ہندوستان ملیریا فری کیوں نہیں بن پایا؟

198

رویش کمار

سری لنکا ملیریا سے آزاد ہو گیا ہے. ملیریا فری سری لنکا کا اعلان اہم ہے تاریخی نہیں کیونکہ دنیا کے کئی ملک ملیریا سے نجات پا چکے ہیں اور 90 کے قریب ممالک نجات حاصل کرنے کی کوشش میں ہیں یا نجات کے نام پر کنٹرول کر رہے ہیں. ملیریا سے سری لنکا کی نجات پر بات ہونی چاہئے کیونکہ مچھروں سے ہم بھی تو پریشان ہیں. کئی بار آپ سوچتے ہوں گے کہ ہم ایسے موضوعات پر بات کیوں نہیں کرتے. آج جو مشکل آئی وہ بتانا چاہتا ہوں. ہماری نظر میں جن لوگوں کے نام آئے ان سے رابطہ کرتے کرتے پورا دن نکل گیا. جنہوں نے شاندار کام کئے ہیں وہ امریکہ چلے گئے. جو ہندوستان میں تھے ان میں سے کچھ کو ہندی نہیں آتی تھی. جنہیں ہندی آتی تھی انہوں نے دوسرے کا نام بتایا تو دوسرے نے تیسرے کا. جن لوگوں نے ہندوستان کے ہی دوردراز علاقے میں کام کیا ہے ان تک اسکائپ کے ذریعہ پہنچنا جوکھم بھرا کام ہے. تو اتنا آسان نہیں ہے کہ آپ ہندی میں ملیریا پر جب چاہیں بات کر لیں. یہ اس لئے بتا رہا ہوں کہ صرف چاہنے سے کچھ نہیں ہو جاتا. پھر بھی آج ملیریا پر بات کرکے رہوں گا.

ہندوستان کے دارالحکومت دہلی میں ملیریا سے موت کی ایک غمناک خبر سامنے آئی ہے. پروین شرما 4 اگست کے روز صفدر جنگ اسپتال میں بھرتی ہوا لیکن بچ نہیں سکا. دن بھر بتایا جاتا رہا کہ دہلی میں گزشتہ پانچ سالوں میں ملیریا سے یہ پہلی موت ہے. پھر پتہ چلا کہ اسی جولائی میں ایک اور موت ہو چکی ہے. دوردراز کے علاقوں کے اعداد و شمار کس حال میں درج ہوتے ہوں گے آپ سمجھ سکتے ہیں. پروین کے بھائی راجن شرما کا کہنا ہے کہ 28 تاریخ کو میکس پٹپڑ گنج میں ملیریا کا پتہ چلا تھا. حالت بگڑی تو 3 اگست کو صفدر جنگ ریفر کر دیا گیا جہاں اس کی موت ہو گئی.

ملیریا سے موت پر ہم کیوں چوکنے ہوئے. تحقیقات سے لے کر علاج کی تمام جدید سہولت ہونے کے بعد بھی کوئی اس بیماری سے مر جائے تو ہمارے کان کھڑے ہو جانے چاہئیں. سرکاری اعداد و شمار ہے کہ اس سال جولائی تک ہندوستان میں تقریبا 4 لاکھ 71 ہزار ملیریا کے معاملے رپورٹ ہوئے ہیں. 119 لوگوں کی موت ہوئی ہے. ہندوستان میں جانے کب سے ملیریا سے نجات کی کوششیں چل رہی ہیں. باقاعدہ شعبہ ہے اور ملازم تعینات ہیں اور بجٹ بھی ہے. اکیلے دہلی میں تینوں کارپوریشن میں چار ہزار ملازمین اس کے لئے تعینات کئے گئے ہیں. ان کا کام ملیریا، ڈینگو اور چكنگنيا سے نجات دلانا ہے. مجموعی طور پر 78 کروڑ کا سالانہ بجٹ ہے.

ملک کے تمام اداروں کے وسائل کو شامل کر لیں تو پتہ چلے گا کہ مچھروں کے پیچھے کتنے لوگ لگے ہیں. مچھروں سے نجات کی مہم حکومت بھی وقتا فوقتا چلاتی ہے جن پر ہم وقت وقت پر توجہ نہیں دیتے ہیں. خود بھی مچھر پیدا کرنے کے حالات پیدا کرتے ہیں اور بازار سے کریم اور كوايل خرید کر سمجھتے ہیں کہ مچھر ہمارا کیا بگاڑ لے گا. سوچیں یہ مچھر جب ہندوستانی حکومت سے نہیں ڈرا تو آپ کے كوايل سے ڈرے گا. ان کی وجہ سے ملک بھر میں تمام طرح کی بیماریاں پھیل رہی ہیں پھر بھی ہم نہیں پھیل رہے ہیں. عام ہوتے جا رہے ہیں. سری لنکا نے ملیریا سے نجات کیسے حاصل کی؟ پہلے اس کہانی کو سنیے پھر بات کریں گے کہ ہندوستان میں کیا دشواریاں ہیں؟ ہم کہاں تک کامیاب ہوئے ہیں؟ ہمارے ساتھی پریمل نے بتایا کہ ہندوستان کو ملیریا فری ہونے میں 2030 تک کا وقت لگ جائے گا. ڈینگو اور چكنگنيا سے نجات کب ملے گی پتہ نہیں!

