باملاحظہ ہوشیار … 2017 میں طلائی زمانہ آ رہا ہے …

نئے سال کو لے کر اتنی گدگدی اور گھبراہٹ کبھی نہیں   ہوئی تھی. مفلر مین کی طرح یہ سال آ رہا ہے. ایسا لگ رہا ہے کہ جیسے محبوب چوک تک آ گیا ہے. سہیلیاں   چھت پر دوڑنی لگی ہیں  . جھروکوں   سی محبوب کی نگاہ سڑک پر آتے جاتے ہر شہری پر پڑتی ہے. بیچینيوں   اور بیقراريوں   کو سنبھالتے ہوئے سكھياں   کبھی کسی کو پہچان لیتی ہیں   تو کبھی کسی کو. کوئی اس جھروکوں   سے اس چھروکے کی اور دوڑتی جا رہی ہے تو کوئی اس جھروکوں   سی اس جھروکے کی طرف ہانپتی چلی آ رہی ہے. تبھی ریڈیو پر ایک کی بعد ایک گانے آنے لگتے ہیں  . 31 دسمبر کی شام آدھی رات تک پہنچنے کے لیے بے قرار ہے. پورا شہر ریڈیو سے چسپاں   ہوا سردی سی ٹھٹھر رہا ہے. ہر گا نے کو گاتا ہے اور سارا شہر کورس بن جاتا ہے. آپ بھی پڑھتی ہوئی اپنی موبائل سیٹ پر یہ گانا بجا لیجیے۔۔. کھڑے ہو جائیے.

 پہلا گانا بجتا ہے. شہنشاہ کا گانا ہے. کشور کمار کی آواز گونجتی ہے. اندھیری راتوں   میں   ویران راہوں   پرهر ظلم مٹانے کو … ایک مسیحا نکلتا ہے .. جسے لوگ شہنشاہ کہتے ہیں   … عظیم شاعر لطف بخشی کی قلم کی سیاہی بہنے لگتی ہے. تبھی ریڈیو جاکے گانا بدل دیتا ہے. یہ تو بد مزاج فلم کا گانا ہے. پردے پر ہیما مالنی جی گانا رہی ہیں  . گانے کے ابتدائی الفاظ اس طرح ہیں   … ہزاروں   سال انسانوں   کا دل آنسو چلاتا ہے .. ہزاروں   سال میں   کوئی مسیحا بن کی آتا ہے … وو مسیحا آیا ہے … آیا ہے … آيا ہے … آيا ہے … آيا ہے … آيا … بہت دنوں   غم نی ہمیں   تڑپايا ہے … وہ مسیحا آیا ہی، آیا ہے، آیا ہے، آیا ہے. بار بار آیا ہے، آیا ہے، سن کر یہ نہ سمجھیں   کہ ریکارڈ پھنس گیا ہے. بلکہ یہی تو مسیح ہے جو پرانی ریکارڈ کو صفائی، ڈیجیٹل فارمیٹ انعقاد کر چکا ہے. گانا جاری ہے … لو وہ آگیےچل نکلا ہے … آپ اس کی پیچھی ہو جاؤ … یا پہنچو اپنی منزل پہ، یا ان رستوں   میں   کھو جاؤ … قسم اٹھا کر اس نی قسم اٹھائی ہے. وہ مسیحا آیا ہے، آیا ہے … چوک سے کورس کی آواز مخر ہونی لگتی ہے. سارا شہر آیا ہے، آیا ہے … گا نے لگتا ہے. تبھی ریڈیو جاکے دوبارہ گانا بدل دیتا ہے. سوریا کا گانا بجنے لگتا ہے محمد عزیز کی آواز سب کو باندھ لیتی ہے. پردے پر اب ونود کھنہ آ گئے ہیں  . نغمہ کی غزلیں   ہیں   … ایک نئی صبح کا پیغام لے کر … آئی گا سوریا .. آسماں   کا زمین کو سلام لی کر آئے گا سوریا … محمد عزیز کی گانے کا سوشلزم فاشزم کو چیر کر جمہوریت کا پرچم اٹھا لیتا ہے … عمر اس اندھیرے کی رات بھر ہے،  ہونی ہے والی پل بھر میں   سحر ہے … ساتھیو ہمت ہار نہ جانا … چار قدم اور سفر ہے … رفیع کی ڈوپلیکیٹ، عزیز اس گانے کو آدرشوادی مقام پر پہنچا دیتے ہیں  .

 یارو، 2016 کے ہر لمحے کو اپنی سانسوں   میں   قید کر لو. جذباتو میں   دفن کر لو. 2017 کا سال کوئی عام سال نہیں   ہے. صدیوں   بعد ایسا نیا سال آ رہا ہے. خواب اپنی خماريوں   پر اترا رہے ہیں  . خواب کسی وزیر کی طرح اکڑ رہے ہیں  . خواب ڈریم پارٹی اسپوکس پررسن ہو چکے ہیں  . تبھی ریڈیو جاکے ایک اور شرارت کرتا ہے. کارواں   کا گانا بجا دیتا ہے. دیکھو .. دیکھو … وہ آگیا … بارہ بج رہے ہیں   گھڑی میں   … ہیلن بے قرار ہے پردے پر … شراب گٹک جاتی ہی … وو پھر سی گاتے ہیں   … پيا تو اب تو آجا … ای ای … مونیکا وہ آ گیا … دیکھو-دیکھو وہ آ گیا …. ویلکم ٹو 2017 ڈیر متروذ، دوستوذ اینڈ دشمنوذ. ورودھيوذ ٹو.

مضمون:  اب بی جے پی کو مسلمانوں کا زیادہ خیال رکھنا پڑے گا!

 2017 سنہری دور کا سال هے۔ بھرشٹاچار، نکسل واد، دہشت گردی، منشیات مافیا مبرا ہندوستان کا سال. اس غیر معمولی سال ہے. اس سال کی آنے سی پہلے 50 دنوں   کے صبر کا وعدہ پورا ہوتا ہے. ضبط کے 50 دن پورے ہوتے ہیں  . تب پورا ہوتا ہے. اب جب شروع ہونے والا ہے. کیا ہو جائے گا یہ سوچ کر دل ویسے ہی مچلتا ہے جیسی چھت کے جھروکوں   سی شہزادی کا دل اپنی راجکمار کی پہلی جھلک کی لیے مچلتا ہے. میں   نی ریڈیو بند کر دیا ہے. ٹی وی آن کر دی ہے. دو جنوری کی لکھنؤ کی ریلی نظر آرہی ہے. سب کے دل دھڑک رہے ہیں  . جانے کیا اعلان ہو جائے. جانے کیا ہو جائے گا. بھارت کے سنہری دور کی پہلی ایماندار ریلی. اس ریلی کا ایک ایک نیا پیسہ 120 کروڑ ہندوستانیوں   کو پتہ چلے گا. جن کی پاس آدھار نمبر نہیں   ہو گا، وہ ریلی میں   نہیں   گھس پائیں   گے.

 تبھی ایک اور کیمرا آن ہوتا ہے. یوپی کی ڈیڑھ لاکھ بوتھ پر سی سی ٹی وی کیمرے لگے ہیں  . گاؤں   گاؤں   میں   طلائی زمانے کا نظارہ دکھائی دے رہا ہے. لاؤڈ اسپیکرز پر رات والے گانے ہی بج رہے ہیں  . بدمزاج، کارواں،   سوریا اور شہنشاہ کی گانے. دو جنوری کی ریلی میں   پہنچنے کی لئے کارکنوں   نے خشک روٹی کی پوٹلی باندھ لی ہے. ریلی کے انتظامات کی لئے آئے کالے دھن کو ہاتھ لگانے سی انکار کر دیا ہے. کس کس نی چندہ دیا ہے، سب کا نام لکھا جا رہا ہے. دانے دانے پر لکھا ہے ڈونر کا نام. ایمان کا پیسہ کم پڑ رہا ہے. کارکنوں   نی ٹرینوں   اور بسوں   کو چھوڑ دیا ہے. ان گاڑیوں   کو ابھی پین نمبر اور آدھار نمبر سے لنک نہیں   کیا گیا ہے. وہ کالے دھن کی بھی ہو سکتی ہیں  . لہذا وہ لکھنؤ کی طرف پیدل ہی چل پڑے ہیں .

 پراتتوشاستري چھینی ہتھوڑي لے کر ہندوستان مواصلات کارپوریشن لمیٹڈ کی بچھائے گیے تاروں   کو اکھاڑ کر دیکھ رہے ہیں   کہ یہاں   کہیں   کالا دھن تو نہیں   ہے. انہیں   کوئی غریب نہیں   مل رہا ہے. بھارت سی کرپشن، دہشت گردی، نکسل واد، منشیات مافیا کا نام و نشان مٹ گیا ہے. ماضی میں   ان کے ہونے پر ہم کس طرح تھے، اس کا تحریری ثبوت نہیں   مل رہا ہے. اب صرف زبانی سورس یعنی زبانی ثبوتوں   کا ہی سہارا ہے. ریلی ایماندار ہو گئی ہے. ہر جھنڈی پر ڈونر کا نام ہے. بانس کی ہر بلی پر ڈونر کا نام ہے. آدھار نمبر ہے. پین نمبر ہے. کوئی بھی کلک کر کے اس سے پوچھ سکتا ہے کہ آپ نے چندہ دیا ہے. کارپوریٹ نے لیڈروں   کا ساتھ چھوڑ دیا ہے. جب ان سے کچھ ملنا ہی نہیں   تو کیا پیچھے پیچھے چلنا. دو جنوری کی ریلی ہندوستان کی تاریخ کی سب سی مقدس ریلی ہونی چاہئے. سنہری دور کا آغاز اس طرح سے ہو جیسے کوئی اندھیری راتوں   کو چیرتے ہوئے شہنشاہ کی طرح نکل آیا ہو. ٹينو آنند زندہ باد کی نعرے لگ رہے ہوں  .

