آج کا کالم

کیا AAP کے ساتھ امتیازی سلوک ہو رہا ہے؟

رويش کمار

ذرائع اور ابلاغ ، ان دونوں کا اتنا جلوہ رہا کہ دہلی میں بحث گلزار رہی کہ عام آدمی پارٹی کے 20 ممبران اسمبلی کی رکنیت جا چکی ہے. الیکشن کمیشن نے اپنی طرف سے رسمی اعلان تو نہیں کیا ہے مگر ایسی خفیہ معاملات باہر بھی آ جاتی ہیں اور بی جے پی، کانگریس اور عآپ آپس میں بھڑ بھی جاتے ہیں. ذرائع کے مطابق 20 اراکین اسمبلی کی رکنیت کا معاملہ ہے تو آخر ان کی بھی نوکری جانے والی ہے، لہذا نوکری سیریز میں آج ان کی بات بھی ہو جائے گی۔ آپ نوجوان دکھی نہ ہوں، خاص کر جھارکھنڈ اور راجستھان والے امیدوار میرے ذہن میں ہیں۔ ہم اگلے ہفتے یا پھر جب بھی وقت ملے گا مورچہ سنبھالیں گے. ایس ایس سی 2015 اور 16 کے قریب ہوئے امیدواروں کے لئے کتنا اچھا ہوتا اگر 26 جنوری سے پہلے ان کو جواننگ لیٹر مل جاتا. کتنی خوشیاں آجاتیں. بہرحال دہلی کے ممبران اسمبلی کی طرف مڑتے ہیں.

الیکشن کمیشن نے آفس آف پروفٹ کے معاملے میں عام آدمی پارٹی کے 20 ممبران اسمبلی کی رکنیت پر صدر کے پاس اپنی سفارش بھیج دی ہے. ہمارے ساتھی هرديیش جوشی کے مطابق کمیشن کی سفارش کے بعد صدر کے پاس دستخط کرنے کے علاوہ کوئی چارہ نہیں رہ جاتا ہے. اس کے بعد عدالت میں ہی چیلنج کیا جا سکتا ہے. اس معاملے کی ٹائم لائن دیکھ لیتے ہیں.

– 13 مارچ 2015 کو وزیر اعلی اروند کیجریوال نے 21 ممبران اسمبلی کو پارلیمانی سیکرٹری کے طور پر مقرر کیا.

– 19 جون 2015 کو وکیل پرشانت پٹیل نے صدر کے پاس عرضی دی کہ یہ آفس آف پروفٹ کا معاملہ ہے، یعنی ان ممبران اسمبلی کی رکنیت منسوخ ہونا چاہئے.

– 24 جون 2015 کو دہلی اسمبلی میں removal of disqualification amendment bill 2015 پاس کرکے صدر کے پاس بھیجا.

– اس میں بیک ڈیٹ سے پارلیمانی سیکرٹریوں کو آفس آف پروفٹ معاملے میں چھوٹ دینے کی بات کہی.

– 13 جون 2016 کو صدر نے بل پر دستخط کرنے سے انکار کر دیا.

– 25 جون 2016 کو مرکزی حکومت نے بل اسمبلی کو بھیج دیا.

– 14 سے 21 جولائی 2016 کے درمیان الیکشن کمیشن نے 21 ممبران اسمبلی کی پرسنل سماعت کی.

– 8 ستمبر 2016 کو دہلی ہائی کورٹ نے 21 ممبران اسمبلی کو پارلیمانی سیکرٹری بنانے کے حکم کو منسوخ کر دیا.

– 8 ستمبر 2016 کو الیکشن کمیشن نے 21 اراکین اسمبلی کو وجہ بتاو نوٹس جاری کیا.

– 24 جون 2017 کو الیکشن کمیشن نے عآپ ممبران اسمبلی کی اپیل رجیکٹ کر دی.

– 9 اکتوبر 2017 کو دوبارہ نوٹس جاری کرکے کمیشن نے اراکین اسمبلی سے صفائی مانگی.

– 19 جنوری 2018 کو کمیشن نے رکنیت منسوخ کرنے کی سفارش کر دی.

