آج کا کالم

کیا ون بیلٹ ون روڈ پروجیکٹ سے باہر ہونے سے ہندوستان کو نقصان ہوگا؟

رويش کمار

پوری دنیا چین کے ون بیلٹ-ون روڈ پروجیکٹ پر بحث کر رہی ہے. چین ایک نیا سلک روٹ بنانے جا رہا ہے. سلک روٹ یعنی وہ تاریخی راستہ ، جس کے راستے صدیوں تک تجارت ہویی اور جو ایشیا کے تمام ممالک سے گزرتا ہوا مشرقی ایشیائی ممالک کوریا اور جاپان تک کو یورپ سے لگے بحیرہ روم کے ارد گرد کے علاقوں تک جوڑتا تھا. یہ راستہ ہمیشہ سے ہی چین کی اقتصادی خوشحالی کا ذریعہ بنا رہا. اس راستے کی اہمیت کا اندازہ اس بات سے کیا جا سکتا ہے کہ سوا دو ہزار سال پہلے چین کے ہان شہنشاہ تک نے اس راستے کی حفاظت کے لئے چین کی دیوار کی تعمیر کی تھی. اسی سلک روٹ کو نئے طور پر تیار کرنے کے لئے چین نے کمر کس لی ہے. اس کے تحت ایشیا کے تمام ممالک میں کام شروع بھی ہو چکا ہے. کہیں پہاڑوں کے نیچے سرنگیں کھودی جا رہی ہیں، کہیں بڑے بڑے دریاؤں پر وسیع پل بن رہے ہیں. لین کے ہائی وے بن رہے ہیں تو ہزاروں کلومیٹر طویل ریلوے لائن بچھ رہی ہیں. بڑے بڑے پاور پلانٹ بن رہے ہیں اور سینکڑوں کلومیٹر طویل گیس پائپ لائن بچھائی جا رہی ہے. چین کا یہ اب تک کا سب سے بڑا پروجیکٹ ہے، جس کا بجٹ دس ٹریلین امریکی ڈالر یعنی سات سو کھرب روپے ہے… جو بھارت کی کل معیشت کا تقریبا ایک تہائی ہے … اسی سے آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ یہ کتنا اہم اور بڑا منصوبہ ہے.

14 مئی اور 15 مئی کو بیجنگ میں اس کا رسمی طور پر دروازے بھی  کھولے گیے. اس کے افتتاح کے موقع پر چین سمیت 29 ممالک کے راشٹررمكھ اور 70 دیگر ممالک کے نمائندے موجود تھے. ون بیلٹ-ون روڈ چین کے صدر شی چنگفنگ کا خواب ہے، جس کا مقصد بتایا گیا ہے ایشیائی ممالک کے ساتھ چین کا رابطہ اور تعاون بہتر کرنا اور افریقہ اور یورپ کو بھی ایشیائی ممالک کے ساتھ قریبی تعلقات استوار کرنا.

اس پروجیکٹ کے تحت زمین اور سمندری راستوں سے تجارتی راستوں کو بہتر بنایا جائے گا. بہت ‘ہائی اسپیڈ ریل نیٹ ورک ہوں گے، جو یورپ تک جائیں گے. ایشیا اور افریقہ میں کئی بندرگاہوں سے یہ روٹ گزرے گا اور اس راستے میں بہت فری ٹریڈ زون آئیں گے. چین دنیا کے 65 ممالک کو ایک دوسرے کے قریب لے آئے گا اور دنیا کی دو تہائی آبادی کو اس کی معیشت سے براہ راست شامل کیا جایے گا.

ماہر اقتصادیات اسے اس مارشل پلان کی طرز پر تلاش کر رہے ہیں ، جس نے دوسری عالمی جنگ کے بعد امریکہ کو دنیا کا سپر پاور بنا دیا، لیکن یہ اس سے بھی بڑا پروجیکٹ ہے. اگر قیمت کے لحاظ سے دیکھا جائے تو آج کی قیمت کے حساب سے امریکہ کا مارشل پلان 130 ارب ڈالر کا تھا جبکہ چین کا پروجیکٹ اس سے کئی گنا زیادہ بڑا یعنی دس کھرب ڈالر کا ہے.

