ہم جنس پرستی پر فیصلے سے پارلیمنٹ کی بالادستی داؤ پر

وراگ گپتا

ہم جنس پرستی کو قانونی شکل دیے دیئے جانے کے لئے دائر دو سال پرانی  درخواست پر سپریم کورٹ کی بڑی بنچ  کی جانب سے سماعت ہوگی. سپریم کورٹ کی نو ججوں کی بنچ نے پرائیویسی پر فیصلے میں جسٹس چندرچوڑ، جسٹس نریمن اور جسٹس کول نے آئین کے آرٹیکل 21 میں دیئے گئے زندگی کی بنیادی حقوق کے تحت ہم جنس پرستی سمیت کئی اختیارات پر بحث کی تھی. پرائیویسی کے قانونی حق کے بعد سپریم کورٹ کو اس پر فیصلہ دینا اور پارلیمنٹ کو ڈیٹا کی حفاظت پر قانون بنانا باقی ہے اور اب ہم جنس پرستی کا معاملہ بھی نئے طریقے سے سماعت کے لئے آ گیا ہے.

دہلی ہائی کورٹ نے سال 2009 میں ناز فاؤنڈیشن اور دوسرے لوگوں کی درخواست پر ہم جنس پرستی کے بارے میں آي پي سي کی دفعہ 377 کو آئین کے آرٹیکل 14 اور 21 کے خلاف بتایا تھا. سپریم کورٹ نے 2013 میں دہلی ہائی کورٹ کے فیصلے کو منسوخ کرتے ہوئے کہا کہ آي پي سي کی دفعہ 377 غیر آئینی نہیں ہے. سپریم کورٹ کے جج سنگھوی نے اپنے تفصیلی فیصلے میں یہ بھی کہا تھا کہ قانون کو تبدیل کرنا پارلیمنٹ کی ذمہ داری ہے. سپریم کورٹ میں 2013 کے فیصلے کے بعد ریویو پٹیشن 2014 میں منسوخ ہو گئی اور كيوریٹو درخواست کو فروری 2016 میں آئین بنچ کے سامنے سماعت کے لئے بھیج دیا گیا.

کمیشن نے اپنی 172 ویں رپورٹ میں ہم جنس پرستی کو جرم سے آزاد کرنے کی سفارش کی تھی. اس رپورٹ کے مطابق، قانون میں تبدیلی کرنے پر گزشتہ 18 برسوں میں تمام حکومتیں ناکام رہیں. بہت سی دوسرے رپورٹوں میں ہم جنس پرستی سے ایڈز اور بچوں کے جنسی استحصال کے خطرات کی بات کہی گئی ہے. جس بنیاد پر کانگریس کی یو پی اے حکومت نے ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ میں ہم جنس پرستی کی عرضی کی مخالفت میں حلف نامہ دائر کیا تھا. لیکن سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ششی تھرور نے 2015 میں آي پي سي کی دفعہ 377 کو منسوخ کرنے کے لئے پارلیمنٹ میں پرائیویٹ بل پیش کیا، جس کے حق میں 14 اور مخالفت میں 58 ووٹ پڑے. کانگریس حکومت کے سینئر وزیر کپل سبل نے ہم جنس پرستی کے حق میں سپریم کورٹ میں پختہ دلیلیں دیں، جن پر اب بڑی بنچ میں سماعت ہوگی. بی جے پی کے حامی بابا رام دیو اور آر ایس ایس ہم جنس پرستی کو خاندانی نظام کے خلاف سمجھتے ہیں. دوسری طرف بی جے پی کی طرف سے مقرر اٹارنی جنرل مکل روہتگی نے ہم جنس پرستی کے حکم کو غلط بتاتے ہوئے كيوریٹو درخواست کو ایپروو کر دیا.

