آج کا کالم

کیا ضابطۂ اخلاق صرف دکھاوے کے لئے ہے؟

رويش کمار

کچھ تو بات ہے ایگزٹ پول میں. ورنہ ٹی وی اسٹوڈيو میں اسپیکر دو دو گھنٹے نہیں بیٹھتے، وہ بھی صرف دو یا پانچ منٹ بات کرنے کے لئے. اینکرز لوگ ایسے بول رہے ہیں جیسے آندھی میں اشوک کے درخت جھک رہا ہو. وہ اٹھتے ہیں جھکتے ہیں گرتے ہیں اور کئی بار لگتا ہے کہ گرا ہی دیں گے قریب والے اسپیکر کو. ایگزٹ پول انتخابی تہوار کا آخری میلہ ہے. اس میلے میں لوگ خوب جھولا جھول رہے ہیں. مزہ آ رہا ہے تبھی تو لوگ لفٹ میں چڑھتے اترتے وقت پوچھ رہے ہیں کہ بتائیے کون جیت جائے گا. وهاٹس اپ كھولے تو وہاں لوگ پرسنل اور كاپنفڈینشیل ہوکر پوچھ رہے ہیں کہ وہاں نہیں تو یہاں بتا تو کون جیتے گا. ایگزٹ پول 18 کو گول ہو جائیں گے، کچھ صحیح ہوں گے کچھ غلط ہو جائیں گے، پھر لوگ ایگزٹ پول کو گرياییں گے، لیکن اگلے انتخابات میں دوبارہ ایگزٹ پول دیکھنے بیٹھ جائیں گے. یہی ایگزٹ پول کا جلوہ ہے. یہ وہ بیماری ہے جس کا علاج کوئی نہیں چاہتا. انتخابات ہو گئے، اس انتخاب میں الیکشن کمیشن کو لے کر کیا کیا تنازعہ ہوئے، کیا ہم ایسے دور میں پھر سے آ گئے ہیں جہاں الیکشن کمیشن کی ذرا سی چوک بڑا خدشہ پیدا کر دیتی ہے. ٹی این شیشن نے الیکشن کمیشن کو خدشات سے باہر نکالا تھا. کیا الیکشن کمیشن کو لے کر پھر سے خدشات ہونے لگے ہیں؟ پہلے ای وی ایم کو لے کر سوال کھڑے ہوئے اور اب سوال اس بات پر پہنچ گیا ہے کہ الیکشن کمیشن اپنے فیصلوں میں بھی برابری نہیں کر رہا ہے. کیا ایسا ہے، اس کا صحیح اور متوازن جواب تو تبھی آئے گا جب الیکشن کمیشن اپنا موقف رکھے گا، شاید 18 کو نتائج آنے کے بعد کمیشن اپنا موقف رکھے.

آخری مرحلے کی ووٹنگ کے بعد لوٹتے ہوئے وزیر اعظم گاڑی سے باہر لٹکے تھے اور اپنی انگلی دکھا کر اشارہ کر رہے تھے کہ ووٹ دیا ہے. عام طور پر رہنما ایسا کرتے ہیں لیکن اس بار وزیر اعظم روڈ شو کی طرح انگلی دکھاتے ہوئے چلے جا رہے تھے. نہ بھی چلتے تو بھی ووٹ دینے کی ان کی تصویر ٹی وی پر کئی بار چلتی ہی مگر کیا ان کا ایسا کرنا روڈ شو تھا، کیا انہوں نے حد توڑی ہے کیونکہ وہ وزیر اعظم ہیں. 2014 کے لوک سبھا انتخابات میں بھی ووٹ کے بعد جب انہوں نے انتخابی نشان ظاہر کیا تھا تب تنازعہ ہوا تھا. کیا وزیر اعظم کو پولنگ کے لئے کچھ ایسا کرنا چاہیے تھا جس سے لگے کہ وہ تپرچار کر رہے ہوں. پھر پرچار بند کرنے کا کیا مطلب ہو جاتا ہے. یہ سوال اٹھے ہیں. ایک سوال وزیر اعظم کو لے کر اٹھا ہے اور دوسرا سوال الیکشن کمیشن کو لے کر اٹھا ہے کہ کمیشن کیا کر رہا ہے. وزیر اعظم ضرور نئے نئے چیزیں کرتے ہیں، سی پلین سے اڑ جاتے ہیں لیکن ووٹ ڈالنے کے بعد اس طرح سے کرنا کیا کمیشن کے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے، اس سوال کا جواب تو الیکشن کمیشن سے ہی ملے گا. تنازعہ ہو سکتا ہے اور تنازعہ ہو رہا ہے.

