سے کوئی تحریک نہیں ہے. اس کے پیچھے کانگریس اور اینٹی سوشل ایلیمنٹس کا ہاتھ ہے. ویسے، آج کل اینٹی سوشل ایلیمنٹ بھی کسان تحریک کرتے ہیں . یہ بات کچھ نئی ہے. مندسور کی رہنما کانگریس سے ہیں ، مگر مندسور اسمبلی کی آٹھ اسمبلی سیٹوں میں سے سات پر بی جے پی کا قبضہ ہے. ایک اسمبلی کی نشست کانگریس کے پاس ہے. مہاراشٹر میں بھی کسان ایک جون ہی مظاہرے کر رہے ہیں .

یہاں کسانوں نے چھٹے دن بھی مختلف جگہوں پر تحصیل دفاتر کو بند کر دیا. شہروں کی طرف جانے والی دودھ اور سبزیوں کی گاڑیوں کو روکنے کا اعلان کیا گیا. بیڑ، احمدنگر، کولہاپور، پونے، ناسک، اورنگ آباد، سانگلی، لاتور میں کسانوں کی ہڑتال کا اثر دکھائی دے رہا ہے. وزیر اعلی کا کہنا ہے کہ حکومت کسانوں کے ساتھ کھڑی ہے، مگر کچھ لوگ کسانوں کے کندھے پر بندوق رکھ کر سیاست کر رہے ہیں . یہ ایک طرح سے گناہ ہے. مدھیہ پردیش اور مہاراشٹر دونوں جگہوں پر حکومت کی نظر میں کسان تحریک مشکوک ہے. ان کے کسان ہونے پر شک ہے. حکومتوں کو لگتا ہے کہ مخالف پارٹی کسانوں کے کندھے پر بندوق رکھ کر سیاست کر رہے اور کسان براہ راست ہیں وہ اپنے کندھے پر کانگریس کو بندوق رکھنے دے رہے ہیں . ویسے شیوسینا نے کسانوں کو اپنی حمایت دی ہے. یہ درست ہے کہ کسانوں کی تحریک میں کئی تنظیمیں شامل ہیں . ان کا الزام ہے کہ حکومت کسانوں کی تنظیموں کو تقسیم کر رہی ہے. کچھ کسانوں نے وزیر اعلی کی تجویز قبول کی ہے تو کچھ کا کہنا ہے کہ وہ یقین دہانی سے نہیں ماننے والے.

بہتر ہے براہ راست کسانوں کے مطالبات پر آ جاتے ہیں . کسان بنیادی طور پر دو ہی چیزوں کا مطالبہ کر رہے ہیں . مدھیہ پردیش میں بھی اور مہاراشٹر میں بھی … پیداوار کی کامل دام ملے اور قرض معاف ہو. بی جے پی نے لوک سبھا انتخابات کے وقت کسانوں سے وعدہ کیا تھا. ہندی والے منشور کے صفحہ نمبر 26 پر لکھا ہے کہ … ایسے قدم اٹھائے جائیں گے کہ جس سے زرعی شعبے میں منافع بڑھیں . اس بات کا یقین ہو جائے گا کہ اخراجات کا 50 فیصد فائدہ ہو.

مہاراشٹر میں کسان یہی مطالبہ کر رہے ہے کہ پیداوار کی مناسب قیمت ملے اور لاگت کا 50 فیصد یقینی بنایا جائے. 28 مئی کو بی جے پی صدر امت شاہ نے پی ٹی آئی سے کہا ہے کہ کوئی بھی حکومت سوامناتھك فارمولہ کے مطابق نہیں چل سکتی ہے، کیونکہ اس میں زمین کی قیمت بھی شامل ہے. امت شاہ نے پی ٹی آئی سے کہا کہ مودی حکومت نے کم از کم امدادی قیمت میں لاگت کا 43 فیصد بڑھا کر دیا ہے. کیا کسانوں کو یہ بات معلوم ہے. کیا یہ دعوی درست ہے. اس کے علاوہ کہا جا رہا ہے کہ 2022 تک کسانوں کی آمدنی دوگنی کر دی جائے گی. اس وقت کسانوں کی آمدنی کتنی ہے، ہمارے پاس دو مختلف اعداد و شمار ہیں . دونوں میں سے کوئی مکمل نہیں ہے پھر بھی ایک اندازہ مل سکتا ہے. جولائی 2016 میں انڈین ایکسپریس میں اشوک گلاٹی اور شویتا سینی کے مضمون میں بتایا ہے کہ کسانوں کی آمدنی کو لے کر آخری بار جو قومی سطح پر سروے ہوا تھا وہ پانچ سال پرانا ہے.

