آج کا کالم

یوپی میں کانگریس نے پھونکا انتخابی بگل

رویش کمار

2007 میں جب کساد بازاری آئی تھی تب اسی سال شاہ رخ خان کی ایک فلم آئی تھی. ‘اوم شانتی اوم’. اس فلم کا ایک گانا تھا ‘درد ڈسکو.’ 2016 میں اترپردیش میں کساد بازاری کی شکار کانگریس نے بنارس میں اپنا ایک سفر لانچ کیا ہے. اس کا نام ہے درد بنارس. درد ڈسکو کے خالق تھے جاوید اختر صاحب. درد بنارس کے خالق بتائے جا رہے ہیں پرشانت کشور. درد بنارس کس کا درد ہے. کانگریس کا یا بنارس کے لوگوں کا جسے کانگریس اپنے نعروں سے آواز دینا چاہتی ہے. ویسے سونیا گاندھی کی طبیعت خراب ہو گئی اور وہ روڈ شو درمیان میں چھوڑ کر دہلی لوٹ آئیں.

ابھی تک گاندھی امبیڈکر جوڑی کا استعمال ہوتا تھا، پہلی بار امبیڈکر- ترپاٹھی جیسی جوڑی بنانے کی کوشش ہو رہی ہے. سونیا گاندھی نے بنارس میں ڈاکٹر امبیڈکر کی مورتی پر پھول چڑھا کر اپنے سفر کا آغاز کیا. یہ روڈ شو چھ کلومیٹر چل کر انگلشيا لائن کے پاس كملاپت ترپاٹھی کے نام پر بنے تراہے کے پاس ختم ہوا. اسی جگہ پر کانگریس کا پرانا دفتر ہے. سونیا گاندھی کہیں کار کے اندر رہیں تو کہیں کہیں کار سے باہر بھی نکلیں. حکمت عملی کے حوالے سے کہا گیا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے علاقے سے روڈ شو کے آغاز کا ایک سیاسی میسج ہے. کانگریسی کارکن جوش میں تو نظر آئے اور شاید مقامی سیاست کو سمجھنے والوں کے مطابق متحد بھی. ان کا کہنا ہے کہ نتیجہ تو پتہ نہیں لیکن کانگریسی کارکنوں کی بھیڑ دیکھ کر لگ رہا ہے کہ 27 سال سے ہارنے والی پارٹی اتنا بتا رہی ہے کہ وہ زندہ ہے. وہ دعویدار ہے.

كملاپت ترپاٹھی 1971 سے 73 کے درمیان یوپی کے وزیر اعلی رہے، 1975 سے 77 اور 1980 میں تھوڑے وقت کے لئے ریلوے کے وزیر تھے. بنارس میں بہت سے لوگ کہتے ہیں کہ ڈیزل لوکوموٹیو فیکٹری سے لے کر کئی کام کرانے کا کریڈٹ انہیں جاتا ہے. ان کی موت کے 26 سال بعد ان کا ایسا کون سا سیاسی سرمایہ بچا ہوگا جس کے دم پر کانگریس برہمن ووٹر کو لبھانے کی کوشش کر رہی ہے. روڈ شو میں آئے کتنے کانگریسی کارکنوں کو اب كملاپت ترپاٹھی کی یاد جذباتی کرتی ہوگی. كملاپت ترپاٹھی نے دس سے زائد کتابیں لکھی ہیں. شاذ ونادر ہی ہوں گے جنہوں نے ان کی کوئی کتاب پڑھی ہوگی.

2008 میں كملاپت ترپاٹھی کی 103 ویں برسی پر دہلی میں سونیا گاندھی، منموہن سنگھ نے ان کی ایک کتاب باپو اور مانوتا کا اجرا کیا تھا. اس مناسبت کی رپورٹنگ کرتے ہوئے انڈین ایکسپریس کے ڈی کے سنگھ نے لکھا تھا کہ کانگریس 2009 کے لوک سبھا انتخابات کو دیکھتے ہوئے یوپی میں اپنی سیٹ بڑھانے کے لئے كملاپت ترپاٹھی کو یاد کر رہی ہے تاکہ برہمن ووٹر ان کے نام پر پارٹی کے قریب آسکیں. صحافی ڈی کے سنگھ نے لکھا تھا کہ ایسا بہت کم ہوتا ہے جب اے آئی سی سی مہاتما گاندھی، جواہر لال نہرو، اندرا گاندھی اور راجیو گاندھی کو چھوڑ کر کسی بڑے لیڈر کی جینتی یا برسی مناتی ہو.