کیا وزیر اعظم نے روڈ شو کیا، ضابطہ اخلاق توڑا، الیکشن کمیشن کے فیصلے کا انتظار رہے گا لیکن جس وقت یہ واقعہ ٹی وی پر گھٹ رہا تھا اس وقت بہت سے سینئر صحافی اسے لے کر اپنے خیالات کا اظہار کر رہے تھے.

sagarikaghose@ نے  لکھا کہ الیکشن کمیشن جھنجھلايا ہوا دکھائی دے رہا ہے، ایک طرف ایف آئی آر کی دھمکی دے رہا ہے تو دوسری طرف پولنگ کے لئے روڈ شو ہونے دے رہا ہے. گجرات انتخابات کا بدقسمت نتیجہ یہ بھی رہا کہ الیکشن کمیشن کو کس طرح سے دیکھا گیا ہے.

mkvenu1@ نے ٹویٹ کیا  کہ ووٹ دینے کے بعد وزیر اعظم کا روڈ شو چالاکی سے ووٹ مانگنے کی تشہیر لگتا ہے. الیکشن کمیشن بے بس لگتا ہے.

shammybaweja@  نے ٹویٹ کیا کہ راہل گاندھی کا انٹرویو دکھانے کے لئے چینلز کو نوٹس بھیجنے کے ایک دن بعد الیکشن کمیشن حکمراں پارٹی کے لئے کتنا احترام ظاہر کر رہا ہے.

abhishar_sharma@  نے ٹوئٹ کیا ہے کہ وزیر اعظم روڈ شو کس طرح کر سکتے ہیں، یہ تو الیکشن کمیشن اور اس کے قوانین پر کھلے عام خلاف ورزی اور مذاق اڑ رہا ہے.

اس بحث میں سیاستدان بھی کودے لیکن ان کے ساتھ ساتھ کالم نگار اور سماجی کارکن بھی انتخابات کمشنروں کو لے کر بحث میں کود گئے.

tavleen_singh@  نے ٹویٹ کیا کہ نوین چاولہ چیف الیکشن کمشنر بننے سے پہلے ڈاينیسٹ کے وفادار خادم تھے. چیف الیکشن کمشنر ایم ایس گل کو راجیہ سبھا کا ممبر بنایا گیا اور وزیر بھی. کانگریس نے کبھی اس پر بات نہیں کیا.

pbhushan1@ نے موجودہ الیکشن کمشنر پر الیکشن کمیشن کی آزادی کو تباہ کرنے کا الزام لگا دیا. کہا کہ انہیں مودی نے پہلے چیف سکریٹری بنایا، پھر جي ایس پي سي کا چیئرمین بنا دیا جس ادارے کے بارے میں سی اے جی نے 20000 کروڑ کی لوٹ کا الزام لگایا ہے.

ہمارے ساتھی اکھلیش شرما نے کہا کہ اسی الیکشن کمیشن نے جب احمد پٹیل کے انتخابات کے وقت دو ووٹوں کو غیر قانونی قرار دیا تھا تب الیکشن کمیشن کی تعریف ہوئی تھی. ایک چیز کا خیال رکھو. ہر فیصلے کا جائزہ اسی فیصلے سے ہوگا. اگر روڈ شو غلط ہے تو اس لیے صحیح نہیں ہو سکتا کہ چاولہ کیا تھے اور اے کے نور کیا ہیں. ممکن ہے الیکشن کمیشن کے اور فیصلے صحیح ہوں، آج بھی اور ماضی میں بھی، لیکن کیا راہل گاندھی کا انٹرویو دینا اور وزیر اعظم کا روڈ شو کرنا ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہے؟ ان دونوں پر کارروائی نہ کر کے الیکشن کمیشن ایک ادارے کے طور پر اپنی ساکھ داؤ پر لگا رہا ہے؟ کانگریس پارٹی کے لیڈر نے بھی وزیر اعظم کے ووٹ ڈالنے کے بعد گاڑی سے بھیڑ میں ہاتھ ملاتے جانے پر تنقید کی. رديپ سرجے والا اور اشوک گہلوت، پی چدمبرم نے سخت رد عمل ظاہر کیا.

