آج کا کالم

کیا ملک میں جی ایم سرسوں کی پیداوار ہونی چاہئے؟

رويش کمار

ہزاروں سال سے قدرتی سرسوں ہماری قابل اعتماد ساتھی رہی ہے. قدرتی سرسوں اس لیے کہا کیونکہ اب ایک نیا سرسوں آسکتا ہے جسے سائنسی زبان میں جینی ٹكلي موڈی فایڈ مسٹرڈ کہتے ہیں . ہندی میں جی ایم سرسوں کہہ سکتے ہیں. پوری دنیا میں جی ایم فوڈ یعنی جینی ٹكلي موڈی فایڈ مسٹرڈ  اناجوں کے کھانے اور اثر کو لے کر بحث چل رہی ہے. بھارت میں اس بحث کا نتیجہ یہ نکلا کہ 2010 میں بی ٹی برنجل، بی ٹی بینگن پر روک لگا دی گئی. میڈیا رپورٹ کے مطابق جینٹک انجینئرنگ اپروول کمیٹی جي ايےسي نے ماحولیات کی وزارت کو سونپی اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ جی ایم مسٹرڈ کی کاروباری کھیتی کی اجازت دی جا سکتی ہے. ماحولیات کے وزارت کی ویب سائٹ میں جی ایم فوڈ کو لے کر سوال جواب ڈالے  گئے ہیں. اس میں کہا گیا ہے کہ سارے جی ایم فوڈ کے لیے ہم ایک ترازو پر نہیں بانٹ سکتے.

 مختلف جی ایم الگ الگ جین سے بنائے جاتے ہیں . تو ہر جی ایم فوڈ کی جانچ کا نتیجہ ایک دوسرے سے مختلف ہو سکتا ہے. ممکن نہیں ہے کہ سارے جی ایم فوڈ کے بارے میں ایک جواب دے دیا جائے کہ یہ غیر محفوظ ہیں . بین الاقوامی منڈیوں میں جی ایم فوڈ دستیاب ہے اور اس سے صحت کو خاص خطرہ نہیں ہے. جن ممالک میں اجازت ہے، وہاں استعمال کرنے والے لوگوں میں کسی قسم کی خرابی کی کوئی علامات نہیں ملے ہیں

 جینی ٹكلي موڈی فایڈ  کھانوں کی سائنسی تعریف تو نہیں بتا سکتا مگر اس میں مصنوعی طور پر پروٹین کی صلاحیت پیدا کر دی جاتی ہے. اس طرح سے بنا دیا جاتا ہے کہ اسے کیڑے برباد نہ کر سکیں، اس کے بیج کو کسی قسم کا انفیکشن نہ ہو کیونکہ اس کے اندر اندر خاص قسم کی غالب جین ہوتا ہے. سوال اٹھتا ہے کہ اس کا استعمال کرنے پر انسان اور جانور کے جسم میں وہ جین داخل ہو جائے گا.

 ماحولیات کی وزارت کی ویب سائٹ پر کہا گیا ہے کہ جی ایم فوڈ کھانے سے انسانی جسم میں ٹراسجين کے داخل ہونے کے کوئی ثبوت نہیں ملے ہیں. جی ایم فوڈ کا بڑھا ہوا پروٹین جسم کو نقصان نہیں پہنچاتا ہے. جيم مسٹرڈ کے بیج روایتی سرسوں کے بیج کی طرح ہی محفوظ ہے. جی ایم مسٹرڈ سے بنا تیل یا دوا ویسے ہی محفوظ ہے جیسے روایتی سرسوں سے بنا تیل یا دوا. بلکہ ذائقہ سے لے کر دواؤں کی خصوصیات تک میں کوئی فرق نہیں ہوتا. جی ایم مسٹرڈ سرسوں کی روایتی مختلف قسم ورا اور ریڈیو لبرٹی 1359 کے جیسا ہی غذائی ہوتا ہے.