كملاپت ترپاٹھی موتی لال نہرو کے زمانے سے گاندھی خاندان کے ساتھ رہے. کانگریس کے قومی صدر بھی رہے. راجیو گاندھی تک آتے آتے ان کی کچھ ان بن بھی ہو گئی جس کی وجہ سے انہوں نے 1986 میں قیادت کی خامیوں کو گناتے ہوئے راجیو گاندھی کو ایک طویل خط بھی لکھا تھا. جب کانگریس ورکنگ کمیٹی ناراض ہو گئی تو كملاپت ترپاٹھی کو معافی مانگنی پڑی. وہ پوری زندگی کانگریسی رہے. چار نسلوں سے ان کا خاندان کانگریس میں ہے. كملاپت کے بیٹے لوكپت ترپاٹھی بھی وزیر بنے. وہ کبھی وزیر اعلی نہیں بن سکے. لوكپت ترپاٹھی کی بیوی چندرا ترپاٹھی چندولی لوک سبھا سے ممبر پارلیمنٹ رہی ہیں. لوكپت ترپاٹھی کے بیٹے راجیش پت ترپاٹھی انتخابات لڑے. راجیش پت ترپاٹھی کے بیٹے للیتیش پت ترپاٹھی اس وقت مڑيان سے رکن اسمبلی ہیں.

یہ فہرست ہندوستانی سیاست کے ایک بنیادی مسئلہ کے تئیں اشارہ بھی کرتی ہے. كملاپت اتنے ہی بڑے لیڈر ہوتے تو ان کے نام پر ان کے وارثوں کی طوطی بول رہی ہوتی. کانشی رام کی سیاست نے اترپردیش سیاست کی سارے بنیادیں بدل ڈالیں. ٹھاکر برہمن وزیر اعلی کی بات تو دور، پارٹی میں کوئی بڑی حیثیت نہیں ملتی تھی.

یوپی میں سیاسی مباحثوں میں برہمن ووٹروں کی گنتی بھی بند ہو گئی تھی. یوپی کی سیاست میں برہمن ووٹروں کی از سرے نو تلاش کا کریڈٹ مایاوتی کو جاتا ہے. جون 2005 میں لکھنؤ میں مایاوتی نے برہمن کانفرنس کرکے سب کو چونکا دیا تھا. 2007 میں 86 برہمنوں کو ٹکٹ دے دیا جس سے 34 جیت گئے. 2007 میں بی ایس پی ہی واحد پارٹی بنی جس کے پاس سب سے زیادہ برہمن اور ٹھاکر اراکین اسمبلی تھے. ستیش مشرا مایاوتی کے معتمد بن کر ابھرے. اس سال پہلی بار بی ایس پی میں مایاوتی کے علاوہ دو دیگر رہنماؤں کو ہیلی کاپٹر ملا تھا. نسیم الدین صدیقی اور ستیش مشرا. 2012 میں بھی مایاوتی نے 74 برہمن امیدوار اتارے مگر انتخابات ہی ہار گئیں. 2007 میں 86 برہمنوں کو ٹکٹ دے کر مایاوتی نے ہندوستانی سیاست اور سماج کے تاریخی چکر کو پلٹ دیا تھا. 2007 کے یوپی اسمبلی انتخابات کی رپورٹنگ نکال کر دیکھیں گے تو آج سے کہیں زیادہ تب برہمن ووٹر کی بحث ہوا کرتی تھی. یوپی کی حالیہ تاریخ بتاتی ہے کہ برہمن ووٹروں نے ترپاٹھی، مشرا اور تیواری دیکھ کر ووٹ دینا چھوڑ دیا ہے. اس پر بی جے پی کی بھی دعویداری ہے اور بی ایس پی کی بھی. کانگریس کے پاس لیڈر ہے تو بی ایس پی کے پاس جیتنے کی ضمانت.

اب ایک سوال ہے جو 2014 سے ہندوستانی سیاست میں بنا ہوا ہے. کیا سیاست انتظامات سے مقرر ہوتی ہے. کیا اب پارٹی میں کسی کی حیثیت نہیں رہی کہ وہ اپنے طور پر کارکنوں اور دھڑوں کو جمع کر لے. کیا اس دم پر کانگریس اپنے اندر جان بھر سکتی ہے. اس سے پہلے لکھنؤ میں کانگریس کے بوتھ سطح کے کارکنوں کا اجتماع ہوا. ریمپ بنایا گیا جس پر راہل گاندھی نے کارکنوں سے بات چیت کی. کارکنوں کی بھیڑ اس پارٹی کے لئے حیرانی پیدا کر رہی تھی جو 27 سال سے یوپی کے اقتدار میں نہیں ہے. کیا عوام اس طرح کے انتظامات سے حیرت میں آ جاتی ہوگی. بنارس میں بھی کانگریسی کارکنوں کا جوش دکھا. نئے نئے پرچم بتا رہے تھے کہ وہ کم از کم لڑنے کے لئے تو تیار ہیں. 2014 میں نریندر مودی نے اس سے پہلے اٹل بہاری واجپئی اور ان سے بھی پہلے راجیو گاندھی نے اس طریقہ کار کی شروعات کی تھی. درمیان میں یوپی کی سیاست میں امر سنگھ ویڈیو رتھ لے آئے تھے.