-2012-13 کے نیشنل سیمپل سروے آفس کے مطابق، پنجاب کے کسانوں کی اوسط ماہانہ آمدنی 18059،روپے تھی.

– سكے بعد ہریانہ کے کسانوں کا نمبر آتا ہے. ان ماہانہ آمدنی 14434، روپے تھی.

-سب کم بہار کے کسانوں کی ماہانہ آمدنی تھی، 3588، روپے.

-وہ سروے کے مطابق، بھارت کے کسانوں کی اوسط ماہانہ آمدنی ہوتی ہے، صرف 6426، روپے.

دوسرا ڈیٹا اقتصادی سروے 2016 کا ہے، جس کا ذکر دیویندر شرما نے اپنے مضمون میں کیا ہے. یہ اعداد و شمار نیشنل سیمپل سروے کی طرح پورے ملک کا نہیں ہے، صرف 17 ریاستوں کا ہے، جس کے مطابق کسانوں کی ماہانہ آمدنی صرف 1700 روپے ہیں … ہر سال 20000، روپے. دونوں میں موازنہ ٹھیک نہیں رہے گی، مگر اندازہ ملتا ہے جو بہت خطرناک ہے. نیشنل سیمپل سروے کے مطابق، 2012-13 میں کسان کی ماہانہ آمدنی 4266،  روپے تھی. 2016 کے اقتصادی سروے کے مطابق، 1700 روپے ہو گئی. اب اس حساب سے کیا۔

-2012 سے 2017 کے درمیان کسانوں کی ماہانہ آمدنی میں 7264، روپے کی کمی آئی ہے.

-تب کس بنیاد پر دعوی کیا جا رہا ہے کہ پانچ سال بعد آمدنی دگنی ہو جائے گی.

-2016 کے مطابق 1700 اگر 2022 میں 3400، روپے ہو بھی گئی، تو کیا یہ بہت ضروری ہے.

دونوں ہی اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ کسان اتنی کم آمدنی میں پانچ لوگوں کا خاندان نہیں پال سکتا ہے. حکومت کو سب سے پہلے یہ بتانا چاہیے کہ اس وقت ملک کا کسان ماہ کا کتنا کماتا ہے، تاکہ انہیں پتہ چلے کہ 2022 میں اس کی کمائی دگنی ہوئی یا نہیں . اس میں قیمت قیمت میں اضافہ کا حساب شامل کیا جائے گا تو 2022 میں کسان اور غریب ہو جائے گا.

ابھی آتے ہیں قرض معافی پر. یوپی حکومت نے 4 اپریل کو اعلان کیا کہ چھوٹے اور معمولی کسانوں کا ایک لاکھ تک فصلي قرض معاف کیا جا رہا ہے. اس منصوبہ کے تحت دو کروڑ 15 لاکھ کسان آئیں گے، جن کل 30729، کروڑ روپے کا قرض معاف کیا جایے گا. اس کے لئے چھ ارکان کی کمیٹی بنی تھی جو تمام بینکوں کے ساتھ مل کر قرض معافی کے عمل کو انجام دے گی.

مہاراشٹر کے وزیر اعلی نے یہی کہتے رہے کہ قرض معافی نہیں کریں گے، کیونکہ یہ حل نہیں ہے. مگر اب کہہ رہے ہیں کہ مہاراشٹر کی تاریخ کی سب سے بڑی قرض معاف کرنے جا رہے ہیں . اکتوبر تک تیس ہزار کروڑ کا قرض معاف کریں  گے، جس سے 34 لاکھ کسانوں کو فائدہ ہو گا. یوپی میں بھی قریب 30000، کروڑ کا قرض معاف ہو رہا ہے، مگر وہاں 15 لاکھ کسانوں کو ہی فائدہ ہو رہا ہے، جبکہ یوپی میں ایک لاکھ تک کا قرض معاف ہو رہا ہے.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close