 جس طرح وزارت کی ویب سائٹ پر تمام جوابات دیئے گئے ہیں اس سے یہی لگتا ہے کہ جی ایم فوڈ سے زیادہ محفوظ دنیا میں کچھ اور ہے ہی نہیں . یہ ایک ایسا فوڈ ہے جو سارے سوالوں کے جواب دے سکتا ہے. یہ تمام خوبیوں کو فروغ دے رہا ہے. کچھ بھی پوچھئے وزارت کی ویب سائٹ کہتی ہے کہ کوئی خطرہ نہیں ہے. گائے بھینس جی ایم سرسوں کی کھلی کھا لیں ، دودھ پر کوئی اثر نہیں پڑے گا، شہد کی مکھیاں جی ایم سرسوں کے پھولوں کا رس چوس لیں، ان پر کوئی اثر نہیں پڑے گا.

 جی ایم مسٹرڈ Dmh-11 کی هابريڈ کی شکل ہے، جسے دہلی یونیورسٹی کے سینٹر فار جینیاتی مینپلیشن آف كراپ پلاٹس نے تیار کیا ہے. اسے حکومت ہند کے اداروں نے ہی اقتصادی تعاون دیا ہے. جی ایم سرسوں سے پیداوری بڑھے گی، دعوی ہے کہ 30-35 فیصد پیداوری بڑھ جائے گی، جس سے ہم سرسوں کا تیل درآمد کم کر سکیں گے. اس وقت ہماری سالانہ ساٹھ ہزار کروڑ کھانے کے تیل کی درآمد ہے. ہم دنیا کے کسی ایسے ملک کے بارے میں نہیں جانتے ہیں، جس نے جی ایم فوڈ کی پیداوار کے بعد اس اناج کی درآمد ہی بند کر دیا ہو. ناقدین کہتے ہیں کہ جی ایم مسٹرڈ کی پیداوری کی جانچ سرسوں کی جس مختلف قسم کے مقابلے میں کیا گیا ہے وہ درست نہیں ہے. RH-749 قسم سے ایک هیكٹير میں 2600- 2800 کلو سرسو ہو جاتا ہے. DMH-11 هابريڈ سرسوں سے ایک ہیکٹر میں 2،626 کلو فی ہیکٹر پیداوار ہونے  کا دعوی کیا گیا  ہے.

200 سے 400 گرام فی ہیکٹر اگر پیداوار بڑھ بھی جائے تو کیا یہ بہت ہے، کیا یہ واقعی بڑی حیرت انگیز بات ہے، جسے ہم روایتی کاشت میں بہتری کے ذریعہ حاصل نہیں کر سکتے. ہمارے خواب کے ملک امریکہ میں بھی جی ایم فوڈ کو لے کر ایک رائے نہیں ہے. ویسے وہاں ٹرمپ کو لے کر بھی ایک رائے نہیں ہے. امریکہ میں لوگ برسوں سے جی ایم فوڈ کھا رہے ہیں . مکئی اور سویا بین تو جی ایم ہی اگاتے ہیں شاید وہاں . گزشتہ سال وہاں بحث ہوئی کہ پتہ ہونا چاہیئے کہ جی ایم کھا رہے ہیں یا نہیں . اسے لے کر بحث ہوئی اور انفرادی ریاستوں میں 100 سے زیادہ بل پیش کر دیے گئے. لیبل کی مخالفت کرنے والے کہتے تھے کہ جب جی ایم اناج محفوظ ہے تو کیوں لکھیں کہ یہ جی ایم اناج ہے. دہائیوں تک جی ایم اناج کھانے کے بعد امریکی عوام کو پتہ چلا کہ جی ایم فوڈ کے لئے جو کیڑے مار ادویات کا استعمال کیا جاتا ہے، وہ انسانی صحت کے لیے بے حد خطرناک ہیں.

 ہربی سایڈ کہتے ہیں ایسی ادویات کو عالمی ادارہ صحت کی کینسر ریسرچ برانچ نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ جی ایم فصلوں کے نیچے اگنے والے گھاس کو ختم کرنے والے هربساڈ میں glyphosate  ہوتی ہے، جو ایک طرح سے کینسر پیدا کرنے والا كارسی نوجین ہیں. اس کے خلاف ملک بھر میں کئی تنظیمیں سرسوں ستیہ گرہ چلا رہے ہیں. سودیشی جاگرن منچ نے 23 مئی کو وزیر اعظم مودی کو ایک خط لکھا ہے. کہا ہے کہ جی ایم سرسوں کی کاشت کی اجازت دینے میں جلد بازی نہیں ہونا چاہئے. سودیشی جاگرن منچ کا کہنا ہے کہ جی ایم مسٹرڈ کے حق میں اعداد و شمار کی باجي گاري کی گئی ہے. جی ایم مسٹرڈ کے مقامی ہونے کا دعوی غلط ہے. 2002 میں ٹھیک ایسے ہی مصنوعات کی کاشت کے لئے ایک کمپنی نے اجازت مانگی تھی. جی ایم سرسوں کی پیداوار روایتی سرسوں سے بالکل زیادہ نہیں ہے. بہت سی دیسی سرسوں ہے، جو جی ایم سرسوں سے زیادہ پیداواری ہے.

 سودیشی جاگرن منچ کے کنوینر ڈاکٹر اشونی مہاجن نے جس سائنسی انداز میں وزیر اعظم کو خط لکھا ہے، اس سے لگتا نہیں ہے کہ کوئی ان کے دعوے کو گنیش جی کے ٹرانسپلانٹ والے مثال سے کاٹ سکتا ہے. میرے کہنے کا مطلب ہے کہ مہاجن جی نے پورے حقائق کے ساتھ اور وےجنانكتا کی بنیاد پر خط لکھا ہے انگریزی میں. ویسے ہندی میں مجھے بھی دقت آئی ہے.

 18 مئی کو منٹ اخبار سے 14 سال کے تحقیق کے بعد جی ایم سرسوں کے مختلف قسم تیار کرنے والے چراغ پٹیل کا انٹرویو چھپا ہے جس میں انہوں نے کہا ہے کہ آدمی ہر دن دو سے تین لاکھ قسم کے پروٹین کی انٹیک کرتا ہے. سرسوں میں اسی ہزار قسم کے پروٹین ہیں. جی ایم سرسوں برنیس اور برستر جین سے بنا ہے، جو ایسا پروٹین ہی پیدا نہیں کرتا ہے جس سے الرجی اور ٹكسك پیدا ہو. لہذا اس سے کوئی نقصان نہیں کرے گا. جی ایم ٹکنالوجی کے خلاف جو جھوٹ پھیلایا جا رہا ہے وہ post truth دنیا کا حصہ ہے. post truth سے ہم صحافی لوگ تو پریشان ہیں ہی، لگتا ہے سائنسی لوگ بھی تکلیف میں ہیں. ویسے جی ایم فوڈ کی مخالفت post truth کے گردش میں آنے سے کئی سال پہلے سے ہو رہا ہے. ٹرمپ کے جیتنے کے بعد یہ لفظ رائج ہوا، مطلب یہ ہے کہ سچائی پر لوگوں کے جذبات بھاری پڑ جاتی ہے. جو بھیڑ مان لے وہی سچ ہے. مغرب کا تو پتہ نہیں، ہمارے مذہب نصوص میں post truth کے کئی سیاق و سباق مل جائیں گے. بہرحال، پیٹل صاحب کا دعوی ہے کہ اس ریسرچ کو لے کر جتنے بھی ٹیسٹ ہوئے، سیکورٹی چیک ہوئیں وہ کسی کمپنی کے دباؤ سے نہیں ہوئی ہیں. حکومت کا پیسہ لگا تھا، حکومت کی ایجنسیاں شامل تھیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close