مگر سیاسی انتظامات کی پختہ شکل دکھی 2014 میں. وزیر اعظم نریندر مودی تھری ڈی کے ذریعہ لوگوں کے درمیان پہنچنے لگے. نیتا ایک ساتھ کئی شکلوں میں لیلا کرنے لگا. کئی مورتیوں پر ہار پہنائے جانے لگے. بنارس میں نامزدگی بھرنے گئے تو پیش کاروں کے ناموں کا اعلان ایسے ہوا جیسے کسی بادشاہ کو زمین پر اتارا جا رہا ہو. امید ہے بنارس میں ان کے پیش کار کافی خوش ہوں گے. چائے پر چرچا جیسا برانڈ لانچ ہوا. ان ہی پروگراموں کی نقل میں پنجاب میں ایک نقلی برانڈ لانچ ہوا ہے. ہلکے وچ کیپٹن. مطلب آئیڈیا وہی ہے 2014 والا جسے وزیر اعظم مودی نے چھوڑ دیا ہے. ہماری سیاست آئیڈیا کی بھوکی ہو گئی ہے. دہلی کی سڑکوں پر برسات کی وجہ سے گڈھے بن گئے تو کانگریسی لیڈروں نے مگرمچھ اور شارک کی مورتی ڈال کر اسے دلچسپ بنا دیا اور ان کا مظاہرہ کیمرے پر آ گیا. کانگریسی لیڈر یہ بھول گئے کہ یہ آئیڈیا کرناٹک سے آیا ہے جہاں ان ہی کی حکومت ہے. وہاں پر فن کار اسی طرح گڈھوں کو بھر کر اپنا احتجاج درج کرتے ہیں. بنگلور میں جو آئیڈیا کانگریسی حکومت کے خلاف ہے دہلی میں وہی آئیڈیا کانگریسی کارکنوں کا ہتھیار ہے، جو مودی کا آئیڈیا ہے وہی راہل کا ہے اور وہی اروند کا.

کیا کانگریس یہ بتا رہی ہے کہ انتظامات اور تیاری پر صرف بی جے پی کا حق نہیں ہے. 27 سال سے اقتدار کی نقل مکانی جھیل رہی کانگریس کے پاس یو پی میں 28 ممبران اسمبلی ہیں. استثنا کو چھوڑ دیں تو ان میں سے ایک بھی لیڈر ایسا نہیں ہوا جس میں خود کو بڑا اور کانگریس کو زندہ کرنے کی بھوک کبھی نظر آئی ہو. اس کی کوئی طاقت نہیں بچی ہے اس لئے دہلی کی طرف تاكتا ہے.

اس لئے آپ اس بھیڑ میں کارکنوں کے جوش و جذبے اور جیپ ٹرک کے اوپر بیٹھے رہنماؤں کے جوش میں فرق دیکھیں گے. جتنے اعتماد سے کارکن آیا ہے، رہنماؤں کو دیکھ کر لگ رہا ہے جیسے وہ اپنے آپ سے حیران ہوں کہ کیا کیا کرنا پڑ رہا ہے. نہیں جیتے تو کیا کیا سننا پڑے گا. یا آپ کو اس میں کانگریس کے اندر کسی نئی قوت ارادی کی جھلک نظر آرہی ہے. سیاست میں جدوجہد جب انتظامات بن جاتا ہے تب اس کا بہت فائدہ نہیں ملتا ہے. کانگریس کو جلد ہی اپنے امیدواروں کی ذات سے آگے نکل کر پالیسی پر آنا پڑے گا. اس کے مقامی رہنماؤں اور کارکنوں میں ایسی دھار نہیں بچی ہے کہ وہ روہت ویمولا سے لے کر اونا کے واقعہ تک اور گئو رکشک کو لے کر جارحانہ حملہ کر سکیں. اس کے لیڈر اسی مخمصے میں رہے کہ راہل گاندھی نے جے این یو جاکر ٹھیک کیا یا نہیں کیا. وہ کبھی ہندوتو کے آگے جھک جاتے ہیں تو کبھی لڑنے کی رسم نبھا کر کنارے ہو جاتے ہیں. کانگریس کا بحران صرف انتخابات کا نہیں ہے. بڑے سے لے کر چھوٹے لیڈروں میں نظریہ کا سنگین بحران ہے. دو سال میں مودی حکومت کا سخت جائزہ تو ہوا لیکن اپوزیشن کی شکل میں کانگریس کے کردار کا نہیں ہوا ہے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close