انگلینڈ میں عیسائی چرچ کے دباؤ میں سال 1533 میں ہم جنس پرستی کو جرم بنایا گیا تھا، اسی طرز پر انگریزوں نے آي پي سي کی دفعہ 377 سے ہم جنس پرستی کو ہندوستان میں بھی جرم قرار دے دیا. انگریزوں کے وقت بنائے گئے بہت سے قانون آزادی اور مساوات کی خلاف ورزی کرتے ہیں اور اس وجہ سے سپریم کورٹ کی بحث ہم جنس پرستی تک محدود نہیں رہے گی. اخلاقیات کے تقاضے وقت کے ساتھ بدلتے ہیں تو کیا قانون کو وقت کے ساتھ نہیں تبدیل کرنا چاہئے؟ دو بالغوں کے درمیان رضامندی سے جسمانی تعلقات کو جرم خیال کرنا کیا آزادی اور پرائیویسی کے حقوق کے خلاف ہے؟ ہم جنس پرستی پر بحث سے کیا اب عصمت فروشی کو بھی قانونی درجہ دینے کا مطالبہ نہیں اٹھے گی؟

برطانوی دور کے بہت سے قوانین پر تبدیلی کے لئے قانون کمیشن کی کئی سفارشات کے ساتھ سپریم کورٹ نے بھی کئی فیصلے دیئے ہیں. پر آئین کے مطابق قانون میں تبدیلی یا نئے قانون بنانا پارلیمنٹ کا کام ہے. پارلیمنٹ کے ستراوسان پر کئی ممبران پارلیمنٹ نے عدالتوں کی بڑھتے ہوئے کردار اور انتہائی عدالتی سرگرمی کو جمہوریت کے لئے خطرہ بتایا تھا. ریویو پٹیشن منسوخ ہونے کے بعد سپریم کورٹ کا فیصلہ آخری ہو چکا ہے، پھر ہم جنس پرستی قانون میں تبدیلی کے لئے حکومت کو سپریم کورٹ کے کس فیصلے کا انتظار ہے؟ ہم جنس پرستی پر پارلیمنٹ کی طرف سے قانون میں تبدیلی نہیں کی گی تو سپریم کورٹ کا فیصلہ آئین کی نئی عبارت پھر گڑھے گا.



⋆ وراگ گپتا

وراگ گپتا

وراگ گپتا سپریم کورٹ ایڈووکیٹ اور آئینی امور کے ماہر ہیں۔

آپ اسے بھی پسند کر سکتے ہیں

2 جی فیصلے کے خلاف اپیل، حکومت کیوں نہ لے ونود رائے کی مدد؟

2 جی معاملے میں فیصلہ دینے والے اوپی سینی کی ایمانداری کی وجہ سے سی بی آئی عدالت کا اسپیشل جج بنایا گیا تھا. ملک میں بدعنوانی کے مقدمات کے خلاف کارروائی کرنے والی سی بی آئی کس طرح بے ایمان ہو سکتی ہے؟ اتنے ایماندار نظام کے باوجود 1.76 لاکھ کروڑ کے گھوٹالے کے ملزمان کو سزا کیوں نہیں ہوئی؟ پیچیدہ معاملات میں حکومت سابق حکام سے قانونی مسائل پر تبادلہ خیال کرتی ہے. سی اے جی سے ریٹائرمنٹ کے بعد ونود رائے ابھی بینکاری بورڈ اور بی سی سی آئی انتظامی کمیٹی کے چیئرمین بن کر این پی اے اور کرکٹ میں بدعنوانی  کو دور کر رہے ہیں. 2 جی معاملے میں پیروی کے لئے يويو للت کی تقرری ہوئی تھی، جو اب سپریم کورٹ کے جج ہیں. تو پھر اس صورت میں مندرجہ ذیل نکات پر اپیل بنانے کی ذمہ داری ونود رائے کو کیوں نہیں دی جانی چاہئے، جس سے سی بی آئی اور ای ڈی کے افسران ہائی کورٹ کو اپیل میں سماعت کے دوران الجھن پیدا نہ کر سکیں.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے