آج کا کالم

‘گدھے’ پر اکھلیش یادو کی بیان بازی: ایک تیر سے دو نشان

یوپی میں آج کل گدھے کو لے کر سیاست ہونے لگی اور اس میں زبانی جنگ تیز ہے. آغاز صوبے کے وزیر اعلی اکھلیش یادو نے کی اور پھر اس پر مسلسل بیان بازی چلی آ رہی ہے. ایک جانور کسی انتخابات میں اتنا اہم ہو جائے گا، کبھی کسی نے سوچا بھی نہیں ہوگا. اتر پردیش اسمبلی انتخابات اپنے عروج پر ہے. سات مراحل میں انتخابات ہو رہے ہیں . چار مراحل پر ووٹنگ ہو چکا ہے. پردیش کے وزیر اعلی اور سماج وادی پارٹی کے صدر اکھلیش یادو نے رائے بریلی کے اوچاهار میں ایک انتخابی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے امیتابھ بچن سے یہ اپیل کی کہ وہ گجرات کے گدھے کا پرچار نہ کریں .

اکھلیش کا یہ بیان انتخابی مہم کی سطح کو گرانے والا تو ہے ہی، کچھ سوالات بھی کھڑے کر رہا ہے. کہا جا رہا ہے اور ظاہر بھی دے رہا ہے کہ اکھلیش یادو نے گجرات سیاحت کے لئے امیتابھ بچن کی تشہیر کی ویڈیو کا ذکر کرتے ہوئے نریندر مودی پر نشانہ شفل تھا. یہ خیال کیا جا رہا ہے کہ نریندر مودی اور گجرات اور امیتابھ بچن میں اچھے تعلقات کی وجہ سے کہیں یہ نشانہ امیتابھ بچن پر تو نہیں ہے. کہیں اکھلیش یادو نے ایک تیر سے دو نشانہ تو نہیں سادھے …

ویسے امیتابھ بچن کی بیوی جیا بچن ریاست میں جاری انتخابی مہم مہم میں اپنا کردار ادا کر رہی ہیں . اکھلیش یادو کی بیوی ڈمپل یادو کے ساتھ جیا جلسے کر رہی ہیں ، پلیٹ فارم اشتراک کر رہی ہیں . ویسے پارٹی میں اختلاف کے بعد بھی جیا بچن نے ملائم سنگھ یادو کا خیمہ نہیں چھوڑا تھا. جبکہ امر سنگھ کو پارٹی سے نکالے جانے پر جیا پردا پارٹی چھوڑ کر ان کے ساتھ چلی گئی تھیں . پھر بعد میں ایک بار اور امر سنگھ کی پارٹی میں واپسی ہوئی اور اب پھر امر سنگھ سیاسی دنیا میں کہیں کے نہیں رہے.

یاد ہے کہ امیتابھ بچن پہلے گاندھی خاندان کے کافی قریب تھے اور بعد میں كنهي وجوہات گاندھی خاندان سے ان کی دوریاں بنی اور سیاست سے بھی وہ دور ہو گئے. لیکن امر سنگھ کی بدولت وہ سماجوادی پارٹی کے قریب آئے. ملائم سنگھ یادو اور بچن خاندان کئی مواقع پر ایک دوسرے کے ساتھ نظر آتے ہیں . ملائم سنگھ یادو اور امیتابھ بچن کے درمیان قریبی اتنی بڑھیں کی امیتابھ بچن، ابھیشیک بچن اور ایشوریہ رائے تک کو اتر پردیش کا سب سے زیادہ مائشٹھیت اعزاز ‘یش بھارتی’ دیا گیا. جیا بچن اب ایس پی کی جانب سے ہی راجیہ سبھا کی ممبر پارلیمنٹ ہیں .

یوپی کی سماج وادی پارٹی میں باپ بیٹے میں پارٹی میں بالادستی کی جنگ اکھلیش یادو جیت چکے ہیں اور اب اکھلیش یادو کا امیتابھ بچن کو یہ مشورہ دینا کہیں کوئی اشارہ تو نہیں ہے. کچھ سیاسی لوگوں کا خیال ہے کہ کہیں اکھلیش یادو اس بیان کے ذریعے امیتابھ بچن کو یہ اشارہ تو نہیں دے رہے ہیں کہ گجرات بہت ہو چکا. دو ناو میں اب ایک ساتھ سیر نہیں ہو سکتی ہے. ایک طرف کا راستہ آگے جائیں گے.

ویسے امیتابھ بچن گجرات سیاحت کے اشتہارات کے علاوہ اتر پردیش کی قانون نظام کو بہترین بتانے والا اشتہار بھی کر چکے ہیں . امیتابھ بچن گجرات حکومت کے براڈ ایمبیسیڈر ہیں . اور مرکز میں مودی حکومت کی طرف سے چلائے جا رہے صفائی مہم کے اشتہارات میں بھی نظر آ رہے ہیں .