آج سے ساٹھ سال پہلے سری لنکا پوری دنیا میں ملیریا سے سب سے زیادہ متاثر سمجھا جاتا تھا. گزشتہ ساڑھے تین سال میں سری لنکا میں ایک بھی ملیریا کا مریض نہیں ہوا ہے. سری لنکا نے 1911 میں اینٹی ملیریا مہم شروع کی تھی، اس دوران ہر سال ملیریا کے 15 لاکھ معاملے درج ہوا کرتے تھے. سری لنکا نے 1963 تک ملیریا کو قریب قریب ختم ہی کر دیا تھا جب صرف 17 کیس رپورٹ ہوئے. تب سری لنکا نے اس کا بجٹ کہیں اور کھپا دیا اور مچھر پھر سے واپس آنے لگے. پھر سے پچاس سال لگ گئے ملیریا فری ہونے میں. سری لنکا میں ہندوستان سے چار گنا زیادہ بارش ہوتی ہے.

عالمی ادارہ صحت (WHO) کے مطابق نوے کی دہائی میں سری لنکا نے ملیریا سے نمٹنے کی حکمت عملی بدلی. اس میں مچھر کے علاوہ ملیریا کے پیراسائٹ یعنی پرجیوی کو بھی نشانہ بنایا گیا. عام زبان میں ہم سمجھیں کہ ہم مچھروں کو بھگانے کے لئے فوگنگ کرنے لگتے ہیں. لیکن پیراسائٹ کو نشانہ بنانے کا مطلب ہے مچھر کے اندر جو ملیریا کے عناصر ہیں ان کو ختم کرنا. سری لنکا نے ملیریا سے نمٹنے کے لئے انٹرنیٹ کا استعمال کیا. ہر طرح کے بخار کے مریض کا ملیریا کے لئے بھی ٹیسٹ کیا گیا اور ہر کیس وزارت صحت کے اینٹی ملیریا مہم کو نوٹیفائی کیا گیا. اس کا ایک قومی ڈیٹا تیار کیا گیا. ملیریا میں مبتلا ممالک میں سفر کرنے والوں کی پہچان کی گئی. ان پر نگرانی رکھی گئی. امن مشن پر دوسرے ملکوں میں گئے فوج کے لوگوں کا بھی ٹیسٹ کیا گیا. ملیریا کی ادویات صرف اینٹی ملیریا مہم کے پاس ہی موجود تھی، اس کی وجہ سے مجبورا پرائیویٹ ہیلتھ سینٹر کو بھی بتانا پڑا کہ ان کے یہاں ملیریا کا مریض ہے. اینٹی ملیریا مہم نے 24 گھنٹے کی ایک ہاٹ لائن چلائی. بیماری کو پھیلنے سے روکنے کے لئے مریضوں کا الگ سے علاج کیا.

سری لنکا کابینہ کا فیصلہ ہے کہ ملیریا فری مہم کو ہر سال دس فیصد زیادہ بجٹ ملے گا اور ملتا ہے. اس پورے معاملے میں دو الفاظ کا ذکر آئے گا. ویکٹر اور پیراسائٹ. ویکٹر کا مطلب جو بردار ہوتا ہے. جو ڈھوتا ہے. ویکٹر کا مطلب مچھر ہوا. فیمیل اینوفلیس مچھر. پیراسائٹ پلاسموڈيم اس مچھر کے اندر ہوتا ہے اور جب مچھر کاٹتا ہے تو وہ پیراسائٹ انسان میں جاکر ملیریا جیسی بیماری کو جنم دیتا ہے. سری لنکا کی مہم نے اس پلاسموڈيم پیراسائٹ کا علاج کرنے کا سوچا. یعنی اس پر اٹیک کیا. 1999 کے بعد سے ملیریا کے مریضوں میں تیزی سے کمی آنے لگی اور 2008 تک تو ہر سال صرف 1000 کیس ہی رپورٹ ہوتے رہے. سڑکوں کی صفائی کا خاص خیال رکھا گیا. پانی جمع نہیں ہونے دیا گیا تاکہ مچھر نہ پنپے. دیہی علاقوں میں علاج مہیا کرانے کے لئے موبائل ملیریا كلينک بنائے گئے.