مضمون:  9نومبر،یوم اقبال کے موقع پرخصوصی تحریر

پچاس دنوں   کے بعد کچھ تو ہوگا جو مسيحايی سے کم نہیں   ہوگا. کرنے والا بھی تو مسیحا سے کم نہیں   ہے. پچاس دن کے بعد آنے والا جنوری کا یہ دوسرا دن کسی اوتار کی طرح لگ رہا ہے. ٹیکس کم ہو جائیں   گے. لوگوں   کے اکاؤنٹ میں   پیسے پہنچ جائیں   گے. چوری کا ہر امکان ختم ہو چکا ہوگا. لوک پال نہ پہلے تھا نہ اب اس کی ضرورت ہو گی. جب کرپشن کا دائرہ کار ہی نہیں   ہوگا تو لوک پال کا دائرہ کار کیوں   ہونا چاہئے. سب کے بینک اکاؤنٹس میں   کتنا پیسہ پہنچے گا، اس کا کر کے گیت گائے جا رہے ہیں  . بینکوں   کے آگے کیرتن ہو رہے ہیں  . وہاں   پر وہی گانے بج رہے ہیں   جو ریڈیو جیکی نے 31 دسمبر کی رات بجائے تھے. آپ دوبارہ ان گانوں   کو سنئے. آپ پیدل چلنے لگیں   گے. سوریا میرا پسندیدہ سماجوادی اور مارکسی گانا دوبارہ بجاے. اسی گانے میں   سب کی بھلائی ہے. غریبوں   کے لئے یہی موقع ہے. یہ گانا گاییں . ان کا مسیحا بھی یہ گانا گا رہا ہے. مل کر گاییے. سوشلزم فیل ہو چکا ہے، مارکسزم فیل ہو چکا ہے، سوریا فیل نہیں   ہوا ہے، سوریا کا گانا ہر فیکٹری میں   نو بجے، بجے گا. ہر دفتر میں   دس بجے بجے گا. گانے کا بول لکھ دے رہا ہوں . آپ زور زور سے گاییے:

جو حل چلائے، اس کی زمیں   ہو

یہ فیصلہ ہو، آج اور یہیں   ہو

اب تک ہوا ہے پر اب نہ ہو گا

محنت کہیں   ہو، دولت کہیں   ہو

یہ حکم دنیا کا نام لے کر

آئے گا سوریا،

آسماں   کا دھرتی کو سلام لے کر آئے گا سوریا

 2017 امیدوں   کا سال ہے. اس سال دنیا معیشت کے نئے ماڈل دیکھے گی. بھارت میں   ایک فروری کے بجٹ سے پہلے دو جنوری کو کوئی نیا ماڈل لانچ ہو سکتا ہے. ناقدین کو خوب موقع ملا۔ حامیوں   کو بھی ملا. نوبیل کمیٹی کو بھی دو جنوری کی ریلی میں   آنا چاہئے، انہیں   تسلیم کرنا چاہئے کہ سیاست داں   سے بڑا ماہر اقتصادیات کوئی نہیں   ہوتا. کسی ماہر اقتصادیات نے تعریف نہیں   کی تو کیا ہوا، بینکاروں   نے تو کی ہی ہے. ماہر اقتصادیات بھی انہی بینکاروں   کے یہاں   نوکری کرتے ہیں  . اس بڑے فیصلے کا احترام ہو. اس پر واجب انعام ہو. بھارت کے مسيحاي سیاستدان کو معاشیات کا نوبیل انعام ملنا چاہئے. میں   حیران ہوں   کہ نواز اب تک یہ ہمت کیوں   نہیں   کر سکے ہیں  . معاشیات کا نوبل انعام بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی کو دیا جانا چاہئے. وزیر اعظم کے پاس ایسا کچھ ہوگا جس کی بھنک کسی کو نہیں   لگی ہے. اس کا اعلان آنے والے دنوں   میں   ہونے والا ہے. معاشیات کی دنیا میں   کسی نامعلوم کی آمد ہونے والی ہے. کیا ہو گا جو اب تک نہیں   ہوا ہے، یہ سوچ کر دل دھڑک رہا ہے. 31 دسمبر کی رات ہوش مت کھو بٹھیےگا. سنہری دور آ رہا ہے. سوریا کے گانے کی آواز تیز کر دیجیئے گا. اسی کے گانے کا اگلا حصہ ہے ….

 آئے گی انصاف کی حکمرانی

اب نہ بہتا خوں   ہو کر پانی

اٹھ روشنی کا لہرا دے پرچم

کر دے یہ دنیا پرانی

ایک نئی صبح کا پیغام لے کر آئے گا سوریا …

مترجم: محمد اسعد فلاحی


⋆ رویش کمار

رویش کمار
مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