آج کا کالم

یوم جمہوریہ اور نظام کے اندر سے اٹھتی آوازیں

نظام کی خود مختاری اور وقار کو بچانے کی آواز اب اندر سے بھی اٹھنے لگی ہے. اداروں کے سربراہ حکومتوں کے اشارے پر مینج ہوتے رہے۔ لیکن ملازمین کی یہ آواز بتاتی ہے کہ وہ ادارے کو مٹنے دینے کی قیمت پر خاموش نہیں رہیں گے. حالیہ دنوں میں کچھ ایسے واقعات ہوئیں ہیں جو ان مایوس لوگوں کو یقین دہانی کرا سکتی ہیں، جن کا ماننا ہے کہ ادارے کا سربراہ اپنی من مانی کرتا رہے گا اور کوئی کچھ نہیں بولے گا. نیم فورس اور فوج کے جوانوں نے ویڈیو بنا کر عوام کو بھروسہ دیا ہے کہ وہ اندر سے بھی پہرےداري کر رہے ہیں. غلط کے خلاف بولنے کی اس بے چینی کے سسٹم کو یقینی طور پر بہتر بنانے والی ہے.

 آج انڈین ایکسپریس میں سمدرگپت کشیپ کی میگھالیہ سے خبر شائع ہوئی ہے. میگھالیہ محل کے اسی کی مزید ملازمین نے صدارتی محل اور وزیر اعظم کے دفتر کو ایک خط لکھا ہے. اس خط میں گورنر پر مبینہ عیاشیوں کے الزام لگائے گئے ہیں. ان ملازمین نے فورا گورنر وی شمگتھن کو ہٹانے کا مطالبہ کیا ہے. بھارت کی تاریخ میں یہ پہلا واقعہ ہوگا، جب شاہی محل کے ملازمین نے گورنر کو ہٹانے کا مطالبہ کیا ہو. ان کا الزام ہے کہ گورنر کی کچھ سرگرمیوں کے چلتے شاہی محل کے وقار اور شہرت کو ٹھیس پہنچی ہے.

 یوم جمہوریہ کے دن آئین کے سرپرست کے بارے میں یہ خبر تشویش میں ڈالتی ہے. گورنر شمگتھن کے پاس میگھالیہ کی طرف اروناچل پردیش کا چارج ہے. ملازمین کا گورنر کی شکایت کرنا عام رجحان نہیں ہے. اگر یہ خبر صحیح ہے اور خط کی تفصیلات سنجیدہ ہیں تو صدارتی محل اور وزیر اعظم کے دفتر کو فوری طور پر خصوصی ایلچی بھیج کر انکوائری کرانی چاہئے. فی الحال تو گورنر کا فوری تبادلہ کر دینا چاہئے.

 شیلانگ کے مقامی اخبار ہائلینڈ پوسٹ نے لکھا ہے کہ شاہی محل کے افسر تعلقات عامہ کے انٹرویو دینے آئی ایک نامعلوم خاتون نے گورنر پر چھیڑ چھاڑ کا الزام لگایا ہے. گورنر نے تو بے بنیاد بتا دیا ہے مگر اس طرح کے الزامات کو دونوں طرف کے بیانات کے بھروسے نہیں چھوڑا جانا چاہئے. گورنر کا کہنا ہے کہ جن کا انتخاب نہیں ہوا ہے، وہ لوگ اس طرح کی باتیں کر رہے ہیں. اس کے بعد بھی اسی ملازمین کا خط عام رجحان نہیں ہے. انہوں نے وزیر اعظم کے دفتر کو خط لکھنے کا خطرہ یوں نہیں اٹھایا گے.

 گزشتہ دنوں جب کھادی دیہی صنعت کے کیلنڈر پر وزیر اعظم کی تصویر شائع ہوئی تو ممبئی کے ولی پارلے واقع کھادی ذخائر کے ملازمین نے اس کی مخالفت نہیں بلکہ باہر آکر مظاہرہ بھی کیا بھارتی ریزرو بینک کے ملازمین نے بھی گورنر ارجت پٹیل کو خط لکھ کر ادارے کی خود مختاری اور وقار سے کھلواڑ نہ ہونے دینے کے لئے آگاہ کیا تھا. ایسا شاید ہی پہلے ہوا ہو جب ملازم، افسر اپنے گورنر کو خط لکھ رہے ہیں. یہ واقعات حکومت کے لئے پریشانی کا سبب ہو سکتی ہیں لیکن یہ ملازم کی شہریت کا مظاہرہ کر ہم سب کو اس بات پر یقین کر رہے ہیں کہ اداروں کی شفافیت کی لڑائی اب وہ بھی لڑیں گے.

یہ مصنف کی ذاتی رائے ہے۔
(اس ویب سائٹ کے مضامین کوعام کرنے میں ہمارا تعاون کیجیے۔)
Disclaimer: The opinions expressed within this article/piece are personal views of the author; and do not reflect the views of the Mazameen.com. The Mazameen.com does not assume any responsibility or liability for the same.)


مزید دکھائیں

رویش کمار

مضمون نگار ہندوستان کے معروف صحافی اور ٹیلی وژن اینکر ہیں۔

متعلقہ

Close