الیکشن کمیشن کو بھی فوری طور پر صاف کرنا چاہئے. راہل گاندھی کے انٹرویو پر نوٹس لیا تو بتانا چاہیے کہ غلطی تھی یا نہیں. یہ بھی بتانا چاہئے کہ اسی دن جب راہل کا انٹرویو چلا تب فکّی کے پروگرام میں شامل ہو رہے وزیر اعظم کی لمبی تقریر تمام چینلز پر نشر کیی گیی. لوگ الیکشن کمیشن ہی سے مطمئن ہوں گے کہ دونوں میں کیا کوئی فرق ہے یا پھر کمیشن ایک پر کارروائی کر رہا ہے اور دوسرے پر نہیں کر رہا ہے، پھر کسی نے مثال دی کہ پولنگ کے دن گجرات کے اخبارات میں وزیر اعظم کا وگیاپن چھپا اور جس میں انتخابی نشان بھی تھا. گجرات کے وزیر اعلی کا بیان سنتے ہیں.

وجۓ رپانی نے کہا کہ وزیر اعظم نے انگلی کا نشان دکھایا، کمل کا نشان نہیں دکھایا. کمل کا نشان تو وزیر اعظم نے 2014 کے انتخابات میں ووٹ کے بعد دکھایا تھا. تو کیا رپاني جی کے مطابق وہ غلط تھا. چلئے اگر یہی پیمانہ ہے تو کیا رپاني جی کے مطابق ان کی پارٹی کے قومی ترجمان سنبت پاترا نے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کی ہے. سنبت پاترا نے باقاعدہ ٹوئٹر پر گجرات ود نمو کے ساتھ ہندی میں ٹویٹ کیا کہ ‘انتخابات کے دوسرے اور آخری مرحلے کی پولنگ میں گجرات کے عوام سے اپیل کی کہ وہ کمل کے نشان پر اپنا مووٹ دیں اور توکاس کو فاتح بنائیں. پہلے ووٹنگ پھر ناشتا. ‘

سنبت کے ٹویٹس پر راجدیپ نے ٹویٹ کیا کہ الیکشن کمیشن حاضر ہو. بی جے پی لیڈر بھوپندر یادو نے کہا کانگریس کی رسی جل گئی مگر بل نہیں گیا.

ضابطہ اخلاق کو کون سنجیدگی سے لیتا ہے، اس کی خلاف ورزی انتخابات کے وقت ہی ٹھن ٹھن کرتی ہے، پھر کچھ پتہ بھی نہیں چلتا کہ جو خلاف ورزی تھی اس کا کیا ہوا.

لیکن کیا کانگریس کے کارکنوں نے الیکشن کمیشن ہیڈ کوارٹر پر کارکردگی کا مظاہرہ کر ٹھیک کیا؟ کانگریس کارکنان کا الزام تھا کہ الیکشن کمیشن دہرا رویہ اپنا رہی ہے. منصفانہ طریقے سے الیکشن نہیں کروا رہا ہے. کانگریس کی خاتون مورچہ نے نعرے بھی لگائے اور ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کرنے والے وزیر اعظم اور دیگر بی جے پی رہنماؤں کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا. خاتون کانگریس کی سربراہ سشمیتا دیو اس کارکردگی کی قیادت کر رہی تھیں جو ایک رہنما بھی ہیں. ان کا کہنا ہے کہ الیکشن کمیشن کانگریس لیڈروں کے خلاف کارروائی تو کرتا ہے مگر بی جے پی لیڈروں کی باری آتی ہے تو نرم پڑ جاتا ہے.

ناراضگی اور الزام لگانے سے آگے جاکر الیکشن کمیشن کے باہر مظاہرہ کرنا کیا کانگریس نے بھی حد نہیں توڑی. 14 دسمبر کو بی جے پی کے رہنماؤں نے بھی الیکشن کمیشن کے ہیڈکوارٹر جاكر چیف الیکشن کمشنر سے ملاقات کی. وزیر دفاع نرملا سیتا رمن، وزیر قانون روی شنکر پرساد، اقلیتی امور کے وزیر مختار عباس نقوی سمیت کئی وزیر اور لیڈر الیکشن کمیشن کے ہیڈکوارٹر گئے. اجلاس کے بعد مختار عباس نقوی نے کہا کہ وزیر اعظم نے روڈ شو کر کسی ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی نہیں کی. انہوں نے کوئی بیان نہیں دیا. ہم نے کبھی بھی آئینی اداروں کی دھجیاں نہیں اڑائیں.