شی چنگفنگ نے اسے پراجیکٹ آف دی سنچری بتایا ہے. ایک ایسی منصوبہ بندی جو اس خالی جگہ کو بھرےگي، جو ٹرمپ کے دور میں امریکہ فرسٹ کی پالیسی کے تحت بین الاقوامی معیشت سے امریکہ کے پاؤں کھینچنے سے بن گئی ہے. چین اس کے ذریعہ دنیا کی معیشت پر اپنی گرفت اور گہری کرنے کی کوشش میں ہے. ایسے وقت جب چین میں گھریلو مطالبہ کافی کم ہوئی ہے تو ترقی کی بھوک مکمل کرنے کے لئے اسے دوسرے ممالک کی جانب تیزی سے بڑھنا ہی ہوگا اور یہ پراجیکٹ اس کے لئے بہت مددگار ثابت ہو سکتا ہے. چین ون بیلٹ-ون روڈ کے ذریعہ اپنے سستے اور بہتر مصنوعات دنیا کے بازاروں تک آسانی سے پہنچا پائے گا. اس کا مقصد ہے اگلے ایک دہائی میں اپنا کاروبار ڈھائی کھرب ڈالر تک پہنچانا. ایک طرح سے چین اپنے اقتصادی سلطنت کو ایسے بڑھانے جا رہا ہے جیسا پہلے کبھی دیکھا یا سنا نہیں گیا … لیکن  خاص بات یہ ہے کہ بھارت اس کا حصہ نہیں بن رہا … جنوبی ایشیا میں بھارت اور بھوٹان اکیلے ملک رہ گئے ہیں، جو اس میں شامل نہیں ہوئے. بھوٹان کے ساتھ تو چین کے سفارتی تعلقات نہیں ہیں ، لیکن بھارت اس سے کیوں منسلک نہیں  … بھارت نے اس کی وجہ صاف کر دی ہے. اس کا کہنا ہے کہ یہ پراجیکٹ اس کے خودمختاری کی خلاف ورزی کرتا ہے …

بھارتی وزارت خارجہ نے اس معاملے پر بیان جاری کر کہا ہے کہ کوئی بھی ملک اس طرح کے پروجیکٹ کو قبول نہیں کر سکتے جو خود مختاری اور علاقائی سالمیت کی اس تشویش کو نكارتا ہو.

دراصل، ون بیلٹ-ون روڈ اس چائنا-پاکستان اکنامک كورڈور یعنی چین-پاکستان اقتصادی کوریڈور سے گزرتا ہے، جو پاکستان کے قبضے والے کشمیر میں پڑتا ہے. بھارت اسے اپنا حصہ مانتا ہے اور اس علاقے میں اقتصادی سرگرمیوں میں چین کے شامل ہونے پر اعتراض جتاتا رہا ہے. اس علاقے میں بنیادی ڈھانچے کو بہتر کرنے کے لئے چین اب تک 46 ارب ڈالر کی سرمایہ کاری بھی کر چکا ہے، جس پر بھارت مسلسل اعتراض جتاتا رہا ہے.

سوال یہ ہے کہ کیا ون بیلٹ-ون روڈ پروجیکٹ سے باہر ہونے سے بھارت کو نقصان پہنچے گا … کیا بھارت دنیا کی معیشت میں الگ تھلگ پڑ جائے گا. بہت سے لوگ سمجھتے ہیں کہ ایسا نہیں ہے. عالمی معیشت میں ہندوستان کے اکیلے پڑنے کا خطرہ نہیں ہے، کیونکہ بھارت ایک ایسا بڑا اقتصادی اور سیاسی طاقت ہے، جسے کوئی دوسری طاقت الگ تھلگ نہیں کر سکتی. بین الاقوامی امور کے ماہر سی راجا موهن انڈین ایکسپریس میں لکھتے ہیں کہ بھارت کا ایک اہم جغرافیائی مقام ہے جہاں سے وہ چین کے بیلٹ اور روڈ مہم میں اہم کردار بھی ادا کر سکتا ہے اور اس کے لئے دقت بھی پیدا کر سکتا ہے.

لیکن بھارت کی حقیقی چیلنج ہے علاقائی سالمیت کے اپنے دعووں کو زمین پر بھی ثابت کرنے کی. بیلٹ روڈ مہم پر بھارت کی دلیلوں کا ایک اور اثر وہ بتاتے ہیں . ان کا کہنا ہے کہ اس سے بھارت، پاکستان اور چین کے تناظر میں جموں و کشمیر کا مسئلہ مرکز میں آ گیا ہے. اس مسئلے کو ہمیشہ بھارت اور پاکستان کے درمیان دو طرفہ مسائل کے طور پر ہی دیکھا جاتا رہا، لیکن چین ہمیشہ سے اس میں بھی ایک کردار ادا کرتا رہا ہے. دراصل، حقیقت یہ ہے کہ چین کشمیر میں تیسری طاقت ہے.

لداخ کے ایک بڑے علاقے پر چین کا قبضہ ہے. اس مغرب میں پاکستان نے اپنے قبضے کا ایک بڑا حصہ 1962 کی بھارت-چین جنگ کے بعد چین کے سپرد کر دیا ہے. كراكورم ہائی وے کشمیر میں چین کا پہلا trans-border infrastructure project ہے جو ساٹھ کی دہائی کا ہے. اس کے بعد سے ہی پاکستان کے قبضے والے کشمیر میں چین کا دخل بڑھتا گیا ہے. چین-پاکستان اقتصادی کوریڈور کے پاکستان کے قبضے والے کشمیر کے ساتھ جڑنے سے کشمیر تنازعہ میں چین کا کردار اور بڑھ گیا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close