آج کا کالم

کیا 18 ہزار روپے کم سے کم اجرت کا مطالبہ جائز نہیں ہے؟

رویش کمار

1982 میں جسٹس پی این ایس بھگوتی نے اپنے فیصلے میں کہا تھا کہ اقل مقداراجرت کم ہونے کی وجہ سے آدھے مزدور بندھوا اجرت کر رہے ہیں. بھارت میں منظم اور غیر منظم علاقے کی اجرت میں ہی بھیانک فرق ہے. ایک مطالعہ کے مطابق 2010-11 میں باقاعدہ مزدور کو ہر روز 392 روپے مل رہے تھے تو غیر منظم علاقے والے کو 143 روپے. مزدور یونین بھی غیر منظم علاقے کے مزدوروں کی بات زور شور سے نہیں کرتے جبکہ اب زیادہ تر مزدور اسی علاقے سے آتے ہیں جو ایک تہائی کم اجرت پر کام کرتے ہیں. مرکزی مزدور تنظیموں نے جمعہ سے ہڑتال پر جانے کی دھمکی دی ہے. ان کا مطالبہ ہے کہ اقل مقداراجرت بڑھائی جائے.

ساتویں پے کمیشن نے مرکزی حکومت میں اقل مقدارتنخواہ 18000 روپے فی ماہ کر دی ہے. ورکر تنظیمیں چاہتی ہیں کہ یہ 18000 کی جگہ 26000 ہونی چاہئے. ساتویں پے کمیشن کی بنیاد پر مزدور یونین کہہ رہے ہیں کہ غیر ہنر مند مزدوروں کی اقل مقداراجرت 18000 ہو. گزشتہ سال دس مرکزی مزدور انجمنوں کی ہڑتال ہوئی تھی تب مطالبہ کیا گیا تھا کہ غیر ہنر مند مزدور کے لئے اقل مقداراجرت کی شرح 6330 روپے ماہ سے بڑھا کر 15000 کردی جائے. ان تنظیموں کا دعوی ہے کہ ان کے 15 کروڑ رکن ہیں پھر بھی 15 کروڑ لوگ اپنے لئے 15000 روپے کی اقل مقداراجرت حاصل نہیں کر سکے. گزشتہ سال کم ازکم اجرت بڑھی لیکن صرف 7098 روپے ہی ہوئی، 15000 نہیں ہوئی. اب یہ تنظیمیں پھر ہڑتال پر جانے کی بات کر رہے ہیں. اس بار 15000 کی جگہ 18000 روپے اقل مقداراجرت کرنے کی مانگ ہے.

30 اگست کو مرکزی حکومت نے کم ازکم اجرت میں 350 روپے روز کا اضافہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے. اب غیر ہنر مند مزدور کی اجرت ہر دن 246 روپے کی جگہ 350 روپے ہوگی. اگر آپ اسے مہینے کے 30 دن سے ضرب کریں تو غیر ہنر مند مزدور کی ماہانہ آمدنی ہوگی 10500. دہلی حکومت نے حال ہی میں اقل مقداراجرت میں 50 فیصد اضافہ کا اعلان کیا ہے. اگر یہ نافذ ہوا تو غیر ہنر مند مزدور کی تنخواہ 14052 روپے فی ماہ ہوگی. ہنرمند مزدور کی تنخواہ 17033 ہوگی. نیم ہنرمند مزدور کا درماه 15471 روپے ہوگا.

18000 روپے تو دہلی میں بھی نہیں ہوتے ہیں لیکن پھر بھی دہلی میں اقل مقداراجرت 18000 کے قریب ہے اور ارد گرد کی ریاستوں کے مقابلے میں 80 سے 100 فیصد زیادہ ہے. آپ کسی بھی ماہر اقتصادیات سے پوچھیں گے تو دو بات کہیں گے. اقتصادی عدم مساوات بڑھ رہی ہے اور بے روزگاری بھی. یہ بات وہ ماہر اقتصادیات بھی کہیں گے جو مانتے ہیں کہ ہندوستان کی معیشت تیزی سے بڑھ رہی ہے. دنیا بھر میں اقتصادی عدم مساوات کو لے کر تشویش ہے. لوگوں کی کمائی نہیں بڑھ رہی ہے. کیا کروڑوں لوگ آج کے زمانے میں 18000 روپے سے کم میں رہ سکتے ہیں، رہتے ہی ہیں لیکن ہمیں یہ بھی دیکھنا ہوگا کہ وہ کن حالات میں رہ رہے ہیں. غنیمت ہے کہ یہ لوگ ٹوئٹر پر نہیں ہیں، ورنہ روز ٹویٹ کرتے کہ دستخط 15000 پر کراتے ہیں اور تنخواہ ملتی ہے 10000 سے بھی کم. یہ سب ٹویٹ ہونے لگے اور ٹرینڈ ہونے لگے تو ٹویٹر پر ڈیموکریسی کا مزہ خراب ہو سکتا ہے. ویسے آپ کو اپنے سیکورٹی گارڈز سے لے کر تمام مزدوروں سے پوچھنا چاہئے کہ وہ آٹھ نو ہزار کی تنخواہ میں کس طرح خاندان چلاتے ہیں. ہم کچھ نہیں کر سکتے، لیکن پوچھ تو سکتے ہی ہیں.

دنیا بھر میں اقل مقداراجرت بڑھانے کی بات ہو رہی ہے. اس اضافہ سے صنعت اور روزگار پر کیا اثر پڑے گا؟ انفرادی ریسرچ کے الگ الگ دعوے ہیں. کوئی کہتا ہے کہ 10 فیصد کم ازکم اجرت بڑھے تو 2 فیصد روزگار کم ہو جاتا ہے. کوئی کہتا ہے کہ اقل مقداراجرت بڑھنے سے پیداواری صلاحیت بڑھ جاتی ہے اور کمپنی کو منافع ہوتا ہے. کوئی کہتا ہے کہ اقل مقداراجرت میں اضافہ کریں گے تو کمپنیاں یا لوگ خودکار طریقے اپنائیں گے. جیسے وہ نہیں بڑھانے پر خودکار طریقے اپنانا بند کر دیتے ہیں. کچھ دلائل میں تک ہے، کچھ بے تکے ہیں.

پوری دنیا میں یہ چیلنج ہے کہ کس طرح اقل مقداراجرت بڑھائی جائے کیونکہ اب اس کے بغیر گزارہ نہیں چلنے والا ہے. آپ اتنی بڑی آبادی کو کم تنخواہ پر رہنے کے نام پر مرتے ہوئے نہیں دیکھ سکتے ہیں. نیوزی لینڈ اور فن لینڈ چھوٹی سطح پر ایک نیا ماڈل اپنانے جا رہے ہیں. سب کو بنیادی انکم دیا جائے گا. کئی سطحوں پر اسے لے کر بحث شروع ہو گئی ہے. اسی اپریل میں برطانیہ نے ایک قانون پاس کیا ہے جس کا نام ہے National Living Wage. اس کے تحت 25 سال یا اس سے زیادہ کے کام کرنے والے کو ہر گھنٹے اجرت ہوگی 7.20 پاؤنڈ. پہلے 6.70 پونڈ ہی ملتا تھا. نیشنل لونگ ویج لاگو کرنے کے لئے آجروں کے لئے سخت سزا کا انتظام کیا گیا ہے. اس کے لئے قومی سطح پر ایک ٹول نمبر دیا گیا جہاں مزدور شکایت کر سکتا ہے.

امریکہ میں بھی برنی سینڈرس نے فی گھنٹہ 7.25 ڈالر اقل مقداراجرت کو 15 ڈالر کرنے کی بات کہی تھی. بھارتی روپے سے موازنہ کریں اس وقت امریکہ میں اقل مقداراجرت ہر گھنٹے 485 روپے ہے. امریکہ میں اقل مقداراجرت کی شرح سے ایک کام کرنے والا آٹھ گھنٹے میں 3884 روپے کماتا ہے، جبکہ بھارت میں آٹھ گھنٹے میں 350 روپے. امریکی مزدور دس گنا ہے، لیکن ان کی جی ڈی پی بھی ہم سے کئی گنا بڑی ہے. کیا ہندوستان میں 15000 یا 18000 روپے فی ماہ کی اقل مقداراجرت کا مطالبہ جائز نہیں ہے؟ مرکزی اسٹیٹسٹک آفس نے ایک ڈیٹا جاری کیا ہے، اس کے مطابق اپریل سے جون کی سہ ماہی میں بھارت کی جی ڈی پی 7.1 فیصد درج ہوئی ہے. گزشتہ چھ سہ ماہی میں یہ سب سے کم ترقی ہے. امید کی جا رہی تھی کہ جی ڈی پی کی شرح 7.6 فیصد رہے گی، لیکن 7.1 فیصد ہی درج ہوئی.

کان کنی، کنسٹرکشن اور کاشت میں کمی آنے سے اپریل جون سہ ماہی کی جی ڈی پی کم ہوئی ہے. یہ چیلنجز ہیں، لیکن یہ چیلنجز اراکین اسمبلی کے لئے نہیں ہیں. بدھ کو ہی ہریانہ نے اپنے اراکین اسمبلی کی تنخواہ بڑھا لی ہے. تین سال میں ان کی تنخواہ ڈبل ہو گئی ہے. پندرہ کروڑ کے ووٹ سے رکن اسمبلی بننے والے اپنی تنخواہ بڑھا لیتے ہیں، لیکن 15 کروڑ والے اپنی اجرت نہیں بڑھا پا رہے ہیں.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Back to top button
Close