ہائی کورٹ نے ان اراکین اسمبلی کی تقرری منسوخ کر دی کہ نائب گورنر کے سائن نہیں تھے، لہذا غیر قانونی ہیں. اس پر بحث ہوئی کہ جب تقرری ہی غیر قانونی تھی تو پھر آفس آف پروفٹ کا معاملہ کس طرح بنتا ہے. دلیل دی گئی کہ ہائی کورٹ کے غیر قانونی ماننے کے پہلے تک تو آپ کے رکن اسمبلی اس عہدے پر تھے. اب دوسرا سوال یہ ہے کہ کیا عآپ کے ممبران اسمبلی نے فائدہ اٹھایا، یعنی سیلری یا بھتہ. دلیل دی جاتی ہے کہ انہیں کمرہ ملا تھا اور کمرے کی بحالی پر خرچ ہوا تھا. پر سپریم کورٹ کے کئی فیصلوں میں صاف صاف کہا گیا ہے کہ فائدہ کا عہدہ یعنی ممبر اسمبلی کو فائدہ مل رہا ہو. کیا فائدہ کا عہدہ صرف سیلری سے طے ہوگا، انہیں عہدے پر رکھنے یا ہٹانے کے پیمانے سے نہیں ہو گا. ہمیں نہیں معلوم کہ الیکشن کمیشن کے پاس کیا حقائق ہیں.

فائدہ کے عہدے کا معاملہ کئی بار سپریم کورٹ پہنچا ہے اور کورٹ نے فائدہ کے عہدے کیا ہیں، اس کی واضح تشریح کی ہے. 21 اگست 1954 کو لوک سبھا کے پہلے اسپیکر جی وی ماولنكر نے راجیہ سبھا کے چیئرمین سے مشورہ کرکے آفس آف پروفٹ کے لئے ایک کمیٹی بنائی. اس کمیٹی کے صدر تھے پنڈت ٹھاکر داس بھارگو، جن کی وجہ سے اسے بھارگو کمیٹی کہا جاتا ہے. وہ ہسار سے ممبر آف پارلیمنٹ تھے. کمیٹی کا مشورہ تھا کہ ایک بل لا کر صاف کیا جائے کہ کون سا عہدہ فائدہ کا ہے اور کون سا نہیں ہے. پي ڈي ٹي آچاریہ نے اپنی کتاب میں اس کے بارے میں لکھا ہے. سپریم کورٹ نے آفس آف پروفٹ کا تعین کرنے کے لئے کچھ ٹیسٹ طے کئے ہیں. پہلا ٹیسٹ یہ ہے کہ آفس ہے یا نہیں. دوسرا ٹیسٹ ہے کہ منافع ہوا یا نہیں. سب سے اہم ٹیسٹ یہ ہے کہ کیا حکومت نے تقرری کی ہے. کیا حکومت ممبر اسمبلی کو تنخواہ دیتی ہے، بھتے کی ادائیگی کرتی ہے.

فائدہ کے عہدے کے پیچھے ماڈل تصور یہ تھا کہ ممبر اسمبلی دوسرے کام نہ کریں کیونکہ اس کا کام ایوان میں ہونا اور عوام کی آواز اٹھانا ہے. وہ حکومت کے کنٹرول میں نہیں ہونا چاہئے. ورنہ وہ عوام کی آواز نہیں اٹھا پائے گا. پر کیا یہ عملی طور پر بھی لاگو ہوتا ہے. اول تو اسمبلیوں کے اجلاس بھی بہت کم دنوں کے ہوتے ہیں. کیا یہ اخلاقی جرم نہیں ہے. یہی نہیں، ایم ایل اے ایوان میں وهيپ کی بنیاد پر اپنی پارٹی کے لئے ووٹ کرتا ہے. وہ عوام کا نمائندہ کاغذ پر ہوتا ہے مگر ووٹ پارٹی کے وهيپ کے حساب سے ہوتا ہے. پھر آفس آف پروفٹ کا تصور کا کیا مطلب رہ جاتا ہے. آپ خود بھی سوچئے. ایک بار پانڈی چیري کے میئر کے عہدے پر ممبر اسمبلی کی تقرری ہو گئی. اسے الیکشن کمیشن نے آفس آف پروفٹ سمجھا کیونکہ کئی طرح کے بھتے ملتے تھے. مگر اسے آفس آف پروفٹ نہیں مانا گیا کیونکہ میئر کا عہدہ حکومت کے کنٹرول میں نہیں آتا تھا. مجموعی طور پر آفس آف پروفٹ کی کوئی ایک درست تشریح نہیں ملتی ہے.

2006 میں شیلا دکشت نے کانگریس کے 19 ممبران اسمبلی کو کئی قسم کے عہدے دیے. پارلیمانی سیکرٹری سے لے کر ٹرانس جمنا ایریا ڈیولپمنٹ بورڈ کے چیئرمین، وائس چیئرمین کے طور پر. تقرری کے بعد الیکشن کمیشن نے 19 ممبران اسمبلی کو آفس آف پروفٹ کا نوٹس بھیج دیا. شیلا دکشت اپنی حکومت بچانے کے لئے ایک بل لے آئیں. 14 دفاتر کو آفس آف پروفٹ کے دائرے سے باہر کر دیا.

شیلا دکشت نے کہا تھا کہ میری حکومت کو بچانا میرا حق ہے اور آئینی طور پر ایسا کر رہے ہیں. شیلا دکشت نے صدر کو بل دوبارہ بھیجا اور دستخط ہو گیا. اروند کیجریوال کے ساتھ ایسا نہیں ہوا. ان پر الزام لگ رہا ہے کہ ریٹروسپیكٹو سے کوئی قانون نہیں لاگو ہوتا. ماہر قانون  پي ڈي ٹي آچاریہ کہتے ہیں کہ کئی ریاستوں نے پہلے تقرری کی اور پھر بعد میں قانون بنا کر اس عہدے کو فائدہ کے عہدے کے دائرے سے باہر کیا اور عدالت نے بھی مانا. جیسے راجستھان کے کانگریس رکن اسمبلی كانتا كتھوريا کا معاملہ ہے. 1969 کا ہے. اس کیس میں ہوا یہ کہ كانتا كتھريا کی فائدہ کے عہدے پر تقرری ہوئی. ہائی کورٹ نے آفس آف پروفٹ کی وجہ سے ان کی رکنیت منسوخ کر دی. سپریم کورٹ میں اپیل دائر ہوئی تب اسمبلی نے قانون پاس کر کے ان کے عہدے کو فائدہ کے دائرے سے ہی باہر کر دیا. سپریم کورٹ نے اس بنیاد پر رکنیت منسوخ نہیں کی. کورٹ نے کہا کہ آرٹیکل 191 میں ایسا کہیں نہیں لکھا ہے جس سے پتہ چلتا ہے کہ یہ اعلان ریٹروسپیكٹو افیکٹ سے نہیں ہو سکتا۔ یعنی آپ تقرری کے بعد قانون نہیں بنا سکتے، ایسا کہیں نہیں ہے.

اسی طرح کا بل جھارکھنڈ اور چھتیس گڑھ میں بھی پاس ہوا. پھر کیجریوال حکومت کا بنایا قانون کیوں نہیں درست ہے. کیا آفس آف پروفٹ کرپشن ہے، اگر آئینی اخلاقیات کا معاملہ ہے تو پھر ہر ریاست میں ایک ہی پیمانہ ہونا چاہئے. اگر یہ آئینی اخلاقیات کا معاملہ ہے تو ہر جگہ ایک ہو گا یا الگ الگ ریاستوں کی آئینی اخلاقیات الگ الگ ہوں گے. اس معاملے میں بہت کنفیوژن لگتا ہے. ہریانہ میں بھی 4 ممبران اسمبلی کو پارلیمانی سیکرٹری بنایا گیا. 18 جولائی 2017 کو پنجاب ہریانہ ہائی کورٹ نے تقرری منسوخ کر دی. 50 ہزار سیلری ملتی تھی اور 1 لاکھ سے زیادہ الاؤنس ملتا تھا. لیکن کیا ان کی رکنیت گئی، نہیں گئی مگر تقرری منسوخ ہو گئی.

