25 سال بعد دوبارہ یاد آیا بابری انہدام کا وہ منظر

ندھی کلپتی

(ندھی کلپتی این ڈی ٹی وی انڈیا میں سینئر ایڈیٹر ہیں.)

بابری مسجد کو منہدم کئے ہوئے 25 سال ہو گئے، آپ وہاں تھیں، آپ کو کچھ لکھنا چاہیے. ہمارے ساتھی امیتیش نے مجھ سے یہ بات کہی. میں نے سوچا کیوں کچھ عجیب سی کیفیت ہوتی ہے اس انہدام کے بارے میں لکھنے پر. اتنا وقت گزر گیا، بہت سے عدالتوں کی در پر یہ معاملہ پہنچتا رہا یا پھر اس لئے کہ وہ سهرن یاد آتی ہے جب تشدد سے اس کو ڈھایا گیا. یا وہ لامتناہی سوال کہ رام کو ان کے گھر میں جگہ کیوں نہیں یا پھر وہ کہ وہ تو صرف تلسی، بالمیکی کے صفحات پر تھے. ابھی کچھ دنوں پہلے 5 اکتوبر کو لکھنؤ گئی تھی، سی بی آئی کے سمن ملنے پر. اس تاریخ سے کچھ دن پہلے آفس سے فون آیا تھا صبح صبح کہ سی بی آئی کے لوگ پہنچے ہوئے ہیں، آپ کے لئے سمن ہے. پہلے تو میں تھوڑا سا سٹپٹائی تھی. ذہن میں متعدد سوالات تھے کہ سی بی آئی کا یہ فرمان کیوں آیا ہوگا. میں نے جب پوچھا، کس کے نام پر ہے تو فون پر دوسری طرف سے آ رہی آواز نے 1992 میں میرے اس وقت کے آفس کا پتہ بتایا تھا Live India Communique، Lodhi Estate. میڈم یہ ایودھیا کیس کے سلسلے میں ہے. اچانک میں نے 25 سال پیچھے 1992 میں پهچ گئی تھی. دھول، شور، تشدد کے درمیان وہ گھنٹے یاد آ گئے تھے. ایک گہری سانس نکلی تھی تب.

بہرحال 5 تاریخ کو میں حکم کے مطابق لکھنؤ کے پرانے ہائی کورٹ بلڈنگ پہنچ گئی تھی جو قیصرباغ میں ہے. سی بی آئی کی خصوصی عدالت سپریم کورٹ کے حکم پر روز سماعت کر رہی تھی. قریب 70 صحافیوں سے پروسكيوشن ابھی بیان درج کرا رہا تھا. وہاں پہنچنے پر مجھے بتایا گیا کہ 1993 مارچ میں سی بی آئی کے حکام کے سامنے جو بیان دیا گیا تھا، وہ اب عدالت کے سامنے رکھنا ہے. عدالت پہنچنے کے کچھ دیر بعد سی بی آئی کے وکیل ایک ایک کر پہنچنے لگے. انہوں نے اپنا تعارف کرایا اور سمجھایا کہ آج کے دن صرف جج کے سامنے صرف میرے ہی پوچھ گچھ کی جائے گی. 1992 میں جو میں نے بیان دیا تھا، اس کی کاپی میرے سامنے رکھ دی گئی. کہا گیا کہ یہی آپ جج کے سامنے دہرانہ ہے. بڑا سا کورٹ روم تھا. 7-8 لوگ کالے کوٹ میں میرے ارد گرد ٹیبل پر بیٹھ گئے. معاملے سے منسلک سب سے قدیم وکیل جن کے پاؤں میں اب چوٹ ہے، مجھے میرا بیان پڑھ کر سنانے لگے، لیکن میں کشمکش میں پڑ گئی. اس بیان کو پڑھا تو لگا کچھ یاد ہی نہیں تھا کہ 6 دسمبر کو کیا جھیلا تھا. بیان سنتے ہوئے اور پھر خود پڑھتے ہوئے اس دن کی یادیں پھر سے آنکھوں کے سامنے تیرني سی لگی.

متنازع مقام پر میں صبح قریب 10:30 پہنچ گئی تھی. جیسے ہی اپنی ٹیم کے ساتھ مسجد کی طرف قطار میں بڑھ رہی تھی، وہاں یونین کے سربراہ سدرشن جي ملے تھے. ان کا انٹرویو بھی کیا تھا. بیان میں یہ نہیں تھا کہ کیا باتیں کی. شاید اس وقت یونین سربراہ کو ملنا ہی بتا دینا اہم رہا ہوگا. بھیڑ میں اپنی ٹیم کے ساتھ آگے مہاراشٹر سے آئی ان لڑکیوں کے نام بھی تھے، جنہوں نے مجھے بچایا تھا. تشدد بھڑکنے اور مسجد کو توڑنے سے پہلے وی ایچ پی کے اشوک سنگھل نے ایک پری کرما سی کی تھی، جس کے بعد بڑی تعداد میں کارسیوک یا کہیں کہ وہ شر پسند عناصر مسجد کے گنبد پر چڑھ گئے تھے اور اسے توڑنا شروع کر دیا تھا. پھر وہ منطر دیکھنے کو ملا تھا جس نے بہت کچھ مسمار کر دیا تھا. اس دھول، تشدد اور شور کے درمیان میری آنکھوں کے سامنے میری ٹیم کھو گئی تھی. لاٹھیوں کے ساتھ چیخنے کی آوازیں بھی سنائی دے رہی تھیں. اسی کہرام میں کیمرہ مین اور سائونڈ ركارڈسٹ روی کو چوٹیں آئی تھیں. روی کا تو پاؤں توڑ دیا گیا تھا. اس کے کندھے پر لٹکے ریکارڈر میں ہی تو ٹیپ ہوا کرتا تھا، جس میں کافی کچھ درج ہو چکا تھا. وہ سب توڑ دیا گیا تھا. یہ بھی صاف ہو گیا تھا کی میڈیا نشانے پر تھی. اس دوران ہی مہاراشٹر سے آئی مارشل آرٹس اینڈ ٹرینڈ لڑکیوں نے مجھے بچایا تھا. یہ وہی لڑکیاں تھیں، جنہوں نے کہا تھا کہ انہیں کیوں نہیں چڑھنے دیا گیا تھا بغاوت کے لئے، ہم ان کے لڑکوں سے کون سے کم تھے. جذبات کا وہ ابالنا ہر طرف دیکھنے کو مل رہا تھا. ٹیم کو تلاش کرنے ہسپتال بھی پہنچی تھی، لیکن وہاں کوئی بچھڑا ساتھی نہیں ملا تھا. بچتے-بچاتے ایودھیا تھانے پہنچی تھی. غیر ملکی صحافیوں کی مدد کی ہندی میں ان کی عرضی دی. پھر قریب ساڑھے تین بجے کیمرہ اور اسسٹنٹ موریا ملے تھے. روی کا پتہ اگلے دن لگا تھا. کچھ صحافی اس کو  براہ راست دہلی لے گئے تھے.