یہ روڈ شو غلط تھا یا نہیں کیا اس کا جواب کیا اس سے ملے گا کہ ایم ایس گل کو وزیر بنایا گیا یا نہیں. اس لئے ضروری ہے کہ الیکشن کمیشن جواب دے. آؤٹ لک اور بی بی سی ہندی نے گجرات کے اہم نرواچك عہدیدار بی بی سوین سے بات کی ہے. سوین نے کہا ہے کہ وزیر اعظم کا قافلہ تفتیش کے دائرے میں ہے. جب وزیر اعظم مودی ووٹ دے کر بوتھ سے نکلے تھے تو ضابطۂ اخلاق کی کمیٹی وہاں موجود تھی، جو ہر حرکت کی ویڈیوگرافی کرتی ہے. ہم نے احمد آباد کے ضلع الیکشن آفیسر سے اس بارے میں رپورٹ مانگی ہے. یہ کہنا جلد بازی ہوگی کہ وہ قافلہ ضابطۂ اخلاق کی خلاف ورزی تھا.

دہلی میں الیکشن کمیشن میں سینئر نائب الیکشن کمشنر امیش سنہا نے میڈیا کو تمام معلومات دی ہیں. انہوں نے بتایا کہ گجرات کے چیف الیکشن آفیسر نے کانگریس کے لگائے تمام الزامات پر رپورٹ بھیجی ہے. اس رپورٹ کی جانچ کی جا رہی ہے. ہم جلد ہی اس پر غور کر معلومات دیں گے. وزیر اعظم کے روڈ شو کے تنازعہ کی بھی جانچ کی جائے گی.

گجرات انتخابات کی تاریخ کے حوالے سے ہی الیکشن کمیشن کے کردار پر سوال اٹھنے لگے تھے. 12 اکتوبر کو ہماچل پردیش کے ساتھ گجرات انتخابات کا اعلان نہیں ہوا تھا. بتایا گیا کہ پہلے بھی ایسا ہو چکا ہے اور سیلاب کی وجہ سے انتظامیہ کے ذریعہ چند ہفتے کا وقت مانگا گیا تھا. تب سابق چیف الیکشن کمشنر ایس وائی قریشی نے کہا تھا کہ ایک ساتھ انتخابات کا اعلان نہ کرنا بدقسمتی کی بات ہے. 7 دسمبر کو گجرات ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کو نوٹس جاری کیا ہے کہ وي وي پیٹ کی پرچی کے بھی ساتھ ساتھ گنتی کی جائے. راجکوٹ کے ایک شخص نے عرضی دائر کی تھی کہ ای وی ایم کو لے کر سنگین الزام لگے ہیں لہذا ای وی ایم کے ساتھ ساتھ وي وي پیٹ کی پرچی کی گنتی ہونی چاہئے. اس بارے میں آخری معلومات ہمارے پاس نہیں ہے.

ہم نے کئی سابق انتخابات کے کمشنروں سے گجرات انتخابات کے تناظر میں ہوئے تنازعہ کو لے کر بات کرنے کی کوشش کی. سب نے انکار کر دیا. کے جے راؤ نے ضرور بات کی. الیکشن کمیشن کے تییں اعتماد رکھنے اور احترام ظاہر کرنے کی روایت کی ادائیگی کرتے ہوئے کے جے راؤ نے اشارہ میں جو بات کہی ہے وہ اہم ہے. وہ کہہ رہے ہیں کہ کبھی کبھی چوک ہو جاتی ہے جسے ٹھیک کر لیا جاتا ہے اور وہ یہ بھی کہہ رہے ہیں کہ میڈیا کو نہیں دکھانی چاہئے. کیا میڈیا کو وزیر اعظم کو روڈ شو کے بارے میں نہیں دکھانا چاہیے تھا. کیا کمیشن نے انتخابات سے پہلے یا انتخابات کے دوران میڈیا کو اس طرح کے ہدایات دیئے تھے یا سب اندھیرے میں تیر چلا رہے ہیں.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close