14 نومبر 2017 کو ٹائمز آف انڈیا نے اس خبر شائع کیا ہے کہ راجستھان ہائی کورٹ نے وہاں کے چیف سکریٹری، پرنسپل سکریٹری اور کابینہ سیکرٹری کو پارلیمانی سیکرٹری کے معاملے میں نوٹس جاری کیا ہے. راجستھان میں دس پارلیمانی سیکرٹری بنائے گئے ہیں جنہیں وزیر مملکت کا درجہ دیا گیا ہے. کیا یہ کوئی کرپشن ہے، کیا ان کی رکنیت جارہی ہے، الیکشن کمیشن کچھ کر رہا ہے، میرے پاس کوئی پختہ معلومات نہیں ہے. ایک کیس اور ہے. ممتا بنرجی نے دوبارہ اقتدار میں آنے سے پہلے 24 ممبران اسمبلی کو پارلیمانی سیکرٹری بنا دیا تھا. قانون بھی لے کر آئیں مگر 2013 میں ایک مفاد عامہ کی عرضی دائر ہو گئی. کولکتہ ہائی کورٹ نے ممتا بنرجی کے برقرار قانون کو منسوخ کر دیا. 24 ممبران اسمبلی کی تقرری بھی منسوخ ہو گئی. مارچ 2015 کو دہلی کے 21 رکن اسمبلی پارلیمانی سیکرٹری بنتے ہیں. اس کے دو ماہ بعد مئی 2015 میں چھتیس گڑھ میں 11 ممبران اسمبلی کو رمن سنگھ کی حکومت پارلیمانی سیکرٹری بناتی ہے. چھتیس گڑھ کا فیصلہ آج تک نہیں آیا، دہلی کا آ گیا. 1 اگست 2017 کو نیو انڈین ایکسپریس نے چھاپا ہے کہ چھتیس گڑھ ہائی کورٹ نے فیصلہ دیا ہے کہ تمام پارلیمانی سیکرٹریوں کے حقوق منسوخ کر دیے جائیں. ہائی کورٹ نے کہا کہ اگر ان کی تقرری گورنر سے نہیں ہوئی ہے تو ان کی تقرری درست نہیں مانی جائے گی. اسی طرح کا فیصلہ تو دہلی کے ممبران اسمبلی کے بارے میں عدالت نے دیا تھا. 27 جون 2017 کی ایک خبر ملی. ٹیلگراف اور ٹائمز آف انڈیا سے. اس کے مطابق الیکشن کمیشن نے مدھیہ پردیش حکومت سے جواب مانگا ہے کہ کیا 109 رکن اسمبلی اور 9 وزیر آفس آف پروفٹ کے دائرے میں آتے ہیں.

عام آدمی پارٹی کی شکایت پر الیکشن کمیشن نے مدھیہ پردیش سے پوچھا تھا. عام آدمی پارٹی کی شکایت تھی کہ 116 ممبران اسمبلی جن بھاگيداري کمیٹی کے رکن تھے جو منافع کا عہدہ ہے اور دو وزراء کو اسکاؤٹ اور گائیڈ کا کمشنر مقرر کیا گیا تھا. کیا بجلی وزیر پارس جین اور اسکولی وزیر تعلیم  دیپک جوشی نے فائدہ کے عہدے کی خلاف ورزی کی ہے.

الیکشن کمیشن نے مدھیہ پردیش، راجستھان اور چھتیس گڑھ میں منافع کے عہدے کے معاملے میں کیا آخری فیصلہ لیا ہے، کب لے گا، ہمیں نہیں پتہ. رکنیت منسوخ ہونے کی خبر سننے کے بعد عآپ کے کچھ رکن اسمبلی دہلی ہائی کورٹ گئے، ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن سے حکم کے بارے میں پوچھا تو الیکشن کمیشن کے وکیل نے کہا کہ ابھی دیر شام کو الیکشن کمیشن سے ان کا رابطہ نہیں ہو سکا ہے اور انہیں وقت دیا جائے. ہائی کورٹ نے اراکین اسمبلی کے رویے پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ ممبر اسمبلی کورٹ میں معاملہ زیر التوا ہونے کی آڑ لے رہے تھے. اس کے بعد کورٹ نے کوئی عبوری حکم دینے سے انکار کر دیا اور اب کیس کی سماعت پیر کو ہوگی.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close