 بیان پڑھ کر جج صاحب کا انتظار کیا جا رہا تھا. اس دوران اس ٹیپ کی تلاش شروع ہوئی، جو مارچ 1993 کو سی بی آئی کو دہلی میں میرے بیان کے ساتھ دیا گیا تھا. وہ بھی بے حد ضروری ثبوت تھا جو جج کے سامنے رکھنا تھا. آدھے گھنٹے کے انتظار کے بعد دو بڑے بڑے ٹرنک کمرے میں آئے، جن میں وہ ٹیپ تھے. مجھے ان کی تصدیق بھی کرنی تھی. ٹیپوں کے ڈھیر میں اس ایک ٹیپ کی تلاش شروع ہوئی، جس پر میرے دستخط تھے. بے صبر ہوکر میں بھی مصروف ہو گئی ٹیپ کو ڈھونڈنے میں. اس انبار میں VHS کی اور يومیٹك دونوں طرح کے ٹیپ موجود تھے. کچھ دیر میں میں نے وہ ٹیپ تلاش کر لیا. 25 سال کی عمر اپنے ہاتھوں سے لکھی تاریخ اور دستخط نے مجھے حیرت ڈال دیا. کس طرح سی بی آئی نے اتنے سالوں سے ان ثبوتوں کو سنبھالے رکھا. مجھے بتایا گیا کہ درمیان میں دوردرشن کے لوگوں نے انہیں منظم بھی کیا. سی بی آئی کے وکلاء نے بھی راحت کی سانس لی کہ ثبوت پورے ہو گئے.

پھر شروع ہوا جج صاحب کے سامنے میرا بیان درج کرانے کا عمل. اس دوران کمرے میں کچھ اور وکیل بھی آ گئے تھے. بتایا گیا کہ وہ مدعا علیہان کے ہیں. میں قریب 15-20 وکلاء سے گھری ہوئی تھی. میرے آفس سے ساتھ پہنچی وکیل میرے ساتھ مسلسل کھڑی رہیں. درمیان میں کچھ تیکھی بحث بھی ہوئی، جس میں اس وقت نہیں لکھ سکتی کیونکہ معاملہ کورٹ میں ہے، لیکن یہ احساس ہو رہا تھا کہ بابری کیس کے تاریخ کے صفحات میں میرا ایک ورق بھی درج ہو گیا. کچھ اطمینان بھی تھا کہ اپنے بیان کے ساتھ وجويل رپورٹ کا ٹیپ بھی دے کر اپنا فرض پورا کیا. صبح 10 سے دوپہر 2 بج چکے تھے. مجھے کہا گیا کہ بچاو پکش بھی بلائے گا. فی الحال انتظار ہے.

انتظار بہت سوالات کے جوابات کا بھی رہے گا. اس معاملے کی سماعت سپریم کورٹ میں جو 5 دسمبر کو شروع ہونی تھی، وہ نہیں ہو سکی. طویل بحث کے بعد سماعت فروری تک کے لئے ٹل گئی ہے، لیکن اس کی آنچ گجرات انتخابات تک پہنچ گئی ہے. کون مندر بنوانا چاہتا ہے؟ کون اس کا استعمال ووٹ کے لئے چاہتا ہے؟ کس قوم کا کون بھروسے مند ہے؟ کون سی قوم کا اعتماد جیتا جائے؟ اور یہ امینی تنازعہ ہے یا ہمارے ایمان کا سوال ہے؟ جواب کا انتظار اب طویل رہے گا.



⋆ ندھی کلپتی

مدیر

آپ اسے بھی پسند کر سکتے ہیں

تعلیم کے تیزاب میں ڈال اس کی خودی کو

تعلیم کے مقاصدمیں طلبا کی ترقی شامل ہے۔ مذہبی، سماجی، اخلاقی، معاشی وغیرہ ترقی کے لئے تعلیم ہی ذمے دار اور اہم کردار ادا کرتی ہے۔ علم انسان کو انسانیت کا سبق سکھاتا ہے۔ تہذیب،تمیز اور شرافت، حق و باطل میں میں تمیز، صراط المستقیم پر چلنا، سلیقہ اور شعور وغیرہ تمام اخلاقی اقدار بہترین تعلیم کی شکر گزار ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے