آج کا کالم

گاندھی کا قتل – راہول بیان واپس نہیں لیں گے

رویش کمار

اکثر کہا جاتا رہا ہے کہ کانگریس کے اندر بھی ہندووادی عناصر ہیں. آرایس ایس سے ہمدردی اور اتفاق رکھنے والے لوگ ہیں، بہت سے معاملات پر وہ بھی نرم ہندوتو کی سیاست کرتی ہے. 90 کی دہائی کے بعد اس فرق پر بحثیں پھیکی پڑنے لگیں کیونکہ اقتصادی پالیسیوں اور منصوبوں کو لے کر کانگریس، بی جے پی یا کسی بھی پارٹی میں فرق مٹنے لگا. نظریاتی تقسیم کے لئے کانگریس اور بی جے پی کے درمیان ایک ہی لائن ہے. آرایس ایس- سنگھ بھی بی جے پی کے ساتھ رہتے ہوئے اس فرق کو ابھارنے میں کافی محنت کرتا ہے. آپ نے انتخابات کے وقت خبریں بھی دیکھی ہوں گی کہ بی جے پی کو جتانے کے لئے سنگھ کے سینکڑوں لوگ بہار آسام گئے ہوئے ہیں.

یہاں تک کہ گوا کے صوبائی سربراہ سبھاش ویلنگكر کو اس لئے عہدے سے معزول کردیا گیا کہ وہ سیاسی پارٹی بنانا چاہتے تھے. سیاست کر رہے تھے. یہ سنگھ کا سرکاری بیان ہے. گوا میں ویلنگكر کی حیثیت سنگھ اور بی جے پی میں استاد کی رہی ہے. ان کے عہدے سے ہٹائے جانے کی مخالفت میں 400 سویم سیوکوں نے استعفی کا اعلان کر دیا ہے. میڈیا میں ایسی باتیں شائع ہو رہی ہیں کہ ویلنگكر تحفظ برائے ہندوستانی زبان فورم کے سربراہ تھے جو بی جے پی حکومت پر تنقید کر رہے تھے کہ انگریزی کو فروغ مل رہا ہے، كوكنی اور مراٹھی کو نہیں. مختلف دعوے ہیں، آنے والے دنوں میں ویلنگكر کے بولنے سے ان کا موقف بھی سامنے آئے گا. وہی بتائیں گے کہ کیا انہیں بی جے پی صدر امت شاہ کو سیاہ پرچم دکھانے کی وجہ سے عہدے سے ہٹایا گیا ہے. یہ مثال اس لیے نہیں دی کہ اس پر بحث کروں گا، بلکہ اس لئے کہ کیا سنگھ بی جے پی سے اپنی شناخت کے فرق کو لے کر پہلے کی طرح محنت نہیں کرنا چاہتا.

اب آتے ہیں راہل گاندھی پر. راہل گاندھی گزشتہ کچھ مہینوں سے مسلسل آرایس ایس پر بیانی حملہ کر رہے ہیں. سوال ہے کہ کیا راہل گاندھی زمین پر اتر کر آر ایس ایس سے لڑنے کی تیاری کر رہے ہیں؟ کیا راہل گاندھی اس جنگ میں کانگریس کو بھی جھونک دیں گے؟ کیا کانگریس کا عام کارکن اور رہنما بھی سنگھ سے لڑنے کے لئے تیار ہے؟ تیار کا مطلب یہ ہے کہ کیا اس کی نظریاتی تیاری ہے؟ سادہ الفاظ میں کیا اس کی پڑھائی ہوئی ہے؟ کیا راہل گاندھی آر ایس ایس سے لڑتے ہوئے اپنی پارٹی کے اندر ہندوتو کے تئیں ہمدردی رکھنے والوں سے بھی لڑیں گے؟ کیا راہل کی قیادت میں موجودہ کانگریس آر ایس ایس سے سڑک پر لڑنے کی تیاری میں ہے یا دہلی میں بیانات کے ذریعہ ہی لڑنے کی خانہ پری ہوتی رہے گی؟ کانگریس کی حکومتوں کے دوران تو ایسی گھمسان لڑائی نہیں نظر آئی لیکن کیا راہل واقعی سنجیدہ ہیں؟ 2014 میں مہاراشٹر کے بھیونڈی میں راہل گاندھی نے بیان دیا تھا کہ آر ایس ایس کے لوگوں نے گاندھی کا قتل کیا. ہتک عزت کا کیس ہو گیا. سپریم کورٹ میں گزشتہ سماعت میں ایسا سننے کو ملا کہ راہل گاندھی اپنے بیان سے پلٹ گئے ہیں. جمعرات کو خبر آئی کہ راہل اپنے بیان سے پیچھے نہیں ہٹیں گے اور مقدمے کی سماعت کا سامنا کریں گے.

اس کے لئے راہل گاندھی کو بھیونڈی کی عدالت میں خود پیش ہونا ہوگا. پنجاب ہریانہ کورٹ نے باپو کے قتل کے معاملے میں 21 جون 1949 کو فیصلہ سناتے ہوئے ناتھورام گوڈسے کو پھانسی کی سزا دی تھی. 1949 کے بعد دوبارہ مقدمے کی فائل کورٹ اور پبلک میں کھلے گی. گاندھی کا پھر سے قتل ہوگا اور مقدمہ چلے گا. بنگال انتخابات کے دوران ٹی وی چینلوں پر ہر دوسرے تیسرے دن نیتا جی سبھاش چندر بوس کی فائل کھل جاتی تھی. انتخابات گزر جانے کے بعد فائلیں بند ہو گئیں ہیں. اگر انتخابی سیاست کے لئے یہ سب ہو رہا ہے تو افسوسناک ہے. اگر واقعی کانگریس آر ایس ایس کو لے کر اپنی کوئی ٹھوس فکر بنانا چاہتی ہے تو دیکھتے ہیں اور راہل کے وکیل کپل سبل کیا کہتے ہیں وہ بھی پڑھ لیجئے. سبل کہتے ہیں، ‘آج جب معاملہ عدالت کے سامنے آیا تو آر ایس ایس نے عدالت کے سامنے ہمارے لئے ایک بیان کہنے کو کہا، کہ ہم مانتے ہیں کہ آر ایس ایس نے گاندھی جی کا قتل نہیں کیا اور آر ایس ایس مجرم نہیں ہے. تو ہم نے کہا کہ جو ہم نے پہلے کہا ہے ہم اس پر قائم ہیں. ہم کوئی اور بیان نہیں دینے والے. اگر آپ سمجھتے ہیں کہ معاملہ واضح ہونا چاہئے تو ہم عدالتی جنگ کے لئے تیار ہیں. یہ جنگ عدالت کی نہیں ہے. وہاں تو ہم لڑیں گے ہی لڑیں گے. اس لڑائی میں یہ فیصلہ ہوگا کہ اصلی ہندو کون ہے، یہ فیصلہ ہوگا. ‘

سبل صاحب کا یہ بیان مقدمے کی بریف سے بہت آگے کا ہے. اصلی ہندو کون ہے سے لے کر شناخت کی سیاست کے سوال تک لے جاتے ہیں. پھر ہر طرح کی لڑائیوں کو خلط ملط کرنے لگتے ہیں. بی جے پی کے تمام رہنماؤں نے راہل گاندھی کے موقف پر حملہ کیا ہے. سنبت پاترا، راجیو پرتاپ روڈی، بیم رجيجو سے لے کر کئی رہنماؤں نے تنقید کا نشانہ بنایا ہے.

30 جنوری 1948 کے روز مہاتما گاندھی کا قتل ہوا تھا. اگر آپ کو لگتا ہے کہ اس موضوع میں جاننا چاہئے تو ٹی وی چھوڑ کر لائبریری میں وقت صرف کیجئے. ورنہ ایک فریق یہ کہے گا کہ سردار پٹیل نے سنگھ کی تعریف کی تھی، ایک فریق کہے گا کہ سردار پٹیل نے آر ایس ایس پر پابندی عائد کی تھی. کوئی کہے گا نہرو اور گاندھی نے آرایس ایس کی تعریف کی تھی، کوئی کہے گا آر ایس ایس نے گاندھی کو ہی مار دیا. جیسے جمعرات کی شام کانگریس پارٹی نے ایک ٹویٹ کیا ہے. انڈین ایکسپریس اخبار کا تراشہ انگریزی میں ہے، میں ہندی میں پڑھ دے رہا ہوں. ‘آر ایس ایس رہنما نے گوڈسے کو ریوالور دیا. گوپال گوڈسے کا بیان ہائی لائٹ کیا گیا ہے کہ سبھی بھائی آر ایس ایس میں تھے. ناتھورام، دتاتریہ، میں اور گووند. آپ کہہ سکتے ہیں کہ ہم اپنے گھر کے بجائے سنگھ میں ہی پلے بڑھے. سنگھ ہمارے لئے خاندان جیسا تھا.’

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close