ویسے 2014 میں انتخابات کے دوران ایک یو ٹیوب ویڈیوز عوامی ہوا تھا جس میں امیتابھ بچن کی آواز میں نریندر مودی کی تعریف کی تشہیر تھا. امیتابھ بچن نے اس پر سخت اعتراض ظاہر کی تھی. انہوں نے صاف کہا تھا کہ انہوں نے یہ اشتہار نہیں کیا. یہ اشتہار کچھ اور تھا اور ان کی آواز کا استعمال دوسرے اشتہار میں غلط طریقے سے کیا گیا. ویسے تو گجرات کے وزیر اعلی اور بی جے پی کے وزیر اعظم کے عہدے کے امیدوار کے طور پر نریندر مودی نے اپنے نامعلوم پرستار سے ایسا نہ کرنے اور معافی مانگنے کے لئے کہا تھا. اس اشتہار پر بھی کافی ہنگامہ ہوا تھا.

بتا دیں کہ 2015 میں جب اکھلیش یادو کی حکومت نے یہ اعلان کیا تھا کہ یش بھارتی اعزاز حاصل کرنے والوں کو سالانہ 50 ہزار پنشن دیا جائے گا، تو تنازعہ ہوا تھا. اس فہرست میں امیتابھ بچن کا بھی نام تا. اس وقت تنازعہ کو ٹھنڈا کرنے کے لئے امیتابھ نے پنشن لینے سے انکار کر دیا تھا. بتا دیں کہ صدی کے سپر اسٹار کی ڈگری سے نواذے جا چکے امیتابھ بچن نے گجرات کے گدا پویتراستان کے ایک اشتہار ہے. وہ اس میں محفوظ پناہ گاہ کے بارے میں بتاتے ہیں ، گدھوں کے بارے میں بتا رہے ہیں اور لوگوں سے وہاں جانے، گھومنے پھرنے کی اپیل کر رہے ہیں .

اتر پردیش کے وزیر اعلی اکھلیش یادو نے کہا تھا کہ ‘کیا آپ نے کبھی گدھے کے اشتہارات کے بارے میں سنا ہے؟ گجرات کے لوگ گدھے کی تشہیر کر رہے ہیں . لیکن وہ مجھ پر صرف قبرستان کے لئے کام کرنے کا الزام لگاتے ہیں . ‘ اکھلیش یادو اشتہارات کے ذریعے گجرات حکومت، وزیر اعظم نریندر مودی اور امیتابھ بچن طنز کرتے ہیں ‘گجرات کے لوگ تو گدھے کا بھی منادی کرتے ہیں . اسی اشتہار میں کہا گیا ہے کہ اگلی بار آپ کو کوئی گدا کہے تو آپ کو برا مت مانےگا. یہ شہر والا گدھا نہیں ہے جو کچھ سوچتا رہتا ہے. اس کے پاس اس کے لئے فرصت نہیں . اس تمام خوبیوں فروغ پزیر ہے. ‘ اکھلیش یادو آگے بولتے ہیں کہ اشتہار میں کہا گیا ہے کہ کسی کو گدا کہنا یا گدا ہونا کوئی بری بات نہیں ہے. یادو بتاتے ہیں کہ خود گجرات کے لوگ یہ کہہ رہے ہیں .

وزیر اعظم نریندر مودی نے اکھلیش یادو کے ‘گجرات کے گدھے’ والے بیان پر جوابی حملہ کیا اور کہا کہ، ‘اب گدی سے بھی ڈرنے لگے ہیں کیا؟’ مودی نے کہا کہ ‘بی جے پی پر حملہ کرو تو سمجھ سکتا ہوں لیکن اکھلیش جی، میں حیران ہوں کہ آپ نے بیچارے گدی کے اوپر حملہ کیا. کیا آپ کو گدی سے بھی ڈر لگنے لگا ہے؟ وزیر اعظم نے کہا کہ ‘میں فخر گدی سے پریرتا لیتا ہوں اور ملک کے لئے گدھے کی طرح کام کرتا ہوں . سوا سو کروڑ دیشواسی میرے مالک ہیں . گدا وفادار ہوتا ہے اسے جو کام دیا جاتا ہے وہ پورا کرتا ہے ‘.

انہوں نے کہا کہ ‘سماج وادی پارٹی کی نسل پرست ذہنیت اب جانوروں میں نظر آنے لگی ہے. گدا آپ کو اتنا برا لگنے لگا. آپ کی حکومت تو اتنی ماہر ہے کہ کسی وزیر اعظم خاں کی بھینس کھو جائے تو پوری حکومت تلاش کرنے میں لگ جاتی ہے. یہی تو آپ کی حکومت کی شناخت، لیکن اکھلیش جی، آپ کو معلوم نہیں ہے، گدا بھی ہمیں ترغیب دیتا ہے ‘

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close