آج کا کالمنقطہ نظر

گؤ رَکشا تو ہو جائے گی لیکن ہماری رَکشا کون کرے گا؟

انیتا شرما

راجستھان میں جان گنوانے والے پہلو خان، دادری میں پیٹ پیٹ کر موت کے گھاٹ اتارے گئے اخلاق اور بھی کئی نام … مجھے ان تمام خاندانوں سے ہمدردی ہے، جو اس طرح کے واقعات کا شکار بنے. اور ساتھ ہی مجھے ان لوگوں سے بھی ہمدردی ہے جو ایسے واقعات کو انجام دیتے ہیں. وہ لوگ شاید انسانیت کے نہیں کسی اور اسی طاقت کے جنون میں کھو کر اس طرح کی حرکت کرتے ہیں.

انسان صدیوں سے مذہب کے نام پر مر مٹنے کو تیار رہا ہے. کبھی کبھی سوچتی ہوں کہ مذہب آخر ہے کیا. مذہب ایک وقت میں ترقی پذیر تہذیبوں کے ذریعے بنائے گئے کچھ شرائط ہی تو ہوں گے، تو انہیں ایک سماجی ڈھانچے میں، یکساں اور محفوظ طریقے سے رہنے کا سہارا دیتے ہوں گے. ہر تہذیب، ہر بستی نے اپنے لئے کچھ شرائط برقرار ہوں گے. پر وقت کے ساتھ ساتھ وہ مذہب میں تبدیل ہوئے ہوں گے. ہو سکتا ہے کہ میری سوچ غلط ہو، لیکن ذرا سوچئے معاشرے کے ان قوانین کا کیا فائدہ جو سماج کی بنیاد انسان کو، اس کی انسانیت کو ہی تباہ کر دیں. کچھ دقیانوسی تصورات، رواج، مذاہب کے پیچھے ہم یہ کیوں بھولیں کہ مذہب انسان کے لئے ہے، انسان مذہب کے لئے نہیں.

آج جب گائے لکھ کر گوگل کیا تو اس نے جواب دیا – ‘ایک مخلوق’ ہے. لیکن جب میں نے انسان لکھ کر سرچ کیا تو گوگل نے خود ہی مجھے کئی اختیارات دے دیے، جن میں سے ایک تھا انسانیت. جسے بہت سے لوگ بھول گئے ہیں.

اس میں کوئی شک نہیں  گائے مختلف طریقوں میں فائدہ مند مخلوق ہے، لیکن یہ بات بھی ہم انسان مان چکے ہیں کہ زندگی کی سائیکل میں سب سے اہم انسانی ہی ہے. زمین پر ہر مخلوق کی زندگی کی اپنی اہمیت ہے. ہم صرف آپ کی سہولت اور آستھا کے لحاظ سے بھلا کسی مخلوق کی زندگی کو اہم اور کسی کی زندگی کو سستا کس طرح بنا سکتے ہیں. اس لحاظ سے تو صرف گوماس ہی کیوں، ہر گوشت خوری مکمل طور بند ہو جانا چاہئے.

بہت سے لوگ ہوں گے، جو میری اس بات کی حمایت کریں گے. لیکن میں ایسے خیالات والے لوگوں کے ان ‘اندھ-حامیوں ‘ سے ایک سوال پوچھنا چاہتی ہوں – ‘اگر زمین پر تمام شاکاہاری ہو گئے، تو کتنے لوگوں کی بھوک مٹ پائے گی.’ کیونکہ زمین اپنی آبادی کا پیٹ بھرنے کے لئے اس تناسب میں اناج نہیں پائے گی. ایسے میں بھوکا وہ غریب ہی مرے گا، جو گائے پالكر پیٹ برتا ہے. مہنگی ریستوران میں گوماس کا ذائقہ لینے والا امیر تو تب بھی اپنے لئے اناج کا جگاڑ کر ہی لے گا.

میں نے نہ صرف ان نام نہاد گوركشكو سے بلکہ ان سب سے جو انہیں کسی نہ کسی طور پر حمایت کرتے ہیں، درخواست کرتی ہوں کہ ایک بار سوچے- کیا ہوگا اگر گائے کو بچاتے بچاتے ہم ہی تباہ ہو جائیں گے. شاید گائے تو بچ جائے گی، پر ہم انسان اپنی انسانیت کو تباہ کر بیٹھیں.

مترجم: محمد اسعد فلاحی

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

متعلقہ

Close