آج کا کالم

کیا پرائیویسی کے لیے نیا قانون بنے؟

رويش کمار

حکومت کی فائلوں پر خفیہ لکھا ہوتا ہے، اس کا مطلب ہے یہ معلومات عوامی نہیں ہوگی. اسی طرح ہماری اپنی زندگی کی کچھ ایسی معلومات ہوتی ہیں جن کے بارے میں ہم نہیں چاہتے کہ دنیا جانے. کیا آپ چاہتے ہیں کہ آپ کے نام سے لکھا گیا خط کوئی اور پڑھ لے اور یہ بھی جان لے کہ خط کہاں سے آیا ہے. آپ خط سینے سے لگا کر پڑھتے ہیں یا ساری دنیا کو دکھا کر پڑھتے ہیں. یہ مثال اس لیے دے رہا ہوں تاکہ یہ بات سب کے سامنے برابری سے صاف ہو جائے کہ سب کے سامنے خط کا پڑھنا پرائیویسی کی خلاف ورزی ہے. جیسے اگر میں آپ کی پاس بک لے کر دیکھنے لگ جاؤں کہ کتنی رقم ہے تو آپ کو برا لگے گا. جس طرح سے حکومت کی رازداری اس کی پرائیویسی ہے، اسی طرح سے آپ کی پرائیویسی یعنی پرائیویسی کی بھی رازداری ہے. آج کل آدھار بہت چیزوں میں لازمی کیا جانے لگا ہے. آدھار کارڈ میں آپ کی بہت سی معلومات ہوتی ہیں. ان سب معلومات کو آج کل ڈیٹا کہتے ہیں. دنیا کے کسی بھی ملک میں یہ ڈیٹا محفوظ ہوتے ہوئے بھی آخری طور پر محفوظ نہیں ہے. ایک جگہ جمع ہونے کی وجہ سے ان اڑا لینے کا خطرہ رہتا ہے. اڑایا بھی گیا ہے. سپریم کورٹ میں آدھا کو بايومیٹريك یعنی آنکھوں کی پتلی، انگلیوں کے نشانات سے شامل کرنے کے خلاف 20 یاچیکاییں دائر ہیں.

26 جنوری 1950 کے آئین نافذ ہونے کے 67 سال بعد بھارت کی سپریم کورٹ کی آئینی بنچ اس بات پر غور کر رہی ہے کہ پرائیویسی، آپ کا بنیادی حق ہے یا نہیں. 9 ججوں کی بنچ کے سامنے یہ سوال آدھار کے تناظر میں آیا ہے. بہت چیزوں میں آدھار کے لازمی کئے جانے کو چیلنج کرنے والی درخواست میں یہ سوال اٹھا ہے کہ آدھار کے بعد کسی کا کسی سے پردہ نہیں رہے گا. پرائیویسی ختم ہو جائے گی. یہ بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے. اسی لیے غور ہو رہا ہے کہ کیا پرائیویسی بنیادی حق ہے. اگر آدھار کی تمام معلومات، اس سے منسلک موبائل نمبر، بینک اکاؤنٹس کی معلومات لیک ہو جائے تو آپ کس قانون کے تحت کورٹ کے پاس جائیں گے کہ آپ کی پرائیویسی یعنی پرائیویسی کے حقوق کی خلاف ورزی ہوئی ہے. جب ہم انفرادی اور عوامی معمالات میں توقع کی جاتی ہے کہ ایک دوسرے کی پرائیویسی کا خیال رکھیں، احترام  کریں، تو وہ آئین یا قانون کے تحت اس کی وضاحت کیوں نہیں ہے. جو سوال سوشل کوڈ کا حصہ ہے، وہ سوال آئین کا حصہ کیوں نہیں ہے.

