آج کا کالم

گاندھی کے ملک میں گاندھی وادی کی لڑائی

راکیش کمار مالوی

  ان کے چہروں کو غور سے دیکھئے. اس بلاگ کی تصویر کے ہر چہرے کو غور سے دیکھئے. ان کا چہرہ گزشتہ تیس پینتیس سالوں سے ایک جد وجہد کا آئینہ دار ہے. ان جیسے پینتیس چالیس ہزار عام چہروں کی سالوں سے ایک چھوٹی سی لڑائی ہے. لڑائی ہے اپنی زمین سے نہ اجاڑے جانے کی. لڑائی ہے زمین کے بدلے واجب زمین پانے کی. لڑائی ہے جنگل- زمین بچانے کی.

اتنی طویل جدوجہد، بار بار کی مایوسی اور وقت کے بے رحم تھپیڑے کھا کر بھی نہ انہوں نے بندوق اٹھائی، نہ کبھی کوئی قانون شکنی کی. گاندھی کے ملک میں، گاندھی کے بعد، گاندھی کے ستیہ گرہ کو سب سے بڑی طاقت بناکر شاید سب سے لمبی لڑائی. ستیہ گرہ. ایک بار پھر.

سوال یہ ہے کہ چار دہائیوں کی اس طویل جدوجہد کا آج بھی کیا نتیجہ ہے. صفر. دعوی ہے کہ اب بھی چالیس ہزار خاندانوں کی مناسب بازآبادکاری نہیں ہوئی ہے. ان کی زندگی مشکلات میں ہے. باوجود اس کے کہ ان کی بات سننے کی فرصت حکومت کے پاس نہیں ہے، حیرت ہوتی ہے، اتنے سالوں تک بغیر کوئی غصہ کئے لوگ کیسے لڑتے رہتے ہیں. حیرت اس بات کی بھی ہے کہ اتنی لمبی لڑائی میں لوگ مایوس کیوں نہیں ہوتے؟ ان کے چہرے اب بھی اعتماد سے کیسے لبریز ہیں؟

نرمدا پانی، جنگل، زمین حق ستیہ گرہ 30 جولائی یعنی آج سے مدھیہ پردیش کے ایک چھوٹے سے قصبے بڑوانی کی گاندھی سمادھی سے شروع ہو رہا ہے. ستیہ گرہ میں نرمدا گھاٹی کے لوگ، ان کے ملک بھر کے حامی اور عام شہری شامل ہوکر سردار سروور کے نام پر ڈوبے متاثرین کے ساتھ کئے جا رہے ناانصافی کی مخالفت کر رہے ہیں.

narmada

2014 میں سردار سروور باندھ کا گیٹ لگا کر اس کی آخری پانی کی سطح 138.68 میٹر تک بھر دینے کا فیصلہ کیا گیا تھا. سپریم کورٹ نے اس سے پہلے حکم دیا تھا کہ بغیر بازآبادکاری کے ہی باندھ کو پورا کیا جا سکتا ہے. آخری سطح تک بھر جانے سے گجرات، مہاراشٹر اور مدھیہ پردیش کے 244 دیہات کے 40 ہزار سے زیادہ خاندان متاثر ہونے والے ہیں. ان میں سے زیادہ تر قبائلی ہیں. ان کی کھیتی اور گھر ڈوب جائیں گے. ڈوبنے میں مدھیہ پردیش کا دھرمپوری قصبہ بھی شامل ہے.

ان کی لڑائی چھوٹی سی ہے. بہتر بازآبادکاری کی لڑائی. لیکن نقل مکانی کے جتنے بھی تجربے رہے ہیں، وہ انتہائی تلخ ہیں. انتظامیہ جس چستی سے لوگوں کی ہٹاتی ہے، اسی ترجیحی بنیاد پر انھیں بساتی کیوں نہیں. یاد آتا ہے اندرا ساگر باندھ سے متاثر ہرسود شہر. مریخ کی جغرافیائی صورتحال میں بازآبادکاری کی گئی، یہ بیس ہزار کی آبادی والا قصبہ اب بھی پوری طرح نہیں بس سکا ہے. ایک پوری کی پوری خوش حال، ہنستی- کھیلتی آبادی پھر ویسی نہیں بس سکی تو گاؤں اور مزدوروں- ٹولوں کی بات تو چھوڑیئے.

کیا ایسا نہیں کیا جا سکتا کہ بڑے باندھ اور ترقیاتی منصوبے بنانے والی حکومت اس آبادی کو پہلے سے زیادہ اچھی طرح بساكر مخالفت کر رہے ان لوگوں کو خاموش کرا دے. کیا ایسا نہیں ہو سکتا کہ زمین سے زمین مانگنے والے ان ترقی مخالفین کو حکومت زمین دے کر منہ چپ کرا دے. صنعت کاروں کو سستے داموں پر ہزاروں ایکڑ زمین سرمایہ کاری کے نام پر بانٹ دینے والی انتظامیہ آخر ان لوگوں کے لئے دو انچ اچھی زمین بھی کیوں نہیں نکال پاتی؟ یہ تو صرف ان چالیس ہزار لوگوں کی زندگی بھر کا سوال ہے، جنہوں نے اپنے جائز مطالبات کے لئے کبھی متشدد بننے کا راستہ نہیں چنا (جو ہمیں ملک کے کئی دوسرے حصوں میں ترقی کے نام پر ظاہر ہوتا ہے). یہ لوگ آج بھی گاندھی کے ملک میں گاندھی وادی طور طریقوں سے سال در سال ستیہ گرہ کرتے ہیں. پر کیا آج عدم تشدد تحریکوں کا کوئی اثر انتظامیہ پر ہوتا ہے یا نہیں، سوچنا ہوگا. آخر اروم شرمیلا کو سولہ سالوں کے بعد اپنا انشن توڑنا پڑتا ہے. پر اس سے کتنے سوال حل ہو پائے اور اتنے سالوں کی ایک مخالفت کسی انجام تک پہنچی بھی یا نہیں؟ کیا ہم ایک جمہوری نظام میں اختلافات کی نتیجہ خیز روایت کو بچا کر رکھنا چاہتے ہیں یا نہیں.

نرمدا بچاؤ تحریک کا براہ راست الزام ہے کہ سردار سروور باندھ سے آبپاشی اور پینے کا پانی فراہم کرنے کے جو دعوے کئے گئے ہیں، وہ کھوکھلے اس لیے ہیں کیونکہ اب تک نہروں کام 30 سالوں میں محض 30.35 فیصد ہو پایا ہے. ان کا یہ بھی الزام ہے کہ دہلی ممبئی انڈسٹریل کوریڈور کے تحت آنے والی صنعتوں کو پانی دینے کے لئے گجرات حکومت سردار سروور کے کل كمانڈ علاقے میں سے 4 لاکھ ہیکٹر کم کرنے کا فیصلہ لے چکی ہے. گجرات حکومت کے اس فیصلے کے اولین فائدہ اٹھانے والوں میں کئی کارپوریٹ گھرانے شامل ہیں. گجرات حکومت کی طرف سے سردار سروور کی نہر سے ہر روز 30 لاکھ لیٹر کوکا کولا کو اور 60 لاکھ لیٹرہر روز آنند میں واقع کار کمپنی کو دیئے جانے کا معاہدہ کیا گیا ہے، اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ باندھ کا اصلی فائدہ اٹھانے والے لوگ کون ہیں.

گجرات کے آر ٹی آئی کارکن بھارت سنگھ جھالا کہتے ہیں کہ گجرات کے دیہات کو آبپاشی ملے گی، لیکن ہم نے دیکھا ہے نرمدا کا پانی کسانوں سے پہلے صنعت کاروں کو دیا جا رہا ہے. ممکن ہے پانی نچلی سطح تک بھی پہنچ جائے، لیکن یہ کسانوں اور قبائلیوں کے لئے نہیں بلکہ صنعتوں کے لئے کرنا پڑے گا. گجرات میں 2 ہزار سے زائد گاؤں سال در سال مسلسل مکمل یا جزوی طور پر خشکی کے بحران میں مبتلا ہیں لیکن ان تک نرمدا کا پانی نہیں پہنچایا گیا ہے.

تو سوال صرف منشا کا ہے. اتنے سخت اور مسلسل  مایوس کن رویہ کی وجہ سے لوگوں کو اب انتظامیہ پر اعتماد نہیں رہا. انہیں لگتا ہے کہ انتظامیہ کے ایجنڈے میں وہ نہیں کوئی اور ہیں. سب سے بڑی دشواری اعتماد کا نہ بن پانا ہے. اعتماد بن گیا ہوتا تو شاید اتنی طویل جدوجہد بھی نہ ہوتی. نہ سردار سروور منصوبے کی لاگت 4 ہزار 200 کروڑ سے بڑھ کر 90 ہزار کروڑ روپے ہو چکی ہوتی. لیکن 21 گنا اضافہ کا الزام ترقی مخالفین پر جڑ دیا جاتا ہے.

راج گھاٹ میں شروع ہوئے ستیہ گرہ کے مطالبات پر ایک نظر غور کر لیجئے، بغیر بازآبادکاری کے سردار سروور کا گیٹ بند نہیں کرنا. کھیتی کی زمین دے کر بازآبادکاری کرنا. ضروری سہولیات کے ساتھ بازآبادکاری مقامات کی تعمیر کرنا. بازآبادکاری مقامات پر ذریعہ معاش کے ذرائع دستیاب کروانا. 1000-1500 کروڑ روپے کی بازآبادکاری گھوٹالے کی جانچ والی جھا کمیشن کی رپورٹ عام کرنا اور اس کی سفارشات پر کارروائی کرنا.

ان میں سے ایک بھی مطالبہ آپ بتا دیجئے جو آپ کو ناجائز لگتا ہے. یہ صرف لوگوں کے سوالات ہیں، فطرت اور ماحول کے سوالات تو الگ ہی ہیں. قدرت اپنا حساب اپنے طریقے سے کر بھی لیتی ہے، کر ہی رہی ہے، آپ غرور مت پالئے. فی الحال تو لوگ جو سوال کر رہے ہیں ان کا جواب دیجئے …!

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

راکیش کمار مالوی

مضمون نگار این ایف آئی کے فیلو اور معروف سماجی تجزیہ نگار ہیں۔

متعلقہ

Close