ہندوستان نے بھی اسی طرح پولیو سے نجات پا لی تھی. پولیو فری مہم بھی کم شاندار نہیں ہے. کبھی وقت نکال کر اس مہم کی ڈیٹیل پڑھئے گا پھر پتہ چلے گا کہ کس طرح ایک مقررہ وقت پر پولیو کی دوا لے کر کوئی آپ کے دروازے پر آکر کھڑا ہو جاتا ہے. ایک ایسے موسم میں جب ہندوستان میں لوگ ڈینگو چكنگنيا سے کراہ رہے ہیں، سری لنکا سے ملیریا سے نجات کی یہ خبر ہمارے اندر بھی خوابوں کو جگاتی ہے، تو سوچا کہ بات کرتے ہیں. پوری دنیا میں 320 کروڑ لوگ ملیریا کے خطرے کے درمیان رہتے ہیں. پوری دنیا میں نجات مہم چل رہی ہے. 2015 میں ملیریا سے دنیا بھر میں 4 لاکھ لوگوں کی موت ہوئی ہے. 21 کروڑ ملیریا کے معاملے سامنے آئے ہیں.

متحدہ عرب امارات، مراکش، مالدیپ، ارمنيا، ترکمانستان جیسے کئی ممالک ہیں جنہوں نے گزشتہ سات آٹھ سالوں میں ملیریا سے نجات پائی ہے. WHO کا ٹارگیٹ ہے کہ 2030 تک 35 ممالک کو ملیریا فری کرنے کا، جس میں ہندوستان اور انڈونیشیا بھی شامل ہیں. WHO کا کہنا ہے کہ اگلے 15 سال تک فنڈنگ کو تین گنا کرنا پڑے گا اگر یہ ہدف پورا کرنا چاہتے ہیں تو. حکومت ہند نے بھی اس سال فروری میں 2030 تک ملیریا سے نجات کا ہدف بنایا ہے. اس دوران حیدرآباد کے فری لانس صحافی وویکانند نیمانا اور ان کے ساتھ لوگوں کے پیسے سے چلنے والے WNYC ریڈیو کے لئے کام کرنے والی صحافی انکتا راؤ نے ہندو اور الجزیرہ ڈاٹ کام کے لئے طویل اور پڑھنے کے قابل مضمون لکھا ہے. دونوں کے اس ریسرچ کو قارئین نے فنڈ کیا تھا. آپ  ناظرین کے فنڈ سے اب بہت سی ویب سائٹ چل رہی ہیں جہاں نیوز چینلوں سے اچھا کام ہو رہا ہے. بہر حال وویکا نند اور انکتا نے ہندوستان میں ملیریا کے خاتمے سے متعلق تمام اعداد و شمار کا گہرائی سے مطالعہ کر کے بتایا ہے کہ 2014 میں ملیریا کنٹرول کے بجٹ کا 90 فیصد حصہ انتظامی کاموں میں ہی خرچ ہو گیا. دوا، مچھر دانی اور چھڑکاؤ کے لئے 10 فیصد ہی بجٹ بچا. جبکہ اس بیماری سے ہندوستان کی معیشت کو ہر سال تقریبا 13000 کروڑ روپے کا نقصان ہو رہا ہے. قبائلی علاقوں میں ملیریا کی بھیانک دہشت ہے.

وویکا نند اور انکتا راؤ کا کہنا ہے کہ کسی کو پختہ طور پر معلوم نہیں ہے کہ ملیریا سے ہر سال کتنی اموات ہوتی ہیں. 2015 میں ملیریا سے مرنے والوں کا سرکاری اعداد و شمار 300 ہے جبکہ برطانیہ کا نامی ہیلتھ جرنل لانسیٹ کا اندازہ ہے کہ ہندوستان میں ہر سال 50000 لوگ ملیریا سے مر جاتے ہیں. ملیریا سے ہونے والی ہر موت کی رپورٹنگ ہوتی ہی ہو اس کا کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملتا ہے. بہت سے لوگ اسپتال پہنچنے سے پہلے ہی بخار سے مر جاتے ہیں. دونوں قلم کاروں نے یہ بھی بتایا تھا کہ دوا کے ساتھ مچھر دانی بانٹنے کا ہدف تھا کہ 25 کروڑ لوگوں میں باٹیں گے لیکن ایک فیصد لوگوں میں بھی نہیں بٹا. دونوں کے مضمون میں اس بات پر زور دیا گیا ہے کہ ملیریا سے نجات پر زور ہونا چاہئے. یہ ارجنٹ معاملہ ہے لیکن محض اعلان سے کچھ حاصل نہیں ہوگا.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


تبصرے