یہ سوال پہلے بھی تھا مگر ڈیجیٹل دور میں کافی بڑا ہو گیا ہے. آپ کا بھی اس دنیا میں مسلسل کسی جرم میں پیچھا کیا جا سکتا ہے. ایک تیسری آنکھ دیکھ رہی ہوتی ہے. دنیا بھر میں روز لاکھوں پرائیویسیوں پر حملہ ہوتا ہے. لوگوں کے بارے میں معلومات جمع کرنا اور اسے چرا کر فروخت کرنا، یہ اپنے آپ میں ایک دھندہ بن گیا ہے. تبھی تو آپ کے موبائل پر جب سیل یا خریدو بیچو  کے میسیج آنے لگتے ہیں تو آپ پریشان ہو جاتے ہیں. اس کے لئے ٹیلی فون ریگولیٹری آف انڈیا نے اس کا اہتمام کیا ہے جس کے تحت آپ درج کرا سکتے ہیں کہ آپ کو اس طرح کے میسیج نہیں بھیجے جائیں. یہ آپ اس لیے کرتے ہیں کیونکہ آپ نہیں چاہتے کہ کوئی آپ کی پرائیویسی میں دخل دے. کوئی جانے کہ آپ نے فریز خریدا ہے، اب اس کا کور بھی خرید لیجئے.

سپریم کورٹ میں 9 ججوں کی بنچ 19 اور 20 جولائی کو ویچارمنتھن کر رہی ہے کہ پرائیویسی کا حق بنیادی حق ہے یا نہیں. پی شرما کے کیس میں آٹھ ججوں کی پیٹھ اور 1962 میں کھڑک سنگھ کے کیس میں چھ ججوں کی بنچ نے فیصلہ دیا تھا کہ پرائیویسی کا حق بنیادی حق نہیں ہے. اس کے بعد بھی کئی فیصلے آئے ہیں جن میں عدالت نے رازداری کے حق کو بنیادی حق مانا ہے. بدھ کو گوپال سبرامنیم اور شیام دیوان نے رازداری کو بنیادی حق منوانے کے لئے بحث کی. بینک سے لے کر موبائل نمبر تک آدھا سے منسلک کیا جا رہا ہے.اسے لازمی کیا جا رہا ہے. ہم سب آدھار کارڈ بنوا بھی رہے ہیں لیکن کیا ہم اس سوال کو سمجھ پا رہے ہیں کہ اگر آدھار کا ڈیٹا لیک ہو گیا اور سب کو پتہ چل گیا تو آپ کے ساتھ کیا ہو سکتا ہے.

گوپال سبرامنیم نے کہا کہ آئین کے دیباچے میں لوگوں کو سوچنے کی آزادی کا حق دیتی ہے. بغیر آزادی اور پرائیویسی کے یہ ممکن نہیں ہے. خیالات کی آزادی تبھی ہوگی جب آپ کی پرائیویسی محفوظ رہے اور آزادی ہو. پرائیویسی لبرٹی کی اصل اور بنیادی عنصر ہے. کسی دوسرے کے حقوق کے سائے میں رہنے والا نہیں ہے. لبرٹی اور پرائیویسی کے حقوق ہمیں دیے نہیں گئے ہیں بلکہ یہ پہلے سے موجود ہیں. یہ قدرتی حقوق ہیں.

گوپال سبرامنیم نے کہا کہ ہم یہ نہیں کہتے کہ آرٹیکل 21 کے تحت رہنے کے حق کا دائرہ بڑھایا جائے بلکہ جو حق پہلے سے ہیں، ان کی شناخت کی جائے، تسلیم کیا جائے. سابق سالیسٹر جنرل سولی سورابجي نے کہا ہے کہ آئین میں رائٹ ٹو پرائیویسی نہیں لکھا ہے، اس کا مطلب یہ نہیں کہ یہ ہے ہی نہیں. پرائیویسی ہر انسانی شخصیت کا لازمی حصہ ہے. جیسے آئین آرٹیکل 19 کے تحت پریس کی آزادی کا حق نہیں دیتا، اس اظہار کی آزادی کی طرح دیکھا جاتا ہے. عدالتوں نے بھی اس بات کو ہمیشہ مانا ہے.

شیام دیوان نے اپنی دلیل میں کہا کہ راجیہ سبھا میں 16 مارچ 2016 کو ارون جیٹلی نے کہا تھا کہ اب یہ کہنے میں کہ پرائیویسی بنیادی حق ہے یا نہیں، کافی دیر ہو چکی ہے. پرائیویسی شاید ایک بنیادی حق ہے. رائٹ ٹو پرائیویسی، آئین کے آرٹیکل 14، مساوات کے حقوق، آرٹیکل 19 اظہار کی آزادی اور ارٹكل 21 جینے کے حق کے سنہرے مثلث سے ملا ہے. آدھار کے سب سے بڑے حامی نندن نلیكری کا انٹرویو 19 جولائی 2017 کے بزنس سٹینڈرڈ میں چھپا ہے. اس میں نلیكي نے جو کہا ہے وہی خدشات آدھار اور پرائیویسی کو لے کر لوگ اظہار کرتے آرہے ہیں. انہوں نے کہا ہے کہ صرف کچھ ڈیجیٹل پلیٹ فارم کے پاس ڈیٹا ہونا ڈیجیٹل مونوپولي کو جنم دے گا. چین میں لوکل کمپنیوں کو ترجیح دی گئی لیکن بھارت میں بیرونی کمپنیاں ہیں جو انٹرنیٹ کی دنیا میں چھائی ہوئی ہیں. جیسے فیس بک اور گوگل. یہ کمپنیاں بھی ڈیٹا کے بدلے مفت سروس دیتی ہیں. ان کے پاس ڈیٹا ہے تو اشتہارات بھی زیادہ ہیں. بھارت میں ایسی کوئی پالیسی نہیں ہے جہاں معلوم ہو کہ کون سا ڈیٹا اسٹاک کرنا ہے، کون سا ذاتی ہے. مجھے فکر ہے کہ یہ اعداد و شمار اب مونوپولي بنا دے گا اور نیا colonization model بنے گا.

اگر آدھار کے جنک نلیكری جی یہ بات کہہ رہے ہیں کہ اعداد و شمار جٹاكر کمپنیاں نیا کالونی بنا سکتی ہیں. مطلب وہاں کے لوگوں کو غلام بنا لینا جیسے برطانیہ نے بھارت کو اپنا نو آبادی بنا لیا تھا. اگر یہ خطرہ ہے کہ انٹرنیٹ کمپنیوں کے لئے بھی اورآدھار کے لئے بھی یہ صاف ہونا چاہئے کہ پرائیویسی  کے تعلق سے ہمارے حقوق کیا ہیں. اگر پہلے سے ہیں تو کیا ہمیں معلوم ہے کہ اس کی کوئی کمپنی خلاف ورزی کر رہی ہے، اگر حکومت کے اعداد و شمار بینک سے آدھار کا ڈیٹا جاری ہو جاتا ہے تو ایک شہری حکومت پر کس طرح سے دعوی کر سکتا ہے. انٹرنیٹ کمپنی کے خلاف کس قانون کے تحت وہ اپنے لیے انصاف مانگ سکتا ہے.

19 جولائی کے بزنس سٹینڈرڈ میں نندن نلیكری کا بیان چھپا ہے جس میں انہوں نے کہا ہے کہ پرائیویسی کو لے کر نیا قانون بننا چاہئے تاکہ صارفین جسے قارئین کہتے ہیں، اس کا اپنی معلومات پر کنٹرول ہو. کیا ہم جانتے ہیں کہ ڈیجیٹل انڈیا کے سرکاری مہم میں غیر ملکی کمپنیاں ہیں یا نہیں اگر ہیں تو ان کا ہمارے اعداد و شمار پر کس طرح کا کنٹرول ہو گا. کیا نلیكي گوگل اور فیس بک سے آگاہ کر رہے ہیں. چین میں فیس بک اور گوگل کا اپنا ورژن ہے. وہاں کے لوگوں کا ڈیٹا امریکہ میں بیٹھی کمپنی کے پاس ہے. نلیكری نے کہا ہے کہ ہمارے پاس اس پر لگام لگانے کے لئے کوئی قانون نہیں ہے.

اگر نلیكری کو لگتا ہے کہ پرائیویسی کے لئے نیا قانون ہونا چاہئے تو اس کا مطلب ہے کہ آدھار کو لے کر پرائیویسی کے حق کا سوال اٹھانے والے بھی صحیح جگہ پر لگتے ہیں. اس لیے یہ ضروری ہو جاتا ہے کہ پرائیویسی کی وضاحت کی جائے. اس قانونیت صاف صاف ہو.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close